Jump to content

Search the Community

Showing results for tags 'usey'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair o Shairy
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Movies and Stars
    • Chit chat And Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • IPS Community Suite 4.4
    • Applications 4.4
    • Plugin 4.4
    • Themes/Ranks
    • IPS Languages 4.4
  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares
  • Extras

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Interests


Location


ZODIAC

Found 3 results

  1. گر نہیں ہے تو اسے مت کیجے گر نہیں ہے تو اسے مت کیجے یونہی ضائع نہ محبت کیجے کیا دکھاوے کا تعلق رکھنا اس سے بہتر ہے کہ نفرت کیجے جو نہیں تیرا اسی کا ہونا ہے حماقت نہ حماقت کیجے مار ڈالے گی مروت ہم کو ختم ہر اپنی عنایت کیجے بے وفا ہو یا ہو مجبور کوئی بہ خوشی ایسوں کو رخصت کیجے جانے والوں کو دعا دے کے کہو پھر سے آنے کی نہ زحمت کیجے مانا مشکل ہے سنبھلنا دل کا دل سے ہر گز نہ رعایت کیجے دل کی فطرت ہے بغاوت کرنا اب کہ اس دل سے بغاوت کیجے ایک ہی شخص کو لکھے جانا بند ابرک یہ بلاغت کیجے اپنے حصے میں بھی کچھ رکھ لیجے اب کہ ابرک جو محبت کیجے ..... اتباف ابرک .....
  2. ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﻟﻮﮒ ﺍُﺳﮯ ﺁﻧﮑﮫ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﻮ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ ﭨﮭﮩﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺑﻮﻟﮯ ﺗﻮ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﮭﻮﻝ ﺟﮭﮍﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭼﻠﻮ ﺑﺎﺕ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺭﺑﻂ ﮬﮯ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺧﺮﺍﺏ ﺣﺎﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﺍُﺳﮯ ﺗﺘﻠﯿﺎﮞ ﺳﺘﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺟﮕﻨﻮ ﭨﮭﮩﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺑﺪﻥ ﮐﯽ ﺗﺮﺍﺵ ﺍﯾﺴﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭘﮭﻮﻝ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﺒﺎﺋﯿﮟ ﮐﺘﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﺷﻌﺮ ﻭ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺳﮯ ﺷﻐﻒ ﺳﻮ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺠﺰﮮ ﺍﭘﻨﮯ ﮬُﻨﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﮔﺎﮨﮓ ﮨﮯ ﭼﺸﻢِ ﻧﺎﺯ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺳﻮ ﮨﻢ ﺑﮭﯽ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﮔﻠﯽ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺣﺸﺮ ﮨﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﻏﺰﺍﻝ ﺳﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﮨﺮﻥ ﺩﺷﺖ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺳﯿﺎﮦ ﭼﺸﻤﮕﯿﮟ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮨﮯ ﺳﻮ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺳُﺮﻣﮧ ﻓﺮﻭﺵ ﺁﮦ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺭﺍﺕ ﺍُﺳﮯ ﭼﺎﻧﺪ ﺗﮑﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﺳﺘﺎﺭﮮ ﺑﺎﻡِ ﻓﻠﮏ ﺳﮯ ﺍُﺗﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﮨﯿﮟ ﮐﺎﮐﻠﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺷﺎﻡ ﮐﻮ ﺳﺎﺋﮯ ﮔﺰﺭ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﻟﺒﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﻼﺏ ﺟﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﻮ ﮨﻢ ﺑﮩﺎﺭ ﭘﺮ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﺩﮬﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺷﺒﺴﺘﺎﮞ ﺳﮯ ﻣُﺘﺼﻞ ﮨﮯ ﺑﮩﺸﺖ ﻣﮑﯿﮟ ﺍُﺩﮬﺮ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﻮﮮ ﺍِﺩﮬﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺗﻤﺜﺎﻝ ﮨﮯ ﺟﺒﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺟﻮ ﺳﺎﺩﮦ ﺩﻝ ﮨﯿﮟ ﺍُﺳﮯ ﺑﻦ ﺳﻨﻮﺭ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳُﻨﺎ ﮨﮯ ﭼﺸﻢِ ﺗﺼﻮﺭ ﺳﮯ ﺩﺷﺖِ ﺍِﻣﮑﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﻠﻨﮓ ﺯﺍﻭﯾﮯ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﮐﻤﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺭُﮐﮯ ﺗﻮ ﮔﺮﺩﺷﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﺎ ﻃﻮﺍﻑ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﭼﻠﮯ ﺗﻮ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﭨﮭﮩﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﺲ ﺍِﮎ ﻧﮕﺎﮦ ﺳﮯ ﻟُﭩﺘﺎ ﮨﮯ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﺩﻝ ﮐﺎ ﺳﻮ ﺭﺍﮨﺮﻭﺍﻥِ ﺗﻤﻨّﺎ ﺑﮭﯽ ﮈﺭ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺏ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﭨﮭﮩﺮﯾﮟ ﯾﺎ ﮐُﻮﭺ ﮐﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﻓﺮﺍﺯ ﺁﺅ ﺳﺘﺎﺭﮮ ﺳﻔﺮ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ (ﺍﺣﻤﺪ ﻓﺮﺍﺯ)
  3. waqas dar

    nazm usey maine hi likha th

    اسے میں نے ہی لکھا تھا کہ لہجے برف ہوجاٰئیں تو پھر پگھلا نہیں کرتے پرندے ڈر کر اڑ جائیں تو پھر لوٹا نہیں کرتے یقیں اک بار اٹھ جائے کبھی واپس نہیں آتا ہواؤں کا کوئی طوفاں بارش نہیں لاتا اسے میں نے ہی لکھا تھا جو شیشہ ٹوٹ جائے تو کبھی پھر جڑ نہیں پاتا جو راستے سے بھٹک جائیں وہ واپس مڑ نہیں پاتا اسے کہنا وہ بے معنی ادھورے خط اسے میں نے ہی لکھا تھا !!اسے کہنا کے دیوانے مکمل خط نہیں لکھتے۔ ۔ ۔
×