Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Search the Community

Showing results for tags 'اُسے'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 8 results

  1. کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر حرف آتا ہے مسیحائی پر اُس کی شہرت بھی تو پھیلی ہر سُو پیار آنے لگا رُسوائی پر ٹھہرتی ہی نہیں آنکھیں ، جاناں ! تیری تصویر کی زیبائی پر رشک آیا ہے بہت حُسن کو بھی قامتِ عشق کی رعنائی پر سطح سے دیکھ کے اندازے لگیں آنکھ جاتی نہیں گہرائی پر ذکر آئے گا جہاں بھونروں کا بات ہو گی مرے ہرجائی پر خود کو خوشبو کے حوالے کر دیں پُھول کی طرز پذیرائی پر پروین شاکر
  2. Anabiya Haseeb

    poetry اسے کہنا ،،،،،،

    ﺍﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺐ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﻢ ﺗﻮ ﺷﺎﺥ ﺳﮯ ﭨﻮﭨﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﺘﮯ ﺑﮩﺖ ﻋﺮﺻﮧ ﮨﻮﺍ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺭﮔﯿﮟ ﺗﮏ ﻣﺮ ﭼﮑﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻠﮯ ﺭﻭﻧﺪﮮ ﺟﻼ ﮐﺮ ﺭﺍﮐﮫ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﮯ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺮ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﮮ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺳﭙﺮﺩِ ﺧﺎﮎ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺏ ﯾﺎﺩ ﮨﯽ ﮐﺐ ﮨﮯ؟ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﺳﻢ ﺗﮭﮯ ﮐﺴﯽ ﮔﻠﺸﻦ ﮐﯽ ﺯﯾﻨﺖ ﺗﮭﮯ ﮐﺴﯽ ﭨﮩﻨﯽ ﮐﯽ ﻗﺴﻤﺖ ﺗﮭﮯ ﮐﺌﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺣﺖ ﺗﮭﮯ ﯾﺎ ﺟﯿﻮﻥ ﮐﯽ ﺣﺮﺍﺭﺕ ﺗﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﻋﺮﺻﮧ ﮨﻮﺍ ﻭﮦ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﺎ ﻣﻮﺳﻢ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭘﮭﺴﻼ ﯾﺎ ﺷﺎﺋﯿﺪ ﭘﮭﺮ ﺧﺰﺍﮞ ﻣﻮﺳﻢ ﮐﻮ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﻤﺠﮫ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺳﻮ ﺍﺱ ﺩﻥ ﺳﮯ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮐﺴﯽ ﻣﻮﺳﻢ ﺳﮯ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺷﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻨﺘﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺷﺎﺥ ﮐﯽ ﺑﺎﻧﮩﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﮩﭽﺎﻧﺘﯽ ﮐﺐ ﮨﯿﮟ؟ ﮐﺒﮭﯽ ﮨﻢ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﺗﮭﮯ ﯾﮧ ﺷﺎﺧﯿﮟ ﻣﺎﻧﺘﯽ ﮐﺐ ﮨﯿں
  3. Zarnish Ali

    اسے کہنا۔۔۔۔۔

    اسے کہنا۔۔۔۔۔ ہمیں کب فرق پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔؟ کہ۔۔۔۔۔۔۔! ہم تو شاخ سے ٹوٹے ہوئے پتّے بہت عرصہ ہوا ہم کو۔۔۔۔۔۔ رگیں تک مر چکیں دل کی کوئی پاوٴں تلے روندے جلا کر راکھ کر ڈالے ہوا کے ہاتھ پر رکھ کر کہیں بھی پھینک دے ہم کو سپردِ خاک کر ڈالے ہمیں اب یاد ہی کب ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ کہ ہم بھی ایک موسم تھے۔
  4. گنگناتے ہوئے لمحوں میں اُسے دھیان میرا کبھی آیا کہ نہیںجانے وہ آج بھی سویا کہ نہیں اے مجھے جاگتا پاتی ہوئی رات وہ مری نیند سے بہلا کہ نہیں بھیڑ میں کھویا ہوا بچہ تھا اُس نے خود کو ابھی ڈھونڈا کہ نہیں مجھ کو تکمیل سمجھنے والا اپنے معیار میں بدلا کہ نہیں گنگناتے ہوئے لمحوں میں اُسے دھیان میرا کبھی آیا کہ نہیں بند کمرے میں کبھی میری طرح شام کے وقت وہ رویا کہ نہیں میری خود داری برتنے والے تیرا پندار بھی ٹوٹا کہ نہیں الوداع ثبت ہوئی تھی جس پر اب بھی روشن ہے وہ ماتھا کہ نہیں پروین شاکر
  5. مل گیا تھا تو اُسے خود سے خفا رکھنا تھا دل کو کچھ دیر تو مصروفِ دُعا رکھنا تھا میں نا کہتا تھا کے سانپوں سے اَٹے ہیں راستے گھر سے نکلے تھے تو ہاتھوں میں عصا رکھنا تھا بات جب ترکِ تعلق پہ ہی ٹھہری تھی تو پھر دل میں احساسِ غمِ یار بھی کیا رکھنا تھا دامن موجِ ہوا یوں تو نا خالی جاتا گھر کی دہلیز پہ کوئی تو دِیا رکھنا تھا کوئی جگنو تہہِ داماں بھی چھپا سکتے تھے کوئی آنسو پسِ مژگاں ہی بچا رکھنا تھا کیا خبر اُس کے تعاقب میں ہوں کتنی سوچیں ¿ اپنا انداز تو اوروں سے جدا رکھنا تھا چاندنی بند کواڑوں میں کہاں اُترے گی ¿ اِک دریچہ تو بھرے گھر میں کھلا رکھنا تھا اُس کی خوشبو سے سجانا تھا جو دل کو محسؔن اُس کی سانسوں کا لقب موجِ صبا رکھنا تھا (محسن نقوی) __________________
  6. تُجھے کیا خبر میرے حال کی مـیرے درد، مـیرے مـلال کی یہ میرے خــیال کا سلسلہ، کسـی یاد سے ہے مـلا ہوا اُسے دیکھنا، اسے سوچنا میری زِندگی کا ہے فیصلہ یہ اُسی کی پلکوں کے سائے ہیں مـیری روح مـیں جو اتـر گئے یہ جُــنون مــنزلِ عــشـق ہے جو چلے تو جاں سے گزر گئے۔۔۔۔ مُجھے اِس مـقام پہ چھوڑنا ہے یہ بے وفائـی کی انتہا یہ قفـس ہـو جیسے کھلـی فضـا یہیں سکھ کا سانس میں لوں سدا جِنہیں تِـیری دید کی پِیـاس تھی وہ کٹورے نینوں سے بھر گئے یہ جـنون مــنزلِ عـشـق ہے جو چلے تو جاں سے گزر گئے۔۔۔!!
  7. ﺍﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ ﻗﺴﻢ ﻟﮯ ﻟﻮ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺑﻌﺪ ﺍﮔﺮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭼﺎﮨﺎ ﮨﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮨﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺁﺭﺯﻭ ﮐﯽ ﮨﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺟﺴﺘﺠﻮ ﮐﯽ ﮨﻮ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺁﺱ ﺭﮐﮭﯽ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﺑﺎﻧﺪﮬﯽ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺎﺭﺍ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺮ ﺗﻢ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺭﺍ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ...... ﺑﺴﺎﯾﺎ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ......... ﺍﭘﻨﺎ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﻭﭨﮭﺎ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺭﻭ ﺭﻭ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﮨﻮ ﺩﺳﻤﺒﺮ ﮐﯽ ﺣﺴﯿﮟ ﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﮨﺠﺮ ﺟﮭﯿﻠﮯ ﮨﻮﮞ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﮐﮯ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﺁﻧﮕﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﯿﻠﮯ ﮨﻮﮞ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﯾﮧ ﮨﻮﻧﭧ ﺗﺮﺳﮯ ﮨﻮﮞ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺑﮯ ﻭﻓﺎﺋﯽ ﭘﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﯾﮧ ﻧﯿﻦ ﺑﺮﺳﮯ ﮨﻮﮞ ﺍﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ ﻗﺴﻢ ﻟﮯ ﻟﻮ
  8. Urooj Butt

    ﺍﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ

    ﺍﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ۔۔۔۔۔ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺐ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔۔۔۔۔۔؟ ﮐﮧ۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﻢ ﺗﻮ ﺷﺎﺥ ﺳﮯ ﭨﻮﭨﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﺘّﮯ۔۔۔۔۔۔۔ ﺑﮩﺖ ﻋﺮﺻﮧ ﮨﻮﺍ ﮨﻢ ﮐﻮ۔۔۔۔۔۔ ﺭﮔﯿﮟ ﺗﮏ ﻣﺮ ﭼﮑﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﯽ۔۔۔۔۔۔ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺎﻭﮞ ﺗﻠﮯ ﺭﻭﻧﺪﮮ۔۔۔۔۔۔ ﺟﻼ ﮐﺮ ﺭﺍﮐﮫ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﮯ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺮ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ۔۔۔۔۔۔ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﮮ ﮨﻢ ﮐﻮ۔۔۔۔۔ ﺳﭙﺮﺩِ ﺧﺎﮎ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﮯ۔۔۔۔۔۔ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺏ ﯾﺎﺩ ﮨﯽ ﮐﺐ ﮨﮯ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﺳﻢ ﺗﮭﮯ۔
×