News Ticker
  • “We cannot expect people to have respect for law and order until we teach respect to those we have entrusted to enforce those laws.” ― Hunter S. Thompson
  • “And I can fight only for something that I love
  • love only what I respect
  • and respect only what I at least know.” ― Adolf Hitler
  •  Click Here To Watch Latest Movie Jumanji (2017) 

Welcome to Funday Urdu Forum

Guest Image

Welcome to Funday Urdu Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Funday Urdu Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

  • Radio

    Live Radio

waqas dar

Gaye dino ka suragh le ker kidher se aya kidher gaya wo

1 post in this topic

گئے دِنوں کا سراغ لے کر ، کِدھر سے آیا کِدھر گیا وہ 
عجیب مانوس اجنبی تھا ، مجھے تو حیران کر گیا وہ 

بس ایک موتی سی چھب دِکھا کر 
بس ایک میٹھی سی دُھن سُنا کر 
ستارہء شام بن کے آیا ، برنگِ خُوابِ سحر گیا وہ 

خوشی کی رُت ہو کہ غم کا موسم 
نظر اُسے ڈُھونڈتی ہے ہر دٙم 
وُہ بُوئے گل تھا کہ نغمہء جاں ، مرے تو دل میں اُتر گیا وہ 

نہ اب وُہ یادوں کا چڑھتا دریا 
نہ فرصتوں کی اُداس برکھا 
یُونہی ذرا سی کسک ہے دِل میں ، جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ 

کچھ اب سنبھلنے لگی ہے جاں بھی 
بدل چلا دٙورِ آسماں بھی 
جو رات بھاری تھی ٹل گئی ہے ، جو دِن کڑا تھا گزر گیا وہ

بس ایک منزل ہے بوالہوس کی 
ہزار راستے ہیں اہلِ دل کے 
یہی تو ہے فرق مجھ میں ، اس میں گزر گیا میں ، ٹھہر گیا وہ 

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں 
گئے دِنوں کو بُلا رہا ہوں 
جو قافلہ میرا ہمسفر تھا ، مثالِ گردِ سفر گیا وہ 

میرا تو خون ہو گیا ہے پانی 
سِتمگروں کی پلک نہ بھیگی 
جو نالہ اُٹھا تھا رات دِل سے ، نہ جانے کیوں بے اٙثر گیا وہ 

وہ میکدے کو جگانے والا 
وہ رات کی نیند اُڑانے والا 
یہ آج کیا اُس کے جی میں آئی ، کہ شام ہوتے ہی گھر گیا وہ 

وہ ہجر کی رات کا ستارہ 
وہ ہم نفس ہم سُخن ہمارا 
سدا رہے اُس کا نام پیارا ، سُنا ہے کل رات مٙر گیا وہ 

وہ جس کے شانے پہ ہاتھ رکھ کر 
سفر کیا تُو نے منزلوں کا 
تری گلی سے نہ جانے کیوں آج ، سٙر جُھکائے گزر گیا وہ 

وہ رات کا بے نوا مسافر 
وہ تیرا شاعر ، وہ تیرا ناصر 
تیری گلی تک تو ہم نے دیکھا تھا ، پھر نہ جانے کِدھر گیا وہ 
*****
*****
شاعر : ناصر کاظمی 
(دیوان)

 

dewan.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,772
    Total Topics
    7,776
    Total Posts