News Ticker
  • “We cannot expect people to have respect for law and order until we teach respect to those we have entrusted to enforce those laws.” ― Hunter S. Thompson
  • “And I can fight only for something that I love
  • love only what I respect
  • and respect only what I at least know.” ― Adolf Hitler
  •  Click Here To Watch Latest Movie secret-superstar (2017) 

Welcome to Funday Urdu Forum

Guest Image

Welcome to Funday Urdu Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Funday Urdu Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

Blogs

Our community blogs

  1. Hareem Naz
    Latest Entry

    By Hareem Naz,

    ﯾُﻮﮞ ﮐﺴﯽ ﺑﻨﺪﮦﺀِ ﺍﺑﺘَﺮ ﮐﻮ_____ﻧﮧ ﮐَﮩِﯿﺌﮯ ﮐﻤﺘَﺮ
    ﮐﯿﺎ ﻋﺠﺐ ﺣَﺸﺮ ﮐﮯ ﺩِﻥ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﻧﮑﻠﮯ...

  2. لمحہ بھر اپنا خوابوں کو بنانے والے
    اب نہ آئیں گے پلٹ کر کبھی جانے والے

    کیا ملے گا تجھے بکھرے ہوئے خوابوں کے سوا
    ریت پر چاند کی تصویر بنانے والے

    سب نے پہنا تھا بڑے شوق سے کاغذ کا لباس
    اس قدر لوگ تھے بارش میں نہانے والے

    مر گئے ہم تو یہ کتبے پر لکھا جائے گا
    سو گئے آپ زمانے کو جگانے والے

    در و دیوار پر حسرت سی برستی ہے محسن!
    جانے کس دیس گئے پیار نبھانے والے

     

    18619965_1355210007861510_2181347456266809950_n.jpg

  3. l_172420_014030_updates.jpg
    172420_9071319_updates.jpgPTI Spokesperson Fawad Chaudhry addressing the media outside the Supreme Court. Photo: Geo News 

    ISLAMABAD: Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) leader Fawad Chaudhry said on Friday that the way the National Accountability Bureau (NAB) presented its appeal before the Supreme Court, "this was bound to happen".

    He was referring to the apex court's dismissal of NAB's plea to reopen the Rs1.2 billion Hudaibiya Paper Mills reference against the Sharif family. The reference was struck down by the Lahore High Court. 

    Imran submitted all documents before the Supreme Court. 

    Addressing the media outside the Supreme Court, Chaudhry said they have serious reservations over the conduct of NAB's prosecution department in the case. 

    Criticising the "non-serious attitude of NAB," Chaudhry said the "Supreme Court judges were not guided the right way. Basic documents of the case were not attached to the appeal". 

    He said the case involves loot of public funds, adding that it is a great disservice to the people if there is no probe into the matter. 

    The PTI leader said if a PTI government is formed, they will take the matter to its logical conclusion. 

    He added that the party will review the detailed order of the case once the detailed judgment is released. 


  4. So guys, the word of the year has finally been announced and umm… it kind of makes us feel a little bad about our vocabulary and might do the same to you. We'll tell you why.

    When Oxford English Dictionary declares its 'Word of The Year', one would expect to have heard it at least once. And if not heard it from someone's mouth, maybe read it. Right?
    But when a word, that most of us have probably never even heard of in the entire year is given that title, we are bound to feel inadequate.

    Without further ado, we're gonna go ahead and tell you. Are you ready?

    The Word of the Year is *drumrolls* 'YOUTHQUAKE'.

    via GIPHY

    No, we haven't made a mistake. It isn't earthquake, it is indeed, Youthquake.

    YOUTHQUAKE is the Oxford Dictionaries #WordOfTheYear 2017. Find out more: https://t.co/BanfCMh2Gi pic.twitter.com/iIQ4ykwUwa

    — Oxford Dictionaries (@OxfordWords) December 14, 2017



    If you have heard of it before, congratulations! We are proud. But if you haven't, join the club.

    Youthquake is defined by Oxford Dictionary as "a significant cultural, political, or social change arising from the actions or influence of young people."

    via GIPHY

    To make you feel a little worse, we should tell that the word actually dates all the way back to the 1960s after the editor of Vogue, Diana Vreeland made it up to describe how British youth were changing fashion and music around the world.
    And its relevance increased in 2017 during the UK general elections and the rise of young political engagement in the Labour Party.
    The word was chosen after careful consideration from among the few shortlisted ones. And guess what? Most of us have probably never heard of any of those either, except for one- Unicorn. 
    The others were:
    1. Antifa- a political protest movement comprising autonomous groups affiliated by their militant opposition to fascism and other forms of extreme right-wing ideology
    2. Broflake- a man who is readily upset or offended by progressive attitudes that conflict with his more conventional or conservative views
    3. Gorpcore- a style of dress incorporating utilitarian clothing of a type worn for outdoor activities
    4. Kompromat- compromising information collected for use in blackmailing, discrediting, or manipulating someone, typically for political purposes
    5. Milkshake Duck- a person or thing that initially inspires delight on social media but is soon revealed to have a distasteful or repugnant past
    6. Newsjacking- the practice of taking advantage of current events or news stories in such a way as to promote or advertise one's product or brand
    7. White fragility- discomfort and defensiveness on the part of a white person when confronted by information about racial inequality and injustice

    It's okay. Take a minute to absorb this information.

    via GIPHY


    On hearing this news, Twitterverse was obviously not very pleased.

    We know how that feels.

    Me pretending I know what a #youthquake is. pic.twitter.com/pmWt7X7r1S

    — Amanda (@Pandamoanimum) December 15, 2017



    Us right now!

    The Dictionary people: the word of 2017 is #youthquake!
    Everyone else: pic.twitter.com/N7T5cyxGGH

    — Alex Davies (@alexanderdavies) December 15, 2017



    True story!

    I run a charity for young people.
    This is not a word that I have ever heard used.
    Anywhere. By Anyone.#Youthquake https://t.co/mJpHnnpK4X

    — Ruth Ibegbuna (@MsIbegbuna) December 15, 2017


    On a side note, it does.

    #youthquake sounds like a really unappetising pancake.....

    — Lucy (@0312bright) December 15, 2017


    Still cannot absorb this.

    Oxford Dictionary: announces #youthquake as word of the year
    Everyone: pic.twitter.com/K8eKyXyLAX

    — Liz Tyler (@LizTyler) December 15, 2017


    Some people absolutely cannot accept this.

    No one in the history of the world has ever used the word #youthquake
    Not even the person who made the word up.
    It's not even a word.

    — Terri Lowe ð (@HelloTerriLowe) December 15, 2017


    Indeed a better idea.

    Throwing a dictionary at a youthquake is a better idea... https://t.co/4DKsoXSPZF

    — Zach Ward (@UnrealZachWard) December 15, 2017


    LMAO

    'Youthquake' sounds the name of a dance group that gets knocked out of Britain's Got Talent in the first round.

    — cluedont (@cluedont) December 15, 2017


    Oh well…

    I believe in Santa more than I believe in #youthquake as it's the first time I heard that word today and it's my job to know these things so...

    — Caroline O'Grady (@yo_grady) December 15, 2017


    Here's the truth

    As a youth worker who frequently dabs and says 'sup everyone' I can confirm no youth ever use the word #youthquake ever.

    — Craig Bryant Ù‎ (@Bryanttie) December 15, 2017



    Well, we are just disappointed that 'Milkshake Duck' lost to 'Youthquake'. At least, it sounds funny.

     

  5. RattiGali lake....(12130 ft)
    Neelam Valley...Kashmir❤ Pakistan🇵🇰. 04.9.2017
    Lυѕн    ° ☾ °☆  ¸. ● .   ★  ★ ° ☾ ☆ ¸. ¸ ✷  :.  . •○Lσνєℓу *。  ☆ 。 ★    。   ☆Bєαυтιƒυℓ ° :.  * • ○ ° ★  .  *  .       .   °  .● .Mιη∂ Bℓσωιηg   ° ☾ °☆  ¸. ● .  ★  Wση∂єяƒυℓ★°☾ ☆✷
    :. .• ○  *。  ☆     * • ○ °★  .  *  . Gяєαт    .   °  .● .   ° ☾ °☆ Fαвυℓσυѕ ¸. ● .   ★  ★°☾ ☆ ✷  :.   . • ○ *。  ☆ 。★   。   ☆° :.   * • ○°Mαяνєʟʟʘυs ★  .  *  .       .   °  .● .       ° ☾ °☆  ¸. ● .   вєsт★  ★ ° ☾ ☆¸. ¸ ✷  :.  . • ○ *。Fαηтαsтιc☆。★  。☆   °:.   * • ○ ° ★  .  *  . νιþ    cʘʘʟ.   °  .● .      ° ☾ °☆  ¸. ● .   ★  ★ ° ☾ ☆¸. ¸ ✷  :.  . •ηιcє ○ *。  ☆    。★。☆Sυρєяв☾ °☆  ¸. ● . ★ .  Lυѕн  ° ☾ °☆  ¸. ● .  ★  ★ ° ☾ ☆ ¸. ¸ ✷   :.  . •○Lσνєℓу *。  ☆。★  。   ☆Bєαυтιƒυℓ° :.  * • ○ ° ★  .   *  .       . °  .● .Mιη∂ Bℓσωιηg ° ☾ °☆  ¸. ●.   ★   Wση∂єяƒυℓ★° ☾ ☆✷
    :.  .• ○ *。  ☆     * • ○ ° ★  .  *  .
     Gяєαт     .   °  .● .     ° ☾ °☆ Fαвυℓσυѕ ¸. ● .   ★  ★°☾ ☆ ✷  :.   . • ○ *。  ☆ 。★συтsтαηdιηg   。   ☆° :.   * • ○°Mαяνєʟʟʘυs ★  .  *  .       . °  .● .  ° ☾ °☆  ¸. ● .   вєsт★ Lυѕн    ° ☾ °☆  ¸. ● .   ★  ★ ° ☾ ☆ ¸. ¸ ✷  :.  . •○Lσνєℓу *。  ☆ 。 ★    。   ☆Bєαυтιƒυℓ ° :.  * • ○ ° ★  .  *  .       .   °  .● .Mιη∂ Bℓσωιηg   ° ☾ °☆  ¸. ● .  ★  Wση∂єяƒυℓ★°☾ ☆✷
    :. .• ○  *。  ☆     * • ○ °★  .  *  . Gяєαт    .   °  .● .   ° ☾ °☆ Fαвυℓσυѕ ¸. ● .   ★  ★°☾ ☆ ✷  :.   . • ○ *。  ☆ 。★   。   ☆° :.   * • ○°Mαяνєʟʟʘυs ★  .  *  .       .   °  .● .       ° ☾ °☆  ¸. ● .   вєsт★  ★ ° ☾ ☆¸. ¸ ✷  :.  . • ○ *。Fαηтαsтιc☆。★  。☆   °:.   * • ○ ° ★  .  *  . νιþ    cʘʘʟ.   °  .● .      ° ☾ °☆  ¸. ● .   ★  ★ ° ☾ ☆¸. ¸ ✷  :.  . •ηιcє ○ *。  ☆    。★。☆Sυρєяв☾ °☆  ¸. ● . ★ .  Lυѕн  ° ☾ °☆  ¸. ● .  ★  ★ ° ☾ ☆ ¸. ¸ ✷   :.  . •○Lσνєℓу *。  ☆。★  。   ☆Bєαυтιƒυℓ° :.  * • ○ ° ★  .   *  .       . °  .● .Mιη∂ Bℓσωιηg ° ☾ °☆  ¸. ●.   ★   Wση∂єяƒυℓ★° ☾ ☆✷
    :.  .• ○ *。  ☆     * • ○ ° ★  .  *  .
     Gяєαт     .   °  .● .     ° ☾ °☆ Fαвυℓσυѕ ¸. ● .   ★  ★°☾ ☆ ✷  :.   . • ○ *。  ☆ 。★συтsтαηdιηg   。   ☆° :.   * • ○°Mαяνєʟʟʘυs ★  .  *  .       . °  .● .  ° ☾ °☆  ¸. ● .   вєsт★
    like.png 1
    Azmat Yar Khan
    Ma Sha Allah zabardast. Behtar tu yeh tha k Shirt pehn k pic li jati. Iss mey ** The Pakistan Tourism ** ki shaan mey mazeed izafa ho jata. Anyhow its a excellent view.
    like.png 1
    police mans tea shirt

    The Pakistan Tourism

  6.  

    کُن سے لَا تک کا سفر

    کچھ لوگ کنویں کی طرح ہو تے ہیں جن میں سے ہر کوئی استطاعت بھر پانی نکالتا ہے سیراب ہوتا چلا جاتا ہے۔اور پھر وہ دن بھی آتے ہیں کہ کنواں خود پیاسا ہوجا تا ہے مگر پھر بھی مشکیں بھر بھر بانٹتا ہے۔صحرا نوردوں کو پیا سوں کو آوازیں لگاتا ہے آؤ اور پیاس بجھاؤ۔
    مگر اس کنویں کا سیراب ہونا لوگوں کے ہاتھوں نہیں اللّٰہ کے ہاتھوں ہوتا ہے۔کبھی باراں رحمت برسا کر تو کبھی زمین کے بند دروازے کھول کر اسے سیراب کر دیا جاتا ہے۔
    جو بس دینا جانتے ہیں ،بانٹنا جا نتے ہیں انکو سیراب کر نے والی ذات اوپر والی ہوتی ہے۔
    وہ جانتے ہیں کہ پیاس کیا ہو تی ہے، پیاسا رہنا کیسا لگتا ہے ۔۔
    اسی لیے تو وہ بے غر ض ہو جاتے ہیں۔اپنی پرواہ کیے بغیراوروں کی پیاس مٹاتے چلے جاتے ہیں ۔لوگ انکے کنارے سستاتے ہیں ڈول بھر بھر پانی نکالتے ہیں اور اسے تنہا چھوڑے چلے جاتے ہیں۔
    کنواں بے غرض رہتا ہے۔پھر ایک موسم ایسا بھی آتا ہے وہ سوکھ جاتا ہے پیاس کی شدت سے اور پیاس کی وہ شدت اسے بانٹنا سکھاتی ہے۔
    ہر غم ہر خوشی کے پیچھے کوئی نہ کوئی مقصد کو ئی نہ کوئی وجہ ہوتی ہے۔ زندگی پرت در پرت نئے باب کھولتی جاتی ہے نئی آزمائش ،نیا کچوکہ ،نیا درد ،نیا سبق ۔
    ہم مصیبت میں مبتلا ہو کر اپنے آپ کو بدنصیب تصور کرتے ہیں مگر اصل خوش نصیب ہی وہی ہوتے ہیں جنہیں نفی کے پانی سے سینچا جا تا ہے ،ٹھکرائے جاتے ہیں رلائے جاتے ہیں۔مصیبت در مصیبت ۔یہی وہ لوگ ہیں جو آسمان کے سب سے روشن ستارے ہوتے ہیں ۔
    مگر کیا کمال کی بات ہے آسمان پہ سب سے زیادہ چمکتا ستارہ دیکھنے والوں کو سب سے زیادہ بھاتا ہے۔مگر اس ستارے کے درد سے کوئی واقف نہیں ہوتا جتنی اس میں آگ ہوتی ہے جتنا اسے جلایا جاتا ہے وہ اتنا ہی روشن اتنا ہی شاندار۔بھٹکنے والوں کو منزل دکھانے والا ہوتا ہے۔
    دردملتا رہتا ہے اسے درد دیا جاتا رہتا ہے جب تک اندر کی آگ بھڑک نہ اٹھے۔ جب تک وہ اصل حقیقت جان نہ لے :-)
    اور اصل حقیقت جاننے کے بعد جو بے نیازی آتی ہے وہ دائمی ہوتی ہے۔انسان سمجھ لیتا ہے وہ جان لیتا ہے مٹی کے یہ پتلے جن کو وہ من میں بٹھا کر پوجتا ہے۔اسے کچھ دے نہیں سکتے۔وہ زبردستی کسی کے دل میں اپنی قدر دانی اپنی محبت پیدا نہیں کر سکتا۔وہ دیکھ لیتا ہے کہ جب رگوں میں سما جانے والے درد کی تضحیک ہوتی ہے تو کیسا لگتا ہے۔کون ہے رب العزت کے سوا؟کون ہے خیر خواہ کون ہے اپنا جو سسکتے ہوئے دل کی سسکیاں بھی سنتا ہے ؟کون جانتا ہے اس ذات کے سوا جان پہ بیتنے والے عذاب کو؟وہ انتظار کر تا رہتا ہے کرتا رہتا ہے پر اسکی ذات پر مرہم رکھنے والا کوئی نہیں ہوتا۔اور پھر اسکے دل میں سوراخ بننے لگتے ہیں جن سے وہ تمام چیزیں بہنے لگتی ہیں جن کی وہ پرستش کرتا رہا۔سب غیر مٹنے لگتا ہے لا الہ الااللّٰہ کی صدا گونجنے لگتی ہے 
    " کیا تم یہ گمان کیے بیٹھے ہو کہ جنت میں چلے جاؤ گے حالانکہ اب تک تم پر وہ حالات نہیں آئے جو تم سے اگلے لوگوں پر آئے تھے۔انہیں بیماریاں اور مصیبتیں پہنچیں اور وہ یہاں تک جھنجھوڑے گئے کہ رسول اور ان کے ساتھ ایمان والے کہنے لگے کہ اللّٰہ کی مدد کب آئے گی ؟سن رکھو کہ اللّٰہ کی مدد قریب ہی ہے "
    (البقرہ:214)
    وہ سیکھتا ہے کہ جب دھکے ملتے ہیں تو کیسا لگتا ہے۔ وہ سمجھ جاتا ہے پیاسوں کی پیاس پھر یا تو وہ کنواں بن جا تا ہے یا سب سے روشن چمکدار ستارہ رستہ دکھانے والا
    بے نیاز بے غرض ۔
    اگر آپ تکلیف کی بھٹی میں مسلسل جلائے جارہے ہیں تو اطمینان رکھیں وہ نیلی چھتری والا بہترین پلانر ہے۔
    جو انسان غم کی چکی میں پس کر بنتا ہے وہ سکھ کی چادر اوڑھ کر کبھی نہیں بن سکتا۔کہ کوئلے کو ہیرا بننے کےلیے ٹنوں بوجھ تلے دبنا پڑتا ہے۔
    " جب میرے بندے میرے بارے میں آپ سے سوال کریں تو آپ کہہ دیں کہ میں بہت ہی قریب ہوں ہر پکارنے والے کی پکار کو جب بھی وہ مجھے پکارےقبول کرتا ہوں ۔اس لیے لوگوں کو بھی چاہیئے وہ میری بات مان لیا کریں اور مجھ پر ایمان رکھیں یہی انکی بھلائی کا باعث ہے "
    (البقرہ:186)
    منقول
    --------------

     

  7. ایک صاحب اور ان کی بیوی پر کسی جادوگر نے انتہائی سخت جادو کا وار کیا یہ جادوگر اس جادو پر باقاعدہ پہرہ بھی دیا کرتا اور کسی عامل کو اس کا توڑ نہ کرنے دیتا۔ وہ صاحب فرماتے ہیں کہ ان کی بیوی کے ہاں اول تو حمل ہی نہ ٹھہرتا اور اگر ٹھہر بھی جاتا تو ساقط ہوجاتا اگر کسی طریقہ 9 ماہ پورے ہوتے تو بچے کی پیدائش مردہ حالت میں ہوتی۔ یہ صاحب انتہائی باکردار اور پانچ وقت کے نمازی تھے اور بچوں کو مسجد میں قرآن بھی پڑھایا کرتے تھے۔ بہت علاج کروائے بڑے سے بڑا عامل بلوایا اور علاج کروایا اور ایڑی چوٹی کا زور لگادیا مگر نتیجہ صفر نکلتا۔ ایک دن ایک انتہائی درویش باعمل عالم اور عامل کے پاس جانا ہوا۔ یہ صاحب اپنے استخارہ کے لیے مشہور تھے اور ان کا استخارہ ایک منٹ کا ہوا کرتا تھا۔ ایک منٹ میں سارا کچا چٹھا کھول کے رکھ دیتے۔ اللہ نے بہت عطا کیا تھا ان کو… اب یہ پریشانی لے کر ان کی خدمت میں حاضر ہوئے۔ مولوی صاحب نے بتایا کہ یہ کسی عام زور آور جادوگر کا وار نہیں بلکہ یہ تو کسی خبیث العین (جادو کی دنیا کا انتہائی غلیظ اور ماہر جادوگر) کا وار ہے اور یہ میرے بس سے باہر ہے۔ میں اس عمر میں اتنی سخت محنت نہیں کرسکتا۔ اس کا توڑ بھی کوئی خبیث العین ہی کرسکتا ہے۔یہ چونکہ مجبور تھے اس لیے پوچھنے لگے کہ کچھ تو حل ہوگا۔ مولوی صاحب فرمانے لگے کہ سندھ کے فلاں علاقے فلاں جگہ پر ایک گاؤں کے باہراسی خبیث العین نے ان دنوں ڈیرہ لگایا ہے تو فوراً اس کے پاس چلا جا۔

    یہ صاحب فوراً سندھ روانہ ہوگئے اور جیسے ہی اس گاؤں کے باہر پہنچے تو دور سے ایک آگ کا دہکتاالاؤ لگا ہوا دکھائی دیا۔ انہوں نے بزرگوں کی بتائی ہوئی نشانی دیکھ کر اس کی طرف بڑھنا شروع کیا‘ دور سے دیکھتے ہیں کہ ایک آدمی آگ کے پاس بیٹھا ہوا ہے اور اردگرد اس کے ماننے والوں کا جمگٹھا ہے۔ ابھی ایک ایکڑ دور تھے کہ وہ شخص اچھل کر کھڑا ہوگیا اور زور زور سے چلانے لگا کہ وہ دیکھو آگیا‘ جادو کا ڈسا… وہ آگیا قرآن پڑھانے والا… یہ اس کے پاس پہنچے اور اپنا مقصد بتایا۔ اب خبیث العین خوشی سے پاگلوں کی طرح ناچنے لگا اور بولا جاؤ فلاں کے پاس… جاؤ فلاں کے پاس… یہ گرہ جولگی ہے کھلواؤ اپنے مولویوں سے… غرض اس نے مولوی صاحبان کے ساتھ ساتھ ان صاحب کو بھی برا بھلا کہا اور بڑے بڑے خدائی کے دعوے بھی کیے اور جادو توڑنے سے انکار کردیا۔

    یہ صاحب واپس آئے اور اپنے رب کو پکارا کہ یااللہ! یہ بھی مخلوق ہے تو چاہے تو کیا نہیں ہوسکتا‘ یہ ظالم مجھ پر غالب آگئے ہیں اور ظلم کرنے سے باز نہیں آرہے اور رو رو کے اللہ کے حضور التجائیں کیں۔ دفعتاً دل میں القا ہوا کہ جادو کا توڑ تو آقا ﷺ نے معوذتین سے کیا تھا اور جادو بھی انتہائی سخت بلکہ آخری درجے کا تھا جب آقاﷺ نے معوذتین سے یہ جادو توڑا تو میں بھی معوذتین ہی پڑھتا ہوں۔

    اب انہوں نے اللہ کا نام لیا اور اسی رات سے باوضو ہوکر مسجد میں جاکر معوذتین اس جادو کی توڑ کی نیت سے پڑھنی شروع کی۔ یہ پوری رات پڑھتے رہے اور وقتاً فوقتاً دن کو بھی ورد چلتا رہتا ہر وقت باوضو رہنے لگے‘ غالباً چھٹے دن رات کو اونگھ آگئی اور اچانک خون کی پوری بالٹی ان کے اوپر جیسے کسی نے گرا دی ہو۔ یہ بہت پریشان ہوئے اٹھے مسجد کے ساتھ ہی کنواں تھا وہاں نہائے دھوئے اور کپڑے بھی پاک کیے‘ مسجد دھوئی۔ اب سوچا بی بی کی بھی خبر لوں‘ گھر پہنچے تو وہاں بھی یہی حال تھا اور بیوی انتہائی پریشان تھی۔ بیوی کو دلاسہ دیا اور فرمانے لگے کہ بھلی مانس اب کچھ ہلچل ہوگئی ہے‘ انشاء اللہ اب کام بن جائے گا۔

    ایک نئے ولولے سے اسی رات سے پھر دوبارہ مسجد میں عمل شروع کردیا نویں دن پھر وہی ہوا اونگھ آئی اور دونوں میاں بیوی پر خون کی بالٹی گرادی گئی۔ انہوں نے ہمت نہ ہاری اور پڑھنا جاری رکھا۔ تیرہویں دن صبح کے وقت وہی سندھ والا خبیث العین مسجد میں داخل ہوا اور آتے ہی پیروں میں گر کے معافیاں مانگنے لگا۔ ان صاحب نے اسے بولا کہ تو مجھ سے کیوں معافیاں مانگ رہا ہے؟ کہنے لگا کہ اللہ کے واسطے مجھے معاف کردیجئے‘ پھر بتاؤں گا۔ انہوں نے معاف کردیا اور وجہ پوچھی۔ کہنے لگا کہ آپ میاں بیوی پر جادو میں نے کیا تھا جب آپ مسجد میں عمل کرنے بیٹھے تومیں بھی آپ کے مقابلے پر بیٹھ گیا اور روزانہ میرا کیا ہوا جادو مجھ پر ہی الٹا چلنے لگا اور میرے مؤکل میرے دشمن ہوگئے۔ یہ صاحب فرمانے لگے کہ اگر یہ بات تو نے مجھے پہلے بتا دی ہوتی تو تجھے میں کبھی معاف نہ کرتا۔ بہرحال یہ جادوگر معافی مانگ کر اپنی جان بچا کر واپس سندھ لوٹ گیا۔ کیونکہ اگر وہ معافی نہ مانگتا تو جان سے ہاتھ دھو بیٹھتا۔ انہوں نے اللہ کا شکر ادا کیا مگر جادوگر کی صلح کا اعتبار بھی نہ کیا اور اکتالیس دن مسلسل عمل کرتے رہے اس کے بعد اللہ نے ان کو نرینہ صحت مند اولاد سے نوازا اور دو سے زائد بیٹے عطا فرمائے اور بندش ہمیشہ کیلئے ٹوٹ گئی۔

    جادو کا حتمی علاج 
    قرآن پاک کی آخری دو سورتیں جنہیں معوز تین کہا جاتا ہے 
    سحر کے علاج میں مغز کی حثیت رکھتی ہیں -
    یعنی سورہ فلق اور سورہ والناس -
    انہیں گیارہ گیارہ مرتبہ صبح و شام پڑھنا چاہئے اور بچوں پر پڑھ کر دم کرنا چاہئے - یہ بے نظیر و بے مثال عمل ہے -
    انہیں آیات کے پڑھنے سے حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو سحر سے شفاء ملی -

  8. 1.jpg

     

    1891

    میں پیدا ہونے والے مہاراجا بھوپندر سنگھ آف پٹیالہ نے 1938 ء میں وفات پائی تو اس کی پانچ بیویاں ، 88 اولادیں اور 350 سے زیادہ داشتائیں تھیں۔

    بھوپندر سنگھ مہاراجہ اعلیٰ سنگھ کی نسل میں سے تھا۔ اس خاندان کے سربراہ نے تاریخی ہیروں اور دیگر نایاب جواہرات پر مشتمل خزانہ چھوڑا تھا۔ اس نے ایک بڑی ریاست قائم کی تھی اور اپنی اولاد کو اقتدار دے گیا تھا۔

    مہاراجہ بھوپندر سنگھ بہت قابل انسان تھا۔ اس کے وزیر اور افسر نہایت لائق افراد تھے۔ ہندوستان کے ہر علاقے کا لائق ترین شخص چن کر اس کا وزیر بنایا گیا تھا۔ اس کے وزیر ساری زندگی اس کے وفادار رہے۔ آزاد ہندوستان کا سفیر برائے چین، مصر اور فرانس سردار کے ایم پانیکر اس کا بااعتماد وزیر خارجہ تھا۔ ایک سابق بھارتی وزیراعلیٰ کرنل رگھبیر سنگھ بھی پٹیالہ کا وزیر داخلہ رہ چکا تھا۔ نواب لیاقت حیات خان کئی سال پٹیالہ کا وزیراعظم رہا۔ قانون کا وزیر الٰہ آباد کا ممتاز وکیل ایم اے رائنا تھا۔ دیوان جرمنی داس زراعت، صنعت اور جنگلات کا وزیر ہونے کے علاوہ مہاراجا کی صحت کے امور کا انچارج تھا۔ بھوپندر سنگھ نے

    ریاست کا انتظام چلانے میں اپنی مدد کے لیے نہایت لائق افراد کو منتخب کیا تھا۔

    2.jpg

    مہاراجا بھوپندر سنگھ کا باپ مہاراجہ سر راجندر سنگھ سی سی ایس آئی شراب نوشی کے ہاتھوں صرف 28 سال کی عمر میں مر گیا تھا۔ مہاراجا کے مشیر اس امر کا خا ص خیال رکھتے تھے کہ وہ اپنے باپ دادا کی طرح شراب کا عادی نہ ہو جائے۔ اسے ایک انگریز ٹیوٹر نے بچپن سے تعلیم و تربیت دی تھی۔ اس کے علاوہ اسے ہندو اور سکھ ٹیوٹر بھی تعلیم و تربیت دیا کرتے تھے۔ 18سال کی عمر میں وہ بہت سی خوبیوں کا مالک بن چکا تھا۔

    جب وہ بالغ ہوا تو اس کے درباریوں نے اسے عورت اور شراب کے مزے سے آشنا کروانا چاہا۔ تاہم مہاراجا ان تمام ترغیبات سے بچا رہا۔ چونکہ مہاراجا کے بگڑنے ہی میں درباریوں کا مفاد تھا اس لیے جلد ہی مہاراجا ان کی سازشوں کا شکار ہو گیا۔

    3.jpg

     

    درباری ولن اسے نوجوان عورتوں کے ذریعے بھٹکانے کی کوشش کرتے رہے۔ وہ نوجوان تھا اس لیے ایسی 
    ترغیبات سے زیادہ عرصہ نہ بچ سکا۔ ان عورتوں کو ہندوستان کے مختلف علاقوں سے لایا جاتا تھا۔ وہ بہت کم عمر اور نہایت حسین ہوا کرتی تھیں۔ جب وہ مرا تو اس کے حرم میں تقریباً 322 عورتیں تھیں۔ ان میں سے صرف دس مہارانیاں تسلیم کی گئی تھیں، تقریباً پچاس کو رانی کہا جاتا جبکہ باقی سب کنیزیں تھیں۔ وہ سب مہاراجا کے اشارے کی منتظر رہتی تھیں۔ وہ دن یا رات کے کسی بھی لمحے ان کے ساتھ قربت اختیار کر سکتا تھا۔

    چھوٹی چھوٹی بچیوں کو محل میں لایا جاتا اور انہیں پالا پوسا جاتا یہاں تک کہ وہ بالغ ہو جاتیں۔ انہیں مہاراجا کی پسند کے مطابق تربیت دی جاتی تھی۔ محل میں شروع شروع میں ان لڑکیوں کا بہت خیال رکھا جاتا تھا۔ انہیں صرف مہاراجا کو سگریٹ اور شراب پیش کرنے یا دوسری خدمات ادا کرنے کا کہا جاتا تھا۔ مہارانیاں ان کو آغوش میں لیتی اور چومتی تھیں۔ پہلے وہ لڑکیاں محض کنیزیں ہوتی تھیں لیکن مہاراجا کو پسند آنے پر ان کا رتبہ بڑھتا جاتا یہاں تک کہ وہ اعلیٰ ترین رتبے پر پہنچ کر مہارانی کہلاتیں۔ جب مہاراجا کسی عورت کو مہارانی منتخب کر لیتا تو حکومت ہندوستان کو اس امر کی اطلاع دیتا اور حکومت اس عورت کو مہارانی تسلیم کر لیتی۔ اس کے بطن سے جنم لینے والے لڑکے کو مہاراجا کا جائز بیٹا تصور کیا جاتا اور اسے شہزادے کے حقوق دیے جاتے تھے۔

    8.jpg

     

     مہارانیوں اور داشتاؤں میں اور بھی فرق تھے۔ مہارانیوں کو دوپہر اور رات کا کھانا اور چائے سونے کے برتنوں میں پیش کیے جاتے تھے۔ رانیوں کو چاندی کے برتنوں میں کھانا پیش کیا جاتا تھا۔ ان کو پچاس اقسام کے کھانے پیش کیے جاتے تھے۔ اعلیٰ تر رتبے کی آرزو مند دیگر عورتوں کو پیتل کے برتنوں میں کھانا پیش کیا جاتا تھا۔ ان کو بیس اقسام کے کھانے پیش کیے جاتے تھے۔ خود مہاراجا کو ہیرے جڑے سونے کے برتنوں میں کھانا پیش کیا جاتا تھا۔ اسے 150 سے زیادہ اقسام کے کھانے پیش کیے جاتے تھے۔

     

    4.jpg

    مہاراجا ، مہارانیوں اور شہزادوں یا شہزادیوں کی سالگرہ پر عظیم الشان تقریبات برپاکی جاتیں۔ دو سو پچھتر یا تین سو مہمانوں کے لیے میز لگائی جاتیں۔ مردوں میں صرف مہاراجا، اس کے بیٹے، داماد اور چند خاص مدعوئین ہوتے جبکہ عورتوں میں صرف مہارانیاں اور محل کی چند منتخب عورتیں ہوتیں۔ ان تقریبات میں اطالوی، فرانسیسی اور انگریز بیرے اور خانساماں ہوتے تھے اور کھانے اور شرابیں نہایت مزیدار ہوتے۔ پکوانوں کو بڑی بڑی پلیٹوں میں لا کر اوپر تلے رکھ دیا جاتا۔ یہ ڈھیر کھانے والوں کے منہ تک پہنچ جاتا تھا۔ بعض اوقات دس سے بیس پلیٹوں تک کی قطاریں بن جاتی تھیں۔ کھانے کے بعد موسیقی کی محفل ہوتی، جس میں مختلف ریاستوں سے بلوائی گئیں رقاصائیں مہاراجا، مہارانیوں اور مہمانوں کا جی بہلاتیں۔ ایسی تقریبات صبح سویرے انجام کو پہنچتیں۔ اس وقت تک سب لوگ نشے میں دھت ہو چکے ہوتے تھے۔ یہ سلسلہ کئی سال جاری رہا۔ محل میں ایسی عورتیں بھی تھیں جنہیں یورپ، نیپال اور قبرص سے لایا گیا تھا۔ محل کی عورتوں نے ایسا لباس اور ہیرے جواہرات پہنے ہوتے تھے کہ دنیا میں ان کی مثال ملنا ناممکن تھی۔ تقریب کے اختتام پر مہاراجا عورتوں میں سے چند ایک کو منتخب کر لیتا اور انہیں لے کر اپنے محل میں چلا جاتا۔ یہ عورتیں مہاراجا کی توجہ حاصل کرنے کے لیے بہت سی ترکیبیں استعمال کرتی تھیں۔ مہاراجا کے دل میں ان سب کے لیے نرم گوشہ تھا۔ وہ روزانہ اپنے معائنے کے لیے آنے والے ڈاکٹروں کو اپنی بیماریوں کے بارے میں بتاتی تھی۔

    5.png

     

    یہ عورتیں بعض اوقات مہاراجا کی محبت اور فرقت میں خودکشی کرنے کی دھمکی دیتیں۔ سچ تو یہ ہے کہ ان میں سے  چند ایک نے کمرے کی چھت سے رسی باندھ کر اس کے ذریعے خودکشی کی کوشش بھی تھی۔ جب کوئی عورت تنہائی کا شکوہ کرتی تو مہاراجا خوفزدہ ہو جاتا۔ عموماً وہ اس سے ملتا اور ہر ممکن طریقے سے اسے دلاسا دینے کی کوشش کرتا۔ مہاراجا کے حرم میں ایسی بدنصیب عورتیں بھی تھیں جنہیں زندگی میں ایک مرتبہ بھی مہاراجا سے ہم آغوش ہونے کا موقع نہیں ملا تھا۔ مہاراجا کو اپنی ساری مہارانیوں، رانیوں اور دیگر عورتوں سے محبت تھی اور وہ سب کے ساتھ برابر کا محبت بھرا سلوک روا رکھنے کی کوشش کرتا تھا۔ عورتیں بھی جواباً اسے اپنا واحد مرد مانتی تھیں۔

    6.jpg

    وہ جب بھی یورپ جاتا کم از کم ایک درجن عورتوں کواپنے ساتھ لے کر جاتا تھا۔ ہندوستان سے باہر ان مہارانی، رانی اور کنیز والی تفریق ختم ہو جاتی۔ ان کے کھانوں، کپڑوں اور رہائش میں کوئی فرق نہ رہتا۔ موتی باغ محل کا پروٹوکول پیرس اور لندن میں ایک طرف رکھ دیا جاتا تھا۔

    مہارانیاں اور دوسری عورتیں موتی باغ کہلانے والے بڑے محل کے عقب میں واقع مختلف محلات میں رہتی تھیں۔ موتی باغ محل مہاراجا کی رہائش گاہ تھا۔ باہر سے کسی شخص کا محل کے ان اندرونی حصوں میں داخل ہونا انتہائی مشکل تھا۔ اگر کوئی شخص موتی باغ محل میں داخل ہونا چاہتا تو پہلے اسے تقریباً آدھا میل لمبا باغ عبور کرنا پڑتا، پھراسے بے شمار کمروں اور متعدد ہال کمروں سے گزرنا پڑتا۔ محل میں ہر بیس قدم کے فاصلے پر فوجی گارڈ موجود ہوتے۔ ان سب مراحل سے گزرنے کے بعد وہ شخص ایک چھوٹے گیٹ تک پہنچتا، جہاں سے داخلی محلات میں پہنچا جا سکتا تھا۔ اندرونی محل میں مہاراجا  سے ملنے کے لیے آنے والوں کو شفاف اور قیمتی ریشمی لباس میں ملبوس اور ہیرے جواہرات سے لدی پھندی نہایت حسین و جمیل عورتیں مہاراجا کے خصوصی احکامات کی تعمیل میں مسکراہٹوں سے نوازتیں اور شراب پیش کرتیں۔ پنجابی لباس میں ملبوس چند عورتیں مہمانوں کو سگریٹ پیش کرتیں جبکہ ساڑھی میں ملبوس چند دیگر عورتیں شراب اور پھل پیش کرتیں۔ پٹیالہ کے دربار کی شان و شوکت کے سامنے الف لیلوی شان و شوکت ماند تھی۔

    مہاراجا اپنی عورتوں سے حسد نہیں کرتا تھا اور اپنے مہمانوں کو ان سے گھلنے ملنے کی اجازت دے دیتا تھا۔ تاہم وہ گھٹیا پن اور بدتمیزی کو ذرا بھی برداشت نہیں کرتا تھا۔ مہاراجا کے پیروں میں درجنوں عورتیں پڑی رہتی تھیں۔ چند عورتیں اس کی ٹانگیں دبا رہی ہوتیں اور چند عورتیں پیغامات ادھر سے ادھر پہنچا رہی ہوتیں۔ مہاراجا کی پسندیدہ عورت اس کی دیوی ہوتی اور سب کی نگاہیں اس پر جمی ہوتیں۔ عموماً وہ مہاراجا کے گھٹنے کے پاس بیٹھی ہوتی۔ اس نے نہایت خوبصورت سرخ رنگ کا شفاف لباس پہنا ہوتا، ناک میں سونے کا کوکا، گلے میں موتیوں کا ہار اور کلائیوں میں ہیروں کے کنگن ڈالے ہوتے۔ حرم کی عیاشانہ زندگی اور ہمسایہ ریاستوں اور ہندوستان کے وائسرائے کے ساتھ چپقلشوں کی وجہ سے مہاراجا کو ہائی بلڈ پریشر کا عارضہ لاحق ہو گیا۔ فرانس کے مشہور ڈاکٹروں پروفیسر ابرامی اور ڈاکٹر آندرے سے لچوٹز نے ریڑھ کی ہڈی میں انجکشن لگا کر بلڈ پریشر کو گھٹانے کا نیا طریقہ دریافت کیا تھا۔ مہاراجا نے انہیں فرانس سے پٹیالہ بلوا لیا۔ مہاراجا علاج کے لیے یورپ بھی گیا لیکن بلڈ پریشر کنٹرول نہ ہو سکا، جس کا خاص سبب یہ تھا کہ اس نے ڈاکٹروں کی ہدایت کے برعکس عورتوں اور شراب کو نہیں چھوڑا۔ مہاراجہ صرف 47 برس کی عمر میں چل بسا۔

     

    7.jpg

  9. ????
    Masala Beef Pulao With Shami Kabab 
    My Mama's Recipe <3
    May The Soul Of My Mother Rest In Peace, Aameen

     

    ___________________________

    MASALA=BEEF=PULAO (Recipe)
    Recipe & Made By Dua Fasih 

     

     

    FOR PULAO STOCK (YAKHNI)

     

    Ingredients:

    Beef,   Half Kg
    Fennel seeds (Sonf), 2 Table Spoon
    Whole Dry Coriander , 2 Table Spoon
    Salt, To Taste
    Whole Garlic, 6 to 7 cloves
    Whole Ginger, 1 to 2 Inch
    Whole Medium Size Onion, 1 (cut in 4 pieces)
    Black Pepper Corns, 8 to 10
    Water, 7 to 8 Glass 

     

    Method,
    Take a pot add all ingredients and cook until meat is tender (make sure we need 2 cups Remaining Beef Yakhni to add in Pulao), Then seive the yakhni and separate the meat and yakhni, Discard all remaining ingredients, (if you use to make potli you can do so, but i don't prefer :)

     

    FOR MASALA BEEF PULAO

     

    Ingredients:

    Basmati Rice, Half Kg OR 3/4 KG (sock in water)
    Onion (Sliced) 2 to 3
    Cinnamon Sticks, 2
    Green Cardamom, 4 to 5
    Black Cardamon, 2
    Cumin Seeds, 1 Tea Spoon
    Bay Leaf, 1
    Black Pepper Corns 8 to 10
    Aniseed (Baadyaan ka phool), 2
    Cloves, 2 to 3
    Fresh Ginger Garlic Paste, 2 Table Spoon
    Tomatoes, 2 (Medium Size)
    Fresh Mint Leaves, Half Bunch 
    Green Chili, 8 to 10 (cut in to two pieces)
    Garam Masala Powder, 1 Tea Spoon
    Salt, To Taste
    Oil OR Ghee, 1 Cup
    Zarda Color , a small pinch (mix with 2 Table spoon of kewra water)
    * * *Cook beef With Stock (Yakhni) * * *

     

    Method,
    Heat oil in a pot add all Whole Garam Masala & onion, When onion become golden brown then add ginger garlic paste and saute, Then add Beef, tomatoes, mint, salt, garam masala powder and green chili and cook till tomatoes are tender. Add Yakhni cover led n cook for 4 to 5 mins in full flame, then add pre-soaked rice (adjust the rice and water ratio according to you) Let this cook on high heat for 2-3 minutes then reduce the heat to medium and keep cooking it, until the water diminishes, giving it a stir every now with slow hand and then to make sure all the rice is cooked evenly and perfectly.

    Once you find there is very little water left in the rice, reduce the heat to the lowest point possible. then add kewra n food color mixture Seal your pan by using a tight lid or wetting a kitchen towel and placing it over the pan then placing a lid on top of it. Leave the rice to continue steaming on very low heat for a good 10 mins. Switch off, and serve :)

     

     

     

    BeefMasalaPulaoWithShamiKabab.jpg

  10. Ayesha Mirza
    Latest Entry
    Quote

     

    آج بازار میں پابجولاں چلو

    چشمِ نم ، جانِ شوریدہ کافی نہیں

    تہمتِ عشق پوشیدہ کافی نہیں

    آج بازار میں پابجولاں چلو

    دست افشاں چلو ، مست و رقصاں چلو

    خاک بر سر چلو ، خوں بداماں چلو

    راہ تکتا ہے سب شہرِ جاناں چلو

    حاکم شہر بھی ، مجمعِ عام بھی

    تیرِ الزام بھی ، سنگِ دشنام بھی

    صبحِ ناشاد بھی ، روزِ ناکام بھی

    ان کا دم ساز اپنے سوا کون ہے

    شہرِ جاناں میں اب باصفا کون ہے

    دستِ قاتل کے شایاں رہا کون ہے

    رختِ دل باندھ لو دل فگارو چلو

    پھر ہمیں قتل ہو آئیں یارو چلو

     

    13435366_1806134046285193_7557522680415405624_n.jpg

     

     

  11. Meerab Raza
    Latest Entry

    اے میرے دل!!

    "درد کی لے دھیمی رکھ"

    آج پھر رقصاں ہیں سلگتی یادیں

    سر دشت جاں، کسی وحشت کی طرح

    پھر ٹکرایا ہے فصیل_جاں سے

    کسی گم گشتہ محبت کا جنوں

    دونوں ہاتھوں میں اٹھاۓ ہوۓ

    انا کا بے جان وجود

    ایک ہارے ہوۓ لشکر کے سپاہی کی طرح

    میں چپ چاپ کھڑا، دیکھ رہا ہوں

    پھیلے ہوۓ ہر سمت تباہی کے مناظر

    اے میرے دل_______!!

    "درد کی لے دھیمی رکھ"

    اے میرے دشمن_جاں______!!

    مجھے جینے دے!

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Blog Statistics

    14
    Total Blogs
    22,774
    Total Entries