Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Search the Community

Showing results for tags 'تھی'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 11 results

  1. اُنہیں بس ہم سے رغبت تھی تھے ہم بھی جانتے لیکن ہمیں ان کا بکھر جانا بکھر کے پھر سمٹ جانا ہمارے ہاتھ کو تھامے ہم سے پھر لپٹ جانا بہت مجبور کرتا تھا کہ اپنے دل کے تہہ خانے میں دفنائے ہوئے سب غم سبھی رنج و ستم ان کے نہ لکھ ڈالیں کتابوں پر کہ لکھ دینے سے یوں شکوے کوئی ان کو نہ کہہ ڈالے جو کہہ ڈالے کوئی احمق انہیں ظالم٬ ہمیں مظلوم تو ہم کیا معاف کر دیں گے؟ خود ہی کو بخش دیں گے ہم؟ ارے جاناں! ارے پاگل نہیں ہوتا کبھی ایسا محبت کے فسانےمیں جسے ہم سونپ دیں سب کچھ اسے ہم بخش دیتے ہیں سبھی خوشیاں زمانے کی اگرچہ جان بھی جائے خوشی سے سونپ آتے ہیں صنم کی اک جھلک پر ہم خود ہی کو وار دیتے ہیں جو وہ کہہ دیں کہ ہنسنا مت ہنسی قربان کر دیں ہم جو کہہ دیں وہ کہ رونا مت تو آنکھیں خشک ہو جائیں جو وہ کہہ دیں کہ میرے ہو تو کیسا ظلم ہو جاناں جن پہ پہلے مرتے ہوں خوشی سے پھر سے مر جائیں چلو سن لو کیوں رغبت تھی انہیں ہم سے بس اک دم سے ہم ان پہ مر مٹے تھے بس وہ ہم سے جی اٹھے تھے بس یونہی سب عشق بن بیٹھا ہمیں برباد کر بیٹھا انہیں کیوں ہم سے رغبت تھی لو تم بھی جان بیٹھے ہو انہیں کیوں ہم سے رغبت تھی انہیں کیوں ہم سے رغبت تھی ©S.S Writes
  2. زندگی خاک نہ تھی خاک اڑا کے گزری تجھ سے کیا کہتے، تیرے پاس جو آتے گزری دن جو گزرا تو کسی یاد کی رَو میں گزرا شام آئی، تو کوئی خواب دکھا تے گزری اچھے وقتوں کی تمنا میں رہی عمرِ رواں وقت ایساتھا کہ بس ناز اُٹھاتے گزری زندگی جس کے مقدر میں ہو خوشیاں تیری اُس کو آتا ہے نبھانا، سو نبھاتے گزری زندگی نام اُدھر ہے، کسی سرشاری کا اور اِدھر دُور سے اک آس لگاتے گزری رات کیا آئی کہ تنہائی کی سرگوشی میں ہُو کا عالم تھا، مگر سُنتے سناتے گزری بار ہا چونک سی جاتی ہے مسافت دل کی کس کی آواز تھی، یہ کس کو بلاتے گزری www.fundayforum.com
  3. جگا سکے نہ ترے لب ، لکیر ایسی تھی ہمارے بخت کی ریکھا بھی میر ایسی تھی یہ ہاتھ چُومے گئے ، پھر بھی بے گلاب رہے جو رُت بھی آئی ، خزاں کے سفیر ایسی تھی وہ میرے پاؤں کو چھُونے جھُکا تھا جس لمحے جو مانگتا اُسے دیتی ، امیر ایسی تھی شہادتیں مرے حق میں تمام جاتی تھیں مگر خموش تھے منصف ، نظیر ایسی تھی کُتر کے جال بھی صیّاد کی رضا کے بغیر تمام عُمر نہ اُڑتی ، اسیر ایسی تھی پھر اُس کے بعد نہ دیکھے وصال کے موسم جُدائیوں کی گھڑی چشم گیر ایسی تھی بس اِک نگاہ مجھے دیکھتا ، چلا جاتا اُس آدمی کی محبّت فقیر ایسی تھی ردا کے ساتھ لٹیرے کو زادِ رہ بھی دیا تری فراخ دلی میرے دِیر ایسی تھی کبھی نہ چاہنے والوں کا خوں بہا مانگا نگارِ شہرِ سخن بے ضمیر ایسی تھی
  4. راستہ بھی کٹھن دھوپ میں شدت بھی بہت تھی سائے سے مگر اس کو . . . . محبت بھی بہت تھی خیمے نہ کوئی میرے . . . مسافر کے جلائے زخمی تھا بہت پاؤں مسافت بھی بہت تھی سب دوست میرے منتظرِ پردہء شب تھے دن میں تو سفر کرنے میں دِقت بھی بہت تھی بارش کی دعاؤں میں نمی آنکھ کی مل جائے جذبے کی کبھی اتنی رفاقت بھی بہت تھی کچھ تو ترے موسم ہی مجھے راس کم آئے اور کچھ مری مٹی میں بغاوت بھی بہت تھی پھولوں کا بکھرنا تو . . . . . مقدر ہی تھا لیکن کچھ اس میں ہواؤں کی سیاست بھی بہت تھی وہ بھی سرِ مقتل ہے کہ سر جس کا تھا شاہد اور واقفِ احوال . . . . عدالت بھی بہت تھی اس ترکِ رفاقت پہ . . . . پریشاں تو ہوں لیکن اب تک کے ترے ساتھ پہ حیرت بھی بہت تھی خوش آئے تجھے . . . . . . شہرِ منافق کی امیری !!ہم لوگوں کو سچ کہنے کی عادت بھی بہت تھی
  5. ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﭨُﻮﭨﮯ ﺳﺘﺎﺭﮮ ﺁﺯﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮐﺜﺮ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﺁﺯﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺻﺤﺮﺍ ﺳُﻠﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺭﯾﺎ ﺑِﻠﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﯾﺎﺩ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮭﮯ ﺳُﻠﮕﺘﮯ ﺷﺮﺍﺭﮮ ﯾﺎﺩ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭼﻠﻮ ﺭﺷﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﮔﺮﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﭼﻠﻮ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﯾﺎ ﮔﮭﻮﻝ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺤﺾ ﺍﮎ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﺎ ﺍﻧﮕﺎﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﮭﻼ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﮐﯿﺎ ﺭﮐﮭﻮﮞ؟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍِﺳﮯ ﺗﻢ ﺫﺍﺕ ﮐﺎ ﺯﻧﺪﺍﻥ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ ﺳﺎﻧﺲ ﮐﯿﺴﮯ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﻮ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺧﺎﺭ ﺳﺎ ﺳﯿﻨﮯ ﮐﻮ ﭼُﮭﻮ ﮐﺮ ﭨﻮﭦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﭽﮫ ﭘَﻞ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯿﻨﮯ ﺩﻭ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺟﺎﻧﺎﮞ ﺍِﺱ ﺣﺼﺎﺭِ ﺫﺍﺕ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﻭﻗﺖ ﺗﮭﻢ ﺟﺎﺋﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺲ ﯾﮧ ﻟﻤﺤﮯ ﺻﺪﯾﺎﮞ ﺭﻗﻢ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ ﺗﻢ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺣﺴﺮﺕ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﯾﮑﮭﯽ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﺳُﻠﮕﺘﮯ ﺯﺧﻢ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺍِﻥ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺩﺭﺩ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ، ﺑُﮭﻼ ﺩﻭ ﺟﻮ ﮨﮯ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺣﺮ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﻮﻟﺘﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﺗﮭﯿﮟ؟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺷﯿﺎﮞ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﮩﺠﮯ ﮐﯽ ﺷﺪﺕ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ؟ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﭼﻮﻧﮑﺎ ﻣﮕﺮ ﮐُﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻻ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ، ﺑُﺖ ﮐﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺩﻥ ﺭﺍﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ، ﺑﺖ ﺷﮑﻦ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻮ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺗﻢ ﺧﺎﮎ ﭨﮭﮩﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﯾﮩﯽ ﺳﭻ ﮨﮯ ﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺭﺱ ﻧﮧ ﺗُﻮ ﺳﻮﻧﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﮐُﮩﺮ ﮐﺐ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﺁﺧﺮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺲ ﻟﻤﺤﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﺁﺧﺮ ﺳﺎﻧﺲ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳُﻠﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﺒﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﺗﻘﺪﯾﺮﯾﮟ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺁﺳﺘﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮯ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮐﺐ ﺻﺤﺮﺍ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﮮ ﮔﺎ ﻭﮦ ﺑﻨﺠﺎﺭﮦ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺐ ﺍُﺳﮯ ﺭﺷﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﭧ ﮐﺮ ﮨﺎﺭﻧﺎ ﮨﻮﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺩﺭﺧﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻟِﺒﺎﺩﮮ ﺯﺭﺩ ﮐﯿﻮﮞ ﭨﮭﮩﺮﮮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﺧﺰﺍﮞ ﮨﻮﻧﺎ ﮨﺮ ﺍِﮎ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﯽ ﻗﺴﻤﺖ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﭼﮩﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﺎ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﮐﺌﯽ ﭼﮩﺮﮮ ﻣﮕﺮ ﺍﭘﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺩِﯾﮯ ﺍﺏ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﻠﺘﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﮨﻮﺍ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﺮﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺑﮭﻼ ﺭﮐﮭﺎ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﮕﻤﮕﺎﺗﮯ ﺳﺐ ﺩﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺭﮐﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﯽ ﺍُﺩﺍﺳﯽ ﺳﮯ ﮐﮩﻮﮞ ﮔﯽ ﮐﯿﺎ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺑﺲ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺍُﻧﮩﯿﮟ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺳُﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺁﻧﮕﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﯿﮍ ﺟﻠﺘﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮧ ﺫﺍﺕ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺯِﻧﺪﺍﮞ ﻣﯿﮟ ﺻﺒﺎ ﺷﺐ ﺑﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﻮ ﺳﺎﻧﺲ ﺍﮐﺜﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﮐﻢ ﮨﯿﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮔﺮ ﯾﮩﯽ ﺳﭻ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺗُﻮ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﺩﮬﮍﮐﺘﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﺯَﺩ ﭘﮧ ﻃﻮﻓﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﮧ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯿﺴﯽ؟ ﺑﮩﺖ ﺑﮯ ﺳﺎﺧﺘﮧ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﺗﯿﺮﯼ ﺭﻭﺡ ﺗﮏ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﭘﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺗﺒﮭﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻣﺪﮬﻢ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺗﮭﻮﮌﮮ ﻭﻗﻒ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﺑﺴﯽ ﮨﻮ ﺗﻢ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﺎ ﭘﺎﺅ ﮔﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮨﻮﮐﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮔُﻢ ﺗﮭﺎ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺏ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭼﻠﻮ ﺍُﻧﮕﻠﯽ ﭘﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺭﺩ ﮐﻮ ﮔِﻦ ﻟﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﺷِﺪّﺕ ﺳﮯ ﺷﺮﯾﺎﻧﯿﮟ ﻧﮧ ﮐﭧ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳﻨﺎﺅ ﺣﺎﻝ ﺍُﺱ ﺷﺐ ﮐﺎ ﺟﺐ ﮨﻢ ﺑﭽﮭﮍﮮ ﺗﮭﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ، ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﺍﯾﺴﯽ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﺷﺐ ﭨﻮﭦ ﮐﮯ ﺭﻭﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﺩﻥ ﺗﯿﺮﮮ ﮐﺎﻧﺪﮬﮯ ﭘﮧ ﺭﻭﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺷﺎﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﺁﻧﺴﻮ ﺳﮯ ﮔﮭﺎﺋﻞ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﻮ ﭘﮭﺮ ﺗﻢ ﭘﮧ ﮐﯿﺎ ﮔﺰﺭﯼ ﻭﮦ ﺧﻮﺍﺏِ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮭﻮ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﮐﻞ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮩﻮ ﺍُﺱ ﻋﺸﻖ ﮐﯽ ﺑﺎﺑﺖ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﺎ ﺣَﺪ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮔﯽ ﮐﮩﺎ ﻭﮦ ﻋﺸﻖ ﺟﯿﺴﮯ ﺭُﻭﺡ ﮐﺎ ﺳﺮﻃﺎﻥ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮩﻮ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﭽﮭﮍﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﯾﮧ ﮨﻮﮔﺎ؟ ! ﮐﮩﺎ ﺟﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﻧﻘﺶِ ﭘﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺳﺘﻮﮞ ﭘﮧ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺳﺘﻮﮞ ﭘﮧ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﺩُﮐﮫ ﺩﺭﺩ ﺣﺎﺋﻞ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺫﺭّﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺣُﺴﻦ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍﯾﮏ ﺫﺭّﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﺌﯽ ﻣﺎﮨﺘﺎﺏ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮧ ﮐﺐ ﯾﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻟﮕﯽ ﺗﻢ ﮐﻮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺑﮯ ﺧﯿﺎﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮭﮯ ﺟﺐ ﭼﮭﻮ ﻟﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮈﻭﺑﺘﺎ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﺎ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﮐﺜﺮ ﮈﻭﺑﺘﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﮩﺮﮦ ﺟﻮ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﯾﺎﺩ ﮨﻮ ﺍﺏ ﺗﮏ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍِﮎ ﮐﻨﻮﻝ ﺭﺥ ﭘﺮ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺣﺮ ﺳﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﮯ ﻣﻘﺘﻞ ﮐﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻢ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﯾﻮﮞ ﮐﮧ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍِﮎ ﺷﺎﻡ ﮐﺎﭨﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺫّﯾﺖ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﻟﻤﺤﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﻗﻒ ﮨﻮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺲ ﻟﻤﺤﮯ ﺟﺎﻧﺎﮞ ﺗُﻮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺑﮭﻼ ﺍﺏ ﺩﺍﺅ ﭘﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﭽﮫ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﭘﺎﺱ، ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﮨﺎﺭ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮐﺐ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﭼﭗ ﺗﯿﺮﯼ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﮐﻮ ﺳﻨﺘﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺐ ﺑﮑﮭﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﻨﺎﺭﺍ ﺗﯿﺮﮮ ﻟﮩﺠﮯ ﭘﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﻥ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺑﻮﺟﮫ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻡ ﺳﮯ ﺍﺏ ﺧﻮﻑ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮨﻠﯿﺰ ﭘﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﺎ ﺩَﺭ ﻭﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﺪﻥ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﺎﻧﭻ ﺟﯿﺴﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺟﺎﻧﺎﮞ ﮐﮧ ﺣﺴﺮﺕ ﮐﺎ ﻟﮩﻮ ﺟﮭﻠﮑﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﻧﯿﻨﺪ ﭨﻮﭨﯽ ﮨﻮ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﺍُﺳﯽ ﻟﻤﺤﮯ، ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺐ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮ ﮐﮩﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﮞ، ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﻣُﺴﻠﺴﻞ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮐﮧ ﺍﺳﯽ ﺑﺎﻋﺚ ﯾﮧ ﺭَﺗﺠﮕﮯ ﻣُﺴﻠﺴﻞ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺁﻭﺍﺯ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮑﮭﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﭘﮧ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﺭﮐﮫ ﮐﮯ ﺭﻭﺗﯽ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﭼﺎﻧﺪ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﺷﺐ ﮐﻮ ﺭﻭﯾﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﻣﺎﺗﮭﮯ ﭘﺮ ﺩُﻋﺎﺋﯿﮟ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﻓﺎﺻﻠﮧ ﮐﺘﻨﺎ؟ ﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﭘﻞ ﺳﻮﭺ ﮐﮯ ﺑﻮﻻ ﺧﺪﺍ ﺍﻭﺭ ﺍِﮎ ﺩُﻋﺎ ﺟﺘﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻟﮕﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﺩُﻋﺎ ﮐﺎ ﺭﺍﺑﻄﮧ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺑﺲ ﻭﮨﯽ ﺟﻮ ﺭﻭﺣﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﺴﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﺎﻃﮧ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﺍﻭﺭ ﺟﺴﻢ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻢ؟ ﮐﮩﺎ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﺟﺴﻢ ﮐﯽ ﻗﺴﻤﺖ، ﻣﺤﺒﺖ ﺭﻭﺡ ﮐﯽ ﻗﺴﻤﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ، ﺳُﻨﻮ ﺳﺎﺣﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺎﻥ ﻟﮯ ﻟﮯ ﮔﯽ ﻟﮕﺎﺅ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺷﺪّﺕ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭼﻠﻮ ﮐﺎﺗِﺐ ﺳﮯ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﻣﺎﻧﮓ ﻟﻮﮞ ﺗﻢ ﮐﻮ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﭼﻮﻧﮑﺎ ﻣﮕﺮ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻻ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺩﺭﯾﭽﻮﮞ ﭘﺮ ﮨَﻮﺍ ﮐﻮ ﮐﺐ ﺑﻼﺅ ﮔﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺲ ﻟﻤﺤﮯ ﺍُﻣﯿﺪ ﮐﯽ ﺷﻤﻌﯿﮟ ﺟﻼﺅﮞ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺷﺎﮦِ ﻣﻦ ﺍﺏ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﺎ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ ﺩﺭﺑﺎﺭ ﺩﻝ ﮐﺎ ﺟﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﺠﺘﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﺎﻧﭻ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍِﺱ ﻟﺌﮯ ﺟﺎﻧﺎﮞ ﮐﮧ ﭘﮩﻠﻮ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺍﺗﺮﯾﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﺷﺐ ﺑﮭﺮ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﮯ ﮨﻤﺮﺍﮦ ﭼﻠﺘﯽ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﺮ ﺗﺎﺭﮮ ﺗﺒﮭﯽ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﻠﮯ ﺟﺐ ﮨﻢ ﻭﮨﯽ ﻗِﺼّﮧ ﺗﻮ ﺩﻭﮨﺮﺍﺅ ﻭﮦ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻣُﻮﻧﺪ ﮐﺮ ﺑﻮﻻ ﺑﮍﯼ ﻟﻤﺒﯽ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﺑﮭﻼ ﮐﺲ ﻣﻮﮌ ﭘﺮ ﭼﮭﻮﮌﯾﮟ ﮔﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺩﻭ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺭﺷﺘﮧ ﺳﺎﻧﺲ ﮐﺎ ﺗﻮﮌﯾﮟ ﮔﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﺮ ﻟﻤﺤﮧ ﯾﮧ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻭﺳﻮﺳﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺗﮭﺎ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﺎﺯﮎ ﺩﻝ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺍُﺩﺍﺳﯽ ﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺷﮧ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﻏﻢ ﺯﺩﮦ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﮔﻮﺷﮧ ﻧﺸﯿﮟ ﮐﺮ ﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﻟﮩﺠﮯ ﮐﯽ ﺭﻡ ﺟِﮭﻢ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍِﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧ ﺟَﻞ ﺗﺮﻧﮓ ﺩﻝ ﺟﮭﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﮐﯿﺎ؟ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺲ ﮐﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﮐﮩﺎ ﺟُﮭﮑﺘﯽ ﺟﺒﯿﻨﻮﮞ ﮐﻮ، ﺍُﭨﮭﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﺒﯿﻦ ﻭ ﮨﺎﺗﮫ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺑﮭﻼ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﻣﯿﮟ؟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻟﮑﮭﯽ ﺟﺎﭼﮑﯽ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﭘﮧ ﺗﻘﺪﯾﺮﯾﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﺎﺗﮫ ﺩﻭ ﺍﭘﻨﺎ، ﺟﺒﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﺩﻭﮞ ﮨﺘﮭﯿﻠﯽ ﭘﺮ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﯾﮧ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮨﯽ ﻧﮧ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳُﻨﻮ ﺳﺎﺣﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺣﺴﺮﺕ ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﯿﺮﯼ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﯾﮧ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮐﯿﺎ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺯﺧﻢ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﻮﺟﮭﻞ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺪﮬﻢ ﺳﮯ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳُﻨﻮ ﺳﺎﺣﺮ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﻏﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﮮ ﺩﻭ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﭘﮭﺮ ﮐﮩﻮ ﮔﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺐ ﻧَﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﮮ ﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﺎﮞ ﺍِﻥ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﻧَﻢ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﺎ ﮐﮩﺎ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﺩُﮐﮫ ﮨﻮﮞ ﮐﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺟُﻨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﺍﭼﮭﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺍِﻥ ﮐﮯ ﺑﻦ ﺟﺬﺑﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﭽﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭼﻠﻮ ﺍِﺗﻨﺎ ﮐﮩﻮ ﺩُﮐﮫ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﺎﻧﭩﻮ ﮔﮯ؟ ﺑﮩﺖ ﺣﯿﺮﺕ ﺳﮯ ﺗﺐ ﺑﻮﻻ، ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺲ ﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﺩُﮐﮫ ﮨﯿﮟ؟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺑﮯ ﭘﻨﺎﮦ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﺩُﮐﮫ ﺩﺭﺩ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺭﺍﮦ ﭼﻠﺘﯽ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﮔﮭﺮ ﺑُﻼﺗﮯ ﺗﮭﮯ؟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﻮ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﭼﺎﮨﺖ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺗﮭﺎ ﯾﮧ ﺍﻓﺴﺎﻧﮯ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺳﺠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﭼﺎﮨﺖ ﮐﯽ ﻓِﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﻨﮑﮫ ﺑﮭﺮﻭﮞ ﮐﯿﺴﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﭘﻨﮑﮭﮍﯼ ﮐُﻮﻧﺞ ﮐﮯ ﭨﻮﭨﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘَﺮ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺍﺗﺮﻭﮞ؟ ﮐﮩﺎ ﺑﮯ ﺁﺏ ﻣﺎﮨﯽ ﮐﺎ ﺳﺎ ﭘﯿﺮﺍﮨﻦ ﭘﮩﻦ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻧَﺲ ﻧَﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮩﻮ ﮐﺎ ﺯﮨﺮ ﭘﮭﯿﻼ ﮨﮯ ﮐﮩﺎ ﺍِﺱ ﺯﮨﺮ ﮐﺎ ﺗﺮﯾﺎﻕ ﮨﮯ ﺑﺲ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﺑﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﭼﻠﻮ ﺍﺗﻨﺎ ﺗﻮ ﮨﻮﮔﺎ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﺯﻧﺠﯿﺮ ﭨﻮﭨﮯ ﮔﯽ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺧﻮﺍﺏِ ﺯﯾﺴﺖ ﮐﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﭨﻮﭨﮯ ﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺗﮭﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﮞ ﯾﮩﯽ ﻃﮯ ﮨﮯ ﺗُﮩﺎﺭﮮ ﻟﻔﻆ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺗﮭﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺳَﺮﺍﺑﯽ ﮨﻢ ﺗﮭﮯ ﯾﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﮨﯽ ﺩﮬﻮﮐﮧ ﺗﮭﯽ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﭘﯿﺎﺱ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﭘﯿﺎﺱ ﺍﯾﺴﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺩﺭﯾﺎ ﺧﻮﺩ ﭘُﮑﺎﺭﮮ ﮔﺎ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﮨﺎﺭ ﺟﺎﺅﮔﯽ ﺳُﻨﻮ ﻭﺍﭘﺲ ﭘﻠﭧ ﺟﺎﺅ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ ﺗﻢ ﺗﻨﮩﺎ ﻧﮧ ﺭﮦ ﺟﺎﺅ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺣﻠﻘﮧﺀ ﯾﺎﺭﺍﮞ ﺑﮩﺖ ﮨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﻣﻤﮑﻦ ﯾﮧ ﺩُﮐﮫ ﺟﺎﻥ ﻟﮯ ﺟﺎﺋﮯ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺘﻨﺎ ﮨﮯ ﺩُﮐﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺯﻣﺎﺅﮞ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮩﻮ ﺍﺗﻨﺎ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺁﺯﻣﺎﺅﮔﮯ؟ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺑﺲ ﻭﮨﺎﮞ ﺗﮏ، ﺟﺐ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﮞ ﺳﮯ ﺟﺎﺅﮔﮯ ﭘﮭﺮ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐِﺘﻨﯽ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﻣﯿﮟ ﮐُﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ
  6. شبِ ہجراں تھی جو بسَر نہ ہوئی ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی ایسا کیا جرم ہو گیا ہم سے کیوں ملاقات عُمر بھر نہ ہوئی اشک پلکوں پہ مُستقل چمکے کبھی ٹہنی یہ بے ثمر نہ ہوئی تیری قُربت کی روشنی کی قسم صُبح آئی مگر سحر نہ ہوئی ہم نے کیا کیا نہ کر کے دیکھ لیا کوئی تدبیر کار گر نہ ہوئی کتنے سُورج نِکل کے ڈُوب گئے شامِ ہجراں ! تری سحر نہ ہوئی اُن سے محفل رہی ہے روز و شب دوستی اُن سے عُمر بھر نہ ہوئی یہ رہِ روزگار بھی کیا ہے ایسے بچھڑے کہ پھر خبر نہ ہوئی اِس قدر دُھوپ تھی جُدائی کی یاد بھی سایۂ شجر نہ ہوئی شبِ ہجراں ہی کٹ سکی نہ عدیم ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی
  7. نہ جانے ظرف تھا کم یا انا زیادہ تھی کلاہ سر سے تو قد سے قبا زیادہ تھی رمیدگی تھی تو پھر ختم تھا گریز اس پر سپردگی تھی تو بے انتہا زیادہ تھی غرور اس کا بھی کچھ تھا جدائیوں کا سبب کچھ اپنے سر میں بھی شاید ہوا زیادہ تھی وفا کی بات الگ پر جسے جسے چاہا کسی میں حسن، کسی میں ادا زیادہ تھی فراز اس سے وفا مانگتا ہے جاں کے عوض جو سچ کہیں تو یہ قیمت ذرا زیادہ تھی احمد فراز
  8. ﯾﮧ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻗﺴﻤﺖ ﮐﮧ ﻭﺻﺎﻝِ ﯾﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﺍﮔﺮ ﺍﻭﺭ ﺟﯿﺘﮯ ﺭﮨﺘﮯ، ﯾﮩﯽ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﺮﮮ ﻭﻋﺪﮮ ﭘﮧ ﺟﺌﮯ ﮨﻢ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺟﺎﻥ ﺟﮭﻮﭦ ﺟﺎﻧﺎ ﮐﮧ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﻣﺮ ﻧﮧ ﺟﺎﺗﮯ ﺍﮔﺮ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﺮﯼ ﻧﺎﺯﮐﯽ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﮐﮧ ﺑﻨﺪﮬﺎ ﺗﮭﺎ ﻋﮩﺪ ﺑﻮﺩﺍ ﮐﺒﮭﯽ ﺗُﻮ ﻧﮧ ﺗﻮﮌ ﺳﮑﺘﺎ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﺘﻮﺍﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻝ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺗﺮﮮ ﺗﯿﺮِ ﻧﯿﻢ ﮐﺶ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺧﻠﺶ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﺟﻮ ﺟﮕﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﯾﮧ ﮐﮩﺎﮞ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻨﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﺎﺻﺢ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ﺳﺎﺯ ﮨﻮﺗﺎ، ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻤﮕﺴﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﺭﮒِ ﺳﻨﮓ ﺳﮯ ﭨﭙﮑﺘﺎ ﻭﮦ ﻟﮩﻮ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﻧﮧ ﺗﮭﻤﺘﺎ ﺟﺴﮯ ﻏﻢ ﺳﻤﺠﮫ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ ﯾﮧ ﺍﮔﺮ ﺷﺮﺍﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﻏﻢ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﺟﺎﮞ ﮔﺴِﻞ ﮨﮯ، ﭘﮧ ﮐﮩﺎﮞ ﺑﭽﯿﮟ ﮐﮧ ﺩﻝ ﮨﮯ ﻏﻢِ ﻋﺸﻖ ﮔﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺗﺎ، ﻏﻢِ ﺭﻭﺯﮔﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﮩﻮﮞ ﮐﺲ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، ﺷﺐ ﻏﻢ ﺑﺮﯼ ﺑﻼ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺑُﺮﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﺮﻧﺎ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺮ ﮐﮯ ﮨﻢ ﺟﻮ ﺭُﺳﻮﺍ، ﮨﻮﺋﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﻏﺮﻕِ ﺩﺭﯾﺎ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﺍُﭨﮭﺘﺎ، ﻧﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻣﺰﺍﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﺍُﺳﮯ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮫ ﺳﮑﺘﺎ ﮐﮧ ﯾﮕﺎﻧﮧ ﮨﮯ ﻭﮦ ﯾﮑﺘﺎ ﺟﻮ ﺩﻭﺋﯽ ﮐﯽ ﺑﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﮐﮩﯿﮟ ﺩﻭﭼﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﯾﮧ ﻣﺴﺎﺋﻞِ ﺗﺼﻮّﻑ، ﯾﮧ ﺗﺮﺍ ﺑﯿﺎﻥ ﻏﺎﻟﺐ ﺗﺠﮭﮯ ﮨﻢ ﻭﻟﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﺟﻮ ﻧﮧ ﺑﺎﺩﮦ ﺧﻮﺍﺭ ﮨﻮﺗﺎ
  9. مستیء حال کبھی تھی ، کہ نہ تھی ، بھول گئے یاد اپنی کوئی حالت نہ رہی ، بھول گئے یوں مجھے بھیج کے تنہا سر بازار فریب کیا میرے دوست میری سادہ دلی بھول گئے میں تو بے حس ہوں ، مجھے درد کا احساس نہیں چارہ گر کیوں روش چارہ گری بھول گئے؟ اب میرے اشک محبت بھی نہیں آپ کو یاد آپ تو اپنے ہی دامن کی نمی بھول گئے اب مجھے کوئی دلائے نہ محبت کا یقیں جو مجھے بھول نہ سکتے تھے وہی بھول گئے اور کیا چاہتی ہے گردش ایام کہ ہم اپنا گھر بھول گئے ، ان کی گلی بھول گئے کیا کہیں کتنی ہی باتیں تھیں جو اب یاد نہیں کیا کریں ہم سے بڑی بھول ہوئی ، بھول گئے
  10. ﻭﮦ ﻧﻮﮐﺮﺍﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ! ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﺗﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺯﺍﮨﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﺁﻓﺲ ﮐﯿﻨﭩﯿﻦ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﭼﺎﺋﮯ ﭘﯽ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮨﻤﮧ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺑﺠﮭﮯ ﺑﺠﮭﮯ ﺳﮯ ﺭﻭﯾﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﭘﻮﭼﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ’’ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﺝ ﻣﺮﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﯿﻦ ﺳﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﺱﺟﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﮐﯽ :ﻧﻘﺎﮨﺖ ﺍﺗﺮ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔۔۔ ﭘﮭﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ’’ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺳﮯ ﺑﺪ ﺗﻤﯿﺰ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﺑﭽﭙﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻝ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺿﺪ، ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻧﺨﺮﮮ، ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮨﮯ، ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮨﮯ۔۔۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﯾﺎﺩ ﮐﮧ ﭘﺎﻧﭽﻮﯾﮟ ﮐﻼﺱ ﺗﮏ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻧﮩﺎﯾﺎ، ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﯾﺎ، ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮩﻨﮯ ﯾﺎ ﺟﻮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﺴﻤﮯ ﺑﻨﺪ ﮐﯿﮯ ﮨﻮﮞ۔ﺑﺎﭖ ﮐﺎﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺻﺮﻑ ﻧﺎﻡ ﮨﯽ ﻣﻼ۔ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﭘﯿﺎﺭ۔ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻦ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﭽﮫ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﭘﺮﺍﺋﻤﺮﯼ، ﻣﮉﻝ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﺗﮏ ﯾﮩﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺭﮨﯽ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ، ﮐﺎﭘﯿﺎﮞ، ﺑﺴﺘﮧ ﻏﺮﺽ ﺗﻤﺎﻡ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺍﺩﮬﺮ ﺍﺩﮬﺮ ﺑﮑﮭﺮﯼ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺳﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺻﺒﺢ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮭﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮐﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﻠﯿﻘﮯ ﺳﮯ ﺑﺴﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﺴﺘﮧ ﺑﮍﯼ ﻧﻔﺎﺳﺖ ﺳﮯ ﻣﯿﺰ ﭘﺮ ﭘﮍﺍ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻻﮐﮫ ﺑﺎﺭ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮐﮧ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﯽ ﮐﺮ ﺳﻮﻧﺎ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﯿﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺐ ﺻﺒﺢ ﺍﭨﮭﺘﺎ ﺗﻮﻟﺐ ﺷﯿﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﮫ ﮐﺎ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﺑﺪﻻ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﭘﮩﻠﮯ ﭘﮩﻞ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﻠﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﭘﺘﮧ ﭼﻞ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﻧﯿﻨﺪ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺩﻭﺩﮪ ﭘﻼ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮭﻠﺘﯽ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮐﮧ ﺑﺎﺭﺵ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﮐﻤﺒﻞ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﺮﺩﯼ ﻧﮧ ﻟﮕﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﮨﯽ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﭼﮍ ﺭﮨﯽ۔۔۔ ﺍﯾﮏ 11 ﺳﮯ 13 ﮔﮭﻨﭩﮯ ﺗﮏ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭼﻼﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺳﻼﺋﯽ ﻣﺸﯿﻦ ﺳﮯﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﮐﮧ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﮐﺜﺮ ﮔﮭﯽ ﻟﮕﻨﮯ ﺳﮯ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮯ ﻭﮦ ﺳﻮﮐﮭﮯ ﭨﮑﮍﮮ ﺟﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺎﺭ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻧﮧ ﺗﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻓﺮﻭﺧﺖ ﮨﻮﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮐﻮﮌﺍ ﺩﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﺳﻼﺋﯽ ﻣﺸﯿﻦ ﮐﺎ ﺭﺥ ﮐﺮﺗﺎ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮍ ﺗﮭﯽ۔ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺳﮯ ﮨﭧ ﮐﺮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﯿﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮐﮧ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﻼﺋﯽ ﻣﺸﯿﻦ ﮐﮯ ﭼﻠﻨﮯ ﺩﻭﺭﺍﻧﯿﮧ 16 ﮔﮭﻨﭩﮯ ﺗﮏ ﺟﺎ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﺎﻟﺞ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻣﺠﮭﮯ 1500 ﺭﻭﭘﯿﮧ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺗﮭﺎ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮔﮭﺮ ﺁ ﮐﺮ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺎ۔ ﺍُﺳﯽ ﺭﺍﺕ 2 ﺑﺠﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮭﻠﯽ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﮭﭧ ﭘﭧ ﮨﻮﺗﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺋﯽ ﺫﺭﺍ ﻣﺰﯾﺪ ﻏﻮﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﯾﮧ ﺑﮭﯽﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﮭﭩﯽ ﮔﮭﭩﯽ ﺳﺴﮑﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ۔ ﭼﭙﮑﮯ ﺳﮯ ﺑﺮﺁﻣﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﻮﭨﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﺎ ﭼﺸﻤﮧ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺐ ﻣﺸﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﺎﮔﮧ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮭﯽ ﮔﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ : ﮐﯿﺎ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﻣﺎﮞ؟؟؟ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﭼﻮﻧﮏ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﺁﻧﺴﻮ ﺻﺎﻑ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯﺍﻭﺭ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﺳﺠﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺻﺎﻑ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔۔۔ ﻭﮦ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺛﺮﯾﺎ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺻﺒﺢ ﺗﮏ ﺩﻭ ﺳﻮﭦ ﺳﻼﺋﯽ ﮐﺮﺩﻭ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﻮﮞ ﻟﯿﮑﻦ ﺩﮬﺎﮔﺎ ﺳﻮﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﻝ ﺭﮨﺎ۔۔۔ ﺍﺱ ﺩﻥ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﺴﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﻣﻮﭨﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔۔۔ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﮐﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮈﮬﻮﻧﮉﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮍﮬﺘﺎ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺎ۔ ﺍُﺩﮬﺮ ﺍﯾﻒ۔ﺍﮮ ﻣﮑﻤﻞ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﮬﺮ ﺁﻓﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮔﮭﺮ ﺟﺎ ﮐﺮ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﻧﮩﺎﻝ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ ﻓﻮﺭﯼ ﺷﮑﺮ ﭘﺎﺭﮮ ﻻ ﮐﺮ ﻣﺤﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﻧﭩﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﺳﮯ ﮔﮭﺮ ﺁ ﮐﺮ ﻟﯿﭧ ﮔﯿﺎ۔ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺗﮭﮑﺎﻭﭦ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﭘﺎﺅﮞ ﭼﺎﺭﭘﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﻟﭩﮑﺎﺋﮯ ﮨﯽ ﺳﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺟﺐ ﺍﭨﮭﺎ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺧﻼﻑ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺁﺝ ﻧﮧ ﺟﻮﺗﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﺍﺗﺮﮮ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺑﻨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺁﻭﺍﺯ ﺩﯼ : ’’ ﻣﺎﮞ، ﻣﺎﮞ ، ﻣﺎﮞ ﺍﭨﮫ ﺑﮭﻮﮎ ﻟﮕﯽ ﮨﮯ، ﻣﺎﮞ ﮞ ﮞ ﮞ ‘‘ ﭼﯿﺦ ﭼﯿﺦ ﮐﺮ ﺭﻭﯾﺎ، ﮨﺰﺍﺭ ﻣﻨﺘﯿﮟ ﺍﻭ ﺭ ﺗﺮﻟﮯ ﮐﯿﮯ ﻣﮕﺮ ﺷﺎﯾﺪ ﻣﺎﮞ ﺍﺏ ﮐﯽ ﺑﺎﺭ ﺍﭨﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﻟﮕﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺩﮬﺮ ﺩﯾﺎﺭِ ﻏﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﺎﺭﺍ ﮐﺎﻡ ﺧﻮﺩ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺳﻮﭼﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻧﮧ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺳﺎﺋﺶ ﻭ ﺳﮑﻮﮞ ﺩﯾﺎ ’’ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﺗﮭﯽ ﻧﻮﮐﺮﺍﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ‘‘ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺯﺍﮨﺪ ﮐﮯ ﺩﻭﻣﻮﭨﮯ ﻣﻮﭨﮯ ﺁﻧﺴﻮ ﺭﺧﺴﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺑﮩﮧ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺣﯿﺎﺕ ﮨﯿﮟ ﺳﺐ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭ ﺻﺤﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺧﻮﺵ ﺭﮐﮭﮯ۔ ﺟﻦ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﻭﻓﺎﺕ ﭘﺎ ﮔﺌﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺻﺒﺮ ﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﻓﺮﻣﺎﺋﮯ۔ ﺁﻣﯿﻦ
  11. پیاس لگی تھی غضب کی مگر پانی میں زہر تھا پیتے تو مر جاتے اور نہ پیتے تو بھی مر جاتے بس یہی دو مسئلے،زندگی بھر نہ حل ہوئے نہ نیند پوری ہوئی ،نہ خواب مکمل ہوئے وقت نے کہا .... کاش تھوڑا سا صبر ہوتا صبر نے کہا .... کاش تھوڑا سا وقت ہوتا صبح صبح اٹھنا پڑتا ہے کمانے کے لیے صاحب آرام کمانے نکلتا ہوں آرام چھوڑ کر ہنر" سڑکوں پر تماشا کرتا ہے اور "قسمت" محلات میں راج کرتی ہے" عجیب سوداگر ہے یہ وقت بھی جوانی کا لالچ دے کر بچپن لے گیا اب امیری کا لالچ دے کر جوانی بھی لے جائیگا لوٹ آتا ہوں واپس گھر کی طرف ...ہر روز تھکا ہارا آج تک سمجھ نہیں آیا جینے کے کام کرتا ہوں یا کام کرنے کے لیے جیتا ہوں تھک گیا ہوں تیری نوکری سے اے زندگی مناسب ہو گا میرا حساب کر دے بھری جیب نے 'دنیا' کی پہچان کرائی اور خالی جیب نے 'اپنوں' کی ہنسنے کی خواہش نہ ہو تو بھی ہنسنا پڑتا ہے کوئی جب پوچھے کیسے ہو....؟ تو "مزے میں ہوں" کہنا پڑتا ہے یہ زندگی کا تھیٹر ہے دوستو یہاں ہر اک کو ڈرامہ کرنا پڑتا ہے ماچس کی ضرورت یہاں نہیں پڑتی !.....یہاں آدمی آدمی سے جلتا ہے
×