Jump to content

Search the Community

Showing results for tags 'aksar'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 3 results

  1. Maine is toor se chaha tuje aksar jaana میں نے اس طور سے چاہا تجھے اکثر جاناں جیسے ماہتاب کو انت سمندر چاہے جیسے سورج کی کرن سیپ کے دل میں اترے جیسے خوشبو کا ہوا رنگ سے ہٹ کر چاہے جیسے پتھر کے کلیجے سے کرن پھوٹتی ہے جیسے غنچے کھلے موسم سے حنا مانگتے ہیں جیسے خوابوں میں خیالوں کی کماں ٹوٹتی ہے جیسے بارش کی دعا آبلہ با مانگتے ہیں میرا ہر خواب مرے سچ کی گواہی دے گا وسعتِ دید نے تجھ سے تری خواہش کی ہے میری سوچوں میں کبھی دیکھ سراپا اپنا میں نے دنیا سے الگ تیری پرستش کی ہے خواہشِ دید کا موسم کبھی ہلکا جو ہوا نوچ ڈالی ہیں زمانوں کی نقابیں میں نے تیری پلکوں پہ اترتی ہوئی صبحوں کے لئے توڑ ڈالی ہیں ستاروں کی طنابیں میں نے میں نے چاہا کہ ترے حسن کی گلنار فضا میری غزلوں کی قطاروں سے دہکتی جائے میں نے چاہا کہ مرے فن کے گلستاں کی بہار تیری آنکھوں کے گلابوں سے مہکتی جائے طے تو یہ تھا کہ سجاتا رہے لفظوں کے کنول میرے خاموش خیالوں مین تکلم تیرا رقص کرتا رہے، بھرتا رہے خوشبو کا خمار میری خواہش کے جزیروں میں تبسم تیرا تو مگر اجنبی ماحول کی پروردہ کرن میری بجھتی ہوئی راتوں کو سحر کر نہ سکی تیری سانسوں میں مسیحائی تھی لیکن تو بھی چارہِ زخمِ غمِ دیدہِ تر کر نہ سکی تجھ کو احساس ہی کب ہے کہ کسی درد کا داغ آنکھ سے دل میں اتر جائے تو کیا ہوتا ہے تو کہ سیماب طبیعیت ہے تجھے معلوم موسمِ ہجر ٹھہر جائے تو کیا ہوتا ہے تو نے اس موڑ پہ توڑا ہے تعلق کہ جہاں دیکھ سکتا نہیں کوئی بھی پلٹ کر جاناں اب یہ عالم ہے کہ آنکھیں جو کھلیں گی اپنی یاد آئے گا تری دید کا منظر جاناں مجھ سے مانگے گا ترے عہدِ محبت کا حساب تیرے ہجراں کا دہکتا ہوا محشر جاناں یوں مرے دل کے برابر ترا غم آیا ہے ! جیسے شیشے کے مقابل کوئی پتھر جاناں
  2. Anabiya Haseeb

    poetry Wo Aksar mujh se Kehta hai

    وہ اکثر مجھ سے کہتا ہے تم سادہ سی لڑکی ہو محبت کی تڑپ کو کیا جانو وہ اکثر میرے پاس آتا ہے اسکی شکایتیں لاتا ہے میرا دل خوب جلاتا ہے کبھی اسکے گھن گاتا ہے کبھی اسکے ستم بتاتا ہے میں پیار سے سب سنتی ہوں اسکا حوصلہ بڑھاتی ہوں اسکو ہنس کر دکھاتی ہوں میری ہنسی پہ وہ اکثر کہتا ہے تجھے بھی محبت ہو جائے تو پوچھوں اب بھی ہنسی آتی ہے اب بھی مسکرایا جاتا ہے میں دل میں ہی کہتی ہوں جب رو رو کر آنسو خشک ہو جائیں جب محبت میں ٹوٹ کر بکھرا جائے جب ساری آسیں ٹوٹ جائیں جب سب ہاتھ سے چھوٹ جائے تو فقط ہنسی ہی بچتی ہے کبھی ہنسا جاتا ہے اپنے حال پہ کبھی ہنسا جاتا ہے محبت پہ مگر اسکو کچھ کہہ نہیں پاتی میں پھر سے ہنس دیتی ہوں اور اسکو کہہ دیتی ہوں محبت میرے بس کا کام نہیں یہ تمہیں ہی مبارک ہو مجھے ہنستا ہی رہنے دو میں جذبات سے عاری لڑکی ہوں محبت سے سو گز دور ہوں مجھے محبت ہو ناممکن ہے اسے اتنا نہیں کہہ پاتی کہ ہاں میں سادہ سی لڑکی ہوں بس تم سے محبت کرتی ہوں اس امید پر جیتی ہوں کبھی تو تم آؤ گے مجھکو اپنے سنگ لے جاؤ گے تم بھی کبھی کہو گے #سادہ_سی _لڑکی_ہو تمہاری سادگی پہ مرتا ہوں ''''اداس کیوں بیٹھی ہو میں بھی تم سے ♡♡♡محبت کرتا ہوں
  3. Zarnish Ali

    poetry wo aksar mujh se kahti thi...

    ﻭﮦ ﺍﮐﺜﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺖ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﭼﺎﮨﻮ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﮎ ﻋﺎﻡ ﻟﮍﮐﯽ ﮨﻮﮞ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻋﺎﺩﺗﻮﮞ ﺳﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺷﻌﺮ ﻭ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺷﻐﻒ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﺮﮮ ﺩﻝ ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﺑُﻮﻧﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻮﺳﯿﻘﯿﺖ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻧﮧ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﭼﺎﻧﺪ ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﻓﺴﻮﮞ ﭘﺎﮔﻞ ﺑﻨﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻋﺎﺩﺗﻮﮞ ﺳﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺖ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﭼﺎﮨﻮ ﻭﮦ ﺍﮐﺜﺮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺳﭽﺎﺋﯽ ﭼﮭﻠﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﻣﺮﯼ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯽ ﻣﮕﺮ ﺍﮎ ﻣﺸﺘﺮﮎ ﺟﺰﺑﮧ ﺟﻮ ﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ، ﻣﺮﮮ ﮨﻮﻧﮯ، ﻣﺮﯼ ﭼﺎﮨﺖ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ، ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﮦ ﻋﺎﻡ ﺳﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺧﺎﺹ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﻧﮧ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺷﻐﻒ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﻣﻮﺳﻢ ﺍُﺳﮯ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍُﺳﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ... ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺍﺩﺍ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ، ﺍُﺳﮯ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﮨﺮ ﺍﮎ ﻣﻮﺳﻢ، ﮨﺮ ﺍﮎ ﻋﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮨﮯ ﻣﺠﮫ ﺍُﺱ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ، ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﺮﯼ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﻧﮧ ﭼﺎﮦ ﮐﺮ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺍﺩﮬﻮﺭﺍ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﮐﺮ ﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺩﻝ ﮐﻮ ﻏﻤﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮ ﻟﻮﮞ ﺍُﺳﮯ ﺍﮎ ﭘﻞ ﺟﻮ ﻧﮧ ﺳﻮﭼﻮﮞ ﺗﻮ ﺟﯿﺴﮯ ﺳﺎﻧﺲ ﺭُﮎ ﺟﺎﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺧﻮﺩﮐﺸﯽ ﮐﺮ ﻟﻮﮞ !!... ﻋﺎﻃﻒ ﺳﻌﯿﺪ
×