Jump to content

Welcome to Fundayforum. Please register your ID or get login for more access and fun.

Signup  Or  Login

house fdf.png

ADMIN ADMIN

Search the Community

Showing results for tags 'اپنے'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair o Shairy
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Movies and Stars
    • Chit chat And Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • Premium Files
  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Interests


Location


ZODIAC

Found 3 results

  1. اتنا نہ اپنے جامے سے باہر نکل کے چل دنیا ہے چل چلاؤ کا رستہ سنبھل کے چل کم ظرف پر غرور ذرا اپنا ظرف دیکھ مانند جوش غم نہ زیادہ ابل کے چل فرصت ہے اک صدا کی یہاں سوز دل کے ساتھ اس پر سپند وار نہ اتنا اچھل کے چل یہ غول وش ہیں ان کو سمجھ تو نہ رہ نما سائے سے بچ کے اہل فریب و دغل کے چل اوروں کے بل پہ بل نہ کر اتنا نہ چل نکل بل ہے تو بل کے بل پہ تو کچھ اپنے بل کے چل انساں کو کل کا پتلا بنایا ہے اس نے آپ اور آپ ہی وہ کہتا ہے پتلے کو کل کے چل پھر آنکھیں بھی تو دیں ہیں کہ رکھ دیکھ کر قدم کہتا ہے کون تجھ کو نہ چل چل سنبھل کے چل ہے طرفہ امن گاہ نہاں خانۂ عدم آنکھوں کے روبرو سے تو لوگوں کے ٹل کے چل کیا چل سکے گا ہم سے کہ پہچانتے ہیں ہم تو لاکھ اپنی چال کو ظالم بدل کے چل ہے شمع سر کے بل جو محبت میں گرم ہو پروانہ اپنے دل سے یہ کہتا ہے جل کے چل بلبل کے ہوش نکہت گل کی طرح اڑا گلشن میں میرے ساتھ ذرا عطر مل کے چل گر قصد سوئے دل ہے ترا اے نگاہ یار دو چار تیر پیک سے آگے اجل کے چل جو امتحان طبع کرے اپنا اے ظفرؔ تو کہہ دو اس کو طور پہ تو اس غزل کے چل
  2. کیوں کسی اور کو دکھ درد سناؤں اپنے اپنی آنکھوں سے بھی میں زخم چھپاؤں اپنے میں تو قائم ہوں ترے غم کی بدولت ورنہ یوں بکھر جاؤں کہ خود ہاتھ نہ آؤں اپنے شعر لوگوں کے بہت یاد ہیں اوروں کے لیے تو ملے تو میں تجھے شعر سناؤں اپنے تیرے رستے کا جو کانٹا بھی میسر آئے میں اسے شوق سے کالر پر سجاؤں اپنے سوچتا ہوں کہ بجھا دوں میں یہ کمرے کا دیا اپنے سائے کو بھی کیوں ساتھ جگاؤں اپنے اس کی تلوار نے وہ چال چلی ہے اب کے پاؤں کٹتے ہیں اگر ہاتھ بچاؤں اپنے آخری بات مجھے یاد ہے اس کی انورؔ جانے والے کو گلے سے نہ لگاؤں اپنے
  3. ﭨﮭﻮﮐﺮ ﻟﮕﯽ ﺗﻮ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻘﺪﺭ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﭘﮭﺮ ﯾﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺍﺣﺴﺎﺱِ ﻓﺮﺽ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺍ ﻧﯿﻨﺪ ﺁ ﮔﺌﯽ ﭼﻠﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﭘﻞِ ﺻﺮﺍﻁ ﭘﺮ۔۔۔۔۔۔۔ ﺑﺴﺘﺮ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺑﺎﺯﯼ ﻣﺤﺒﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﮩﺎﻟﺖ ﻧﮯ ﺟﯿﺖ ﻟﯽ ﻭﮦ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ ﺧﻄﯿﺐ ﺟﻮ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﻤﺒﺮ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻗﺼﻮﺭ ﻭﺍﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻮﻝ ﺗﻮﮌﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ۔۔۔۔۔ ﺧﻨﺠﺮ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺻﺤﺮﺍﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﺌﮯ ﭘﮭﺮﮮ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺟﺴﺘﺠﻮ ﺟﺐ ﭘﯿﺎﺱ ﻣﺮ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ۔۔۔۔۔۔۔ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺷﮩﺮِ ﻃﻠﺐ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﺍﺗﻨﯽ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﮑﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺩﺷﺖِ ﮔﺪﺍﮔﺮ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺩﮬﻮ ﺩﯾﺎ ﻣﺠﺮﻡ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺩﺍﻍ ﺑﮯ ﮔﻨﺎﮦ ﮐﯽ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﭼﺎﺩﺭ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺑﮯ ﻭﻓﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺧﻨﺪﻕ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﭼﮭﭙﮯ ﻣﻠﺒﮧ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﺤﺴﻦ ﭘﮧ ﺟﺎ ﮔﺮﺍ محسن نقوی
×