Jump to content

Register now to gain access to all of our features. Once registered and logged in, you will be able to create topics, post replies to existing threads, give reputation to your fellow members, get your own private messenger, post status updates, manage your profile and so much more. If you already have an account, login here - otherwise create an account for free today!

Welcome to our forums
Welcome to our forums, full of great ideas.
Please register if you'd like to take part of our project.
Urdu Poetry & History
Here you will get lot of urdu poetry and history sections and topics. Like/Comments and share with others.
We have random Poetry and specific Poet Poetry. Simply click at your favorite poet and get all his/her poetry.
Thank you buddy
Thank you for visiting our community.
If you need support you can post a private message to me or click below to create a topic so other people can also help you out.

Pink Pari

Sweet Friend
  • Content Count

    112
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    3

Pink Pari last won the day on September 26 2017

Pink Pari had the most liked content!

Community Reputation

213 Good

5 Followers

About Pink Pari

  • Rank
    Choclaty Friend
  • Birthday 03/28/1989

Profile Information

  • Gender
    Female
  • Location
    Lahore

Recent Profile Visitors

9,596 profile views
  1. اب اپنی رُوح کے چھالوں کا کُچھ حِساب کرُوں میں چاہتا تھا چراغوں کو ماہتاب کرُوں بُتوں سے مجھ کو اِجازت اگر کبھی مل جائے ! تو شہر بھر کے خُداؤں کو بے نقاب کرُوں میں کروَٹوں کے نئے زاویے لِکھوں شب بھر یہ عِشق ہے تو کہاں زندگی عذاب کرُوں ہے میرے چاروں طرف بِھیڑ گونگے بہروں کی ! کسے خطیب بناؤں، کسے خطاب کرُوں؟؟ اُس آدمی کو بس اِک دُھن سوار رہتی ہے بہت حَسِیں ہے یہ دُنیا، اِسے خراب کرُوں یہ زندگی، جو مجھے قرض دار کرتی ہے کہیں اکیلے میں مِل جائے، تو حِساب کرُوں.
  2. پہلی گل اے کہ ساری غلطی میری نئیں
    جے گر میری وی اے، کی میں تیری نئی...؟

  3. 🌼 بیٹی (Daughter) 🌼 ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺟﺎﮨﻠﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮒ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﭩﮭﺎ ﮐﺮ ﻗﺒﺮ ﮐﮭﻮﺩﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﺑﭽﯽ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮔﮍﯾﺎ ﺩﮮ ﮐﺮ، ﺍﺳﮯ ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﮐﺎ ﭨﮑﮍﺍ ﺗﮭﻤﺎ ﮐﺮ، ﺍﺳﮯ ﻧﯿﻠﮯ ﭘﯿﻠﮯ ﺳﺮﺥ ﺭﻧﮓ ﮐﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﭽﯽ ﺍﺳﮯ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ، ﻭﮦ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﭙﮍﻭﮞ، ﻣﭩﮭﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﮔﮍﯾﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮭﯿﻠﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﺱ ﮐﮭﯿﻠﺘﯽ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﻠﮑﮭﻼﺗﯽ ﺑﭽﯽ ﭘﺮ ﺭﯾﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﭽﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﺷﺮﻭﻉ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﯿﻞ ﮨﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺐ ﺭﯾﺖ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﻥ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮔﮭﺒﺮﺍ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺩﯾﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻇﺎﻟﻢ ﻭﺍﻟﺪ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﻗﺒﯿﺢ ﻋﻤﻞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺴﮑﯿﺎﮞ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﺗﮏ ﺍﻥ ﮐﺎ ﭘﯿﭽﮭﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﻇﺎﻟﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﺗﺎﻟﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻧﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﻌﺾ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﮯ ﺟﻦ ﺳﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﺎﺿﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺳﻨﺎﯾﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﻮ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﻟﮯ ﮐﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﭽﯽ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﭘﮑﮍ ﺭﮐﮭﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﻟﻤﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺧﻮﺵ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﺳﺎﺭﺍ ﺭﺳﺘﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻮﺗﻠﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻭﮦ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﺸﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﯽ، ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﺭﺍ ﺭﺳﺘﮧ ﺍﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻓﺮﻣﺎﺋﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮩﻼﺗﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﭘﮩﻨﭽﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻗﺒﺮ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮐﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﭽﮯ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺭﯾﺖ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻟﮓ ﮔﺌﯽ۔ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﭩﯽ ﮐﮭﻮﺩﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺑﺎﭖ ﺑﯿﭩﯽ ﺭﯾﺖ ﮐﮭﻮﺩﺗﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺻﺎﻑ ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮩﻦ ﺭﮐﮭﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺭﯾﺖ ﮐﮭﻮﺩﻧﮯ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﭙﮍﻭﮞ ﭘﺮ ﻣﭩﯽ ﻟﮓ ﮔﺌﯽ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﻧﮯ ﮐﭙﮍﻭﮞ ﭘﺮ ﻣﭩﯽ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺟﮭﺎﮌﮮ، ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻤﯿﺾ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭘﻮﻧﭽﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﻗﻤﯿﺾ ﺳﮯ ﺭﯾﺖ ﮔﮭﺎﮌﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﻗﺒﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﭩﮭﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯼ۔ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﻭﮦ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﺘﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﺗﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﺸﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﮟ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺧﺪﺍﺅﮞ ﺳﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﮔﻠﮯ ﺳﺎﻝ ﺑﯿﭩﺎ ﺩﮮ ﺩﻭ۔ ﻣﯿﮟ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭩﯽ ﺭﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮨﻮﺗﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﻣﭩﯽ ﮈﺍﻟﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺧﻮﻓﺰﺩﮦ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺗﻮﺗﻠﮯ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﭼﮭﺎ۔ " ﺍﺑﺎ ﺁﭖ ﭘﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﻗﺮﺑﺎﻥ، ﺁﭖ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﺩﻓﻦ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﮐﻮ ﭘﺘﮭﺮ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﻗﺒﺮ ﭘﺮ ﺭﯾﺖ ﭘﮭﯿﻨﮑﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﺭﻭﺗﯽ ﺭﮨﯽ ﭼﯿﺨﺘﯽ ﺭﮨﯽ، ﺩﮨﺎﺋﯿﺎﮞ ﺩﯾﺘﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺭﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮦ ﺩﻓﻦ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﯾﮧ ﻭﮦ ﻧﻘﻄﮧ ﺗﮭﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺭﺣﻤﺖ ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﺎ ﺿﺒﻂ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﮔﯿﺎ۔ ﺁﭖ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﮨﭽﮑﯿﺎﮞ ﺑﻨﺪﮪ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺁﻧﺴﻮﺅﮞ ﺳﮯ ﺗﺮ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺁﻭﺍﺯ ﺣﻠﻖ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﻻ ﺑﻦ ﮐﺮ ﭘﮭﻨﺴﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺩﮬﺎﮌﯾﮟ ﻣﺎﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﺣﻤﺖ ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮨﭽﮑﯿﺎﮞ ﻟﮯ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ۔ " ﯾﺎ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯿﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﯾﮧ ﮔﻨﺎﮦ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺎﻑ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ؟ " ﺭﺣﻤﺖ .... ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺻﻞ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺷﮑﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﮩﺮﯾﮟ ﺑﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﻧﻘﻄﮯ ﭘﺮ ﻏﻮﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﭘﯿﻞ ﮐﺮتا ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﺍﯾﺴﯽ ﮔﻨﺪﯼ ﺳﻮﭺ ....ﮐﻮ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﯾﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺍﺻﻞ ﻗﺪﺭ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ
    Daughters Love Hand from grave alive Love for daughters
  4. I just completed this quiz. My Score 100/100 My Time 147 seconds
  5. ساری دنیا کی محبت سے کنارہ کر کے ہم نے رکھا ہے فقط خودکو تمھارا کر کے
  6. تـــرکِ الــــفت کی اذیــت بھی ہے دوزخ جــــیسی
    کـــــتنا مـــــشکل ہے مـــحبت سے گــــــریزاں ہونا

     

  7. تم اگر ہم سے بچھڑنے میں نہ عُجلَت کرتے
    ہم عبادت کی طرح تُم سے محبّت کرتے

    میں نے پوچھا تھا فقط تم سے تغافل کا سبب
    بھیگی آنکھوں سے سہی کچھ تو وضاحت کرتے

    اُن کو دعویٰ تھا مُحبّت میں جُنوں کاری کا
    ہم سے وہ کیسے خسارے کی تجارَت کرتے

    دُکھ کا ہر رُوپ بہر حَال ہمارا ہوتا
    ہم جو تقسیم کبھی دل کی وراثت کرتے

    فیصلہ اُس نے کِیا ترک ِ مرَاسِم کا مگر
    زندگی بیت گئی میری وضاحَت کرتے

  8. مٹّی میں مِلا دے، کہ جُدا ہو نہیں سکتا
    اب اِس سے زیادہ ،مَیں تِرا ہو نہیں سکتا

    دہلیز پہ رکھ دی ہیں کسی شخص نے آنکھیں
    روشن کبھی اِتنا تو دِیا ہو نہیں سکتا

    بس تو مِری آواز میں آواز مِلا دے !
    پھر دیکھ کہ اِس شہر میں کیا ہو نہیں سکتا

    اے موت ! مجھے تُونے مُصِیبت سے نِکالا
    صیّاد سمجھتا تھا رہا ہو نہیں سکتا

    اِس خاک بدن کو کبھی پُہنچا دے وہاں بھی
    کیا اِتنا کَرَم، بادِ صبا! ہو نہیں سکتا

    پیشانی کو سجدے بھی عطا کر مِرے مولیٰ
    آنکھوں سے تو ، یہ قرض ادا ہو نہیں سکتا

    دربار میں جانا مِرا دُشوار بہت ہے 
    جوشخص قلندر ہو گَدا ہو نہیں سکتا

    منوّر رانا

  9. ڈالنا میری لاش پہ_____ کفن اپنے ہاتھوں سے کہی تیرے دیے ہوے زخم کوئی اور نہ دیکھ لے
  10. خاک ڈالو_____میرے مقدر پر
    میں نے پتھر سے دل لگایا تھا 

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...