Welcome to Fundayforum.com - Pakistani Urdu Community Forum

Guest Image

Welcome to Fundayforum.com - Pakistani Urdu Community Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Fundayforum.com - Pakistani Urdu Community Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

  • Radio

    Live Radio

Rate this topic

2 posts in this topic

Author:’Abdullaah Ibn Saalih Al-Fawzaan
Source:Ahaadeeth As-Siyaam: Ahkaam wa Adaab (pg. 13-15)

Abu Hurairah reported that the Messenger of Allaah (Peace be upon him) said: “Ramadaan has come to you – a blessed month. Allaah has made it obligatory on you to fast in it. During this month, the gates of heaven are open, the gates of the Hellfire are closed and the evil devils are chained. To Allaah belongs a night in it, which is better than a thousand months. Whosoever is prevented from its good, then he has been deprived.” [1]


The hadeeth is a glad tiding to the righteous servants of Allaah, of the coming of the blessed month of Ramadaan. The Prophet (Peace be upon him) informed his Companions of its coming and it was not just a simple relaying of news. Rather, his intent was to give them the glad tidings of a magnificent time of the year, so that the righteous people who are quick to do deeds can give it its due estimate. This is because the Prophet (Sallallaahu ‘alaihi wa Sallam) explained in it (the hadeeth) what Allaah has prepared for His servants from the ways towards gaining forgiveness and His contentment – and they are many. So whoever has forgiveness escape him during the month of Ramadaan, then he has been deprived with the utmost deprivation.


From the great favors and bounties that Allaah has bestowed upon His servants is that He has prepared for them meritous occasions so that they may be of profit to those who obey Him and a race for those who rush to compete (for good deeds). These meritous occasions are times for fulfilling hopes by exerting in obedience and uplifting flaws and deficiencies through self-rectification and repentance. There is not a single occasion from these virtuous times, except that Allaah has assigned in it works of obedience, by which one may draw close to Him. And Allaah possesses the most beautiful things as gifts, which He bestows upon whomsoever He wills by His Grace and Mercy.


So the one who achieves true happiness is he who takes advantage of these virtuous months, days and hours and draws closer to His Guardian in them, by doing what is prescribed in them from acts of worship.


Thus perhaps he will be showered with one of the many blessings of those occasions and be helped by it, with an assistance that is enough to save him from the Fire and what it contains, such as its blazing heat. [2]

Being able to reach Ramadaan is itself a magnificent bounty that is bestowed on the one who reaches it and rises to its occasion, by standing in prayer during its night and fasting during its day. In it, he returns to his Protector — from disobeying Him to obeying Him, from neglecting Him to remembering Him, from remaining distant from Him to turning towards Him in submissive repentance.


A Muslim must be conscious of this bounty and acknowledge its magnitude. For indeed, many people are prevented from fasting, either because they die before they reach it, or because they are not capable of observing it or because they oppose and turn away from it. Thus, the one who fasts must give praise to his Lord for this bounty and should welcome this month with joy and delight that a magnificent time of the year out of all the occasions for performing obedience is welcomed. He should exert himself deeply in doing good deeds. And he should invoke Allaah to grant him the ability to fast and stand in night prayer, and that He provide him with seriousness, enthusiasm, strength, and energy in that month. And that He awaken him from heedless oversleeping so that he may take advantage of these virtuous times of good.


It is unfortunate to find that many people do not know the value of this virtuous occasion, nor do they consider it to be sacred. So the month of Ramadaan no longer becomes a significant time for obedience, worship, reciting the Qur’aan, giving in charity and making remembrance of Allaah. Rather, to some people, it becomes a signifcant time to diversify their foods and drinks and to prepare different types of meals before the month begins. Some other people do not know Ramadaan except as a month of sleeplessness and constant recurring gatherings, while sleeping by day. This is to the point that some among them sleep past the time of the obligatory prayers, thus not praying them in congregation or in their proper times. Other people do not know Ramadaan except as a signifcant time for conducting worldly affairs, not as a significant time for conducting affairs for the Hereafter. Thus, they work busily in it, buying and selling, and they stay in the market areas, consequently abandoning the masaajid. And when they do pray with the people, they do so in such a hurried manner. This is because they find their pleasure in the market places. This is the extent that the notions and views (of Ramadaan) have been changed.


Some of the Salaf used to say: “Indeed Allaah, the Most High, has made the month of Ramadaan as a competition for His creatures, in which they may race with one another to His pleasure, by obeying Him. Thus, one group comes first and so they prosper and another group comes last and so they fail.” [3]


Also, the individual does not know if this is perhaps the last Ramadaan he will ever see in his life, if he completes it. How many men, women and children have fasted with us the past year, and yet now they lie buried in the depths of the earth, relying on their good deeds. And they expected to fast many more Ramadaans. Likewise, we too shall all follow their path. Therefore, it is upon the Muslim to rejoice at this magnificent occasion for worship. And he should not renounce it, but instead busy himself with what will benefit him and what will cause its effect to remain. For what else is it, except numbered days, which are fasted in succession and which finish rapidly.

May Allaah make us, as well as you, from among those who are foremost in attaining good deeds.



  1. This hadeeth is reported by Ahmad and An-Nasaa’ee. See Ahmad Shaakir’s checking of the Musnad (no. 7148) and Saheeh at-Targheeb wat-Tarheeb of al-Albaanee (1490) as well as Tamaam-ul-Mannah (395)
  2. These are the words of Ibn Rajab in Lataa’if-ul-Ma’aarif: pg. 8
  3. Lataa’if-ul-Ma’aarif of Ibn Rajab: page 246




Share this, Baarakallaah Feekum: [“One who guides to something good has a reward similar to that of its doer” - Saheeh Muslim vol.3, no.4665] [This website protects the copyrights of the authors/publishers. The Content is posted on this website with implicit/explicit permission from content owners. If you find any copyright violations please inform the same.]


Share this post

Link to post
Share on other sites

Workbook: Abdullah Bin Saleh Al - Fawzan front مصنف: عبد بن صالح امام الفوزان
ماخذ: احادیث کی حیثیت الصیام: احکام و Adaab (. ص 13-15)
 - ایک مبارک مہینہ "رمضان تمہارے پاس آیا ہے: ابو ہریرہ کہ اللہ تعالی کے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) نے فرمایا.

 اللہ  تعالی واجب تم اس میں روزہ رکھنے پر بنایا گیا ہے. اس ماہ کے دوران، آسمان کے دروازے، کھلے ہیں جہنم کے دروازے بند کردیے جاتے ہیں اور شر شیاطین جکڑ دیے جاتے. للہ اس میں ایک رات ایک ہزار مہینوں سے بہتر ہے جس کے تعلق   رکھتا  ہے. جو شخص، اس کے اچھے سے روکا جاتا ہے تو پھر وہ محروم کر دیا گیا ہے


حدیث رمضان کے بابرکت مہینے کی آمد کی اللہ تعالی کے نیک بندے، کرنے کے لئے ایک خوشخبری ہے. رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وسلم) اس کے آنے کا ان کے صحابہ آگاہ کیا اور یہ خبر کی صرف ایک سادہ پھر بچھانے کا نہیں تھا. بلکہ اس کے ارادے نیک اورصالح لوگوں کے اعمال کرنے کے لئے جلدی کر رہے ہیں جس نے اسے اس وجہ سے تخمینہ دے سکتا ہے تا کہ، ان کے سال کی ایک شاندار وقت کی بشارت دینے کے لئے تھا. اور وہ بہت سے ہیں - کیونکہ رسول اللہ

( صلی اللہ علیہ واسلم sallallaahu 'alaihi و sallam) 

اللہ تعالی کی بخشش اور اس کا اطمینان حاصل تئیں طریقے سے اپنے بندوں کے لئے تیار کیا گیا ہے کیا اس (حدیث) میں بیان کی گئی ہے. تو ہے جس نے بخشش رمضان کے مہینے کے دوران اس کے فرار ہونے، پھر اس نے پوری کوشش کی محرومی سے محروم کر دیا گیا ہے
عظیم کون کون سی نعمت اور فضل اللہ تعالی اپنے بندوں پر فضل وکرم ہے سے جو اس نے ان کے لئے شاندار مواقع تیار کیا ہے تاکہ وہ جو مقابلہ کرنے کی جلدی جو (اچھے اعمال کے لئے) ان لوگوں کے لئے اس کی اور ایک نسل کی اطاعت ان لوگوں کے  لئے منافع کی ہو سکتی ہے. یہ شاندار مواقع اٹھانے خود ترمیم اور توبہ کے ذریعے خامیوں اور کمیوں اطاعت میں ڈالنے اور   اپ کی طرف سے امیدوں کو پورا کرنے کے لئے وقت ہے. وہاں ان نیک گنا سے ایک موقع پر اس کی اطاعت کے کاموں میں جس کی طرف سے ایک نے اس سے نزدیک اللہ تعالی کی تفویض کی ہے سوائے اس کے کہ نہیں ہے،. اللہ تعالی ہی تحائف، جو  اس نے جسے اللہ علیہ وسلم عطا طور پر سب سے خوبصورت چیزیں اس نے اپنے فضل و رحمت کی طرف سے چاہا حامل ہیں
پس حقیقی خوشی حاصل کرنے والے ایک ان نیک ماہ، دن اور گھنٹے کا فائدہ لیتا ہے اور ان میں اس کے ولی کے قریب کرتی ہے، عبادات میں سے ان میں مشروع ہے، کیا کر کر دینے والا ہے.
یوں شاید وہ ان مواقع کے بہت سے نعمتوں میں سے ایک کے ساتھ پوچھ گچھ کی جائے گی اور ایک امداد جیسے کہ اس دہکتی گرمی آگ اور کیا اس میں موجود، سے بچانے کے لئے کافی ہے اس کے ساتھ، اس کی طرف سے مدد کی جائے. [2]
رمضان تک پہنچنے کے قابل ہونے کی وجہ سے خود کو جو اس تک پہنچ جاتا ہے اور اس کی رات کے دوران نماز میں کھڑے ہیں اور اس دن کے وقت روزہ دار کی طرف سے، اس موقع پر طلوع ایک کو عطا کی جاتی ہے کہ ایک شاندار فضل ہے. اس میں، وہ ان کی حفاظت کرنے کے لئے واپس -،، اطاعت اسی کو یاد کرنے کے لئے اس کو نظر انداز کردیا سے اسی معصیت مطیع توبہ میں اس کی طرف رخ کرنے کے لئے اس سے دور باقی سے.
ایک مسلمان کو اس کے فضل سے ڈرو اور اس کی شدت کا تسلیم کرنا ہوگا. بے شک، بہت سے لوگ، روزہ رکھنے سے روک رہے ہیں وہ اس تک پہنچنے سے پہلے یا تو اس وجہ سے وہ مر جائیں، یا پھر وہ اسے رکھنے کی یا وہ مخالفت کرتے ہیں اور اس سے روگردانی کرتے ہیں کیونکہ قابل نہیں ہیں کیونکہ. اس طرح، روزے رکھتا ہے جو اس کے فضل کے لئے ان کے رب کی طرف الحمد دینا ہوگا اور خوشی اور خوشی ہے کہ اطاعت کو انجام کے لئے تمام مواقع سے باہر سال کی ایک شاندار وقت خیر مقدم کیا ہے کے ساتھ اس مہینے کا استقبال کرنا چاہئے. وہ اچھے اعمال کر میں دل کی گہرائیوں خود حاصل کرنا چاہئے. اس نے اس کے روزے اور رات کو نماز میں کھڑے ہونے کی صلاحیت کو عطا کرنے کا اللہ تعالی کو پکارتے چاہئے، اور وہ سنجیدگی، جوش و خروش، طاقت، اور توانائی کے اس مہینے میں کے ساتھ فراہم کرتا ہے. اور وہ سو سے زائد غافل سے اسے جگانے تاکہ وہ اچھے کے ان نیک اوقات کا فائدہ اٹھا سکتا ہے.
اسے تلاش کرنے کے بہت سے لوگ اس نیک موقع کی قدر نہیں جانتے کہ بدقسمتی کی بات ہے، نہ ہی وہ اسے مقدس سمجھتے. تو رمضان کے مہینے میں اب کوئی اطاعت، عبادت کے لئے ایک اہم وقت بن جاتا ہے،، قرات قرآن صدقہ دے اور اللہ تعالی کے ذکر بنانے. بلکہ، کچھ لوگوں کے لئے، یہ ان کے کھانے کی اشیاء اور مشروبات متنوع کرنے اور ماہ شروع ہونے سے پہلے کھانے کی مختلف اقسام کے تیار کرنے کے لئے ایک اہم وقت بن جاتا ہے. کچھ دوسرے لوگوں، اندرا اور مسلسل مکرر اجتماعات کے ایک ماہ کے طور پر سوائے رمضان پتہ نہیں دن کی طرف سے جبکہ سو کرو. یہ ہے کہ ان کے درمیان کچھ اس طرح باجماعت یا ان کے مناسب اوقات میں ان کو دعا نہیں، فرض نمازوں کے وقت ماضی کو سونے نقطہ کرنے کے لئے ہے. دیگر لوگوں، دنیاوی معاملات کے انعقاد نہ آخرت کے امور کے انعقاد کے لئے ایک اہم وقت کے طور پر کے لئے ایک اہم وقت کے طور پر سوائے رمضان نہیں جانتے. اس طرح، وہ خرید و فروخت اس میں دور پلگ کام،، اور وہ مارکیٹ کے علاقوں میں رہنے، اس کے نتیجے میں مساجد ترک. اور انہوں نے لوگوں کے ساتھ نماز ادا کرتے جب، وہ اس طرح کے ایک جلدی طریقے سے ایسا کرتے ہیں. وہ مارکیٹ مقامات میں ان کی خوشی مل کی وجہ یہ ہے. اس حد تک کہ (رمضان کا) تصورات اور خیالات کو تبدیل کر دیا گیا ہے.
کہتے تھے سلف میں سے کچھ: "بے شک اللہ تعالی، سب سے زیادہ ہائی، اس کی مخلوق کے لئے ایک مقابلہ، جس میں وہ اطاعت کر، اس کی رضا کے لئے ایک دوسرے کے ساتھ دوڑ سکتا ہے کہ رمضان کا مہینہ بنا دیا ہے. اس طرح، ایک گروپ پہلے آتا ہے اور تاکہ وہ ترقی کرنا اور دوسرے گروپ گزشتہ آتا ہے اور تاکہ وہ ناکام رہتے ہیں. "[3]
اس کے علاوہ، انفرادی نہیں جانتا ہے یہ شاید گزشتہ رمضان وہ کبھی وہ اسے مکمل کرتا ہے تو، اس کی زندگی میں نظر آئے گا ہے اگر. کتنے مردوں، عورتوں اور بچوں کو گزشتہ ایک سال سے ہمارے ساتھ روزہ رکھا ہے، اور ابھی تک اب وہ ان کے اچھے اعمال پر انحصار، زمین کی گہرائیوں میں دفن جھوٹ بولتے ہیں. اور اگر وہ اس سے کہیں زیادہ رمضان المبارک کے روزے رکھنے کی توقع کی. اسی طرح ہم بھی سب ان کے راستے کی پیروی کریں گے. لہذا، یہ عبادت کے لئے اس شاندار موقع پر خوشی منانے کا مسلمان پر ہے. اور اس نے اس کو ترک نہیں کرنا چاہئے، بلکہ اس کی بجائے ساتھ اسے کیا فائدہ اور کیا جائے گا اپنے آپ کو مصروف اس کا اثر رہنے کا سبب بنے گی. کسی اور کے لئے کیا یہ گنتی کے چند دنوں، پے در پے روزے رکھے ہیں اور جو بڑی تیزی سے ختم جس کے سوا ہے،.
اللہ تعالی کے اچھے اعمال کے حصول میں سب سے آگے ہیں جو ان لوگوں کے درمیان سے، آپ کے طور پر ہم کر سکتے ہیں، اس کے ساتھ ساتھ.
یہ حدیث احمد اور ایک-نسائی کی طرف سے رپورٹ کیا گیا ہے. مسند (کوئی. 7148) اور صحیح AT-الترغیب امام Albaanee کی اور Wat-والترھیب (1490) کے ساتھ ساتھ Tamaam القرآن Mannah (395) کے احمد شاکر کی چیکنگ دیکھو
یہ Lataa'if القرآن Ma'aarif میں ابن رجب کے الفاظ ہیں: PG. 8
ابن رجب کی Lataa'if القرآن Ma'aarif: صفحہ 246
اس کا اشتراک، Baarakallaah Feekum: [ "اچھی چیز کی طرف رہنمائی کرتا ہے جو ایک اس غصہ اور حسرت کے اس کی طرح ایک اجر ہے" - صحیح مسلم vol.3 کی، no.4665] [یہ ویب سائٹ مصنفین / اشاعت کے کاپی رائٹس کی حفاظت کرتا ہے. مواد مواد کے مالکان سے انترنہیت / واضح اجازت کے ساتھ اس ویب سائٹ پر پوسٹ کیا گیا ہے. آپ کو کسی بھی کاپی رائٹ کے خلاف ورزیوں کو تلاش ہے تو ایک ہی مطلع کر دینا.]

Share this post

Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    Total Topics
    Total Posts