Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Search the Community

Showing results for tags 'phir'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 6 results

  1. اک پہیلی زندگی چاہت کے صبح و شام محبت کے رات دِن ’’دِل ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دِن‘‘ وہ شوقِ بے پناہ میں الفاظ کی تلاش اظہار کی زبان میں لکنت کے رات دِن وہ ابتدائے عشق وہ آغازِ شاعری وہ دشتِ جاں میں پہلی مسافت کے رات دِن سودائے آذری میں ہوئے صنم گری وہ بت پرستیوں میں عبادت کے رات دِن اِک سادہ دِل ، دیارِ کرشمہ گراں میں گم اِک قریۂ طلسم میں حیرت کے رات دِن لب ہائے نارسیدہ کی لرزش سے جاں بلب صہبائے ناچشیدہ کی لذت کے رات دِن روئے نگار و چشمِ غزالیں کے تذکرے گیسوئے یار و حرف و حکایت کے رات دِن ناکردہ کاریوں پہ بھی بدنامیوں کا شور اختر شماریوں پہ بھی تہمت کے رات دِن سوداگرانِ منبر و مکتب سے رو کشی جاں دادگانِ دانش و حکمت کے رات دِن اہلِ قبا و اہلِ ریا سے گریز پا وہ واعظانِ شہر سے وحشت کے رات دِن میر و انیس و غالب و اقبال سے الگ راشد ، ندیم ، فیض سے رغبت کے رات دِن فردوسی و نظیری و حافظ کے ساتھ ساتھ بیدل ، غنی ، کلیم سے بیعت کے رات دِن شیلے کا سحر ، کیٹس کا دُکھ ،بائرن کی دھج ان کافرانِ عشق سے نسبت کے رات دِن تشکیک و ملحدانہ رویے کے باوجود رومی سے والہانہ عقیدت کے رات دِن جیسے مئے سخن سے صراحی بھری ہوئی زورِ بیان و ُحسنِ طبیعت کے رات دِن یاروں سے شاعرانہ حوالے سے چشمکیں غیروں سے عاشقانہ رقابت کے رات دِن شعری سفر میں بعض بزرگوں سے اختلاف پیرانِ میکدہ سے بغاوت کے رات دِن رکھ کر کتابِ عقل کو نسیاں کے طاق پر وہ عاشقی میں دِل کی حکومت کے رات دِن ہر روز ، روزِ ابر تھا ہر رات چاند رات آزاد زندگی تھی ، فراغت کے رات دِن وہ صبح و شام دربدری ، ہم سنوں کے ساتھ آوارگی و سیر و سیاحت کے رات دِن اِک محشرِ خیال کے ہجراں میں کانٹا تنہائی کے عذاب ، قیامت کے رات دِن اک لعبتِ جمال کو ہر وقت سوچنا اور سوچتے ہی رہنے کی عادت کے رات دِن اِک رازدارِ خاص کو ہر وقت ڈھونڈنا بے اعتباریوں میں ضرورت کے رات دِن وہ ہر کسی سے اپنا ہی احوال پوچھنا اپنے سے بھی تجاہل و غفلت کے رات دِن بے وجہ اپنے آپ کو ہر وقت کوسنا بے سود ہر کسی سے شکایت کے رات دِن رُسوائیوں کی بات تھی رُسوائیاں ہوئیں رُسوائیوں کی عمر میں شہرت کے رات دِن اِک دُشمنِ وفا کو بھلانے کے واسطے چارہ گروں کے پند و نصیحت کے رات دِن پہلے بھی جاں گُسل تھے مگر اس قدر نہ تھے اِک شہرِ بے اَماں میں سکونت کے رات دِن اس دولتِ ہنر پہ بھی آزارِ مفلسی اس روشنیٔ طبع پہ ظلمت کے رات دِن پھر یہ ہوا کہ شیوئہ دِل ترک کر دیا اور تج دیئے تھے ہم نے محبت کے رات دِن ہر آرزو نے جامۂ حسرت پہن لیا پھر ہم تھے اور گوشۂ عزلت کے رات دِن ناداں ہیں وہ کہ جن کو ہے گم نامیوں کا رنج ہم کو تو راس آئے نہ شہرت کے رات دِن فکرِ معاش ، شہر بدر کر گئی ہمیں پھر ہم تھے اور قلم کی مشقت کے رات دِن ’’خونِ جگر ودیعتِ مژگانِ یار تھا‘‘ اور مدعی تھے صنعت و حرفت کے رات دِن کیا کیا ہمیں نہ عشق سے شرمندگی ہوئی کیا کیا نہ ہم پہ گزرے ندامت کے رات دِن آکاس بیل پی گئی اِک سرو کا لہو آسیب کھا گیا کسی قامت کے رات دِن کاٹی ہے ایک عمر اسی روزگار میں برسوں پہ تھے محیط ، اذیت کے رات دِن ساماں کہاں کہ یار کو مہماں بلایئے اِمکاں کہاں کہ دیکھئے عشرت کے رات دِن پھرتے تھے میر خوار کوئی پوچھتا نہ تھا قسمت میں جب تلک تھے قناعت کے رات دِن سو یہ بھی ایک عہدِ زیاں تھا ، گزر گیا کٹ ہی گئے ہیں جبرِ مشیت کے رات دِن نوواردانِ شہرِ تمنا کو کیا خبر ہم ساکنانِ کوئے ملامت کے رات دِن احمد فراز
  2. Anabiya Haseeb

    poetry Phir Yun hua

    پھر یوں ہوا کے ساتھ تیرا چھوڑنا پڑا ثابت ہوا کے لازم و ملزوم کچھ نہیں پھر یوں ہوا کہ راستے یکجا نہیں رہے وہ بھی انا پرست تھا میں بھی انا پرست پھر یوں ہوا کہ ہاتھ سے، کشکول گر گیا خیرات لے کے مجھ سے چلا تک نہیں گیا. ﭘﮭﺮ ﯾﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﻟﺬﺕ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻦ ﮔﺌﯽ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ ﻣﻮﻡ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﺑﻨﺎ ﮔﯿﺎ پھر یوں ہوا کہ کوئی شناسا نہیں رہا پھر یوں ہوا کہ درد میں شدت نہیں رہی پھر یوں ہوا کہ ہو گیا مصروف وہ بہت اور ہمیں یاد کرنے کی فرصت نہیں رہی اب کیا کسی کو چاہیں کہ ہم کو تو ان دنوں خود اپنے آپ سے بھی محبت نہیں رہی
  3. Zara thehro meri halat sambhal jaye to phir jana, Dil e be taab thora sa behel jaye ti phir jana, abhi to furqatoun se beher se nikla nahi hun main, tumharay wasl ka jaadu yeh chal jaye to phir jana, bura na gar lagy to samny bethy raho youn hi, tera chehra bisarat main jo dhal jaye to phir jana, Kai sadiyoun raha hun qarb kay is zard mosam main, Suno ye dard ka mosam badal jaye to phir jana, jami hain dharkanain to munjamid hain sari sansain bhi, Badan ki zindagi thori machal jaye to phir jana. Abhi mat jao keh jakra hua ha dard nay mujh ko, Tumhary dard ka loha pighal jaye to phir jana, meray dil main abhi jenay ki phir khuwahish si jaagi ha, Yeh nanhi si tamanna phool phal jaye to phir jana,
  4. Anabiya Haseeb

    poetry Phir Usi Raah Guzar Par Shayad

    Phir Usi Raah Guzar Par Shayad Hum Kabhi Mil SakeiN Magar, Shayad Jinke Hum Muntazar Rahe Unko Mil gaye Aur Humsafar Shayad Jaan Pahchaan Se Bhi Kya Hoga Phir Bhi Ae Dost, Ghaur Kar Shayad Ajnabeeyat ki Dhund Chhat Jaye Chamak Utthe Teri Nazar Shayad Zindagi Bhar Lahu Rulaayegi Yaad-e-Yaaran-e-Bekhabar Shayad Jo Bhi BichhRe Wo Kab Mile haiN ‘FARAZ’ Phir Bhi Tu Intezaar kar Shayad..!!!
  5. Chalo Ik Basar Phir Sy Ajnabi Bann Jaen Hm Donoo Nah Mein Tm Say Koi Umeed Rakhoon Dilnawazi Ki Na Tm Meri Taraf Dekho Galaat ANdaaz Nazroon Sy Na Meray Dil Ki Dharkan Larkharaey Meri Baton Sy Na Zaher Ho Tmhari Kashmakash Ka Raaz Nazron Sy Tmhain Bhe Koi Uljhan Rookti Hai Paish Qadmi Sy Mujhay Bhe Loog Kehtay Hain K Ye Jalwaay Paraaey Hein Meray Hamraah Bhe Ruswaiyan Hain Meray Maazzi Ki Tmharay Saath Bhe Gozri Hoe Raton K Saaaey Hain Ta”Aruf Roug Ho Jaey Tu Usko Bhoolna Behtar Ta”Aluq Roug Ban Jaey Tu Usko Toorna Acha Wo Afsana Jisay Anjaam Taak Lanaa Nah Hoo Mumkin Uasay Ik Khoobsorat Mour Day K Bhooolnaa A6ha Chalo Ik Baar Phir Se Ajnabi Bun Jaen Hm Dono.........
  6. Chalo Ik Baar Phir Sy Ajnabi Bann Jaen Hm Donoo Nah Mein Tm Say Koi Umeed Rakhoon Dilnawazi Ki Na Tm Meri Taraf Dekho Galaat ANdaaz Nazroon Sy Na Meray Dil Ki Dharkan Larkharaey Meri Baton Sy Na Zaher Ho Tmhari Kashmakash Ka Raaz Nazron Sy Tmhain Bhe Koi Uljhan Rookti Hai Paish Qadmi Sy Mujhay Bhe Loog Kehtay Hain K Ye Jalwaay Paraaey Hein Meray Hamraah Bhe Ruswaiyan Hain Meray Maazzi Ki Tmharay Saath Bhe Gozri Hoe Raton K Saaaey Hain Ta”Aruf Roug Ho Jaey Tu Usko Bhoolna Behtar Ta”Aluq Roug Ban Jaey Tu Usko Toorna Acha Wo Afsana Jisay Anjaam Taak Lanaa Nah Hoo Mumkin Uasay Ik Khoobsorat Mour Day K Bhooolnaa A6ha Chalo Ik Baar Phir Se Ajnabi Bun Jaen Hm Dono.........
×