News Ticker
  • “We cannot expect people to have respect for law and order until we teach respect to those we have entrusted to enforce those laws.” ― Hunter S. Thompson
  • “And I can fight only for something that I love
  • love only what I respect
  • and respect only what I at least know.” ― Adolf Hitler
  •  Click Here To Watch Latest Movie Jumanji (2017) 

Welcome to Funday Urdu Forum

Guest Image

Welcome to Funday Urdu Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Funday Urdu Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

Search the Community

Showing results for tags 'shair-o-shairy'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Music, Movies, and Dramas
    • Movies Song And Tv.Series
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

  • Ishq_janoon_Dewanagi
  • Uzee khan
  • Beauty of Words
  • Tareekhi Waqaiyaat
  • Geo News Blog
  • The Pakistan Tourism
  • My BawaRchi_KhaNa
  • Mukaam.e.Moahhabt
  • FDF Members Poetry
  • Sadqy Tmhary
  • FDF Online News
  • Pakistan
  • Dua's Kitchen
  • Raqs e Bismil
  • HayDay Game

Categories

  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • IPS Community Suite 3.4
    • Applications
    • Hooks/BBCodes
    • Themes/Skins
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Categories

  • Articles

Categories

  • Records

Calendars

  • Community Calendar
  • Pakistan Holidays

Genres

  • English
  • New Movie Songs
  • Old Movies Songs
  • Single Track
  • Classic
  • Ghazal
  • Pakistani
  • Indian Pop & Remix
  • Romantic
  • Punjabi
  • Qawalli
  • Patriotic
  • Islam

Categories

  • Islam
  • Online Movies
    • English
    • Indian
    • Punjabi
    • Hindi Dubbed
    • Animated - Cartoon
    • Other Movies
    • Pakistani Movies
  • Video Songs
    • Coke Studio
  • Mix Videos
  • Online Live Channels
    • Pakistani Channels
    • Indian Channels
    • Sports Channels
    • English Channels
  • Pakistani Drama Series
    • Zara Yaad ker
    • Besharam (ARY TV series)
  • English Series
    • Quantico Season 1
    • SuperGirl Season 1
    • The Magicians
    • The Shannara Chronicles
    • Game of Thrones

Found 99 results

  1. ﮐﺒﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﺁﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡﮐﮧ ﻟﮩﻮ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺗﻤﺎﺯﺗﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺩﮬﻮﭖ ﺩﮬﻮﭖ ﺳﻤﯿﭧ ﻟﯿﮟ ﺗﻤﮩﮟ ﺭﻧﮓ ﺭﻧﮓ ﻧﮑﮭﺎﺭ ﺩﯾﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺣﺮﻑ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﭺ ﻟﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺟﻮ ﺷﻮﻕ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺩﯾﺎﺭِ ﮨﺠﺮ ﮐﯽ ﺗﯿﺮﮔﯽ ﮐﻮ ﻣﮋﮦ ﮐﯽ ﻧﻮﮎ ﺳﮯ ﻧﻮﭺ ﻟﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﺁﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﮧ ﺩﻝ ﻭ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﺳﮑﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺣﺪ ﺳﮯ ﺣﺒﺲِ ﺟﻨﻮﮞ ﺑﮍﮬﮯ ﺗﻮ ﺣﻮﺍﺱ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺑﮑﮭﺮ ﺳﮑﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﮐِﮭﻞ ﺳﮑﻮ ﺷﺐِ ﻭﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺧﻮﻥِ ﺟﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﻨﻮﺭ ﺳﮑﻮ ﺳﺮِ ﺭﮨﮕﺰﺭ ﺟﻮ ﻣﻠﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﮧ ﭨﮭﮩﺮ ﺳﮑﻮ ﻧﮧ ﮔﺰﺭ ﺳﮑﻮ ﻣﺮﺍ ﺩﺭﺩ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﻏﺰﻝ ﺑﻨﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﻨﮕﻨﺎﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻣﺮﮮ ﺯﺧﻢ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﮔﻼﺏ ﮨﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺴﮑﺮﺍﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻣﺮﯼ ﺩﮬﮍﮐﻨﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻟﺮﺯ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﭼﻮﭦ ﮐﮭﺎﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺟﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺑﮍﮮ ﺷﻮﻕ ﺳﮯ ﺳﺒﮭﯽ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﺳﺒﮭﯽ ﺿﺎﺑﻄﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﭼﮭﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﮌ ﺩﻭ ﻧﮧ ﺷﮑﺴﺖِ ﺩﻝ ﮐﺎ ﺳﺘﻢ ﺳﮩﻮ ﻧﮧ ﺳﻨﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﻋﺬﺍﺏِ ﺟﺎﮞ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻠﺶ ﮐﮩﻮ ﯾﻮﻧﮩﯽ ﺧﻮﺵ ﭘﮭﺮﻭ، ﯾﻮﻧﮩﯽ ﺧﻮﺵ ﺭﮨﻮ ﻧﮧ ﺍُﺟﮍ ﺳﮑﯿﮟ ، ﻧﮧ ﺳﻨﻮﺭ ﺳﮑﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﻝ ﺩُﮐﮭﺎﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻧﮧ ﺳﻤﭧ ﺳﮑﯿﮟ ، ﻧﮧ ﺑﮑﮭﺮ ﺳﮑﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﺴﯽ ﻃﻮﺭ ﺟﺎﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﺳﮑﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﯾﺎﺩ ﺁﺅ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ !!
  2. پھر کوئی دست خوش آزار مجھے کھینچتا ہے جذبہ عشق سرِ دار مجھے کھینچتا ہے میں محبت کے مضافات کا باشندہ ہوں کیوں ترا شہرِ پُر اسرار مجھے کھینچتا ہے یہ بھی حیرت ہے عجب، خود مری تمثال کے ساتھ آئینہ بھی پسِ دیوار مجھے کھینچتا ہے دم بھی لینے نہیں دیتا ہے مسافت کاجنون پَا برہنہ وہ سرِ خار مجھے کھینچتا ہے پھر کوئی تیر ہدف کرتا ہے مشکیرہ کو پھر کوئی دستِ کماں دار مجھے کھینچتا ہے بولیاں جس کی لگے میں کوئی یوسف تو نہیں کس لئے مصر کا بازار مجھے کھینچتا ہے ہے کوئی گریہ کن حرف پسِ خیمہ جاں پھر کوئی نالہ آزار مجھے کھینچتا ہے تجھ کو معلوم ہے شاہدؔ بھی ہے مغرور بہت کیوں ترا حُسن انادار مجھے کھینچتا ہے
  3. روگ دل کو لگا گئیں آنکھیں اک تماشا دکھا گئیں آنکھیں مل کے ان کی نگاہ جادو سے دل کو حیراں بنا گئیں آنکھیں مجھ کو دکھلا کے راہ کوچہء یار کس غضب میں پھنسا گئیں آنکھیں اس نے دیکھا تھا کس نظر سے مجھے دل میں گویا سما گئیں آنکھیں محفل یار میں بہ ذوق نگاہ لطف کیا کیا اٹھا گئیں آنکھیں حال سنتے وہ میرا کیا حسرت وہ تو کہئے سنا گئیں آنکھیں
  4. poetry

    سب لوگ جدھر وہ ہیں ادھر دیکھ رہے ہیں ہم دیکھنے والوں کی نظر دیکھ رہے ہیں داغ دہلوی
  5. poetry

    Ghum e Hijran ki tere pass dawa hy ky nahi غمِ ہجراں کی ترے پاس دوا ہے کہ نہیں جاں بلب ہے ترا بیمار ، سنا ہے کہ نہیں وہ جو آیا تھا، تو دل لے کے گیا ہے کہ نہیں جھانک لے سینے میں کم بخت ذرا ، ہے کہ نہیں مخمصے میں تری آہٹ نے مجھے ڈال دیا یہ مرے دل کے دھڑکنے کی صدا ہے کہ نہیں سامنے آنا ، گزر جانا ، تغافل کرنا کیا یہ دنیا میں قیامت کی سزا ہے کہ نہیں اہل دل نے اُسے ڈُھونڈا ، اُسے محسوس کیا سوچتے ہی رہے کچھ لوگ ، خدا ہے ، کہ نہیں تم تو ناحق مری باتوں کا برا مان گئے میں نے جو کچھ بھی کہا تم سے ، بجا ہے کہ نہیں؟ آبرو جائے نہ اشکوں کی روانی سے نصیر سوچتا ہوں ، یہ محبت میں روا ہے کہ نہیں
  6. poetry

    ﮨﺠﺮ ﺍُﮔﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﮯ ﭘﻮﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﯿﺞ ﺑﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﻮ ﺗﻢ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﮯ ﮐﻮ ﺳﻮﭼﺘﯽ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﻮ ﺗﻢ ﻋﺎﻃﻒ ﺳﻌﯿﺪ
  7. poetry

    خودی کا سر نہاں لا الہ الا اللہ خودی ہے تیغ فساں لا الہ الا اللہ حضرت علامہ اقبالؒ
  8. دین سے دور ، نہ مذہب سے الگ بیٹھا ہوں تیری دہلیز پہ ہوں، سب سے الگ بیٹھا ہوں ڈھنگ کی بات کہے کوئی ، تو بولوں میں بھی مطلبی ہوں، کسی مطلب سے الگ بیٹھا ہوں بزمِ احباب میں حاصل نہ ہوا چین مجھے مطمئن دل ہے بہت ، جب سے الگ بیٹھا ہوں غیر سے دور، مگر اُس کی نگاہوں کے قریں محفلِ یار میں اس ڈھب سے الگ بیٹھا ہوں یہی مسلک ہے مرا، اور یہی میرا مقام آج تک خواہشِ منصب سے الگ بیٹھا ہوں عمرکرتا ہوں بسر گوشہ ء تنہائی میں جب سے وہ روٹھ گئے ، تب سے الگ بیٹھا ہوں c میرا انداز نصیر اہلِ جہاں سے ہے جدا سب میں شامل ہوں ، مگر سب سے الگ بیٹھا ہوں
  9. سُننے والوں کے لیے تیری ہنسی نعمت ہے توُ جو روئے تو تُجھے دیکھنے والا روئے آبشاروں کی طرح ، ابرِ مُسلسل کی طرح آپ کی یادمیں آخر کوئی کِتنا روئے جتنے بیزار ہیں مُسکان میّسر سب کو جو بھی اس بزم میں ہو محوِ تماشا روئے اُس کی تقدیر میں اتنا تو تبسُم لکھ دے یاد کر کے اُسے ہم دشت میں جتنا روئے سانحہ یہ تھا کہ تو نے ہمیں مصلوب کیا ملک افلاک پہ گوہر تہہِ دریا روئے اس سے بڑھ جائے گی کُچھ تاب و روانی دلبر چشمِ بے تاب سے کہہ دے لبِ دریا روئے
  10. ظلمت کدے میں میری شب غم کا جوش ہے اک شمع ہے دلیل سحر سو خاموش ہے داغ فراق صحبت شب کی جلی ہوئی اک شمع رہ گئی ہے سو وہ بھی خاموش ہے آتے ہیں غیب سے یہ مضامین خیال میں غالب سریر خامہ نوائے سروش ہے ظلمت کدے میں میری شب غم کا جوش ہے اک شمع ہے دلیل سحر سو خاموش ہے
  11. نعل آتش میں ہے، تیغِ یار سے نخچیر کا کاؤکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا خشت پشتِ دستِ عجز و قالب آغوشِ وداع پُر ہوا ہے سیل سے پیمانہ کس تعمیر کا وحشتِ خوابِ عدم شورِ تماشا ہے اسدؔ جو مزہ جوہر نہیں آئینۂ تعبیر کا بس کہ ہوں غالبؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا !!...موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا
  12. Baazicha-E-Atfaal Hai Duniya Mere Aage Hota Hai Shab-O-Roz Tamasha Mere Aage Ik Khel Hai Aurang-E-Sulemaan Mere Nazdeek Ik Baat Hai Ejaaz-E-Masiha Mere Aage Juz Naam Nahin Surat-E-Aalam Mujhe Manzoor Juz Vaham Nahin Hasti-E-Ashiya Mere Aage Hota Hai Nihaan Gard Main Sehraa Mere Hote Ghistaa Hai Jabin Khaak Pe Dariya Mere Aage Mat Pooch Ke Kya Haal Hai Mera Tere Peeche Tu Dekh Ke Kya Rang Hai Tera Mere Aage Sach Kahte Ho Khudbin-O-Khudaara Hoon Na Kyun Hoon Baitha Hai But-E-Aaina Seema Mere Aage Phir Dekhiye Andaaz-E-Gulafshaani-E-Guftaar Rakh De Koi Paimaana-E-Sahabaa Mere Aage Nafrat Ka Gumaan Guzre Hai Main Rashk Se Guzra Kyun Kar Kahoon Lo Naam Na Us Ka Mere Aage Imaan Mujhe Roke Hai Jo Kheenche Hai Mujhe Kufr Kaaba Mere Peeche Hai Kalisa Mere Aage Aashiq Hoon Pe Mashooq Farebi Hai Mera Kaam Majnu Ko Bura Kahti Hai Laila Mere Aage Khush Hote Hain Par Vasl Main Yun Mar Nahin Jaate Aai Shab-E-Hijraan Ki Tamanna Mere Aage Hai Maujzan Ik Qulzum-E-Khoon Kaash! Yahi Ho Aata Hai Abhi Dekhiye Kya-Kya Mere Aage Go Haath Ko Jumbish Nahin Aankhon Main To Dam Hai Rahne Do Abhi Saagar-O-Meena Mere Aage Hampesha-O-Hammasharab-O-Hamraaz Hai Mera ‘Ghalib’ Ko Bura Kyun Kaho Achcha Mere Aage
  13. poetry

    ﺟﻮ ﭼﻞ ﺳﮑﻮ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﭼﺎﻝ ﭼﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﻣﺠﮭﮯ ﮔﻤﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﮨﻮ ____ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺑﺪﻝ ﺟﺎﻧﺎ ﯾﮧ ﺷﻌﻠﮕﯽ ﮨﻮ ﺑﺪﻥ ﮐﯽ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺳﻮ ﻻﺯﻣﯽ ﺗﮭﺎ ____ ﺗﺮﮮ ﭘﯿﺮﮨﻦ ﮐﺎ ﺟﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺭﻣﺎﮞ ____ ﯾﮧ ﻭﻗﺖ ﺁﭘﮩﻨﭽﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ ﺗﻮ ____ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﮨﻤﯿﮟ ﻋﺠﯿﺐ ﻟﮕﺎ ____ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﮈﮬﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﺳﺠﯽ ﺳﺠﺎﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﻮﺕ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻮﺭﺧﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻘﺎﺑﺮ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ____ ﻣﺤﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﺍِﺳﯽ ﺳﺎﻋﺖِ ﺯﻭﺍﻝ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﮨﮯ ____ ﺳﺒﮭﯽ ﺳﻮﺭﺟﻮﮞ ﮐﻮ ﮈﮬﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻋﺸﻖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ____ ﺍﻭﺭ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﻋﺸﻖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻓﺮﺍﺯ ﺍﺗﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺁﺳﺎﮞ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ____ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﺟﺎﻧﺎ ﺍﺣﻤﺪ ﻓﺮﺍﺯ
  14. ایک بحر میں پانچ غزلیں *********************** 1. نہ آیا ہوں نہ میں لایا گیا ہوں میں حرفِ کن ہوں فرمایا گیا ہوں میری اپنی نہیں ہے کوئی صورت ہر اک صورت سے بہلایا گیا ہوں بہت بدلے میرے انداز لیکن جہاں کھویا وہیں پایا گیا ہوں وجودِ غیر ہو کیسے گوارا تیری راہوں میں بے سایا گیا ہوں نجانے کون سی منزل ہے واصف جہاں نہلا کے بلوایا گیا واصف علی واصف _______ 2. فلک سے خاک پر لایا گیا ہوں کہاں کھویا کہاں پایا گیا ہوں میں زیور ہوں عروسِ زِندگی کا بڑے تیور سے پہنایا گیا ہوں نہیں عرض و گزارش میرا شیوہ صدائے کُن میں فرمایا گیا ہوں بتا اے انتہائے حسنِ دنیا میں بہکا ہوں کہ بہکایا گیا ہوں مجھے یہ تو بتا اے شدتِ وصل میں لِپٹا ہوں کہ لِپٹایا گیا ہوں بدن بھیگا ہوا ہے موتیوں سے یہ کِس پانی سے نہلایا گیا ہوں اگر جانا ہی ٹھہرا ہے جہاں سے تو میں دنیا میں کیوں لایا گیا ہوں یہ میرا دل ہے یا تیری نظر ہے میں تڑپا ہوں کہ تڑپایا گیاہوں مجھے اے مہرباں یہ تو بتا دے میں ٹھہرا ہوں کہ ٹھہرایا گیا ہوں تِری گلیوں سے بچ کر چل رہا تھا تِری گلیوں میں ہی پایا گیا ہوں جہاں روکی گئی ہیں میری کِرنیں وہاں میں صورتِ سایہ گیا ہوں عدیم اِک آرزو تھی زِندگی میں اُسی کے ساتھ دفنایا گیا ہوں عدیم ہاشمی _______ 3. جہاں قطرے کو ترسایا گیا ہوں وہیں ڈوبا ہوا پایا گیا ہوں بلا کافی نہ تھی اک زندگی کی دوبارہ یاد فرمایا گیا ہوں سپرد خاک ہی کرنا ہے مجھ کو تو پھر کاہے کو نہلایا گیا ہوں اگرچہ ابرِ گوہر بار ہوں میں مگر آنکھوں سے برسایا گیا ہوں کوئی صنعت نہیں مجھ میں تو پھر کیوں نمائش گاہ میں لایا گیا ہوں مجھے تو اس خبر نے کھو دیا ہے سنا ہے میں کہیں پایا گیا ہوں حفیظ اہل زباں کب مانتے تھے بڑے زوروں سے منوایا گیا ہوں حفیظ جالندھری ______ 4. جہاں معبود ٹھہرايا گيا ہوں وہيں سولی پہ لٹکايا گيا ہوں سنا ہر بار ميرا کلمۂ صدق مگر ہر بار جھٹلايا گيا ہوں مرے نقشِ قدم نظروں سے اوجھل مگر ہر موڑ پر پايا گيا ہوں کبھی ماضی کا جيسے تذکرہ ہو زباں پر اس طرح لايا گيا ہوں جو موسی ہوں تو ٹھکرايا گيا تھا جو عيسی ہوں تو جھٹلايا گيا ہوں جہاں ہے رسم قتلِ انبيا کی وہاں مبعوث فرمايا گيا ہوں ابھی تدفين باقی ہے ابھی تو لہو سے اپنے نہلايا گيا ہوں دوامی عظمتوں کے مقبرے ميں ہزاروں بار دفنايا گيا ہوں ميں اس حيرت سرائے آب و گل ميں بحکمِ خاص بھجوايا گيا ہوں کوئی مہمان ناخواندہ نہ سمجھے بصد اصرار بلوايا گيا ہوں بطورِ ارمغاں لايا گيا تھا بطورِ ارمغاں لايا گيا ہوں ترس کيسا کہ اس دارالبلا ميں ازل کے دن سے ترسايا گيا ہوں اساسِ ابتلا محکم ہے مجھ سے کہ ديواروں ميں چنوايا گيا ہوں کبھی تو نغمۂ داؤد بن کر سليماں کے لئے گايا گيا ہوں نجانے کون سے سانچے ميں ڈھاليں ابھی تو صرف پگھلايا گيا ہوں جہاں تک مہرِ روز افروز پہنچا وہيں تک صورتِ سايہ گيا ہوں رئیس امروہوی ______ 5. تمناؤں میں الجھایا گیا ہوں کھلونے دے کے بہلایا گیا ہوں دلِ مضطر سے پوچھ اے رونقِ بزم میں خود آیا نہیں لایا گیا ہوں لحد میں کیوں نہ جاؤں منہ چھپائے بھری محفل سے اٹھوایا گیا ہوں ہوں اس کوچے کے ہر ذرے سے آگاہ ادھر سے مدتوں آیا گیا ہوں سویرا ہے بہت اے شورِ محشر ابھی بے کار اٹھوایا گیا ہوں قدم اٹھتے نہیں کیوں جانبِ دیر کسی مسجد میں بہکایا گیا ہوں کجا میں اور کجا اے شاد دنیا کہاں سے کس جگہ لایا گیا ہوں شاد عظیم آبادی ♡♡♡♡♡
  15. ﻋﺸﺮﺕِ ﻗﻄﺮﮦ ﮨﮯ ﺩﺭﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻓﻨﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﺎ ﺩﺭﺩ ﮐﺎ ﺣﺪ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﻧﺎ ﮨﮯ ﺩﻭﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﺎ ﻣﺮﺯﺍ ﻏﺎﻟﺐ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ
  16. میں چاہنے والوں کو مخاطب نہیں کرتا اور ترک تعلق کی میں وضاحت نہیں کرتا میں اپنی جفاؤں پہ نادم نہیں ہوتا میں اپنی وفاؤں کی تجارت نہیں کرتا خوشبو کسی تشہیر محتاج نہیں ہوتی سچا ہوں مگر اپنی وکالت نہیں کرتا احساس کی سولی پہ لٹک جاتا ہوں اکثر میں جبر مسلسل کی شکائیت نہیں کرتا میں عظمت انسان کا قائل تو ہوں محسن لیکن کبھی بندوں کی میں عبادت نہیں کرتا محسن نقوی
  17. poetry

    یہ دل روشن ہے تیری روشنی سے سراپا ان چراغوں کا تجھے حیرت سے تکتا ہے میری ویران حسرت کو وہی آباد کرتا ہے جو سایہ ساتھ رکھتا ہے، جو وعدے کو نبھاتا ہے محبت فرض اُن پر ہے جنہیں سونا نہیں آتا یہ حکمت اُن پہ واجب ہے جنہیں رونا نہیں اتا کسی تاریک گوشے میں، کہیں شعلہ بھڑکتا ہے پُجاری کی عقیدت سے خدا کا دل دھڑکتا ہے جہاں میں خواہشوں کے پھل تیری پہلی نظر سے ہیں نفس کی کاوشوں کے پھل تیری پہلی نظر سے ہیں وفاداری غلامی ہے، یہ مجھ کو راس آتی ہے ندامت کی اک ادا سے دل کو میرے کھینچ لاتی ہے مقدس تیرگی میں بس تجھے محسوس کرتا ہوں میں ہر پل روشنی میں بس تجھے محسوس کرتا ہوں مجھے معذور خوابوں سے یہی بیدار کرتی ہے سوا تیرے ہر اک شے بس مجھے بے زار کرتی ہے مجھے مسرور کرتی ہے، میری تلخی بُھلاتی ہے میرے محبوب موسم کو میرا اپنا بناتی ہے یہ اُڑتی بادلوں میں اور کبھی اطراف پھرتی ہے میرے اندر کی چنگاری فروزاں کرتی رہتی ہے عجب انصاف کرتی ہے، مُجھے عادل بناتی ہے تیری خوشبو مجھے سرشار رکھتی ہے (سہیل احمد )
  18. ، بہت کوشش کرو گے تُم !!کہ اب موسم جو بدلیں تو، ہماری یاد نہ آۓ ۔۔۔ ،،،،،،مگر ایسا نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ،کہیں جو ۔۔۔۔۔۔۔ سرد موسم میں دِسمبر کی ہواؤں میں ۔۔۔۔۔ تُمھارے دل کے گوشوں میں ۔۔۔۔۔ جمی ہیں برف کی طرح ۔۔۔۔۔ وہ یادیں کیسے پگھلیں گی ۔۔۔۔۔ ؟؟؟ ،کبھی گرمی کی تپتی سُرخ گھڑیوں میں میرے ماضی کو سوچو گے ۔۔۔۔۔۔۔ تو آنکھیں بھیگ جائیں گی ۔۔ گھڑی پیچھے کو دوڑے گی ۔۔۔۔ کئی سالوں کی گُم گشتہ، ہماری یاد آۓ گی بچھڑ جاؤ !! مگر سُن لو ۔۔۔۔۔ ہمارے درمیان، ایسی کوئی تو بات بھی ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ جِسے تُم یاد رکھو گے ۔۔۔۔۔ مُجھے تُم یاد رکھو گے ۔۔۔۔
  19. poetry

    ﻣﺠﮫ ﮐﻤﻠﯽ ﮐﺎ ﺳﻨﮕﮭﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﻥ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﺮﺩﺍﺭ ﭘﯿﺎ ﺗﺠﮫ ﺑﻦ ﺩﺭ، ﭼﮭﺖ، ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮈﺳﮯ ﺗﺠﮫ ﺑﻦ ﺳﻮﻧﺎ ﮔﮭﺮ ﺑﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﮨﺮ ﺟﺬﺑﮯ ﮐﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺗﻮ ﺳﺎﻧﻮﻝ ، ﺗﻮﺩﻟﺪﺍﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﻥ ﺳﺮ ﺍٓﻧﮑﮭﻮﮞ ﭘﺮ ﺣﮑﻢ ﺗﺮﺍ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﻧﻮﮞ ﮨﺮ ﮨﺮ ﺑﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺗﻮ ﮨﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﻏﻤﺨﻮﺍﺭ ﺳﺠﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮﮞ ﺍﻗﺮﺍﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﺏ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﭼُﻮﺭ ﻭ ﭼُﻮﺭﮨﻮﺋﯿﮟ ﺍﺏ ﺁ ﻣﻞ ﺗﻮ ﺍﮎ ﺑﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﮎ ﺩﮐﮫ ﻧﮯ ﮔﮭﯿﺮﺍ ﮈﺍﻝ ﻟﯿﺎ ﺍﺏ ﻟﮯ ﭼﻞ ﻧﮕﺮﯼ ﭘﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﮨﮯ ﻣﻦ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﮎ ﺍٓﺱ ﺗﺮﯼ ﺗُﻮ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﺭﮐﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﮨﺮ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺎ ﮐﺮ ﮨﺠﺮ ﻣﻠﮯ ﺳﺐ ﺭﺍﮨﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﺮ ﺧﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺗﻮ ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﺳﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﻋﺎ ﯾﮧ ﺩﻝ ﺗﯿﺮﺍ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﮎ ﺳﮑﮫ ﺳﮯ ﺳﻮﺋﮯ ﻭﺻﻞ ﺗﺮﺍ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺐ ﮨﻮ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﭘﯿﺎ ﭘﮭﺮ ﭼﺎﮨﺖ ﮐﯽ ﺍﮎ ﺑﺎﺕ ﺗﻮﮐﺮ ﻣﺖ ﭼﭗ ﭼﭗ ﺭﮦ ﮐﺮ ﻣﺎﺭ ﭘﯿﺎ ﺗﮏ ﺗﮏ ﺭﺍﮨﯿﮟ ﺍﺏ ﻧﯿﻦ ﺗﮭﮑﮯ ﯾﮧ ﺑﺮﺳﯿﮟ ﺯﺍﺭ ﻭ ﺯﺍﺭ ﭘﯿﺎ ﺍﺏ ﺩﮮ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﮎ ﺗﯿﺮﯼ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﭘﯿﺎ
  20. وہ سامنے بھی آئے ــ تو دیکھا نہ کر اُسے گر بچھڑ بھی جائے ــ تو سوچا نہ کر اُسے اِک بار جو گیا ، سو گیا ـ ـ بُھول جا اُسے وہ گمشُدہ خیال ہے ــ پیدا نہ کر اُسے اب اُس کی بات خالی ہے ـ ـ معنی سے اَے مُنیرؔ کہنے دے جو وہ کہتا ہے ــ روکا نہ کر اُسے
  21. یہ عشق نے دیکھا ہے یہ عقل سے پنہاں ہے قطرے میں سمندر ہے ذرّے میں بیاباں ہے اے پیکر ِمحبوبی میں کس سے تجھے دیکھوں جس نے تجھے دیکھا ہے وہ دیدۂِ حیراں ہے سو بار تیرا دامن ہاتھوں میں میرے آیا جب آنکھ کھلی دیکھا اپنا ہی گریباں ہے یہ حُسن کی موجیں ہیں یا جوش ِتمنا ہے اس شوخ کے ہونٹوں پر اک برق سی لرزاں ہے اصغر سے ملے لیکن اصغر کو نہیں دیکھا اشعار میں سنتے ہیں کچھ کچھ وہ نمایاں ہے
  22. ....ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﺘﺎﺅ ﺑﮯ ﺳﺒﺐ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﻭﭨﮫ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﻮ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﺫﺭﺍ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﺅﮞ . . . . ﺍﭼﮭﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ...ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺁﺧﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﺮﺗﺎ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ....ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﺪ ﮨﯽ ﻧﮩﯽ ﮨﻮﺗﯽ .....ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﺘﺎﺅ . . . ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﺗﻨﺎ ؟ .....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ !!ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﺗﻮ ﮨﻮ ﮨﯽ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ...ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﯾﻮﮞ ﮨﯽ ﺭﻻ ﺩﻭﮞ ﺗﻮ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ....ﻣﺠﮭﮯ ﮈﺭ ﮨﮯ ﮐﮯ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﮭﯿﮓ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ .....ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﺘﺎﺅ . . ﺑﺎﺭﺷﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮨﮯ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ...ﮐﮯ ﯾﮧ ﺗﻮ ﺑﺎﺩﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﺭﻭﺗﯽ ﮨﮯ ....ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﺩﮬﻮﺭﮮ ﮨﯿﮟ ؟ ...ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ...ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﺗﻢ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﺩﮮ ﺩﻭ ﻧﺎ ...ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﺘﺎﺅ ﭼﻮﮌﯾﺎﮞ ﮐﯿﺴﯽ ﻟﮕﯿﮟ ﺗﻢ ﮐﻮ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ....ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﭨﻮﭦ ﮐﺮ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ ...ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﺮﻭﮞ ﺟﺐ ﻓﻮﻥ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯽ ﺁﺗﯽ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ...ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻭﺍﺯ ، ﺳﻦ ، ﮐﮯ ﺿﺒﻂ ﺭﻭﺗﺎ ﮨﮯ ....ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﮐﺲ ﻟﯿﮯ ﺁﺧﺮ ؟ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ....ﮐﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﻨﯽ ، ﺳﮑﮫ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﮯ ...ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ...ﺍﺩﺍﺳﯽ ﭘﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﻟﮑﮫ ﮐﮯ ﺩﮐﮭﻼ ﺩﻭ ....ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﻮﮞ ....ﻣﯿﺮﮮ ﺁﮔﮯ ﮐﺮﻭ ﺷﯿﺸﮧ . . . ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﮨﻮ
  23. ساقی شراب لا کہ طبیعت اُداس ہے مُطرب رُباب اُٹھا کہ طبیعت اُداس ہے چبھتی ہے قلب و جاں میں ستاروں کی روشنی اے چاند ڈوب جا کہ طبیعت اُداس ہے شاید تیرے لبوں کی چٹک سے ہو جی بہار اے دوست مُسکرا کہ طبیعت اُداس ہے ہے حُسن کا فسوں بھی علاجِ فسُردگی رُخ سے نقاب اُٹھا کہ طبیعت اُداس ہے میں نے کبھی یہ ضد تو نہیں کی پر آج شب اے مہ جبیں نہ جا کہ طبیعت اُداس ہے توبہ تو کر چکا ہوں مگر پھر بھی اے عدم تھوڑا سا زہر لا کہ طبیعت اُداس ہ
  24. حدودِ جاں سے گزر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا کوئی جنوں کی نظر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا وفا کا پودا شجر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا نصیب اس کا ثمر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا زمیں والوں میں گھر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا ترا فرشتہ بشر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا کہیں نہ کوئی شجر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا جو دھوپ کا ہی سفر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا ابھی تو پھرتے ہو دوستوں میں عزیز کوئی جداُ نہیں ہے کوئی اِدھر سے اُدھر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا وہ جس کی خاطر زمانے بھر کو بنا رہے ہو تم اپنا دشمن وہی نہ اپنا اگر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا ابھی سنا ہے یہ لفظ تم نے تمہیں محبت ملی نہیں ہے کسی کی بانہوں میں گھر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا یہ خوش نصیبی ہے شہر بھر میں تمھارا دشمنُ نہیں ہے کوئی کبھی کسی کا جو ڈر ہوا تو محبتوں کا پتہ چلے گا یہ فاصلہ سا ابھی تلک جو ہمارے دونوں کے درمیاں ہے یہ فاصلہ مختصر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا محبتوں میں تو پتھروں کو بھی موم ہوتے سناُ ہے لیکن تمھارے دل پہ اثر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا ابھی تو مشکل نہیں پڑی ہے زمانے والو نبھا رہے ہو کبھی نشانے پہ سر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا پھر ایک لیلیٰ گھری ہوئی ہے نئے زمانے کی تلخیوں میں، پھر ایک وعدہ امر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا ابھی تو چہرے بدل بدل کے معیار اپنا بنا رہے ہو کوئی نہ حد نظر ہوا تو محبتوں کا پتا چلے گا یہ کیا بچھڑنا کہ شام ہوتے ہی اپنے پیاروں میں لوٹ آنا کبھی جو لمبا سفر ہوا تو !!! محبتوں کا پتہ چلے گا۔۔
  25. کبھی تو شہرِ ستمگراں میں کوئی محبت شناس آئے وہ جس کی آنکھوں سے نور چھلکے لبوں سے چاہت کی باس آئے چلے تو خوشیوں کے شوخ جذبے ہماری آنکھوں میں موجزن تھے مگر نا پوچھو کہ واپسی کے سفر سے کِتنے اُداس آئے ہمارے ہاتھوں میں اِک دِیا تھا ہوا نے وہ بھی بُجھا دیا تھا ہیں کس قدر بدنصیب ہم بھی، ہمیں اُجالے نہ راس آئے ہماری جانِب سے شہر والوں میں یہ منادی کرا دو ”محسن جسے طلب ہو متاعِ غم کی وہ ہم فقیروں کے پاس آئے #محسن_نقوی