News Ticker
  • “We cannot expect people to have respect for law and order until we teach respect to those we have entrusted to enforce those laws.” ― Hunter S. Thompson
  • “And I can fight only for something that I love
  • love only what I respect
  • and respect only what I at least know.” ― Adolf Hitler
  •  Click Here To Watch Latest Movie Jumanji (2017) 

Welcome to Funday Urdu Forum

Guest Image

Welcome to Funday Urdu Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Funday Urdu Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

Search the Community

Showing results for tags 'mai'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Music, Movies, and Dramas
    • Movies Song And Tv.Series
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

  • Ishq_janoon_Dewanagi
  • Uzee khan
  • Beauty of Words
  • Tareekhi Waqaiyaat
  • Geo News Blog
  • The Pakistan Tourism
  • My BawaRchi_KhaNa
  • Mukaam.e.Moahhabt
  • FDF Members Poetry
  • Sadqy Tmhary
  • FDF Online News
  • Pakistan
  • Dua's Kitchen
  • Raqs e Bismil
  • HayDay Game

Categories

  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • IPS Community Suite 3.4
    • Applications
    • Hooks/BBCodes
    • Themes/Skins
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Categories

  • Articles

Categories

  • Records

Calendars

  • Community Calendar
  • Pakistan Holidays

Genres

  • English
  • New Movie Songs
  • Old Movies Songs
  • Single Track
  • Classic
  • Ghazal
  • Pakistani
  • Indian Pop & Remix
  • Romantic
  • Punjabi
  • Qawalli
  • Patriotic
  • Islam

Categories

  • Islam
  • Online Movies
    • English
    • Indian
    • Punjabi
    • Hindi Dubbed
    • Animated - Cartoon
    • Other Movies
    • Pakistani Movies
  • Video Songs
    • Coke Studio
  • Mix Videos
  • Online Live Channels
    • Pakistani Channels
    • Indian Channels
    • Sports Channels
    • English Channels
  • Pakistani Drama Series
    • Zara Yaad ker
    • Besharam (ARY TV series)
  • English Series
    • Quantico Season 1
    • SuperGirl Season 1
    • The Magicians
    • The Shannara Chronicles
    • Game of Thrones

Found 29 results

  1. Mai Ishq Ki Shidat Sy Pereshan Bohat Hun میں عشق کی شدت سے پریشان بہت ہوں اے جاں تری چاہت سے پریشان بہت ہوں ہاں شورشِ ہجراں سے یہ دل شاد بہت تھا ہاں وصل کی راحت سے پریشان بہت ہوں چاہوں تو تجھے چھوڑ دوں میں غیر کی خاطر بس نکتہ وحدت سے پریشان بہت ہوں انصاف کی دنیا ہے فقط خواب کی دنیا یا رب میں حقیقت سے پریشان بہت ہوں جگنو، یہ چاند، تارے، بہاریں صدایئں دیں اف، میں تیری شہرت سے پریشان بہت ہوں ! غنچہ یا کوئی پھول کہوں، پنکھڑی کہوں ہونٹوں کی نزاکت سے پریشان بہت ہوں کیوں اے دل کم فہم تو مانے ہے انا کی؟ آمر کی حکومت سے پریشان بہت ہوں ہر ایک عمل پہ کہے 'یوں تو نہیں، یوں۔۔۔' ناصح تیری عادت سے پریشان بہت ہوں لڑکی ہوں، پگھل جاتی ہوں نظروں کی تپش سے میں حسن کی نعمت سے پریشان بہت ہوں وہ جان تکلم نہ بنا لے مجھے مداح اس زور خطابت سے پریشان بہت ہوں دنیا یہ فقط تجھ پہ جیا! کیوں ہے مہربان لہجوں کی ملاحت سے پریشان بہت ہوں
  2. [embed_video1 url=http://stream.jeem.tv/vod/9a2c7c0a97005c6c0f547e5f26c87143.mp4/playlist.m3u8?wmsAuthSign=c2VydmVyX3RpbWU9Ny8yNi8yMDE3IDE6NDA6MTYgUE0maGFzaF92YWx1ZT1razRuSXhVcHpOVmRaUXlRWnoxVnVnPT0mdmFsaWRtaW51dGVzPTYwJmlkPTE= style=center] KARACHI: Gang rape survivor and social media activist Mukhtar Mai said on Wednesday that she would urge the rape survivours to raise their voice, saying that she and social activists are with the survivours and will do everything in their power to help their plight. While speaking to Geo News, Mai said that she is heart-broken over the incident which took place in Multan, where a Panchayat allegedly ordered ?revenge rape? of a 16-year-old girl. ?Such incidents remind me of what happened with me in 2002,? she said. Mai said that the flaw lies within the weakness in the law and lack of implementation puts hurdles in the way of justice. The criminals have no fear of being caught due to political influence which tilts the matter in their favour. ?Either the perpetrators don?t get caught or get bail in such cases,? she said. She further said that to prevent such cases she along with the NGOs have done everything in their power but not to much avail. The government needs to do something concrete, said Mai. Mai while highlighting the plight of the weak said that women don?t know much about the law and their legal rights. For awareness, government needs to begin efforts from the council level, she said. Even slight implementation of the laws would make a huge difference, said Mukhtar Mai. Mai was gang raped in 2002 over the orders of a Panchayat in the Muzaffargarh district. The men had raped Mai -- with the approval of the village council -- as a punishment after her 12-year-old brother was falsely accused of having an illicit relationship with a woman from the dominant clan in the village.
  3. اَپنی آنکھوں کے سمندر میں اُتر جانے دے تیرا مجرم ہوں مجھے ڈوب کے مرجانے دے اے نئے دوست میں سمجھوں گا تجھے بھی اپنا پہلے ماضی کا کوئی زخم تو بھر جانے دے آگ دنیا کی لگائی ہوئی بجھ جائے گی کوئی آنسو میرے دامن پہ بکھر جانے دے زخم کتنے تیری چاہت سے ملے ہیں مجھ کو سوچتا ہوں کہ کہوں تجھ سے مگر جانے دے زندگی! میں نے اسے کیسے پرویا تھا نہ پوچھ ہار ٹوٹا ہے تو موتی بھی بکھر جانے دے ان اندھیروں سے ہی سورج کبھی نکلے گا رات کے سائے ذرا اور نکھر جانے دے
  4. Koi wajd hy na dhamaal hy tere ishq mai کوئی وجد ہے نہ دھمال ہے ترے عشق میں میرا دل وقفِ ملال ہے ترے عشق میں یہ خواب میں بھی ہے خواب کیف و سرور کا تیرے عشق کا ہی کمال ہے ترے عشق میں میں تو نکل ہی جاوں گا وحشتوں کہ حصار سے یہ تو سوچنا بھی محال ہے ترے عشق میں سرِ دشت محوِ تلاشِ منزلِ آگہی کوئی آپ اپنی مثال ہے ترے عشق میں یہ جو راکھ ہوتا ہے پتنگ میرے سامنے یہی رنگِ شوقِ وصال ہے ترے عشق میں تجھے مل کہ خود سے بھی مل رہا ہوں میں شوق سے میرا خود سے ربط بحال ہے ترے عشق میں کئی دن سے ہیں میری ہمسفر نئی حیرتیں یہ عروج ہے کہ زوال ہے ترے عشق میں
  5. عمر اک خواب سجانے میں گئی تیری تصویر بنانے میں گئی کٹ گئی کچھ تو غم ۓ ہجراں میں اور کچھ ملنے ملانے میں گئی ایک شعلہ سا کبھی لپکا تھا زندگی آگ بجھانے میں گئی ایسے سودے میں تو گھاٹا ہے اگر آبرو سر کے بچانے میں گئی تم بھی چاہو تو نہیں بن سکتی بات جو بات بنانے میں گئی رہ گئی کچھ تو تیرے سننے میں اور کچھ اپنی سنانے میں گئی عمر بھر کی تھی کمائی میری جو تیرے بام پہ آنے میں گئی عکس در عکس فقط حیرت تھی عقل جب آئینہ خانے میں گئی
  6. تر ی پنا ہو ں میں سات رنگو ں کا جال ہوگا کمال ہوگا مرے سنور نے کا سلسلہ جب بحال ہوگا کمال ہوگا یہ جھیل آنکھیں جو کھینچتی ہیں نظر کی ڈوریں محبّتوں سے اگر میں ان میں اتر گئی تو وصال ہوگا کمال ہوگا وہ رہبر ِ کاروان ِ الفت میں نقش ِِ مقصود ِ دلبری ہوں سو اب دم ِ وصل وحشتوں کا زوال ہوگا کمال ہوگا نوید ِ شاہ ِ محب کو سن کر تمام درباری جھومتے ہیں خبر اڑی ہے کہ اس برس بھی دھما ل ہوگا کمال ہوگا میں بچ بچا کے غلا ظتو ں سے بس اس بھروسے پہ چل رہی ہوں صنم جو میرا نصیب ہوگا غزال ہوگا کمال ہوگا نگاہ ِ من میں جواں محبّت کا ابر ِ بارا ں ہے محو ِ رقصا ں جمال ِ حسن ِ نظر میں جو یر غما ل ہوگا کمال ہوگا برستی بارش اور اسکی یادیں پھر اس پہ یہ جنو ری کا موسم حرا تمھارا جو ایسے موسم میں حال ہوگا کمال ہوگا ڈاکٹر حرا ارشد
  7. Pakistani human rights activist Mukhtar Mai (C) receives a standing ovation as she takes the stage following a performance of the opera. Photo: AFP LOS ANGELES: Fifteen years after her horrific gang rape by a local clan in her village in Pakistan, Mukhtar Mai is reliving her ordeal -- and courageousness -- through a US opera inspired by her story. "I was very emotional when I first started watching it and began reliving the incident in my mind," Mai, 37, told AFP on Friday, after attending the Los Angeles premiere of "Thumbprint." Kamala Sankaram (L) portrays Pakistani women´s right activist Mukhtar Mai in the opera. Photo: AFP "But then as the opera progressed, it became easier to watch and I felt more courage," she said in Urdu, speaking through a translator. The opera, by composer Kamala Sankaram and librettist Susan Yankowitz, recounts Mai´s 2002 rape and her decision to defy her attackers and take them to court -- an unusual move in male-dominated society, where a woman who suffers such a crime often commits suicide rather than endure the stigma and shame associated with it. "Thumbprint" first opened in New York in 2014 but Mai had never seen the opera. She traveled this week from her home in the remote Pakistani village of Meerwala to attend the West Coast premiere. While the story onstage ends when Mai´s rapists have been sentenced to death, in reality her attackers walk free -- seemingly going about their daily life with total impunity after their sentences were overturned on appeal. The men had raped Mai -- with the approval of the village council -- as a punishment after her 12-year-old brother was falsely accused of having an illicit relationship with a woman from the dominant clan in the village. Pakistani human rights activist Mukhtar Mai receives a standing ovation as she takes the stage following a performance of the opera. Photo: AFP "My rapists live across from my house and I try not to cross paths with them," said Mai, who used compensation money from her case to start several schools and a women´s shelter in her village. "When I walk past, they taunt me and make catcalls." In an added strange twist to her story, the children of her rapists attend her school, and the daughters of some of the village elders who ordered her rape have sought refuge at her shelter. "Even though some members of my own family were outraged, I told them I could not turn away the kids as the school is here to serve everyone in the community," she said. Mai, who married in 2009 and has three children, acknowledged that her story had empowered women in her village and beyond, giving them courage to stand for their rights. But she said she held little hope that the legal system in her country would ever render her justice. "All four of the men who raped me and the two village elders who ordered the rape are free," she said. "And they will only learn that what they did is a crime if they are punished." Daily threats She said she had grown tired of being the woman everyone points to because of her ordeal, in contrast to her rapists who are unconcerned and will likely never pay for their crime. Kamala Sankaram (C) portrays Pakistani women´s rights activist Mukhtar Mai in the opera. Photo: AFP "I am the one who is always interviewed and put forward in this case," she sighed. "Why doesn´t anyone confront them, why doesn´t anyone point them out in the street and say, ´These are the people who committed horrific acts against Mukhtar Mai?´" She said she receives threatening messages daily on her telephone, Facebook page or in person and is now afraid for the safety of her children. "I have reported nearly 35 such threatening calls and incidents and only one person was arrested, but even he was let out on bail," she said. "I want to make it known that if anything happens to me or my children and family members, the Pakistani government is responsible." As for the opera inspired by her story, she doubts it could ever be shown in Pakistan, where it would certainly hit a nerve. But, she said, "I would like it to be shown everywhere." "And I would like for the people who committed this crime to be identified and come face to face with what they did."
  8. © http://fundayforum.com

  9. ویکھ نی ماں میں بدل گیا واں روٹی ٹھنڈی کھا لینا واں گندے کپڑے پا لینا واں غصہ سارا پی جانا واں ہر دکھ تے لب سی جانا واں ساریاں گلاں جر لینا واں ٹھنڈا ہوکا بھر لینا واں پر کسے نوں کجھ نئیں دسدا ہر ویلے میں ریہندا ہنسدا اندر جھاتی کوئ نا پاوے دکھ تیرا منوں کھائ جاوے تیرے باجھ منوں کوئ نا پُچھدا ہن تے میں کسے نال نئیں رُسدا ویکھ نی ماں میں بدل گیا واں
  10. مجھے معلوم ہے کہ "میں" زمانے بھر کی آنکھوں میں بڑی شدت سے چبھتی ہوں میری باتیں ، میری سوچیں زمانے بھر کی سانسوں میں بڑی تکلیف بھرتی ہیں مجھے معلوم ہے کہ "میں" " کبھی کچھ تھی ، نہ اب کچھ ہوں" مگر پھر بھی زمانہ سرد آنکھوں سے مجھے کیوں تکتا رہتا ہے کسی کو کیا میں جو لکھوں ، جہاں لکھوں " کسی کو جان جاں لکھوں " یا نہ لکھوں جلا دوں شاعری اپنی یا اس کو طاق پر رکھوں کسی کو اس سے کیا مطلب کسی کو مجھ سے کیا مطلب تو اب جو لوگ مجھ کو اپنا کہتے ہیں مجھے نفرت سے تکتے ہیں کہ میں نے اب تلک سارے زمانے کی نگاہوں کو فقط پیاسا ہی رکھا ہے انھیں تسکیں نہیں بخشی مگر بخشوں تو کیوں بخشوں کسی لمحے جو میں سوچوں بھلا کیوں نہ کروں ایسا زمانے بھر کی آنکھوں میں نمی بھردوں زمانے بھر کی سانسوں میں کمی کردوں مگر کیسے کروں ایسا "زمانہ اپنی ہی موت آپ مر جائے تو اچھا ہے" کہ میں اس کی ان آنکھوں کو نکالوں گی - تو دکھ ہوگا
  11. بھـــــــــر کے لایا تھا جو دامن میں ستارے صاحب لے گیا لوٹ کے سب خواب ہمـــــــــــــارے صاحب آپ آسودہ ہیں اس حلقـــــــــــہ ء یاراں میں تو پھر یاد آئیں گے کہــــــــــــاں درد کے مــــــارے صاحب ہجـــر میں سانس بھی رک رک کے چلا کرتی ھے مجھ کو دے جائیں نا کچھ سانس اُدھا رے صاحب کچھ خطاؤں کی ســـــــــزا عشق کی صورت پائی ہم نے دنیا میں ہی کچھ قــــــــــرض اتا رے صاحب ہم جو نکلے کبھی بازار میں کاســــــــــــــہ لے کر بھیک میں بھی تو ملے درد کے دھــــــا رے صاحب اب بھی جلتے ہیں تری یاد میں اشکوں کے چــراغ شب کو معلوم ہیں سب زخم ہمـــــــا رے صاحب میـــــــــرا رشتوں کی تجارت پہ تو ایماں ہی نہ تھا بک گئے خـــــــــــــاک کی قیمت یہ ستارے صاحب یاد کے دشت میں ہم پھــــــــــرتے ہیں یوں آبلہ پا آ کے دیکھو تو کبھی پاؤں ہمــــــــــــــــــارے صاحب بارہا اســـکو بچھـــــــــــــــڑتے ھوئے کہنا چـــــاہا روٹھ کر بھی نہیں ہوتے ہیں گـــــــــــزار ے صاحب لا کے قدموں میں سبھی چــــاند ستارے رکھ دیں لوٹ کر آنا کبھی شہــــــــر ہمــــــــــــا رے صاحب آنـــکھ سے دل کی زبــــاں صـــــــاف ســـنائی دیتی تم ہی سمجھے نـــــہ محبت کے اشـــارے صاحب
  12. غم رہا جب تک کہ دم میں دم رہا دم کے جانے کا نہایت غم رہا حسن تیرا تھا بہت عالم فریب خط کے آنے پر بھی اک عالم رہا دل نہ پہنچا گوشہء داماں تلک قطرہء خوں تھا مژہ پر جم رہا سنتے ہیں لیلٰی کے خیمہ کو سیاہ اس میں مجنوں کا ولے ماتم رہا جامہء احرامِ زاہد پر نہ جا تھا حرم میں لیک نا محرم رہا زلفیں کھولے تو ٹک آیا نظر عمر بھر یاں کام دل برہم رہا اس کے لب سے تلخ ہم سُنتے رہے اپنے حق میں آبِ حیواں سَم ریا میرے رونے کی حقیقت جس میں تھی ایک مدت تک وہ کاغذ نم رہا صبحِ پیری شام ہونے آئی میر تو نہ جیتا یاں بہت دن کم رہا
  13. Itni Mudat Baad Mile Hu Kin Socho Mai Ghum Rahte Hu اِتنی مُدت بعد ملے ہو کن سوچوں میں گم رہتے ہو اِتنے خائف کیوں رہتے ہو ہر آہٹ سے ڈرتے ہو تیز ہَوا نے مجھ سے پوچھا ریت پہ کیا لکھتے رہتے ہو کاش کوئی ہم سے بھی پوچھے رات گئے تک کیوں جاگے ہو میں دریا سے بھی ڈرتا ہوں تم دریا سے بھی گہرے ہو کون سی بات ہے تم میں ایسی اِتنے اچھے کیوں لگتے ہو پیچھے مڑ کر کیوں دیکھا تھا پتھر بن کر کیا تکتے ہو جاؤ جیت کا جشن مناؤ میں جھوٹا ہوں تم سچے ہو اپنے شہر کے سب لوگوں سے میری خاطر کیوں اُلجھے ہو کہنے کو رہتے ہو دل میں پھر بھی کتنے دُور کھڑے ہو رات ہمیں کچھ یاد نہیں تھا رات بہت ہی یاد آئے ہو ہم سے نہ پوچھو ہجر کے قصے اپنی کہو اب تم کیسے ہو محسن تم بدنام بہت ہو جیسے ہو پھر بھی اچھے ہو محسن نقوی
  14. poetry

    Mai Ishq Kahlata Hun میں عشق کہلاتا ہوں Poet: ابریش انمول عشق کیا ہے میں آواراپرندہ ہو پکارہ عشق کے نام سے جاتا ہو خوش بخت ہوتے ہے جنہیں آباد کرتا ہو امومن لوگوں کو برباد کرتا ہو ہمیشہ سفر میں ہی رہتا ہو منزل کو نہ کبھی پا سکو آئی پر جب اپنی آتا ہو نوابوں کو بھی غلام بناتا ہو ایسا ہی کچھ کمال رکھتا ہو ہنستے ہوۓ کو رولاتا ہو روتے ہوۓ کو ہنساتا ہو ویسے اتنا بھی برا نہیں ہو میں ہر کسی پر ظلم نہیں کرتا ہو جن کے ستارے نہیں ملتے بس ان کو ہی تڑپاتا ہو میں عشق کہلاتا ہو
  15. Jiski Jhankaar mai Dil Ka AraamTh - Wo Tera Naam Th جسکی جھنکار میں دل کا آرام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ میرے ہونٹوں پہ رقصاں جو اک نام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،تہمتیں مجھ پہ آتی رہی ہیں کئی، ایک سے اک نئی خوبصورت مگر جو اک الزام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ دوست جتنے تھے نا آشنا ہوگئے، پارسا ہوگئے، ساتھ میرے جو رسوا سرِ عام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،صبح سے شام تک جو میرے پاس تھی، وہ تیری آس تھی شام کے بعد جو کچھ لبِ بام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،مجھ پہ قسمت رہی ہمیشہ مہرباں، دے دیا سارا جہاں پر جو سب سے بڑا ایک انعام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،غم نے تاریکیوں میں اچھالا مجھے، مار ڈالا مجھے اک نئی چاندنی کا جو پیغام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،تیرے ہی دم سے ہے یہ قتیل آج بھی شاعری کاولی اس کی غزلوں میں کل بھی جو الہام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ قتیل شفائی
  16. Ashk Daman Mai Bhare Khuwab Kamar Per Rakhye اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا Poet: Ahmad Mushtaq اشک دامن میں بھرے خواب کمر پر رکھا پھر قدم ہم نے تری راہ گزر پر رکھا ہم نے ایک ہاتھ سے تھاما شب غم کا آنچل اور اک ہاتھ کو دامان سحر پر رکھا چلتے چلتے جو تھکے پاؤں تو ہم بیٹھ گئے نیند گٹھری پہ دھری خواب شجر پر رکھا جانے کس دم نکل آئے ترے رخسار کی دھوپ مدتوں دھیان ترے سایۂ در پر رکھا جاتے موسم نے پلٹ کر بھی نہ دیکھا مشتاقؔ رہ گیا ساغر گل سبزۂ تر پر رکھا
  17. poetry

    Ishq bare shaher ki masjid ka mufti aur mai gaoo'n ka sada sa muslmaan

    © http://fundayforum.com

  18. نعل آتش میں ہے، تیغِ یار سے نخچیر کا کاؤکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا خشت پشتِ دستِ عجز و قالب آغوشِ وداع پُر ہوا ہے سیل سے پیمانہ کس تعمیر کا وحشتِ خوابِ عدم شورِ تماشا ہے اسدؔ جو مزہ جوہر نہیں آئینۂ تعبیر کا بس کہ ہوں غالبؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا !!...موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا
  19. Every year, single people on the Delhi University campus celebrate Valentine’s Day with a puja at the Hindu College’s famous Virgin Tree. The students worship ‘Damdami Mai’ at the puja, who is chosen by hostellers for celebrations on 14th February every year. A post shared by disha patani (paatni) (@dishapatani) on Jan 24, 2017 at 2:18am PST Vaibhav Singh, a second-year student and hosteller at Hindu College said, “The second and third-year hostellers have chosen her. We picked her after having a meeting. Along with Disha, one name that was also considered was of Nargis Fakhri, but since most of the guys liked Disha, we have chosen her as our Damdami Mai.’’ He further added, “Damdami Mai is usually the actress who has been popular in that particular year, and who is also voted for by the most hostellers. Like always, we will have the puja on the morning of February 14. And a fresher will perform the puja as he will be the pandit for that day. As always, condoms will be used to decorate the Virgin Tree.” A post shared by disha patani (paatni) (@dishapatani) on Jan 1, 2017 at 8:09pm PST The students believe that participating in this puja will help them find ‘the one’ within six months and will also help them lose their virginity within a year. Well, good luck to all the students, cuz they’ll sure as hell need it.
  20. Mai Dil Pe jabar Kero Ga, Tuje Bhula Dun Ga میں دل پہ جبر کروں گا، تجھے بھلا دوں گا مروں گا خود بھی تجھے بھی کڑی سزا دوں گا یہ تیرگی میرے گھر کا ہی کیوں‌ مقدر ہو ؟ میں تیرے شہر کے سارے دیئے بجھا دوں گا ہوا کا ہاتھ بٹاؤں گا ہر تباہی میں ہرے شجر سے پرندے میں خود اڑا دوں گا وفا کروں گا کسی سوگوار چہرے سے پرانی قبر پہ کتبہ نیا سجا دوں گا اسی خیال میں گزری ہے شامِ درد اکثر کہ درد حد سے بڑھے گا تو مسکرا دوں گا تو آسماں کی صورت ہے گر پڑے گا کبھی زمیں ہوں بھی مگر تجھ کو آسرا دوں گا بڑھا رہی ہیں میرے دکھ، نشانیاں تیری میں تیرے خط، تری تصویر تک جلا دوں گا بہت دنوں سے مرا دل اداس ہے محسن اس آئینے کو کوئی عکس اب نیا دوں گا محسن نقوی
  21. Mere Qaatil Ko Pukaro Ky Mai Zinda Hun Abhi میرے قاتل کو پکارو کے میں زندہ ہوں ابھی پھر سے مقتل کو سنوارو کے میں زندہ ہوں ابھی یہ شب ہجر تو ساتھی ہے میری برسوں سے جاؤ سو جاؤ ستارو کے میں زندہ ہوں ابھی یہ پریشان سے گیسو دیکھے نہیں جاتے اپنی زلفوں کو سنوارو کے میں زندہ ہوں ابھی لاکھ موجوں میں گھرا ہوں ، ابھی ڈوبا تو نہیں مجھ کو ساحل سے پکارو کے میں زندہ ہوں ابھی قبر سے آج بھی محسن کی آتی ہے صدا تم کہاں ہو میرے یارو کے میں زندہ ہوں ابھی محسن نقوی شہید
  22. IK DIYA DIL MAI JALANA BHI, BUJHA BHI DENA اک دیا دل میں جلانا بھی، بجھا بھی دینا یاد کرنا بھی اسے روز، بھلا بھی دینا کیا کہوں میری چاہت ہے یا نفرت اس کی نام لکھنا بھی میرا، لکھ کے مٹا بھی دینا پھر نہ ملنے کو بچھڑتا ہوں تجھ سے لیکن مڑ کے دیکھوں تو پلٹنے کی دعا بھی دینا خط بھی لکھنا اسے مایوس بھی رہنا اس سے جرم کرنا بھی مگر خود کو سزا بھی دینا مجھ کو رسموں کا تکلف بھی گوارا لیکن جی میں آئے تو یہ دیوار گرا بھی دینا اس سے منسوب بھی کر لینا پرانے قصے اس کے بالوں میں نیا پھول سجا بھی دینا صورتِ نقش ِ قدم، دشت میں رہنا محسن اپنے ہونے سے نہ ہونے کا پتہ بھی دینا
  23. Hum tu yun khush th ky ik taara girebaan mai hy ہم تو یوں خوش تھے کہ اک تار گریبان میں ہے کیا خبر تھی کہ بہار اس کے بھی ارمان میں ہے - ایک ضرب اور بھی اے زندگیِ تیشہ بدست سانس لینے کی سکت اب بھی مری جان میں ہے - میں تجھے کھو کے بھی زندہ ہوں یہ دیکھا تو نے کس قدر حوصلہ ہارے ہوئے انسان میں ہے - فاصلے قرب کے شعلوں کو ہوا دیتے ہیں میں ترے شہر سے دُور اور تُو مرے دھیان میں ہے - سرِ دیوار فروزاں ہے ابھی ایک چراغ اے نسیمِ سحری! کچھ ترے امکان میں ہے - دل دھڑکنے کی صدا آتی ہے گاہے گاہے جیسے اب بھی تری آواز مرے کان میں ہے - خلقتِ شہر کے ہر ظلم کے با وصف فرازؔؔ ہائے وہ ہاتھ کہ اپنے ہی گریبان میں ہے
    Ahmad Fraz Poetry Waiting for love Sad Poetry
  24. Shahar Ky Dukhandaro --- Karobar Ulfat Mai شہر کے دوکاندارو ۔۔۔۔۔ کاروبارِ اُلفت میں سود کیا، زیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے دل کے دام کتنے ہیں ۔۔۔۔۔ خواب کتنے مہنگے ہیں اور نقدِ جاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے کوئی کیسے ملتا ہے ۔۔۔۔۔ پھول کیسے کھلتا ہے آنکھ کیسے جُھکتی ہے ۔۔۔۔۔ سانس کیسے رُکتی ہے کیسے رِہ نکلتی ہے ۔۔۔۔۔۔ کیسے بات چلتی ہے شوق کی زباں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے وصل کا سکوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ ہجر کا جنوں کیا ہے حُسن کا فسُوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ عشق کے درُوں کیا ہے تم مریضِ دانائی ۔۔۔۔۔ مصلحت کے شیدائی راہِ گمراہاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے زخم کیسے پھلتے ہیں ۔۔۔۔۔ داغ کیسے جلتے ہیں درد کیسے ہوتا ہے ۔۔۔۔۔ کوئی کیسے روتا ہے اشک کیا ہیں، نالے کیا ۔۔۔۔۔ دشت کیا ہیں، چھالے کیا آہ کیا، فُغاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے جانتا ہوں میں تم کو ۔۔۔۔۔ ذوقِ شاعری بھی ہے شخصیت سجانے میں ۔۔۔۔۔ اِک یہ ماہری بھی ہے پھر بھی حرف چُنتے ہو ۔۔۔۔۔ صرف لفظ سُنتے ہو اِن کے درمیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے (شاعر: جاوید اختر)
  25. میں بُرا تھا یا بھلا تھا اُسے گلا تو نہ تھا میری وجہ سےشہر بھر میں وہ رسواہ تو نہ تھا اُس نے چاھا تھا مجھےجان سے بھڑ کر لیکن چھوڑ کے مجھ کووہ تنہا تھاادھورا تو نہ تھا میں بُرا تھا یا بھلا تھا اُسے گلا تو نہ تھا میں کنارہ تھا مگر بِکھری ہوئ موجوں کی طرح ایک دن اُس کومیرے سر سے گزر جانا تھا وہ میری پیاس تھا لیکن میرا پیاسا تو نہ تھا میں بُرا تھا یا بھلا تھا اُسے گلا تو نہ تھا سایہ ہمسایہ تھا وہ ساتھ کہاں تک دیتا میرا ہو کر بھی وہ میرے لئیے کیا کر لیتا راحتِ دل تھا مگرغم کا ماداوہ تو نہ تھا میں بُرا تھا یا بھلا تھا اُسے گلا تو نہ تھا