Jump to content

Welcome to Fundayforum. Please register your ID or get login for more access and fun.

Signup  Or  Login

house fdf.png

ADMIN ADMIN

Search the Community

Showing results for tags 'مجھ'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair o Shairy
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Movies and Stars
    • Chit chat And Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.4
    • Applications 4.4
    • Plugin 4.4
    • Themes/Ranks
    • IPS Languages 4.4
  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares
  • Extras

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Interests


Location


ZODIAC

Found 7 results

  1. وہ مجھ سے ستاروں کا پتہ پوچھ رہا ہے عورت ہوں مگر صورت کہسار کھڑی ہوں اک سچ کے تحفظ کے لیے سب سے لڑی ہوں وہ مجھ سے ستاروں کا پتہ پوچھ رہا ہے پتھر کی طرح جس کی انگوٹھی میں جڑی ہوں الفاظ نہ آواز نہ ہم راز نہ دم ساز یہ کیسے دوراہے پہ میں خاموش کھڑی ہوں اس دشت بلا میں نہ سمجھ خود کو اکیلا میں چوب کی صورت ترے خیمے میں گڑی ہوں پھولوں پہ برستی ہوں کبھی صورت شبنم بدلی ہوئی رت میں کبھی ساون کی جھڑی ہوں
  2. کبھی شعر و نغمہ بن کے، کبھی آنسوؤں میں ڈھل کے وہ مجھے ملے تو لیکن، ملے صورتیں بدل کر یہ وفا کی سخت راہیں، یہ تمہارے پائے نازک نہ لو انتقام مجھ سے، مرے ساتھ ساتھ چل کے وہی آنکھ بے بہا ہے جو غمِ جہاں میں روئے وہی جام جامِ ہے جو بغیرِ فرق چھلکے یہ چراغِ انجمن تو ہیں بس ایک شب کے مہماں تُو جلا وہ شمع اے دل! جو بجھے کبھی نہ جل کے نہ تو ہوش سے تعارف، نہ جنوں سے آشنائی یہ کہاں پہنچ گئے ہم تری بزم سے نکل کے کوئی اے خمار ان کو مرے شعر نذر کر دے جو مخالفینِ مخلص نہیں معترف غزل کے
  3. نئی رُتوں،نئی فصلوں کی تاب دے مُجھ کو میں تِیرہ بخت ہوں ،دے، آفتاب دے مُجھ کو جو مُجھ کو حوصلہ، جِینے کا حوصلہ دے دیں اُڑوں میں جِن کے سہارے وُہ خواب دے مُجھ کو یہ تُو جو خود ہی کرے شاد، پِھر کرے ناشاد یہ کیا مذاق ہے بس یہ جواب دے مُجھ کو مری بساط بھی دیکھ اے خُدا! خُدا ہے جو تُو میں جِن کا اہل ہوں ایسے عذاب دے مُجھ کو ہُوا جو مجھ پہ ہر اُس ظلم کی تلافی ہو مرے زماں!کوئی ایسا خطاب دے مُجھ کو مجھے جو دے تو کوئی نعمتِ فراواں دے تووں سا تپنے لگا ہُوں سحاب دے مُجھ کو لہو کے بیچ سے جو حِدّتِ سکوں بخشے رگوں سے خِلق ہو جو وُہ شراب دے مُجھ کو ماجد صدیقی
  4. تمہیں پا کر یہ احساس ہوا ہے مجھ کو کہ جو پل گزرے ہیں تم بن سب کہ جو سانس لیے ہیں تم بن سب کہ جو پھول چنے ہیں تم بن سب کہ جو راہ چلے ہیں تم بن سب کہ جو خواب دکھے ہیں تم بن سب کہ جو خواہشیں کی ہیں تم بن سب کہ جو دن رات کٹے ہیں تم بن سب کہ جو اشعار محبت کے لکھے ہیں تم بن سب کہ جو اقرار نفاست کے سنے ہیں تم بن سب کہ جو دعوے نزاکت کے کیے ہیں تم بن سب کہ جو تعویذ محبت کے لکھے ہیں تم بن سب ہے میری عمر کا بے لوث خسارا بس ہے میری منزل سے بہت دور کنارہ بس تمہیں پا کر یہ احساس ہوا ہے مجھ کو۔۔۔
  5. ﯾﮩﺎﮞ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﻟﮓ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﮕﺮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ، ﺍﻭﺭ، ﮐﯿﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﮎ ﻟﮩﺮ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﮐﻮ ﮔﺰﺭﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺳﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﮎ ﻟﻔﻆ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ، ﺍﻭﺭ، ﺍﺩﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﺳﺎﺭﯼ ﺑﯿﺖ ﺟﺎﺗﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﯽ ﮔﻢ ﮔﺸﺘﮧ ﺻﺪﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﯾﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺁﻧﺪﮬﯽ ﺑﻦ ﮐﮯ ﺍﭨﮭﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺩِ ﺻﺒﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮔﺰﺭ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﮎ ﺷﻮﺭ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺑﭙﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺩﺭ ﻭ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺲ ﻟﯿﮯ ﺗﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻗﯿﺪ ﺧﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﺍﮐﮫ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎﺗﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﮎ ﺑﺎﺭ ﺗﻮ ﺟﻞ ﮐﺮ ﻓﻨﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﮐﯿﻨﭽﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻧﯿﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻇﻔﺮ، ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ، ﻭﺭﻧﮧ، ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﺮﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ، ﯾﺎ ﺑﮭﻼ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﺠﮫ کو
  6. شاخِ مِژگانِ محبّت پہ سجا لے مجھ کو برگِ آوارہ ہُوں، صرصر سے بچا لے مجھ کو رات بھر چاند کی ٹھنڈک میں سُلگتا ہے بدن کوئی تنہائی کے دَوزخ سے نکِالے مجھ کو مَیں تِری آنکھ سے ڈھلکا ہُوا اِک آنسو ہُوں تو اگر چاہے، بِکھرنے سے بچا لے مجھ کو شب غنیمت تھی ، کہ یہ زخم نظارہ تو نہ تھا ڈس گئے صُبحِ تمنّا کے اُجالے مجھ کو میں مُنقّش ہُوں تِری رُوح کی دِیواروں پر تو مِٹا سکتا نہیں بُھولنے والے مجھ کو تہہ بہ تہہ موج ِ طلب کھینچ رہی ہے، مُحسنؔ کوئی گرداب ِ تمنّا سے نِکالے مجھ کو محسن نقوی
  7. وہ اکثر مجھ سے کہتا ہے تم سادہ سی لڑکی ہو محبت کی تڑپ کو کیا جانو وہ اکثر میرے پاس آتا ہے اسکی شکایتیں لاتا ہے میرا دل خوب جلاتا ہے کبھی اسکے گھن گاتا ہے کبھی اسکے ستم بتاتا ہے میں پیار سے سب سنتی ہوں اسکا حوصلہ بڑھاتی ہوں اسکو ہنس کر دکھاتی ہوں میری ہنسی پہ وہ اکثر کہتا ہے تجھے بھی محبت ہو جائے تو پوچھوں اب بھی ہنسی آتی ہے اب بھی مسکرایا جاتا ہے میں دل میں ہی کہتی ہوں جب رو رو کر آنسو خشک ہو جائیں جب محبت میں ٹوٹ کر بکھرا جائے جب ساری آسیں ٹوٹ جائیں جب سب ہاتھ سے چھوٹ جائے تو فقط ہنسی ہی بچتی ہے کبھی ہنسا جاتا ہے اپنے حال پہ کبھی ہنسا جاتا ہے محبت پہ مگر اسکو کچھ کہہ نہیں پاتی میں پھر سے ہنس دیتی ہوں اور اسکو کہہ دیتی ہوں محبت میرے بس کا کام نہیں یہ تمہیں ہی مبارک ہو مجھے ہنستا ہی رہنے دو میں جذبات سے عاری لڑکی ہوں محبت سے سو گز دور ہوں مجھے محبت ہو ناممکن ہے اسے اتنا نہیں کہہ پاتی کہ ہاں میں سادہ سی لڑکی ہوں بس تم سے محبت کرتی ہوں اس امید پر جیتی ہوں کبھی تو تم آؤ گے مجھکو اپنے سنگ لے جاؤ گے تم بھی کبھی کہو گے سادہ_سی _لڑکی_ہو تمہاری سادگی پہ مرتا ہوں اداس کیوں بیٹھی ہو "ماہی" میں بھی تم سے محبت کرتا ہوں
×