Jump to content

Please Disable Your Adblocker. We have only advertisement way to pay our hosting and other expenses.  

Search the Community

Showing results for tags 'dosti'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chit chat And Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • Premium Files
  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Genres

  • English
  • New Movie Songs
  • Old Movies Songs
  • Single Track
  • Classic
  • Ghazal
  • Pakistani
  • Indian Pop & Remix
  • Romantic
  • Punjabi
  • Qawalli
  • Patriotic
  • Islam

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Interests


Location


ZODIAC

Found 10 results

  1. Zarnish Ali

    poetry main dosti kay ajab...

    ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﮯ ﻋﺠﺐ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﻋﺎﺅﮞ، ﮐﺒﮭﯽ ﺳﺎﺯﺷﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺟﻮ ﺗﻢ ﺫﺭﺍ ﺳﺎ ﺑﮭﯽ ﺑﺪﻟﮯ، ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﻟﮯ ﻟﻮﮞ ﮔﺎﮦ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺩﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﻋﺠﺐ ﻭﺍﮨﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺩُﺷﻤﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍُﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺍﺑﮭﯽ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻗﺪﻡ ﻗﺪﻡ ﭘﮧ ﮨﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﻧﻘﻮﺵ ﻣﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﺷﮩﺮ ﮐﮯ ﺳﺐ ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺟﺐ ﺳﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺳﮯ ﺍﺏ ﺁﻧﺪﮬﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺑﻌﺪ ﯾﮧ ﺩﻥ ﺗﻮ ﮔﺬﺭ ﮨﯽ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﺐ ﮐﻮ ﺩﯾﺮ ﺗﻠﮏ ﺁﻧﺴﻮﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻋﺎﻃﻒؔ ﺳﻌﯿﺪ
  2. شکیل بد ایونی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرے ہم نفس مرے ہم نوا مجھے دوست بن کے دغا نہ دے میں ہوں درد عشق سے جاں بلب مجھے زندگی کی دعا نہ دے مرے داغِ دل سے ہے روشنی اسی روشنی سے ہے زندگی مجھے ڈر ہے اے مرے چارہ گر یہ چراغ تو ہی بجھا نہ دے مجھے چھوڑ دے مرے حال پر ترا کیا بھروسہ ہے چارہ گر یہ تری نوازشِ مختصر مرا درد اور بڑھا نہ دے مرا عزم اتنا بلند ہے کہ پرائے شعلوں کا ڈر نہیں مجھے خوف آتشِ گل سے ہے یہ کہیں چمن کو جلا نہ دے وہ اٹھے ہیں لے کے خم و سبو ارے او شکیل کہاں ہے تُو ترا جام لینے کو بزم میں کوئی اور ہاتھ بڑھا نہ دے
  3. کبھی میں جو کہہ دوں محبت ہے تم سے تو مجھ کو خدارا غلط مت سمجھنا کہ میری ضرورت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے پھولوں کی ڈالی یہ باہیں تمہاری ہیں خاموش جادو نگاہیں تمہاری جو کانٹیں ہوں سب اپنے دامن میں رکھ لوں سجاؤں میں کلیوں سے راہیں تمہاری نظر سے زمانے کی خود کو بچانا کسی اور سے دیکھو دل نہ لگانا کہ میری امانت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے چہرہ تمہارا کہ دن ہے سنہرا اور اس پر یہ کالی گھٹاؤں کا پہرا گلابوں سے نازک مہکتا بدن ہے یہ لب ہیں تمہارے کہ کھلتا چمن ہے بکھیرو جو زلفیں تو شرمائے بادل یہ زاہد بھی دیکھے تو ہو جائے پاگل وہ پاکیزہ مورت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو بن کے کلی مسکراتی ہے اکثر شبِ ہجر میں جو رُلاتی ہے اکثر جو لمحوں ہی لمحوں میں دنیا بدل دے جو شاعر کو دے جائے پہلو غزل کے چھپانا جو چاہیں چھپائی نہ جائے بھلانا جو چاہیں بھلائی نہ جائے وہ پہلی محبت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم
  4. ﺩﮬﻤﺎﻝ ﺩُﮬﻮﻝ ﺍُﮌﺍﺋﮯ ، ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻭﺟﺪ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ، ﺗﻮ ، ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﮩﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﻠﺘﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﮐﮯ ﺗﮩﮧ ﻣﯿﮟ ﺟﻼﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﭙِﺶ ﺗﻮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺩﮬﻮﺍﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺟﻮ ﺁﮒ ﺍﺷﮏ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺩﮐﺎﻥِ ﻭﺻﻞ ﺗﻮ ﮐﮭﻮﻟﮯ ﺍُﺩﺍﺱ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﮨﺠﺮ ﮐﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﺎﻝ ﻭ ﺧﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﯿّﺪ ﮨﻮ ﺳﻨﮓ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﭘﮕﮭﻞ ﮐﮯ،ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺩﮐﮭﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻗﺪﻡ ﻗﺪﻡ ﻭﮦ ﺩﮬﻤﮏ ﮨﻮ،ﺯﻣﯿﮟ ﺩﮬﮍﮎ ﺍُﭨّﮭﮯ ﻓﻠﮏ ﻏﺒﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﻋﺼﺎﺋﮯ ﺟﺬﺏ ﮐﯽ ﺿﺮﺑﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﻧﺌﮯ ﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺩﺭﺩ ﺍُﭨﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺭﮦ ﺭﮦ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮧﺀ ﺷَﻖ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺁﭖ ﺍﭘﻨﺎ ﺍُﭘﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺩﺑﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﮯ ﻣﻠﺒﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﮨﭩﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻧﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﮦ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻋﺎﺷﻖ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺩﺷﺖ ﻧﻮﺭﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺧﺎﮎ ﺍُﮌﺍﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺻﺪﺍ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺻﺪﺍ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﺎﺩ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻋﮑﺲ ﺁﻧﮑﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺷﺒﯿﮩﮧ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻓﻠﮏ ﻓﺮﯾﺐ ﮨﻮﮞ ﺑﺎﺗﯿﮟ،ﺯﻣﯿﮟ ﻓﺮﯾﺐ ﻋﻤﻞ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺭﻣﺰ ﻧﮧ ﭘﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﻏُﺒﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﺁﺋﮯ ﺟﻮ ﺯﺭ ﮐﮯ ﺭﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﻏِﻨﺎ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﮕﻮﻟﮧ ﻭﺍﺭ ﻭﮦ ﺟﺘﻨﺎ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﮧ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﮮ ﺯﻣﯿﮟ ﮐﻮ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﮭﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﯾﮧ ﺳﻮﺯِ ﺟﺴﻢ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﮐﯽ ﺁﮒ ﮨﮯ ﻧﯿّﺮ ﺍﻻﺅ ﺭﻭﺡ ﺟﻼﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ !!
  5. ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﮯ ﮐﮧ ﺳﮑﻮﮞ ﻣﻠﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﺎ ﮬﻮ ﮐﮧ ﻗﺮﺍﺭ ﮬﻮ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﺭﺕ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮩﺎﺭ ﮬﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﯿﺎﺭ ﮬﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﮯ۔۔۔۔۔۔ ﮐﮧ ﭼﺮﺍﻍ ِ ﺟﺎﮞ ﺍﺳﮯ ﻧﻮﺭ ﺩﮮ ﺍﺳﮯ ﺗﺎﺏ ﺩﮮ، ﺑﻨﮯ ﮐﮩﮑﺸﺎﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻢ ﮬﻮ ﺟﺲ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﻏﻢ ِ ﺟﺎﻭﺩﺍﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﯾﻮﮞ ﻗﺪﻡ ﻣﻼﺋﮯ ﮐﮧ ﺑﻨﮯ ﮐﺎﺭﻭﺍﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﮯ۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﺍﮦ ﮔﺰﺍﺭ ِ ﺧﯿﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﮭﻮﻝ ﮬﻮ ﻣﯿﮟ ﺳﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﮬﻮﮞ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺅﮞ ﭘﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﮬﻮﻝ ﮬﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺷﻮﻕ ﮬﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﻮﻝ ﮬﻮ ﻏﻢ ِ ﮨﺠﺮ ﮬﻮ، ﺷﺐِ ﺗﺎﺭ ﮬﻮ ﺑﮍﺍ ﻃﻮﻝ ﮬﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﮯ۔۔۔۔ ﮐﮧ ﺟﻮ ﻋﮑﺲ ِ ﺫﺍﺕ ﮬﻮ ﮨﻮﺑﮩﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺭﻭﺑﺮﻭ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺑﻂ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ، ﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺗﻮ ﺳﺮ ِ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﻮ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﮯ ___ ﮐﮧ ﺳﮑﻮﮞ ﻣﻠﮯ
  6. ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺎﻝ ﮐﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﺭﺩ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﻼﻝ ﮐﯽ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﺳﮯ ﮨﮯ ﻣﻼ ﮨﻮﺍ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﺍﺳﮯ ﺳﻮﭼﻨﺎ ﻣﯿﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﮨﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﯾﮧ ﺍﺳﯽ ﮐﯽ ﭘﻠﮑﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﻭﺡ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺗﺮ ﮔﺌﮯ ﯾﮧ ﺟﻨﻮﻥ ﻣﻨﺰﻝ ﻋﺸﻖ ﮨﮯ ﺟﻮ ﭼﻠﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﻗﻔﺲ ﮨﻮ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﮭﻠﯽ ﻗﻀﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﮫ ﮐﺎ ﺳﺎﻧﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮞ ﺻﺪﺍ ﺟﻨﮭﯿﮟ ﺗﯿﺮﯼ ﺩﯾﺪ ﮐﯽ ﭘﯿﺎﺱ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﮐﭩﻮﺭﮮ ﻧﯿﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﮭﺮ ﮔﺌﮯ ﯾﮧ ﺟﻨﻮﻥ ﻣﻨﺰﻝ ﻋﺸﻖ ﮨﮯ ﺟﻮ ﭼﻠﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﮔﺌﮯ
  7. Safa mughal

    Mai tumhain phir miloon gi

    میں تمہیں پھر ملوں گی کہاں؟ کس طرح؟ پتہ نہیں شاید تمہارے خیالوں کی چنگاری بن کر تمہارے کینوس پر اتروں گی یا ایک پر اسرار لکیر بن کر خاموش بیٹھی تمہیں دیکھتی رہوں گی یا شاید سورج کی لو بن کر تمہارے رنگوں میں گھلوں گی یا تمہارے رنگوں کی بانہوں میں بیٹھ کر کینوس پر پھیل جاؤں گی پتہ نہیں کس طرح؟ کہاں؟ لیکن تمہیں ملوں گی ضرور یا شاید ایک چشمہ بنوں گی اور جیسے چشمے کا پانی ابلتا ہے میں پانی کے قطرے تمہارے بدن پر ملوں گی اور ایک ٹھنڈک سی بن کر تمہارے سینے سے لگوں گی میں اورتو کچھ نہیں جانتی لیکن یہ معلوم ہے کہ وقت جدھر بھی کروٹ لے گا یہ جنم میرے ساتھ چلے گا یہ جسم خاک ہوتا ہے تو سب کچھ ختم ہوتا ہوا محسوس ہوتاہے لیکن یادوں کے دھاگے کائناتی ذروں سے بنے ہوتے ہیں ....میں وہی ذرے چنوں گی ........دھاگوں کو بٹوں گی ......اور تمہیں پھر ملوں گی
  8. ﯾﮧ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭨﮭﺎﻥ ﻟﯽ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺩﻋﺎﺅﮞ ﺳﮯ, ﻭﻓﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻧﺎ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻨﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﻔﻆ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﯾﭽﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻠﮕﺘﯽ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮔﻼﺑﯽ ﺷﺎﻡ ﺭﮐﮭﻨﯽ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺷﺎﻡ ﮐﺎ ﺗﺎﺭﮦ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮ ﮐﺮ ﺧﯿﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺠﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺗﺘﻠﯽ ﮐﻮ ﺳﺘﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﻥ ﮐﮩﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻧﻈﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﭼﮭﭙﺎﻧﯽ ﮨﯿﮟ ﮨﺎﮞ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭨﮭﺎﻥ ﻟﯽ ﺍﺏ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﻨﺎ ” ﻣﺤﺒﺖ ﺫﺍﺗﯽ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮨﮯ
  9. سب کچھ اپنا واری بیٹھاں جتی بازی،،،، ہاری بیٹھاں دم کسے دا بھردے بھردے اپنا آپ،،، وساری بیٹھاں مجرم،،، اپنا آپ اى آں میں ہتھیں کھیڈ اجاڑی بیٹھاں ویچ کے ٹوٹے خواباں دے سپنا میں وپاری بیٹھاں مرضی دا،،، ہک ساہ نہ لیا اُنج میں عمر گزاری بیٹھاں ہواواں،،،،،،، راکھ اڈاون پئیاں اِنج میں قسمت ساڑی بیٹھاں اوہلے،،،، کی میں رکھدا یارو زندگی اس توں واری بیٹھاں اپنے آپ نوں،، قیدی کر کے اُچیاں کنداں چاڑی بیٹھاں کوئی کسے دا دردی نئیں ساری گل، نتاری بیٹھاں مُکیئے آپ ایہہ غم نئیں مکدے ہن ایہہ سوچ وچاری بیٹھاں
  10. ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﺗﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣِﺮﮮ ﺣﺮﻑ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮﺳﮑﮯ ﺗﺮﮮ ﻟﻤﺲ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺷﮕﻔﺘﮕﯽ ﻣﺮﮮ ﺟﺴﻢ ﻭﺟﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮﺳﮑﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮐﺴِﯽ ﮔﮩﺮﮮ ﺭﻧﮓ ﮐﮯ ﺭﺍﺯ ﮐﯽ ﻣﺮﮮ ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﺳﮑﮯ ﺗﺮﯼ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﮩﮑﺸﺎﮞ ﮨﻮﮞ ﻣﺤﺒﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﺯﺗﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻤﺎﻝ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﻣﮩﺮﺑﺎﮞ ﺗﺮﮮ ﺑﺎﺯﻭﺅﮞ ﮐﯽ ﺑﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺟُﮭﻮﻟﺘﮯ ﮨُﻮﺋﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﯼ ﺟﺴﺘﺠﻮ ﮐﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﮐﻮ ﺳﺮﺷﺎﻡ ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﻼﺅﮞ ﺍِﺳﯽ ﺟﮭﻠﻤﻼﺗﯽ ﺳﯽ ﺷﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻟِﮑﮭﻮﮞ ﻧﻈﻢ ﺟﻮ ﺗﺮﺍﺭُﻭﭖ ﮨﻮ ﮐﮩﯿﮟ ﺳﺨﺖ ﺟﺎﮌﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻡ ﺟﻮ ﭼﻤﮏ ﺍُﭨﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺳﯽ ﺩُﮬﻮﭖ ﮨﻮ ﺟﻮ ﻭﻓﺎ ﮐﯽ ﺗﺎﻝ ﮐﮯ ﺭﻗﺺ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﯿﺘﺎ ﺟﺎﮔﺘﺎ ﻋﮑﺲ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﺮﮮ ﺣﺮﻭﻑ ﺗﺎﺯﮦ ﮐﻼﻡ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﺭﺍﺯ ﮨﻮﮞ ﺟﻨﮭﯿﮟ ﻣُﻨﮑﺸﻒ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻭﮞ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺟﮩﺎﻥ ﺷﻌﺮ ﮐﮯ ﺑﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻣِﺮﮮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﭼﺸﻢ ﻭﻟﺐ ﺑﮭﯽ ﭼﻤﮏ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯽ ﻓﻀﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﮔﮭﯿﺮﻟﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ
×