News Ticker
  • “We cannot expect people to have respect for law and order until we teach respect to those we have entrusted to enforce those laws.” ― Hunter S. Thompson
  • “And I can fight only for something that I love
  • love only what I respect
  • and respect only what I at least know.” ― Adolf Hitler
  •  Click Here To Watch Latest Movie Jumanji (2017) 

Welcome to Funday Urdu Forum

Guest Image

Welcome to Funday Urdu Forum, like most online communities you must register to view or post in our community, but don't worry this is a simple free process that requires minimal information for you to signup. Be apart of Funday Urdu Forum by signing in or creating an account via default Sign up page or social links such as: Facebook, Twitter or Google.

  • Start new topics and reply to others
  • Subscribe to topics and forums to get email updates
  • Get your own profile page and make new friends
  • Send personal messages to other members.
  • Upload or Download IPS Community files such as:  Applications, Plugins etc.
  • Upload or Download your Favorite Books, Novels in PDF format. 

  • Radio

    Live Radio

Zarnish Ali

نہ میں خواب گر نہ میں کوزہ گر

Rate this topic

2 posts in this topic

نہ میں خواب گر نہ میں کوزہ گر
میری منزلیں کہیں اور ھیں
مجھے اس جہاں کی تلاش ھے
جہاں ھجر روح وصال ھے
ابھی در وہ مجھ پہ کھلا نہیں
ابھی آگ میں ھوں میں جل رھا
ابھی اسکا عرفاں ھوا نہیں
مجھے رقص رومی ملا نہیں
ابھی ساز روح بجا نہیں
رہ سرمدی کا خیال ھے
میں ازل سے جسکا ھوں منتظر
مجھے اس ابد کی تلاش ھے
نہ میں گیت ھوں نہ میں خواب ھوں
نہ سوال ھوں نہ جواب ھوں
نہ عذاب ھوں نہ ثواب ھوں
میں مکاں میں ھوں اک لا مکاں
میں ھوں بے نشان کا اک نشاں
میری اک لگن میری زندگی
میری زندگی میری بندگی
میرے من میں ایک ھی آگ ھے
مجھے رقص رومی کی لاگ ھے
میرا مست کتنا یہ راگ ھے
کہ بلند میرا یہ بھاگ ھے
نہ میں خواب گر، نہ میں کوزہ گر

21761578_1419888091457670_1641503306349034693_n.jpg

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Bohat Awalaa :)  :clap:   

 

آج پھر تم نے مرے دل میں جگایا ہے وہ خواب
میں نے جس خواب کو رو رو کے سُلایا تھا ابھی

کیا ملا تم کو انہیں پھر سے فروزاں کر کے
میں نے دہکے ہوئے شعلوں کو بجُھایا تھا ابھی

میں نے کیا کچھ نہیں سوچا تھا مری جانِ غزل
کہ میں اس شعر کو چاہوں گا، اسے پوجوں گا

اپنی ترسی ہوئی آغوش میں تارے بھر کے
قصرِ مہ تاب تو کیا عرش کو بھی چُھو لوں گا

تم نے تب وقت کو ہر زخم کا مرہم سمجھا
اور ناسور مرے دل میں چمکتے بھی رہے

لذّتِ تشنہ لبی بھی مجھے شیشوں نے نہ دی
محفلِ عام میں تا دیر چھلکتے بھی رہے

اور اب جب نہ کوئی درد نہ حسرت نہ کسک
اک لرزتی ہوئی لو کو تہِ داماں نہ کرو!

تیرگی اور بھی بڑھ جائے گی ویرانے کی
میری اُجڑی ہوئی دنیا میں چراغاں نہ کرو

( مصطفیٰ زیدی)

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,769
    Total Topics
    7,772
    Total Posts