Jump to content

Zarnish Ali

V.I.P Member
  • Content count

    2,142
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    141

Profile Song

Zarnish Ali last won the day on May 21

Zarnish Ali had the most liked content!

Community Reputation

7,965 VIP Hero

About Zarnish Ali

  • Rank
    Poetry Moderator
  • Birthday 08/10/1991

Profile Information

  • Gender
    Female
  • Location
    Lahore Pakistan

Contact Methods

Recent Profile Visitors

55,019 profile views
  1. 🌴سلسلہ فھم قرآن🌴

    〰‌〰〰〰 سورۃ النساء 〰〰〰〰

    🍀بسم اللہ الرحمن الرحیم🍀

    سورہ النسآء آیت نمبر: 11

    یُوۡصِیۡکُمُ اللّٰہُ فِیۡۤ  اَوۡلَادِکُمۡ ٭ لِلذَّکَرِ مِثۡلُ حَظِّ الۡاُنۡثَیَیۡنِ ۚ فَاِنۡ کُنَّ نِسَآءً فَوۡقَ اثۡنَتَیۡنِ فَلَہُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَکَ ۚ وَ اِنۡ کَانَتۡ وَاحِدَۃً  فَلَہَا النِّصۡفُ ؕ وَ لِاَبَوَیۡہِ لِکُلِّ وَاحِدٍ مِّنۡہُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَکَ اِنۡ کَانَ لَہٗ  وَلَدٌ ۚ فَاِنۡ لَّمۡ  یَکُنۡ لَّہٗ وَلَدٌ وَّ وَرِثَہٗۤ اَبَوٰہُ فَلِاُمِّہِ الثُّلُثُ ۚ فَاِنۡ کَانَ لَہٗۤ  اِخۡوَۃٌ فَلِاُمِّہِ السُّدُسُ مِنۡۢ بَعۡدِ وَصِیَّۃٍ یُّوۡصِیۡ بِہَاۤ اَوۡ دَیۡنٍ ؕ اٰبَآؤُکُمۡ وَ اَبۡنَآؤُکُمۡ لَا تَدۡرُوۡنَ اَیُّہُمۡ اَقۡرَبُ  لَکُمۡ نَفۡعًا ؕ فَرِیۡضَۃً مِّنَ  اللّٰہِ ؕ اِنَّ اللّٰہَ کَانَ عَلِیۡمًا حَکِیۡمًا ﴿۱۱﴾

    ترجمہ:

    اللہ تمہاری اولاد کے بارے میں تم کو حکم دیتا ہے کہ : مرد کا حصہ دو عورتوں کے برابر ہے۔ (١) اور اگر (صرف) عورتیں ہی ہوں، دو یا دو سے زیادہ، تو مرنے والے نے جو کچھ چھوڑا ہو، انہیں اس کا دو تہائی حصہ ملے گا۔ اور اگر صرف ایک عورت ہو تو اسے (ترکے کا) آدھا حصہ ملے گا۔ اور مرنے والے کے والدین میں سے ہر ایک کو ترکے کا چھٹا حصہ ملے گا، بشرطیکہ مرنے والے کی کوئی اولاد ہو، اور اگر اس کی کوئی اولاد نہ ہو اور اس کے والدین ہی اس کے وارث ہوں تو اس کی ماں تہائی حصے کی حق دار ہے۔ ہاں اگر اس کے کئی بھائی ہوں تو اس کی ماں کو چھٹا حصہ دیا جائے گا (اور یہ ساری تقسیم) اس وصیت پر عمل کرنے کے بعد ہوگی جو مرنے والے نے کی ہو، یا اگر اس کے ذمے کوئی قرض ہے تو اس کی ادائیگی کے بعد (۲) تمہیں اس بات کا ٹھیک ٹھیک علم نہیں ہے کہ تمہارے باپ بیٹوں میں سے کون فائدہ پہنچانے کے لحاظ سے تم سے زیادہ قریب ہے ؟ یہ تو اللہ کے مقرر کیے ہوئے حصے ہیں، (۳) یقین رکھو کہ اللہ علم کا بھی مالک ہے، حکمت کا بھی مالک۔

    تفسیر:

    ⒈ : آیات 11، 12 میں مختلف رشتہ داروں کے لیے میراث کے حصے بیان فرمائے گئے ہیں۔ جن رشتہ داروں کے حصے ان آیات میں مقرر فرما دئیے گئے ہیں ان کو ” ذوی الفروض “ کہا جاتا ہے۔ آنحضرت (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے وضاحت فرمائی ہے کہ ان حصوں کی تقسیم کے بعد جو مال بچ جائے، وہ مرنے والے کے ان قریب ترین مذکر افراد میں تقسیم ہوگا جن کے حصے ان آیتوں میں متعین نہیں کیے گئے، جن کو ” عصبات “ کہا جاتا ہے۔ مثلا بیٹے اور اگرچہ بیٹیاں براہ راستہ عصبات میں شامل نہیں ہیں، لیکن بیٹوں کے ساتھ مل کر بیٹیاں بھی عصبات میں شامل ہوجاتی ہیں۔ اس صورت میں یہ قاعدہ اس آیت نے مقرر فرمایا ہے کہ ایک بیٹے کو دو بیٹیوں کے برابر حصہ ملے گا۔ یہی حکم اس صورت میں بھی ہے جب مرنے والے کی اولاد نہ ہو اور بہن بھائی ہوں تو بھائی کو بہن سے دگنا حصہ دیا جائے گا۔

    ⒉ : یہ قاعدہ ان آیات میں بار بار دہرایا گیا ہے کہ میراث کی تقسیم ہمیشہ میت کے قرضوں کی ادائیگی اور اس کی وصیت پر عمل کرنے کے بعد ہوگی، یعنی اگر مرنے والے کے ذمے کچھ قرض ہو تو اس کے ترکے سے سب سے پہلے اس کے قرضے ادا کیے جائیں گے۔ اس کے بعد اگر اس نے کوئی وصیت کی ہو کہ فلاں شخص کو جو وارث نہیں ہے، میرے ترکے سے اتنا دیا جائے تو ایک تہائی ترکے کی حد تک اس پر عمل کیا جائے گا اس کے بعد میراث وارثوں میں تقسیم ہوگی۔

    ⒊ : یہ تنبیہ اس بنا پر فرمائی گئی ہے کہ کوئی شخص یہ سوچ سکتا تھا کہ فلاں وارث کو زیادہ حصہ ملتا تو اچھا ہوتا، یا فلاں کو کم ملنا مناسب تھا۔ اللہ تعالیٰ نے فرمادیا کہ تمہیں مصلحت کا ٹھیک ٹھیک علم نہیں ہے۔ اللہ تعالیٰ نے جس کا جو حصہ مقرر فرما دیا ہے، وہی مناسب ہے۔

    از آسان ترجمہ قرآن
    مفتی محمد تقی عثمانی صاحب دامت برکاتہ

    🔴پڑھیں📖
    🔴سمجھیں
    🔴عمل کریں
    🔴آگے بھیجیں

    〰〰〰〰〰〰〰〰〰〰〰

  2. Zarnish Ali

    جنت میں داخل کر دے

    حضرت عائشہ صدیقہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے : ’ایک صحابی حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہو کر عرض گزار ہوئے کہ یارسول اﷲ! آپ مجھے میری جان اور میرے والدین سے بھی زیادہ محبوب ہیں۔ جب میں اپنے گھر میں ہوتا ہوں تو آپ کو ہی یاد کرتا رہتا ہوں اور اس وقت تک چین نہیں آتا جب تک حاضر ہو کر آپ کی زیارت نہ کر لوں۔ لیکن جب مجھے اپنی موت اور آپ کے وصال مبارک کا خیال آتا ہے تو سوچتا ہوں کہ آپ تو جنت میں انبیاء کرام کے ساتھ بلند ترین مقام پر جلوہ افروز ہوں گے اور جب میں جنت میں داخل ہوں گا تو خدشہ ہے کہ کہیں آپ کی زیارت سے محروم نہ ہو جاؤں۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اس صحابی کے جواب میں سکوت فرمایا، اس اثناء میں حضرت جبرئیل علیہ السلام تشریف لائے اور یہ آیت نازل ہوئی : ’’اور جو کوئی اللہ اور رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت کرے تو یہی لوگ (روزِ قیامت) اُن (ہستیوں) کے ساتھ ہوں گے جن پر اللہ نے (خاص) انعام فرمایا ہے۔ ‘‘ سيوطي، الدر المنثور، 2 : 2182 ابن کثير، تفسير القرآن العظيم، 1 : 3523 حوریہ
  3. @waqas dar @Hareem Naz @Urooj Butt @Fareeha Kanwal @Jannat malik
  4. سیرت النبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم.. قسط 1 آج سے سیرت النبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا مبارک سلسلہ شروع کیا جا رھا ھے لیکن آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سیرت پاک کے تذکرہ سے پہلے بہت ضروری ھے کہ آپ کو سرزمین عرب اور عرب قوم اور اس دور کے عمومی حالات سے روشناس کرایا جاۓ تاکہ آپ زیادہ بہتر طریقے سے سمجھ سکیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی پیدائش کے وقت عرب اور دنیا کے حالات کیسے تھے.. ملک عرب ایک جزیرہ نما ھے جس کے جنوب میں بحیرہ عرب , مشرق میں خلیج فارس و بحیرہ عمان , مغرب میں بحیرہ قلزم ھے.. تین اطراف سے پانی میں گھرے اس ملک کے شمال میں شام کا ملک واقع ھے.. مجموعی طور پر اس ملک کا اکثر حصہ ریگستانوں اور غیر آباد بے آب و گیاہ وادیوں پر مشتمل ھے جبکہ چند علاقے اپنی سرسبزی اور شادابی کے لیے بھی مشھور ھیں.. طبعی لحاظ سے اس ملک کے پانچ حصے ھیں.. یمن : یمن جزیرہ عرب کا سب سے زرخیز علاقہ رھا ھے جس کو پرامن ھونے کی وجہ سے یہ نام دیا گیا.. آب و ھوا معتدل ھے اور اسکے پہاڑوں کے درمیان وسیع و شاداب وادیاں ھیں جہاں پھل و سبزیاں بکثرت پیدا ھوتے ھیں.. قوم "سبا" کا مسکن عرب کا یہی علاقہ تھا جس نے آبپاشی کے لیے بہت سے بند (ڈیم) بناۓ جن میں "مارب" نام کا مشھور بند بھی تھا.. اس قوم کی نافرمانی کی وجہ سے جب ان پر عذاب آیا تو یہی بند ٹوٹ گیا تھا اور ایک عظیم سیلاب آیا جس کی وجہ سے قوم سبا عرب کے طول و عرض میں منتشر ھوگئی.. حجاز : یمن کے شمال میں حجاز کا علاقہ واقغ ھے.. حجاز ملک عرب کا وہ حصہ ھے جسے اللہ نے نور ھدائت کی شمع فروزاں کرنے کے لیے منتخب کیا.. اس خطہ کا مرکزی شھر مکہ مکرمہ ھے جو بے آب و گیاہ وادیوں اور پہاڑوں پر مشتمل ایک ریگستانی علاقہ ھے.. حجاز کا دوسرا اھم شھر یثرب ھے جو بعد میں مدینۃ النبی کہلایا جبکہ مکہ کے مشرق میں طائف کا شھر ھے جو اپنے سرسبز اور لہلہاتے کھیتوں اور سایہ دار نخلستانوں اور مختلف پھلوں کی کثرت کی وجہ عرب کے ریگستان میں جنت ارضی کی مثل ھے.. حجاز میں بدر , احد , بیر معونہ , حدیبیہ اور خیبر کی وادیاں بھی قابل ذکر ھیں.. نجد : ملک عرب کا ایک اھم حصہ نجد ھے جو حجاز کے مشرق میں ھے اور جہاں آج کل سعودی عرب کا دارالحکومت "الریاض" واقع ھے.. حضرموت : یہ یمن کے مشرق میں ساحلی علاقہ ھے.. بظاھر ویران علاقہ ھے.. پرانے زمانے میں یہاں "ظفار" اور "شیبان" نامی دو شھر تھے.. مشرقی ساحلی علاقے (عرب امارات) : ان میں عمان ' الاحساء اور بحرین کے علاقے شامل ھیں.. یہاں سے پرانے زمانے میں سمندر سے موتی نکالے جاتے تھے جبکہ آج کل یہ علاقہ تیل کی دولت سے مالا مال ھے.. وادی سیناء : حجاز کے شمال مشرق میں خلیج سویز اور خلیج ایلہ کے درمیان وادی سیناء کا علاقہ ھے جہاں قوم موسی' علیہ السلام چالیس سال تک صحرانوردی کرتی رھی.. طور سیناء بھی یہیں واقع ھے جہاں حضرت موسی' علیہ السلام کو تورات کی تختیاں دی گئیں.. نوٹ : ایک بات ذھن میں رکھیں کہ اصل ملک عرب میں آج کے سعودی عرب , یمن , بحرین , عمان کا علاقہ شامل تھا جبکہ شام , عراق اور مصر جیسے ممالک بعد میں فتح ھوۓ اور عربوں کی ایک کثیر تعداد وھاں نقل مکانی کرکے آباد ھوئی اور نتیجتہ" یہ ملک بھی عربی رنگ میں ڈھل گئے لیکن اصل عرب علاقہ وھی ھے جو موجودہ سعودیہ , بحرین , عمان اور یمن کے علاقہ پر مشتمل ھے اور اس جزیرہ نما کی شکل نقشہ میں واضح طور دیکھی جاسکتی ھے.. عرب کو "عرب" کا نام کیوں دیا گیا اس کے متعلق دو آراء ھیں.. ایک راۓ کے مطابق عرب کے لفظی معنی "فصاحت اور زبان آوری" کے ھیں.. عربی لوگ فصاحت و بلاغت کے اعتبار سے دیگر اقوام کو اپنا ھم پایہ اور ھم پلہ نہیں سمجھتے تھے اس لیے اپنے آپ کو عرب (فصیح البیان) اور باقی دنیا کو عجم (گونگا) کہتے تھے.. دوسری راۓ کے مطابق لفظ عرب "عربہ" سے نکلا ھے جس کے معنی صحرا اور ریگستان کے ھیں.. چونکہ اس ملک کا بیشتر حصہ دشت و صحرا پر مشتمل ھے اس لیے سارے ملک کو عرب کہا جانے لگا.. -->جاری ھے.
  5. Zarnish Ali

    Husn e Zun [ ALLAH RAHM WALA HY ]

    ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺟﻮ ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﻗﺎﺻﺮ ﮨﮯ، ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺟﻮ ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮧ ﻗﺎﺩﺭ ﮨﮯ .. ﭘﻬﺮ ﺑﻬﯽ ﮨﻢ " ﻗﺎﺩﺭ " ﮐﻮ ﭼﻬﻮﮌ ﮐﺮ " ﻗﺎﺻﺮ " ﺳﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺑﯿﭩﻬﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ
  6. 🌷🌸🌷🌸🌷🌸🌷

    علامہ شنقیطی رحمہ اللہ سے پوچھا گیا: عبادت کے موسموں کا استقبال کیسے کریں؟

    فرمایا:
    استقبال کے لیے بہترین چیز استغفار کی کثرت ہے. اس لیے کہ گناہوں کی وجہ سے بندہ عبادت و طاعات کی توفیق سے محروم ہوجاتا ہے۔

    جو بندہ استغفار کو لازم پکڑ لیتا ہے (استغفار کی کثرت کرتا ہے) تو:
    ❶ وہ گناہوں سے پاک صاف ہوجاتا ہے۔
    ❷ اگر وہ کمزور ہے تو طاقتور بن جاتا ہے۔
    ❸ بیمار ہے تو مکمل شفایاب ہوجاتا ہے۔
    ❹ کسی مصیبت میں مبتلا ہے تو خلاصی پالیتا ہے۔
    ❺ اگر حیران و سرگرداں ہے تو ہدایت پالیتا ہے۔
    ❻ بے چین ہے تو قرار نصیب ہوجاتا ہے۔
    ❼ رسول اللہﷺ کے بعد ہمارے لیے سب سے بڑی امان استغفار ہی ہے۔

    1. Hareem Naz

      Hareem Naz

      very nice sharing 

      jazakAllah

  7. Zarnish Ali

    ’اللہ’ جانتا ہے

    ‏"وہی تو ہے جو تم پر رحمت بھیجتا ہے اور اسکے فرشتے بھی تاکہ تم کو اندھیروں سے نکال کر روشنی کی طرف لے جائے اور خدا مومنوں پر مہربان ہے۔" 33:43 -القرآن

  8. حدود طائر سدرہ حضور جانتے ہیں
    کہاں ہے عرش معلیٰ حضور جانتے ہیں
    بروز حشر شفاعت کریں گے چن چن کر
    کہ ہر غلام کا چہرہ حضور جانتے ہیں
    صلی الله علیہ وسلم

    80e0a3f5c41b6f3-a-nw-p.jpeg

  9. 💞💞اللَّهُمَّ صَلِّی عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ، 💞💞

    💞💞اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ، وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ💞💞


    💞💞اللَّهُمَّ صَلّی عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ، 💞💞

    💞💞اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ، وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ💞💞

    3babcafb1d9172d-a-nw-p.jpeg

  10.  

    وَأۡمُرۡ أَهۡلَكَ بِٱلصَّلَوٰةِ وَٱصۡطَبِرۡ عَلَيۡہَا‌   ۖ   لَا نَسۡـَٔلُكَ رِزۡقًا‌   ۖ   نَّحۡنُ نَرۡزُقُكَ   ۗ   وَٱلۡعَـٰقِبَةُ لِلتَّقۡوَىٰ

    اور اپنے گھر والوں کو نماز کا حکم دے اور خود اس پر ثابت رہ، کچھ ہم تجھ سے روزی نہیں مانگتے ہم تجھے روزی دیں گے اور انجام کا بھلا پرہیزگاری کے لیے،

    ( #سورتہ-طہٰ-32 )

    90799381bc98824-a-nw-p.jpeg

  11.  


      ❁
    ┐✭  ﺑِﺴْــــــــــــــــﻢِﷲِﺍﻟﺮَّحْمٰنِﺍلرَّﺣِﻴﻢ ✭┌

          ╭•◆FAZAILE  RAMZAN◆•╮
          ❁❁❁❁❁❁❁❁❁❁❁❁❁❁

    ▓▔▔▔▔▔▔▔▔▔▔▔▔▔▔▓                                
             ~ ⊙ PART-08 ⊙ ~
                 ﹏﹏﹏﹏﹏﹏﹏

    ┌✭• Hazrat Hasan Basri rahmatullahi alaihi ki yeh Riwayat nakal Karte hai ke Huzoor Sallallahu Alaihi Wasallam ne irshaad farmaya ke,

    Allah Ta’ala Ramzan-ul-Mubarak ki har raat me 6 lakh logon ko jahannam se aazaad karte hain aur jab aakhri raat hoti hai to guzishta azaad shuda logon ke baqadr ( ek hi raat me ) azaad kiye jate hain.

    Mazeed Fazail Hazrat sahal bin sa’ad
    RaziAllahu Anhu farmate hain ke Huzoor Sallallahu Alaihi Wasallam farmaya,

    ”roza daar jannat me ek makhsoos darwaze se dakhil honge us darwaze ka naam RAYYAN hai jab roze dar dakhil ho chuken ge to yeh darwazah band kar diya jaye ga phir koi shakhs is darwaze se dakhil na ho sake ga.

    ⚀•RєԲ:➻┐
        ↳ [ Bukhari, Muslim.  ]
    ▦══─────────────══▦
    ↳ Next -09 in sha Allah ta’ala,


    ╔┅┅┐
    ◉      ⚀⊙:➻┐
                   📃→ pαdhє
           📿→ αmαl kαrє
    👥→ duѕrσ tαk pαhσchαчє

  12. Zarnish Ali

    Hadees Mubarik

  13. ﷲ کے سوا کوئی لائق عبادت نہیں وہ عظمت والا حلم والا ہے  ۱؎  اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں جو بڑے عرش کا رب ہے اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں جو آسمانوں کا رب اور زمین کا ر ب اور کرم والے عرش کا رب ہے

  14.  
     
    ‏اگر کبھی فتوی دینے کا مجھ کو بھی اذن ملتا !۔۔۔۔۔۔۔
    تو میں ! انسان کا رونا انسان کے آگے___حرام لکھتا
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×