Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Search the Community

Showing results for tags 'dil'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 24 results

  1. Hareem Naz

    Dil k zindaan

    تمہیں اپنے دل کے زندان میں مقید کر کے😍 تاوان میں تم سے عمر بھر کا ساتھ مانگوں گا....😉 #بابو ❤
  2. اک پہیلی زندگی چاہت کے صبح و شام محبت کے رات دِن ’’دِل ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دِن‘‘ وہ شوقِ بے پناہ میں الفاظ کی تلاش اظہار کی زبان میں لکنت کے رات دِن وہ ابتدائے عشق وہ آغازِ شاعری وہ دشتِ جاں میں پہلی مسافت کے رات دِن سودائے آذری میں ہوئے صنم گری وہ بت پرستیوں میں عبادت کے رات دِن اِک سادہ دِل ، دیارِ کرشمہ گراں میں گم اِک قریۂ طلسم میں حیرت کے رات دِن لب ہائے نارسیدہ کی لرزش سے جاں بلب صہبائے ناچشیدہ کی لذت کے رات دِن روئے نگار و چشمِ غزالیں کے تذکرے گیسوئے یار و حرف و حکایت کے رات دِن ناکردہ کاریوں پہ بھی بدنامیوں کا شور اختر شماریوں پہ بھی تہمت کے رات دِن سوداگرانِ منبر و مکتب سے رو کشی جاں دادگانِ دانش و حکمت کے رات دِن اہلِ قبا و اہلِ ریا سے گریز پا وہ واعظانِ شہر سے وحشت کے رات دِن میر و انیس و غالب و اقبال سے الگ راشد ، ندیم ، فیض سے رغبت کے رات دِن فردوسی و نظیری و حافظ کے ساتھ ساتھ بیدل ، غنی ، کلیم سے بیعت کے رات دِن شیلے کا سحر ، کیٹس کا دُکھ ،بائرن کی دھج ان کافرانِ عشق سے نسبت کے رات دِن تشکیک و ملحدانہ رویے کے باوجود رومی سے والہانہ عقیدت کے رات دِن جیسے مئے سخن سے صراحی بھری ہوئی زورِ بیان و ُحسنِ طبیعت کے رات دِن یاروں سے شاعرانہ حوالے سے چشمکیں غیروں سے عاشقانہ رقابت کے رات دِن شعری سفر میں بعض بزرگوں سے اختلاف پیرانِ میکدہ سے بغاوت کے رات دِن رکھ کر کتابِ عقل کو نسیاں کے طاق پر وہ عاشقی میں دِل کی حکومت کے رات دِن ہر روز ، روزِ ابر تھا ہر رات چاند رات آزاد زندگی تھی ، فراغت کے رات دِن وہ صبح و شام دربدری ، ہم سنوں کے ساتھ آوارگی و سیر و سیاحت کے رات دِن اِک محشرِ خیال کے ہجراں میں کانٹا تنہائی کے عذاب ، قیامت کے رات دِن اک لعبتِ جمال کو ہر وقت سوچنا اور سوچتے ہی رہنے کی عادت کے رات دِن اِک رازدارِ خاص کو ہر وقت ڈھونڈنا بے اعتباریوں میں ضرورت کے رات دِن وہ ہر کسی سے اپنا ہی احوال پوچھنا اپنے سے بھی تجاہل و غفلت کے رات دِن بے وجہ اپنے آپ کو ہر وقت کوسنا بے سود ہر کسی سے شکایت کے رات دِن رُسوائیوں کی بات تھی رُسوائیاں ہوئیں رُسوائیوں کی عمر میں شہرت کے رات دِن اِک دُشمنِ وفا کو بھلانے کے واسطے چارہ گروں کے پند و نصیحت کے رات دِن پہلے بھی جاں گُسل تھے مگر اس قدر نہ تھے اِک شہرِ بے اَماں میں سکونت کے رات دِن اس دولتِ ہنر پہ بھی آزارِ مفلسی اس روشنیٔ طبع پہ ظلمت کے رات دِن پھر یہ ہوا کہ شیوئہ دِل ترک کر دیا اور تج دیئے تھے ہم نے محبت کے رات دِن ہر آرزو نے جامۂ حسرت پہن لیا پھر ہم تھے اور گوشۂ عزلت کے رات دِن ناداں ہیں وہ کہ جن کو ہے گم نامیوں کا رنج ہم کو تو راس آئے نہ شہرت کے رات دِن فکرِ معاش ، شہر بدر کر گئی ہمیں پھر ہم تھے اور قلم کی مشقت کے رات دِن ’’خونِ جگر ودیعتِ مژگانِ یار تھا‘‘ اور مدعی تھے صنعت و حرفت کے رات دِن کیا کیا ہمیں نہ عشق سے شرمندگی ہوئی کیا کیا نہ ہم پہ گزرے ندامت کے رات دِن آکاس بیل پی گئی اِک سرو کا لہو آسیب کھا گیا کسی قامت کے رات دِن کاٹی ہے ایک عمر اسی روزگار میں برسوں پہ تھے محیط ، اذیت کے رات دِن ساماں کہاں کہ یار کو مہماں بلایئے اِمکاں کہاں کہ دیکھئے عشرت کے رات دِن پھرتے تھے میر خوار کوئی پوچھتا نہ تھا قسمت میں جب تلک تھے قناعت کے رات دِن سو یہ بھی ایک عہدِ زیاں تھا ، گزر گیا کٹ ہی گئے ہیں جبرِ مشیت کے رات دِن نوواردانِ شہرِ تمنا کو کیا خبر ہم ساکنانِ کوئے ملامت کے رات دِن احمد فراز
  3. Kisi ki yaad dil me hai koi Ehsas baqi hai Badalte mosamon k darmian Ek Raaz baqi hai Abhi me safar me hon Milay gi manzil mujhe Magar in raston k darmian Ek saath baqi hai kahin pe sham dhalti hai kahin raat hoti hai Abhi to chand hai Chandni raat baqi hai Chale Aao kisi din tum hamara haal B dekho Hamara jism murda hai magar Ek saans baqi hai... Umeed hai phr B milega wo hamain Ek din KHUDA par hai bharosa KHUDA ki zaat baqi hai...!
  4. ہم رات بہت روئے، بہت آہ و فغاں کی دل درد سے بوجھل ہو تو پھر نیند کہاں کی اس گھر کی کھلی چھت پہ چمکتے ہوئے تارو کہتے ہو کبھی جا کے وہاں بات یہاں کی ؟ اللہ کرے میرؔ کا جنت میں مکاں ہو مرحوم نے ہر بات ہماری ہی بیاں کی ہوتا ہے یہی عشق میں انجام سبھی کا باتیں یہی دیکھی ہیں محبت زدگاں کی پڑھتے ہیں شب و روز اسی شخص کی غزلیں غزلیں یہ حکایات ہیں ہم دل زدگاں کی تم چرخِ چہارم کے ستارے ہوئے لوگو تاراج کرو زندگیاں اہلِ جہاں کی انشاؔ سے ملو، اس سے نہ روکیں گے وہ، لیکن اُس سے یہ ملاقات نکالی ہے کہاں کی مشہور ہے ہر بزم میں اس شخص کا سودا باتیں ہیں بہت شہر میں بدنام، میاں کی اے دوستو! اے دوستو! اے درد نصیبو گلیوں میں، چلو سیر کریں، شہرِ بتاں کی ہم جائیں کسی سَمت، کسی چوک میں ٹھہریں کہیو نہ کوئی بات کسی سود و زیاں کی انشاؔ کی غزل سن لو، پہ رنجور نہ ہونا دیوانا ہے، دیوانے نے اک بات بیاں کی
  5. Jiski Jhankaar mai Dil Ka AraamTh - Wo Tera Naam Th جسکی جھنکار میں دل کا آرام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ میرے ہونٹوں پہ رقصاں جو اک نام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،تہمتیں مجھ پہ آتی رہی ہیں کئی، ایک سے اک نئی خوبصورت مگر جو اک الزام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ دوست جتنے تھے نا آشنا ہوگئے، پارسا ہوگئے، ساتھ میرے جو رسوا سرِ عام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،صبح سے شام تک جو میرے پاس تھی، وہ تیری آس تھی شام کے بعد جو کچھ لبِ بام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،مجھ پہ قسمت رہی ہمیشہ مہرباں، دے دیا سارا جہاں پر جو سب سے بڑا ایک انعام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،غم نے تاریکیوں میں اچھالا مجھے، مار ڈالا مجھے اک نئی چاندنی کا جو پیغام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ ،تیرے ہی دم سے ہے یہ قتیل آج بھی شاعری کاولی اس کی غزلوں میں کل بھی جو الہام تھا۔۔۔وہ تیرا نام تھا۔۔ قتیل شفائی
  6. آخری بار ملو ایسے کہ جلتے ہوئے دل راکھ ہوجائیں، کوئی اور تقاضا نہ کریں چاک وعدہ نہ سِلے، زخمِ تمنّا نہ کِھلے سانس ہموار رہے شمع کی لَو تک نہ ہِلے باتیں بس اتنی کہ لمحے انہیں آکر گِن جائیں آنکھ اٹھائے کوئی اُمید تو آنکھیں چھن جائیں اس ملاقات کا اس بار کوئی وہم نہیں جس سے اِک اور ملاقات کی صورت نکلے اب نہ ہیجان و جنوں کا، نہ حکایات کا وقت اب نہ تجدید وفا کا، نہ شکایات کا وقت لُٹ گئی شہرِ حوادث میں متاعِ الفاظ اب جو کہنا ہے تو کیسے کوئی نوح کہیے آج تک تم سے رگِ جاں کے کئی رشتے تھے کل سے جو ہو گا اُسے کون سا رشتہ کہیے پھر نہ دہکیں گے کبھی عارض و رخسار، مِلو ماتمی ہیں دِم رخصت درو دیوار، ملو پھر نہ ہم ہوں گے، نہ اقرار، نہ انکار مِلو
  7. Mai Dil Pe jabar Kero Ga, Tuje Bhula Dun Ga میں دل پہ جبر کروں گا، تجھے بھلا دوں گا مروں گا خود بھی تجھے بھی کڑی سزا دوں گا یہ تیرگی میرے گھر کا ہی کیوں‌ مقدر ہو ؟ میں تیرے شہر کے سارے دیئے بجھا دوں گا ہوا کا ہاتھ بٹاؤں گا ہر تباہی میں ہرے شجر سے پرندے میں خود اڑا دوں گا وفا کروں گا کسی سوگوار چہرے سے پرانی قبر پہ کتبہ نیا سجا دوں گا اسی خیال میں گزری ہے شامِ درد اکثر کہ درد حد سے بڑھے گا تو مسکرا دوں گا تو آسماں کی صورت ہے گر پڑے گا کبھی زمیں ہوں بھی مگر تجھ کو آسرا دوں گا بڑھا رہی ہیں میرے دکھ، نشانیاں تیری میں تیرے خط، تری تصویر تک جلا دوں گا بہت دنوں سے مرا دل اداس ہے محسن اس آئینے کو کوئی عکس اب نیا دوں گا محسن نقوی
  8. IK DIYA DIL MAI JALANA BHI, BUJHA BHI DENA اک دیا دل میں جلانا بھی، بجھا بھی دینا یاد کرنا بھی اسے روز، بھلا بھی دینا کیا کہوں میری چاہت ہے یا نفرت اس کی نام لکھنا بھی میرا، لکھ کے مٹا بھی دینا پھر نہ ملنے کو بچھڑتا ہوں تجھ سے لیکن مڑ کے دیکھوں تو پلٹنے کی دعا بھی دینا خط بھی لکھنا اسے مایوس بھی رہنا اس سے جرم کرنا بھی مگر خود کو سزا بھی دینا مجھ کو رسموں کا تکلف بھی گوارا لیکن جی میں آئے تو یہ دیوار گرا بھی دینا اس سے منسوب بھی کر لینا پرانے قصے اس کے بالوں میں نیا پھول سجا بھی دینا صورتِ نقش ِ قدم، دشت میں رہنا محسن اپنے ہونے سے نہ ہونے کا پتہ بھی دینا
  9. kabhi moam ban kay pighal gaya, kabhi girtey girtey sambhal gaya wo ban kay lamha guraiz ka, mere paas se nikal gaya usey rokta bhi to kis tarhan, kay wo shaks itna ajeeb tha kabhi tarap utha meri aah se, kabhi ashk na pighal saka sar.e.rah mila wo agar kabhi, to nazar chura kay guzar gaya wo utar gaya meri ankh se, Mere dil se kyun na utar saka wo chala gaya jahan chor kar, main wahan se phir na palat saka wo sambhal gaya tha magar, main bikhar kay phir na simat saka
  10. Zarnish Ali

    dil bathi tujh pa har piya

    dil bathi tujh pa har piya دل بیٹھی تجھ پہ ہار پیا کر تو بھی مجھ سے پیار پیا ان گلیوں میں کچھ بھول گئی میں روئی زارو زار پیا اب درد کا ضامن کون بنے میں برسوں سے بیمار پیا کیوں مہکی مہکی شاموں سے ہے دل میرا بیزار پیا کیوں چپ چپ گم سم رہتی ہوں یہ پوچھ نہ مجھ سے یار پیا کچھ دل بھی بوجھل بوجھل ہے کچھ یادوں کا امبار پیا ہم تجھ سے ہیں ناراض بہت یہ بھول گئے ہر بار پیا تیرےنام پر کیسے بکتی ہوں آ دیکھ سر بازار پیا.
  11. Sach hai ke woh pehli si rafaqat nahee rahi Yeh bhi nahee ke milne ki chaahat nahee rahi Toota hai kab yahaan teri yaadoon ka silsila Yeh aur baat hai mujhe fursat nahee rahi Bheegi raheen theen palkain teri yaad mein sada Per aansou'oun ko behnay ki aadat nahee rahi Ek pal woh thaa ke lutf thaa tere wisaal mein Ab tere zikar mein bhi woh raahat nahee rahi Jab hogaya hai khoon sabhi khwahishaat ka Dil kya kare ke ab koi hasrat nahee rahi,
  12. یہ ممکن تو نہیں جو دل نے چاہا تھا وہ مل جاے کوئی امید ٹوٹے تو کیا کریں جو دیکھےخواب آنکھوں نے خقیقت وہ نہ بن پائیں ، جو قسمت ساتھ نہ دہ تو کیا کریں یہ دل جو رو رہا تو کہیں سے صبر مل جاے ہوئے جو بد گماں ہم تو کیا کریں جو دل کے پاس رہتے ہیں وہ دل کیوں توڑ جاتے ہیں، وفا کے بدلے کیوں وہ بےوفائی چھوڑ جاتے ہیں کبھی جو ہمسفر تھے اب وہی انجان لگتے ہیں، محبتوں کے وہ رشتےبھی تو بے جان لگتے ہیں خوشی کے در پہ دستک دہ رہے ہیں غم مسلسل ہی،کہیں نہ چین نہ پائیں تو کیا کریں کسی سے ہمنوائی کا صلہ ہم کو نہ مل پائے، ہوئے جو بد گمان تو ہم کیا کریں کسی کا ساتھ پانا بھی کبھی آسان نہیں ہوتا ہے، کسی کے دور جانے سے یہ دل ویران نہیں ہوتا وجہ کچھ اور بھی مل جاتی ہے دنیا میں جینے کی،کسی کی آس پہ جینا بھی تو آسان نہیں ہوتا نصیبوں میں ہی نہ لکھا ہو تو کیسے وہ مل جاے،خدا بھی روٹھ جاے تو کیا کریں یہ دل جو رو رہا ہے تو کہیں سے صبر مل جاے،ہوئے جو بد گمان ہم تو کیا کریں یہ ممکن تو نہیں جو دل نے چاہا تھا وہ مل جاے،کوئی امید ٹوٹے تو کیا کریں
  13. ایک دل تھا گنوائے بیٹھے ہیں اس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں دل میں دل دار آئے بیٹھے ہیں ہاتھ پر اُن کے تتلی بیٹھ گئی گل سبھی خار کھائے بیٹھے ہیں دستِ نازک پہ تتلی نے سوچا گل ، حنا کیوں لگائے بیٹھے ہیں رنگ اُڑا لے گئے وہ تتلی کا گل کی خوشبو چرائے بیٹھے ہیں شائبہ تک نہیں شرارت کا کیسی صورت بنائے بیٹھے ہیں اس سے بڑھ کر بھی کوئی ہے نازک؟ روشنی سے نہائے بیٹھے ہیں اس لیے پاؤں میں دباتا ہوں وہ مرا دل دبائے بیٹھے ہیں اس لیے مطمئن ہیں کوہِ گراں ہم امانت اٹھائے بیٹھے ہیں دوسرا موقع قیس کیسے ملے؟ ایک دل تھا گنوائے بیٹھے ہیں
  14. waqas dar

    Shaher dil ki galiyun mai.

    شہرِ دل کی گلیوں میں شام سے بھٹکتے ہیں !چاند کے تمنائی بے قرار سودائی دل گداز تاریکی روح جاں کو ڈستی یے روح و جاں میں بستی ہے شہرِ دل کی گلیوں میں تاک شب کی بیلوں پر شبنمیں سر شکوں کی بے قرار لوگوں نے بے شمار لوگوں نے یاد گار چھوڑی ہے اتنی بات تھوڑی ہے صد ہزار باتیں تھیں حیلۂ شکیبائی صورتوں کی زیبائی قامتوں کی رعنائی ان سیاہ راتوں میں ایک بھی نہ یاد آئی جا بجا بھٹکتے ہیں کس کی راہ تکتے ہیں چاند کے تمنائی یہ نگر کبھی پہلے اس قدر نہ ویراں تھا کہنے والے کہتے ہیں قریہ نگاراں تھا خیر اپنے جینے کا یہ بھی ایک ساماں تھا آج دل میں ویرانی ابر بن کے گھر آئی آج دل کو کیا کہیے با وفا نہ ہرجائی پھر بھی لوگ دیوانے آ گئے ہیں سمجھانے اپنی وحشت دل کے بن لیے ہیں افسانے خوش خیال دنیا نے گرمیاں تو جاتی ہیں وہ رتیں بھی آتیں ہیں جب ملول راتوں میں دوستوں کی باتوں میں جی نہ چین پائے گا اور اوب جائے گا آہٹوں سے گونجے گی شہرِ دل کی پہنائی اور چاند راتوں میں چاندنی کے شیدائی ہر بہانے نکلیں گے آزمانے نکلیں گے آرزو کی گہرائی ڈھونڈنے کو رسوائی سرد سرد راتوں کو زرد چاند بخشے گا بے حساب تنہائی بے حجاب تنہائی !!!شہرِ دل کی گلیوں میں ابنِ انشاء
  15. جسم کے جزیرے میں ، یہ جو دل کی وادی ہے اس پہ راج ہے جس کا ، تو وہ شہزادی ہے اپنے در پہ سجدوں کی راہ کیا دکھا دی ہے تو نے میرے ماتھے پر زندگی سجا دی ہے تجھ کو بھولنا چاہوں ، اور شکست کھا جاؤں کتنی بے وقار اپنی قوت اِرادی ہے جستجو کے صحرا میں اب کہاں کوئی آنچل میں نے اپنی چھاؤں بھی دھوپ میں گنوا دی ہے یاد کر کبھی اے تاج تو بھی اس محبت کو جس نے تیرے مرمر کو چاندنی پلا دی ہے میرا ساتھ کیا دے گا شیخ بر سرِ محفل وہ تو چپ ہے بیچارہ جھومنے کا عادی ہے دوست سب قتیل اپنے تل گئے رقابت پر میں نے کوئی دل کی بات جب انہیں سنا دی ہے (قتیل شفائی) Jism Ke Jazeeray Mein, Ye Jo Dil Ki Vaadi Hai Is Pe Raaj Hai Jis Ka, TU Wo Shehzaadi Hai Apnay Dar Pe Sajdon Ki Raah Kia Dikha Di Hai TU Ne Mere Maathay Per Zindagi Sajaa Di Hai Tujh Ko Bhoolna Chaahon, Aur Shikast Khaa Jaon Kitni Be-Waqar Apni Quwwat-e-Iraadi Hai Justuju Ke Sehraa Mein Ab Kahan Koi Aanchal Mein Ne Apni Chhaon Bhi Dhoop Mein Ganwa Di Hai Yaad Kar Kubhi Ay Taaj Tu Bhi Os Mohabbat Ko Jis Ne Tere Mar mar Ko Chaandni Pila Di Hai Mera Saath Kia Dega Shaikh Barsar-e-Mehfil Wo TOu Chhup hy Baichaarah Jhoomnay Ka Aadi Hai Dost Sab Qateel Apnay Tul Gaye Raqaabat Per Mein Ne Koi Dil Ki Baat Jub Unhain Suna Di Hai (Qateel Shifa)
  16. دکھ کی لہر نے چھیڑا ھوگا یاد نے کنکر پھینکا ھوگا آج تو میرا دل کہتا ھے تو اس وقت اکیلا ھوگا میرے چومے ہوئے ہاتھوں سے اوروں کو خط لکھتا ھوگا بھیگ چلیں اب رات کی پلکیں تو اب تھک کے سویا ھوگا ریل کی گہری سیٹی سن کر رات کا جنگل گونجا ھوگا شہر کے خالی اسٹیشن پر کوئی مسافر اترا ھوگا آنگن میں پھر چڑیاں بولیں تو اب سو کر اٹھا ھوگا یادوں کی جلتی شبنم سے پھول سا مکھڑا دھویا ھوگا موتی جیسی شکل بنا کر آئینے کو تکتا ھوگا شام ہوئی اب تو بھی شاید اپنے گھر کو لوٹا ھوگا نیلی دھندلی خاموشی میں تاروں کی دھن سنتا ھوگا میرا ساتھی شام کا تارا تجھ سے آنکھ ملاتا ھوگا شام کے چلتے ہاتھ نے تجھ کو میرا سلام تو بھیجا ھوگا پیاسی کرلاتی کونجوں نے میرا دکھ تو سنایا ھوگا میں تو آج بہت رویا ھوں تو بھی شاید رویا ھوگا ناصر تیرا میت پرانا تجھ کو یاد تو آتا ھوگا۔۔
  17. Zarnish Ali

    Wo dil hi kya jo...

    ﻭﮦ ﺩﻝ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﻮ ﺗﺮﮮ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﮐﮯ ﺯﻧﺪﮦ ﺭﮨﻮﮞ ﺧﺪﺍ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﺮﺍ ﭘﯿﺎﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﻦ ﮐﺮ ﯾﮧ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺕ ﻣﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻭﻓﺎ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﯾﮧ ﭨﮭﯿﮏ ﮬﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺮﺗﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺧﺪﺍ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻣﮕﺮ ﺟﺪﺍ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﺳﻨﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺩﻝ ﭘﮧ ﭼﻮﭦ ﺗﻮ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﻣﮕﺮ ﮔﻠﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﭘﺮﮐﮫ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﻗﺘﯿﻞ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﺟﺎﺋﮯ ﭘﺮ ﺍﻟﺘﺠﺎ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ
  18. Hareem Naz

    nazm Dil Gumshuda

    دِلِ گمشدہ! کبھی مل ذرا کسی خشک خاک کے ڈھیر پر یا کسی مکاں کی منڈیر پر دِلِ گمشدہ! کبھی مِل ذرا جہاں لوگ ہوں، اُسے چھوڑ کر کسی راہ پر، کسی موڑ پر دِلِ گمشدہ! کبھی مِل ذرا مجھے وقت دے، مری بات سُن مری حالتوں کو تو دیکھ لے مجھے اپنا حال بتا کبھی کبھی پاس آ! کبھی مِل سہی مرا حال پوچھ! بتا مجھے مرے کس گناہ کی سزا ہے یہ؟؟؟ تُو جنون ساز بھی خود بنا مری وجہِ عشق یقیں ترا مِلا یار بھی تو، ترے سبب وہ گیا تو ، تُو بھی چلا گیا؟؟؟ دِلِ گمشدہ؟؟؟ یہ وفا ہے کیا؟؟؟ اِسے کِس ادا میں لکھوں بتا؟؟؟ اِسے قسمتوں کا ثمر لکھوں؟؟؟ یا لکھوں میں اِس کو دغا، سزا؟؟؟
  19. Zarnish Ali

    agar yun hi ye dil

    agar yon hi ye dil satata rahega to ik din mera ji hi jata rahega main jata hun dil ko tere pas chore meri yad tujhko dilata rahega gali se teri dil ko le to chala hun main pahunchunga jab tak ye ata rahega qafas main koi tum se ai ham-safiron khabar kal ki hamko sunata rahega khafa ho k ai ?Dard? mar to chala tu kahan tak gam apna chupata rahega
  20. ﮐﺒﮭﯽ ﺟﻮ ﻋﮩﺪِ ﻭﻓﺎ ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﮞ ﺗﯿﺮﮮ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﮧ ﯾﮧ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺣﻮﺻﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﮑﺴﺖ ﺩﻝ ﭘﺮ ﻋﺬﺍﺏ ﭨﮭﮩﺮﯼ ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﻨﮧ ﺯﻭﺭ ﺯﻟﺰﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮬﻤﮏ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﭩﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﺍﺳﮯ ﯾﻘﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺮﻧﺎ ﮨﮯ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﮧ ﺗﯿﺮ ﭼﻠﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﯿﺸﺘﺮ ﺩﺳﺖِ ﺩﺷﻤﻨﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﻭﮦ ﺳﻨﮓ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮔﺮﮮ ﺑﮭﯽ ﺩﻝ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭼﺒﮫ ﮨﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﯾﻘﯿﻦ ﺑﮑﮭﺮﮮ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﮔﻤﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﺍ ﺟﺎﮌ ﺑﻦ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﺱ ﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻏﺰﻝ ﺗﻮ ﻣﺤﺴﻦ ﻧﮯ ﭼﮭﯿﮍ ﺩﯼ ﮨﮯ ﮐﺴﮯ ﺧﺒﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﺲ ﮐﮯ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺩﻝ ﭘﮧ ﺍﺏ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺗﺎﻥ ﭨﻮﭨﮯ ﻣﺤﺴﻦ ﻧﻘﻮﯼ
  21. waqas dar

    Zindagi ab bhi muskurati hai

    سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے اب بھی سورج کی وہی عادت ہے گھر کے آنگن کو وہ جگاتا ہے مرمریں شوخ سی حسین کرنیں چہروں کو چوم کر اٹھاتی ہیں وہاں صبحیں بڑی توانا ہیں اور سب دن بھی خوب دانا ہیں منہ اندھیرے سفر کو جاتے ہیں روز پھر گھر میں شام ہوتی ہے وہی برگد تلے کی ہیں شامیں ایک حقہ ھے کئی ہیں سامع اب بھی فکریں گلی محلے کی باتوں باتوں میں ختم ہوتی ہیں وہی بچوں کا ہے حسیں بچپن جگنو, تتلی کی ہے وہی ان بن وہی جھریوں سی پیاری نانی ہے وہی پریوں کى اک کہانی ہے اب بھی موسم وہاں نشیلے ہیں وہی قوس قزح کے جھولے ہیں وہی بارش کی مستیاں اب بھی ٹین کی چھت پہ گنگناتی ہیں ہے سخن باکمال لوگوں کا میٹھا پن لازوال لہجوں کا سچ بھی جذبوں کی روح میں ہے شامل نہ محبت یہ آزماتی ہے اب بھی باقی ہے دوستی کا مان اب بھی رشتوں میں جان باقی ہے اب بھی جنت ہے ماں کے قدموں میں اب بھی ماں لوریاں سناتی ہے خوشبویں مٹیوں میں زندہ ہیں عکس بھی پانیوں میں ہیں باقی اب بھی تاروں کے سنگ راتوں کو چاندنی محفلیں سجاتی ہے اب بھی راتوں کو چاند کی سکھیاں اپنے چندا سے ملنے جاتی ہیں اور اک دور کھڑے سائے کو اپنی سب دھڑکنیں سناتی ہیں اب بھی سب قافلے جشن میں ہیں اب بھی سب فاصلے امن میں ہیں مسافر جا کے لوٹ آتے ہیں ان کی یادیں نہیں ستاتی ہیں چلو اب ہم بھی وہیں چلتے ہیں جہاں دل آج بھی دھڑکتے ہیں جہاں اب بھی وہ وقت ساکن ہے زندگی اب بھی مسکراتی ہے سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے
  22. ﻣﯿﺮﺍ ﺟﯽ چاہتا ہے ﺗﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻮﮞ۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﺗﻨﺎ ﻃﻮﯾﻞ ہو ﮐﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺧﺘﻢ ﻧﮧ ہو۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺣﮑﺎيتیں ہو ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ ہو ﺍﺱ ﻣﯿﮟ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﭨﮭﯽ ﺭﻭﭨﮭﯽ ﺳﯽ ﮐﭽﮫ ﻣﺤﺒﺘﯿﮟ ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺟﯽ ﭼﺎہتا ہے ﺗﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻮﮞ۔۔۔۔۔۔۔ ﺗﺠﮭﮯ ﺑﺘﺎ ﺩﻭﮞ ﮐﮧ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮨﺮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺭﻓﺎﻗﺘﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉﯾﮟ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻋﻨﺎﯾﺘﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉﯾﮟ۔۔۔۔۔۔ ﺑﮯ ﻣﮩﺮ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﮧ ﺻﺪﺍﻗﺘﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉﯾﮟ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺟﯽ ﭼﺎہتا ہے ﺗﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻮﮞ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮐﮧ ﺗﯿﺮﮮ ﺟﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﮨﺮ ﺭﻧﮓ ﻣﭧ ﮔﯿﺎ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﭧ ﮔﯿﺎ ﺳﻨﮓ ﻣﭧ ﮔﯿﺎ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺑﮯ ﻟﻮﺙ ﺭﺷﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻭ ننگ ﻣﭧ ﮔﯿﺎ۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺟﯽ ﭼﺎہتا ہے ﺗﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻮﮞ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﭽﮭﮍ ﮐﺮ ﺗﺠﮫ ﭘﮧ ﮐﯿﺎ ﮔﺰﺭﯼ۔۔۔۔۔۔۔؟؟ ﺍﯾﺴﯽ ہی ﺩﻧﯿﺎ ﮔﺰﺭﯼ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺳﻮﺍ ﮔﺰﺭﯼ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﺎﺭ ﺗﯿﺮﮮ ﺩﻝ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﺻﺪﺍ ﮔﺰﺭﯼ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺟﯽ ﭼﺎہتا ہے ﺗﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻮﮞ۔۔۔۔۔۔۔۔
  23. waqas dar

    Ajab apna haal huta

    عجب اپنا حال ھوتا جو وصال یار ھوتا کبھی جان صدقے ھوتی'کبھی دل نثار ھوتا کوئی فتنہ تا قیامت نہ آشکار ھوتا ترے دل پہ کاش ظالم مجھے اختیار ھوتا ترے وعدے پہ ستم گر ابھی اور صبر کرتے اگر اپنی زندگی کا ہمیں اعتبار ھوتا یہ وہ درد دل نہیں ھے کہ ھو چارہ ساز کوئی اگر ایک بار ملتا'تو ہزار بار ھوتا تمہیں ناز ھو نہ کیونکر'کر لیا ھے داغ دل کا یہ رقم نہ ھاتھ لگتی'نہ یہ افتخار ھوتا
  24. کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی اس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اس نے بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو مرے پاس آیا بس یہی بات ہے اچھی مرے ہرجائی کی تیرا پہلو ترے دل کی طرح آباد رہے تجھ پہ گزرے نہ قیامت شب تنہائی کی اس نے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا روح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے جاگ اٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی ____________________________________ پروین شاکرؔ
×