Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Search the Community

Showing results for tags 'rahi' or ''.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Location


Interests

Found 4 results

  1. Zarnish Ali

    Kuch yad rahi, Kuch bhool gay

    رُودادِ محبّت کیا کہیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے دو دِن کی مُسرّت کیا کہیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں اِک ہوش کی ساعت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گیے اب وقت کے نازک ہونٹوں پر مجروح ترنّم رقصاں ہے بیدادِ مشیّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے احساس کے میخانے میں کہاں اَب فکر و نظر کی قندیلیں آلام کی شِدّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے کُچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کُچھ ماضی کے عیّار سجن احباب کی چاہت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دِل شبنم سے سُلگتی ہیں پلکیں پُھولوں کی سخاوت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے اب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے دُنیا کی کی حقیقت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے (ساغر صدیقی)
  2. Sach hai ke woh pehli si rafaqat nahee rahi Yeh bhi nahee ke milne ki chaahat nahee rahi Toota hai kab yahaan teri yaadoon ka silsila Yeh aur baat hai mujhe fursat nahee rahi Bheegi raheen theen palkain teri yaad mein sada Per aansou'oun ko behnay ki aadat nahee rahi Ek pal woh thaa ke lutf thaa tere wisaal mein Ab tere zikar mein bhi woh raahat nahee rahi Jab hogaya hai khoon sabhi khwahishaat ka Dil kya kare ke ab koi hasrat nahee rahi,
  3. aapki yaad aati rahi raat bhar chaandani dil dukhati rahi raat bhar gaah jalti huii, gaah bujhti huii shaame gham jhilmilaati rahi raat bhar koi khushboo badalti rahii pairahan koi taswir gaati rahi raat bhar phir saba saaya e shakhe gul ke talay koi qissa sunaati rahi raat bhar jo naa aaya usay koi zanjir e dar har sadaa par bulaati rahii raat bhar ek umeed se dil behelta raha ek tamanna satati rahi raat bhar
  4. پہلا سا حال پہلی سی وحشت نہیں رہی شاید کہ تیرے ہجر کی عادت نہیں رہی شہروں میں ایک شہر مرے رَت جگوں کا شہر کوچے تو کیا دِلوں ہی میں وسعت نہیں رہی لوگوں میں میرے لوگ وہ دل داَریوں کے لوگ بچھڑے تو دُور دُور رقابت نہیں رہی شاموں میں ایک شام وہ آوارگی کی شام اب نیم وَا دریچوں کی حسرت نہیں رہی راتوں میں ایک رات مِرے گھر کی چاند رات آنگن کو چاندنی کی ضرورت نہیں رہی راہوں میں ایک راہ وہ گھر لَوٹنے کی راہ ٹہرے کسی جگہ وہ طبیعت نہیں رہی یادوں میں ایک یاد کوئی دل شکن سی یاد وہ یاد اب کہاں ہے کہ فرصت نہیں رہی ناموں میں ایک نام سوال آشنا کا نام اب دل پہ ایسی کوئی عبارت نہیں رہی خوابوں میں ایک خواب تری ہم رَہی کا خواب اب تجھ کو دیکھنے کی بھی صورت نہیں رہی رنگوں میں ایک رنگ تری سادگی کا رنگ ایسی ہَوا چلی کہ وہ رنگت نہیں رہی باتوں میں ایک بات تیری چاہتوں کی بات اور اب یہ اِتّفاق کہ چاہت نہیں رہی یاروں میں ایک یار وہ عیّاریوں کا یار مِلنا نہیں رہا تو شکایت نہیں رہی فصلوں میں ایک فصل وہ جان دادگی کی فصل بادل کو یاں زمین سے رغبت نہیں رہی زخموں میں ایک زخم متاعِ ہنر کا زخم اب کوئی آرزوئے جراحت نہیں رہی سنّاٹا بولتا ہے صدا مت لگا نصیر آواز رہ گئی ہے سماعت نہیں رہی
×