Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Momina Haseeb

Members
  • Content count

    91
  • Joined

  • Last visited

Community Reputation

345 Marvelous

About Momina Haseeb

  • Rank
    Ice cream Time

Profile Information

  • Gender
    Female
  • Location
    Rawalpindi, Pakistan

Recent Profile Visitors

4,736 profile views
  1. پرکھنا مت ، پرکھنے میں کوئی اپنا نہیں رہتا 
    کسی بھی آئینے میں ، دیر تک چہرہ نہیں رہتا 
    محبت میں تو‌ خوشبو ہے ، ہمیشہ ساتھ چلتی ہے 
    کوئی انسان تنہائی میں بھی ، تنہا نہیں رہتا

  2. ﮐﮭﺒﯽ ﮐﮭﺒﯽ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﻣﺬﺍﻕ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ...

  3. Zindagi hum sey tery naaz na uthaaey gaey

    Saans leney ki faqat rasm adaa kartey rahey.

  4. Mahol ki tapash ka takaza hey bas yehi

    Saaey ko dakh youn na tanaver shajar ko dekh

    Haan yeh zaroori shart hey manzil key wastey

    Raah e safar na dekh shareek e safar ko dakh.

  5. کچھ وصال آخر تک ، معتبر نہیں ھوتے. ساتھ چلنے والے بھی ، ھمسفر نہیں ھوتے. تو ھماری قربت سے کتنا ھی گریزاں ھو. ھم تیرے ٹھکانے سے بے خبر نہیں ھوتے. کچھ کہے بنا اکثر ، بولتی ھیں آنکھیں بھی. گفتگو کے سب لمحے، حرف گر نہیں ھوتے. کتنا خوف ھوتا ھے ، شام کے اندھیرے میں. پوچھ ان پرندوں سے ، جن کے گھر نہیں ھوتے. عمر بھر نہیں ملتا ، واپسی کا دروازہ. آگہی کے زنداں میں ، بام و در نہیں ھوتے
  6. سچ تو یہ ہے کہ جو اللہ کو واقعی اپنا آپ سونپ دے، اللہ کیسے اسے چھوڑ سکتا ہے؟؟؟ اللہ تو انکو بھی نہیں چھوڑتا جو اس سے دور بھاگتے پھرتے ہیں- بہانے دے دے کر انہیں بلاتا ہے- پھر جو سچ مچ سچے دل، روح، جسم و جان سے اپنا آپ سونپ دے تو اسے تو اللہ اور، اور، اور محبت سے تھام لیتا ہے، کیونکہ ایک حدیث قدسی کے مطابق اللہ پاک فرماتے ہیں کہ: "میں اپنے بندے کے گمان کے ساتھ ہوں- اور جب وہ مجھے اپنے دل میں یاد کرتا ہے تو میں بھی اسے اپنے دل میں یاد کرتا ہہ- اور جب وہ مجھے مجلس میں یاد کرتا ہے تو اسے اس سے بہتر فرشتوں کی مجلس میں یاد کرتا ہوں- اور اگر وہ مجھ سے ایک بالشت قریب آتا ہے تو میں اس سے ایک ہاتھ قریب ہو جاتا ہوں، اور اگر وہ مجھ سے ایک ہاتھ قریب آتا ہے تو میں اس سے دو ہاتھ قریب ہو جاتا ہوں- اور اگر وہ میری طرف چل کر آتا ہے تو میں اس کے پاس دوڑ کر جاتا ہوں-" (بخاری و مسلم) سو اللہ ہم سے دور نہیں، ہم اللہ سے دور ہیں- یہ ہم ہیں جو اپنی ناشکری، بے صبری، جلد بازی، نفس و انا کے حجابات کے دروں اللہ سے غافل ہیں، اللہ تو ہم سے قطعی غافل نہیں- اللہ پاک ہمیں توفیق دیں کہ ہم اسکی رحمتوں، اسکی محبتوں کو اپنی زندگی میں محسوس کر سکیں اور اسکے لئے اسکا شکر گزار ہو سکیں- اللھم آمین!
  7. یکطرفہ محبت کا نقصان بہت ہے دل ٹوٹ جانے کا امکان بہت ہے ہم ٹوٹکر چاہیں جسےاسےخبر نہیں اس امر پر حیران دل نادان بہت ہے فریادکرتی ہے یہ میری تنہائی بس جاوٴ اس دل میں یہ ویران بہت ہے ہم کہاں کسی کے عیب سے پردہ اٹھاہیں گے چننے کو تو اپنا گریبان ہی بہت ہے
  8. When u realize u want to spend the rest of your life with somebody , you want the rest of your life to start as soon as possible ?

  9. ایک پہاڑی علاقے میں ایک بزرگ اپنے نوجوان پوتے کے ساتھ رہتے تھے۔ وہ ہر روز صبح سویرے قرآن کی تلاوت کیا کرتے۔ پوتا بھی ہمیشہ ان جیسا بننے کی کوشش کرتا۔ ایک دن پوتا کہنے لگا ’’دادا، میں بھی آپ کی طرح قرآن پاک پڑھنے کی کوشش کرتا ہوں، لیکن مجھے سمجھ نہیں آتی۔ اور جو سمجھ آئے، جیسے ہی قرآن بند کروں، بھول جاتا ہوں۔ ایسے میں قرآن پڑھنے سے ہم کیا سیکھتے ہیں؟‘‘ دادا نے خاموشی سے کوئلوں والی ٹوکری میں سے کوئلے نکال انگیٹھی میں ڈالے۔ پھر ٹوکری پوتے کو دے کر کہا ’’جا پہاڑ کے نیچے بہتی ندی سے مجھے پانی کی ٹوکری بھر کر لا دے۔‘‘ لڑکے نے دادا کی بات پر عمل کیا۔ لیکن واپس پہنچنے تک سارا پانی ٹوکری کے سوراخوں میں سے بہ گیا۔ دادا مسکرائے اور کہا ’’تم اس دفعہ اور زیادہ تیز قدم اٹھانا۔‘‘ یہ کہہ کر پوتے کو واپس بھیج دیا۔ لیکن اس بار وہ بالٹی میں پانی لے آیا۔ دادا نے کہا ’’مجھے بالٹی نہیں ٹوکری میں پانی چاہیے۔ تم ٹھیک سے کوشش نہیں کر رہے۔‘‘ اسے پھر نیچے بھیج کر وہ دروازے میں کھڑے دیکھنے لگے کہ پوتا کتنی سعی کرتا ہے۔ لڑکے کو علم تھا کہ سوراخوں بھری ٹوکری میں پانی بھرنا ناممکن ہے۔ بہرحال دادا کو دکھانے کے لیے ٹوکری پانی سے بھری اور انتہائی سرعت سے واپس دوڑپڑا۔ لیکن پہنچنے تک ٹوکری میں سے پھر پانی بہ چکا تھا اور وہ خالی تھی۔ لڑکے نے کہا ’’دیکھا دادا جان، اس میں پانی بھرنا بے سود ہے۔‘‘ دادا کہنے لگے ’’بیٹا! ٹوکری کی طرف دیکھو۔‘‘ اب نوجوان کو پہلی بار احساس ہوا کہ ٹوکری پہلے سے بہت مختلف لگ رہی تھی۔ وہ پرانی اور گندی ٹوکری اندر باہر سے صاف ستھری ہو چکی تھی۔ دادا نے کہا ’’بیٹا! ذرا دیکھو، کوئلوں سے سیاہ ہوئی ٹوکری بار بار پانی کے دھونے سے منزہ ہو گئی۔ اسی طرح جب ہم تلاوت قرآن کریں، تو چاہے اس کا ایک لفظ بھی نہ سمجھ پائیں، تلاوت ہمیں اندر اور باہر سے ایسے ہی پاک صاف کر دیتی ہے۔ یوں اللہ تعالیٰ ہماری زندگی بدل دیتا ہے۔‘‘ قرآن پڑھا کریں۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم بھی سب وہ ٹوکریاں ھے جس میں سوراح ھے،،، عربی ہم میں کس کو آتی ھے؟ 100 میں سے 30٪ لوگوں کو عربی آتی ھے، باترجمہ سمجھ لیتے ھے، کوشیش کریں قرآن پڑھا کریں،،،
  10. Momina Haseeb

    poetry Mein ab bikhar jaun tu behtar ha

    Thanks @Zarnish Ali & @Anabiya Haseeb
  11. ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎلی ﻋﻨﮧ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﺧﻼﻓﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ گانا گانے والا رہتا ﺗﮭﺎ ﺟﻮ گانے ﮔﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ. ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ 80 ﺳﺎﻝ ﮬﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ اس کی ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮯ اس کا ﺳﺎﺗﮫ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ. ﺍﺏ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮔﺎﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺘﺎ ﺗﮭﺎ. ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻓﻘﺮ ﻭ ﻓﺎﻗﮯ ﻧﮯ ﮈﯾﺮﮮ ﮈﺍﻝ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﺎ ﺳﺎﺭﺍ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺑِﮏ ﮔﯿﺎ. ﺁﺧﺮ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﭘﮑﺎﺭنے لگا... ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ! ﺍﺏ ﺗﻮ ﺗﺠﮭﮯ ﭘﮑﺎﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ۔۔۔۔۔ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﻮﮎ ﮬﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮬﯿﮟ ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ! ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺘﺎ ﺗﻮ ﺗﻮ میری ﺳﻦ..! ﺗﻮ ﺗﻮ میری ﺳﻦ..! ﻣﯿﮟ ﺗﻨﮓ ﺩﺳﺖ ﮨﻮﮞ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﻮﺍ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺎﻝ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻭﺍﻗﻒ ﻧﮩﯿﮟ.. ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﻮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺁﻭﺍﺯ ﺁﺋﯽ اے ﻋﻤﺮ ! ﺍﭨﮭﻮ..! ﻣﯿﺮﺍ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﭘﮑﺎﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ. اس کی مدد کو پہنچو.. ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ نے جب یہ سنا تو ﻧﻨﮕﮯ ﺳﺮ ﻧﻨﮕﮯ ﭘﯿﺮ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﻭﮌﮮ.. ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﮭﺎﮌﯾﻮﮞ ﮐﮯ پیچھے ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺩﮬﺎﮌﯾﮟ ﻣﺎﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﺐ حضرت ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﺁﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺑﮭﺎﮔﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺳﻤﺠﮭﺎ کہ شاید حضرت عمر رضی اللہ عنہ۔ کوڑا لے کر آ رہے ہیں.. ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺭﮐﻮ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ؟؟ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻧﮯ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﮯ؟ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻟﻮ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮬﮯ ﯾﮧ ﺳﻨﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﮔﭩﮭﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻞ ﮔِﺮﺍ ﺍﻭﺭ دھاڑیں مار مار کر رونے لگا اور کہنے لگا.. ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ! ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﻧﺎ ﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﯽ ، ﺗﺠﮭﮯ ﺑﮭﻼﺋﮯ ﺭﮐﮭﺎ ﯾﺎﺩ ﺑﮭﯽ ﮐیا ﺗﻮ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻮ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ " ﻟﺒﯿﮏ " ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﻋﻈﯿﻢ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﺍ ﻣﺠﺮﻡ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﻭﮦ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻤﺎﻝ ﺳﮯ ﻭﻇﯿﻔﮧ ﻣﻘﺮﺭﻓﺮﻣﺎﯾﺎ. ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﮍﺍ ﻏﻔﻮﺭ ﺍﻟﺮﺣﯿﻢ ﮬﮯ...!!! ( ﺣﯿﺎۃ ﺍﻟﺼﺤﺎﺑﮧ )
  12. Momina Haseeb

    poetry Mein ab bikhar jaun tu behtar ha

    سراپا عشق ہوں میں اب بکھر جاؤں تو بہتر ہے جدھر جاتے ہیں یہ بادل ادھر جاؤں تو بہتر ہے ٹھہر جاؤں یہ دل کہتا ہے تیرے شہر میں کچھ دن مگر حالات کہتے ہیں کہ گھر جاؤں تو بہتر ہے دلوں میں فرق آئیں گے تعلق ٹوٹ جائیں گے جو دیکھا جو سنا اس سے مکر جاؤں تو بہتر ہے یہاں ہے کون میرا جو مجھے سمجھے گا فراز میں کوشش کر کے اب خود ہی سنور جاؤں تو بہتر ہے
  13. ﺍﺳﻼﻡ ﻭ ﻋﻠﯿﮑﻢ
    ﺻﺒﺢ ﺑﺨﯿﺮ ♡♡♡
    ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻟﻠّﮧ ۔۔۔۔
    ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺲ ﺍﮎ ﺭﺿﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ
    ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﺭﺿﺎ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻞ ﺟﺎﺅﮞ ﯾﺎﺭﺏ !
     ﺁﻣﯿﻦ

  14. Momina Haseeb

    نماز فرض نماز اور تہجد

    Thanks @waqas dar
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×