Jump to content

Please Disable Your Adblocker. We have only advertisement way to pay our hosting and other expenses.  

Search the Community

Showing results for tags 'zindagi'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chit chat And Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • Premium Files
  • IPS Community Suite 4.3
    • Applications 4.3
    • Plugins 4.3
    • Themes 4.3
    • Language Packs 4.3
    • IPS Extras 4.3
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Facebook ID


FB Page/Group URL


Bigo Live


Website URL


Instagram


Skype


Interests


Location


ZODIAC

Found 13 results

  1. Hareem Naz

    Wajah e zindagi

    ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﺳﺎﺩﮦ سے ﻟﻔﻈﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﺟﮧِ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮩﮧ ﮐﮯ ﻭﺻﻞ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﺮ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺯﻭﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺫﮐﺮ ﻭﮦ ﮨﯽ ﮐﺮﺗﮯﮨﯿﮟ ﻧﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺿﺒﻂ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ، ﺩﺭﺩ ﺁﻥ ﻟﭙﭩﺎ ﮨﮯ ﭨﻮﭨﺘﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﺍﺏ ﺩﺭﺩ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﺭﺩ ﺳﮯ ﺍﻟﺠﮭﺘﮯﮨﯿﮟ ﺿﺒﻂ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﺎﺭ ﺗﺎﺭ ﺩﺍﻣﻦ ﮐﻮ ﺧﺎﺭ ﺧﺎﺭ ﺭﺍﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﻧﺠﺸﯿﮟ ﺑﮭﻼ ﮐﮯ ﮨﻢ ﺁ ﮐﮯ ﺟﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﻠﭩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺭﺍﮦ ﻣﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﺒﺰ ﺳﺒﺰ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ ﻻﻝ ﻻﻝ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﯽ ﺭﮔﻮﮞﺳﮯ ﮨﻢ ﺧﻮﮞ ﻧﭽﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﮔﺰﺭﺗﮯﮨﯿﮟ ﺧﻮﺍﺏ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺅ ﺍﺏ ﺩُﻋﺎﺅﮞ ﮐﻮ ﻣﺎﺗﻤﯽ ﺭﺩﺍﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻟﻮﺩﺍﻉ ﻣﻮﻗﻊ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺩﺭﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺭﺏ ﭘﮧ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ
  2. Well 'Zindagi Na Milegi Dobara' but looks like the handsome Farhan Akhtar has finally found love again in the gorgeous Shibani Dandekar! When Shibani shared a picture of her with a mystery man, the rumour was rife that it was Farhan himself. However, the cat is now out of the bag since he made it Instagram official. View this post on Instagram â¤ï¸ A post shared by Farhan Akhtar (@faroutakhtar) on Oct 14, 2018 at 11:43pm PDT The duo has been spotted hanging out lately and the actor even wished Shibani on her birthday in his Instagram stories. View this post on Instagram #Repost @karishmanaina ã»ã»ã» When Bombay comes to play! Thanks for coming home for the most amazing Sunday lunch ever @angena.bhagwandeen @shibanidandekar @faroutakhtar @nikhil1975 @divyesh_tailor @rgavaskar @utsavakasera @rebeccamala88 A post shared by Shibani Dandekar (@shibanidandekar) on Sep 17, 2018 at 8:34am PDT © Instagram Farhan is currently on his 'SELF Tour' in USA and Canada, while Shibani is a successful singer, model and anchor. View this post on Instagram Those dewy vibes courtesy the crew @beejlakhani @khyatibusa @shamitag @azima_toppo ð± #thatbrowngirl A post shared by Shibani Dandekar (@shibanidandekar) on Jun 29, 2018 at 11:19pm PDT Recently, Shibani was seen defending Farhan when he was called out for 'knowing' about Sajid Khan's involvement in sexual harassment instances, as they are cousins. I cannot adequately stress how shocked, disappointed and heartbroken I am to read the stories about Sajid's behaviour. I don't know how but he will have to find a way to atone for his alleged actions. — Farhan Akhtar (@FarOutAkhtar) October 12, 2018 I deeply resent your insinuation that me or my family knew of his behaviour yet did nothing. Your anger is justified. Your conspiracy theories not. @_Amrita_Puri https://t.co/MCLptZioWR — Farhan Akhtar (@FarOutAkhtar) October 13, 2018 He can't be held accountable for something he didn't do or know of .. we need to focus on the girls and stop with the blame https://t.co/IijmjxMI3O — shibani dandekar (@shibanidandekar) October 13, 2018 We think they make a gorgeous couple and we hope they continue to 'Rock On', because after all, 'ye hai waqt ka ishara', right?
  3. Hareem Naz

    Shakayat nh koi zindagi se

    یہ شیشے یہ سپنے یہ رشتے یہ دھاگے کسے کیا خبر ہے کہاں ٹوٹ جائیں محبت کے دریا میں .."تنکے وفا " کے نہ جانے یہ کس موڑ پر ڈوب جائیں.. عجب دل کی بستی عجب دل کی وادی ہر اک موڑ موسم نئی خواہشوں کا لگائے ہیں ہم نے بھی سپنوں کے پودے مگر کیا بھروسہ یہاں بارشوں کا" مرادوں کی منزل کے سپنوں میں کھوئے محبت کی راہوں پہ ہم چل پڑے تھے ذرا دور چل کے جب آنکھیں کھلیں تو کڑی دھوپ میں ہم اکیلے کھڑے تھے جنہیں دل سے چاہا جنہیں دل سے پوجا نظر آرہے ہیں وہی "اجنبی سے" "روایت ہے شاید یہ صدیوں پرانی "شکایت نہیں ہے کوئی____ زندگی سے"...!!
  4. Hareem Naz

    zindagi k Melay

    میں گھر میں ہونے والی ایک تلخی پر ناخوش ہو کر ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﮑﻝ ﮐﺮ ﺮﻭﮈ ﭘﺮ ﭼﻼ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ کہ پڑوس میں رہنے والے بابا جی نے روک کر پوچھا۔ بیٹا اداس لگ رہے ہو خیریت تو ہے۔ بابا جی کی بات سن کر میں نے اپنی شکائتوں کا دفتر کھول دیا۔ بابا جی زیر لب مسکرائے اور ﺯﻣﯿﻦ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﺳﯽ ﭨﮩﻨﯽ ﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﺵ ﭘﺮ ﺭﮔﮍ ﮐﺮ اس کی چوب بنا کر بولے بھولے بادشاہ آ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﻨﺪﮦ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﺴﺨﮧ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﻧﮧ ﻧﮑﻠﻨﮯ ﺩﻭ ‘ ﺟﻮ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺷﮑﺮ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﻮ ﭼﮭﻦ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﻮ ﻣﺎﻧﮓ ﻟﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﮮ ﺩﻭ ‘ ﺟﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎؤ ‘ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﺑﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎؤ ﮔﮯ ‘ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺟﻤﻊ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﮨﺠﻮﻡ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﺴﮯ ﺧﺪﺍ ﮈﮬﯿﻞ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺣﺘﺴﺎﺏ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﺑﻼ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺳﭻ ﻓﺴﺎﺩ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ‘ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺗﻮ ﺳﭻ ﺑﻮﻟﻮ ‘ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺗﻮ ﭼﭗ ﺭﮨﻮ ‘ ﻟﻮﮒ ﻟﺬﺕ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﺬﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺑﺮﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ‘ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺧﻮﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﻧﮑﻞ ﺟﺎؤ ‘ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﺑﮭﯽ ‘ ﺩﯾﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺷﯽ ﮨﮯ ‘ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻏﻢ ‘ ﺩﻭﻟﺖ ﮐﻮ ﺭﻭﮐﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺭﮎ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ ‘ ﭼﻮﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﭼﻮﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ۔ ﺳﺎﺩﮬﻮﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﺎ ﺳﺎﺩﮬﻮ ﺟﺎﮒ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﺭﺍﺿﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺟﮓ ﺭﺍﺿﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ‘ ﻭﮦ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺍﮌ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ‘ ﺗﻢ ﺟﺐ ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ‘ ﺭﺷﺘﮯ ﺩﺍﺭﻭﮞ ‘ ﺍﻭﻻﺩ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﮍﻧﮯ ﻟﮕﻮ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﻟﻮ ﺍللہ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺟﺐ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺭﺣﻢ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﻮ ﺗﻮ ﺳﻤﺠھ ﻟﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺧﺎﻟﻖ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺭﺍﺿﯽ ﮨﮯ ﮨﺠﺮﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﮭﺎﭨﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ‘‘ ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺒﯽ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯽ ‘ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺮ ﭘﺮ ہاتھ پھرا ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﷲ ﺗﻢ ﭘﺮ ﺭﺣﻤﺘﻮﮞ ﮐا سایہ ﺁﺧﺮﯼ ﺳﺎﻧﺲ ﺗﮏ ﺭﮨﮯ ‘ ’ ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺰ ﮐﺎ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﻧﮧ ﭼﮭﻮﮌﻧﺎ ‘ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﮯ اللہ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽﻣﺨﻠﻮﻕﮐﻮ ﺗﻨﮩﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌﺗﺎ ‘ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺟﻮ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ﺍﺳﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﮕﺮﺟﻮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ‘ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺑﻨﺪ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ ‘ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺍللہ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮨﮯ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻼ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻢ ﯾﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﻨﺎ ‘ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﻣﯿلہ ﻟﮕﺎ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ‘‘ ﻣﯿرے قدموں کا رخ خود بخود گھر کی طرف ہوﮔﯿﺎ کیونکہ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﻨﺪﮦ ﺑﻨﻨﮯ ﮐﺎ نسخہ ء کیمیاء ﻣﻞ ﮔﯿﺎ تھا
  5. 🔸خلیفہ عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے جب دور سے لوگوں کے ایک گروہ کو آگ جلائے دیکھا تو انکے قریب ہوئے اور پکارا "اے روشنی والوں! " یہ نہیں کہا" اے آگ والوں " اس ڈر سے کہ انکو یہ کلمہ اذیت دے گا ۔ 🔸حسن اور حسین رضی اللہ عنهما نے دیکھا ایک بڑی عمر کا آدمی وضو صحیح نہیں کر رہا تو انہوں نے اس سے کہا: ہم چاہتے ہیں کہ آپ ہمارے درمیان فیصلہ کریں کون اچھا وضو کرتا ہے ؟! جب انہوں نے وضو کیا تو وہ ہنسنے لگا کہ میں ہی ہوں جو اچھا وضو نہیں کر رہا تھا۔ 🔸امام غزالی کے پاس ایک شخص آیا اور کہا تارک نماز کے بارے میں کیا حکم ہے ؟ تو کہا اسکا حکم یہ ہے کہ ہم اسکو اپنے ساتھ نماز کیلئے مسجد لیکر جائیں ۔ ✨زندگی کا حسن خوش اسلوبی کے ساتھ ہے نہ کہ عیب چننے سے.😊😊
  6. ہم رات بہت روئے، بہت آہ و فغاں کی دل درد سے بوجھل ہو تو پھر نیند کہاں کی اس گھر کی کھلی چھت پہ چمکتے ہوئے تارو کہتے ہو کبھی جا کے وہاں بات یہاں کی ؟ اللہ کرے میرؔ کا جنت میں مکاں ہو مرحوم نے ہر بات ہماری ہی بیاں کی ہوتا ہے یہی عشق میں انجام سبھی کا باتیں یہی دیکھی ہیں محبت زدگاں کی پڑھتے ہیں شب و روز اسی شخص کی غزلیں غزلیں یہ حکایات ہیں ہم دل زدگاں کی تم چرخِ چہارم کے ستارے ہوئے لوگو تاراج کرو زندگیاں اہلِ جہاں کی انشاؔ سے ملو، اس سے نہ روکیں گے وہ، لیکن اُس سے یہ ملاقات نکالی ہے کہاں کی مشہور ہے ہر بزم میں اس شخص کا سودا باتیں ہیں بہت شہر میں بدنام، میاں کی اے دوستو! اے دوستو! اے درد نصیبو گلیوں میں، چلو سیر کریں، شہرِ بتاں کی ہم جائیں کسی سَمت، کسی چوک میں ٹھہریں کہیو نہ کوئی بات کسی سود و زیاں کی انشاؔ کی غزل سن لو، پہ رنجور نہ ہونا دیوانا ہے، دیوانے نے اک بات بیاں کی
  7. Hareem Naz

    Zindagi ki Arzoo

    مجھے کب زندگی کی آرزو ہے مگر جب تک تمہاری جستجو ہے بہاریں ہی بہاریں ہیں چمن میں گلوں میں رنگ ہے باقی نہ بُو ہے ڈبویا ناخدا نے جو سفینہ ! ! کناروں کو اسی کی جستجو ہے جدائی کی شکایت کر رہا ہوں اسی سے جو ہمیشہ رُوبرُو ہے تیرے چہرے کی رنگت دیکھتا ہوں یہ کس کی آرزووں کا لہو ہے جسے تُو پی رہا ہے میکدے میں لہُو ہے ، وہ لہُو ہے ، وہ لہُو ہے ! تجھے اک بار کیا واصف نے دیکھا ! تجھے پھر دیکھنے کی آرزو ہے
  8. Ganwaai kis ki tamana mein zindagi mainey... wo koun hai jisey dekha nhi kabhi mainey... tera khayal to hai par tera wajood nahi.n... tere liye to ye mehfil sajai thi mainey... tere adam ko ganwara na tha wajood mera... so apni baikh kani mein kami na ki mainey... hai meri zaat sey mansoob sad fasana_e_ishq... aur ek satar bhi ab tak nahi.n likhi mainey khud apney ashwa_o_andaaz ka shaheed hon mein... khud apni zaat sey barti hai berukhi mainey... merey hareef merey yka taziyon pey nisar... tmaam umar haleefon sey jang ki mainey... kharash_e_naghma sey seena chila hoa hai mera... fugaan k tark na ki naghma parwari mainey... dawa sey faida maqsood tha hi kab k faqat... dawa k shok meinseyht tbaah ki mainey... zbaana zan tha jigar soz tushnagi ka azaab... so jof_e_seena mein dozakh andail li mainey... sarvar_e_may pey b ghaliib raha shaoor mera... k har reayat_e_gham zehen mein rakhi mainey... gham_e_shaoor koi dam to mujh ko mohlat dey... tamaam umr jalaya hai apna ji mainey.. ilaaj ye hai k majboor kar diya jaaon... wagarna yun to kisi ki nahi suni mainey... raha mein shahid_e_tanha nasheen_e_msand_e_gham... aur apne karb_e_anaa sey gharaz rakhi mainey... Jaun Elia
  9. Anabiya Haseeb

    poetry Meri Zindagi To Firaaq Hai

    Meri Zindagi To Firaaq Hai, Wo Azal Se Dil Main Makeen Sahi Wo Nigaah-E-Shauq Se Door Hain, Rag-E-Jaan Se Laakh Qareen Sahi Hamain Jaan Deni Hai Aik Din, Wo Kisi Tarah Wo Kaheen Sahi Hamain Aap Khainchiye Daar Par, Jo Nahin Koi To Hameen Sahi Sar-E-Toor Ho, Sar-E-Hashr Ho, Hamain Intezaar Qabool Hai Wo Kabhi Milen,Wo Kahin Milen,Wo Kabhi Sahi, Wo Kaheen Sahi Na Ho Un Pe Kuchh Mera Bass Nahin, Ke Ye Aashqi Hai Hawas Nahin Main Unhi Ka Tha, Main Unhi Ka Hun, Wo Mere Nahin, To Nahin Sahi Mujhe Bhaithne Ki Jagah Milay, Meri Aarzoo Ka Bharam Rahay Teri Anjuman Men Agar Nahin, Teri Anjuman Ke Qareen Sahi Tera Dar To Hum Ko Na Mil Saka, Teri Rahguzar Ki Zameen Sahi Hamain Sajda Karne Se Kaam Hai, Jo Wahan Nahin To Yaheen Sahi Meri Zindagi Ka Naseeb Hai, Nahin Door Mujh Se Qareeb Hai Mujhe Uska Gham To Naseeb Hai, Wo Agar Nahin To Naheen Sahi Jo Ho Faislaa Woh Sunaaiye, Use Hashr Par Na Uthaaiye Jo Karainge Aap Sitam Wahan, Wo Abhi Sahi, Wo Yaheen Sahi Unhen Dekhne Ki Jo Lou Lagi, To 'Naseer' Dekh Hi Lainge Hum Wo Hazaar Aankh Se Door Hon, Wo Hazaar Pardah Nasheen Sahi
  10. Anabiya Haseeb

    poetry Aa bhi jao kay zindagi kam hai.

    Aa bhi jao kay zindagi kam hai.... Aa bhi jao kay zindagi kam hai..... tum nahi ho to har Khushi kam hai vadaa kar ke ye kon aayaa nahi sheher main aaj roshni kam hai jaane kyaa ho gaya hai mausam ko dhuup ziyada hai chaandani kam hai aainaa dekh kar Khayal aaya aaj kal un ki dosti kam hai tere dam se hi main mukammal hoon bin tere meri zindagi kam hai..
  11. Mansoob the jo log meri zindagi ke saath, Aksar wohi mile hain bari berukhi ke saath, Yun to main hans para hun tumhare liye magar, Kitne sitaare toot pare meri ik hansi ke saath, Fursat mile to apna girebaan bhi dekh le, Aye dost yun na khail meri bebasi ke saath, Majbooriyon ki baat chali hai to main kahan, Ham ne pia hai zehr bhi aksar khushi ke saath, Mohsin karam bhi ho aur jis main khuloos bhi, Mujh ko gazab ka pyar hai us dushmani ke saath
  12. waqas dar

    Zindagi ab bhi muskurati hai

    سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے اب بھی سورج کی وہی عادت ہے گھر کے آنگن کو وہ جگاتا ہے مرمریں شوخ سی حسین کرنیں چہروں کو چوم کر اٹھاتی ہیں وہاں صبحیں بڑی توانا ہیں اور سب دن بھی خوب دانا ہیں منہ اندھیرے سفر کو جاتے ہیں روز پھر گھر میں شام ہوتی ہے وہی برگد تلے کی ہیں شامیں ایک حقہ ھے کئی ہیں سامع اب بھی فکریں گلی محلے کی باتوں باتوں میں ختم ہوتی ہیں وہی بچوں کا ہے حسیں بچپن جگنو, تتلی کی ہے وہی ان بن وہی جھریوں سی پیاری نانی ہے وہی پریوں کى اک کہانی ہے اب بھی موسم وہاں نشیلے ہیں وہی قوس قزح کے جھولے ہیں وہی بارش کی مستیاں اب بھی ٹین کی چھت پہ گنگناتی ہیں ہے سخن باکمال لوگوں کا میٹھا پن لازوال لہجوں کا سچ بھی جذبوں کی روح میں ہے شامل نہ محبت یہ آزماتی ہے اب بھی باقی ہے دوستی کا مان اب بھی رشتوں میں جان باقی ہے اب بھی جنت ہے ماں کے قدموں میں اب بھی ماں لوریاں سناتی ہے خوشبویں مٹیوں میں زندہ ہیں عکس بھی پانیوں میں ہیں باقی اب بھی تاروں کے سنگ راتوں کو چاندنی محفلیں سجاتی ہے اب بھی راتوں کو چاند کی سکھیاں اپنے چندا سے ملنے جاتی ہیں اور اک دور کھڑے سائے کو اپنی سب دھڑکنیں سناتی ہیں اب بھی سب قافلے جشن میں ہیں اب بھی سب فاصلے امن میں ہیں مسافر جا کے لوٹ آتے ہیں ان کی یادیں نہیں ستاتی ہیں چلو اب ہم بھی وہیں چلتے ہیں جہاں دل آج بھی دھڑکتے ہیں جہاں اب بھی وہ وقت ساکن ہے زندگی اب بھی مسکراتی ہے سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے
  13. waqas dar

    Zindagi ab b muskurati hai

    سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے اب بھی سورج کی وہی عادت ہے گھر کے آنگن کو وہ جگاتا ہے مرمریں شوخ سی حسین کرنیں چہروں کو چوم کر اٹھاتی ہیں وہاں صبحیں بڑی توانا ہیں اور سب دن بھی خوب دانا ہیں منہ اندھیرے سفر کو جاتے ہیں روز پھر گھر میں شام ہوتی ہے وہی برگد تلے کی ہیں شامیں ایک حقہ ھے کئی ہیں سامع اب بھی فکریں گلی محلے کی باتوں باتوں میں ختم ہوتی ہیں وہی بچوں کا ہے حسیں بچپن جگنو, تتلی کی ہے وہی ان بن وہی جھریوں سی پیاری نانی ہے وہی پریوں کى اک کہانی ہے اب بھی موسم وہاں نشیلے ہیں وہی قوس قزح کے جھولے ہیں وہی بارش کی مستیاں اب بھی ٹین کی چھت پہ گنگناتی ہیں ہے سخن باکمال لوگوں کا میٹھا پن لازوال لہجوں کا سچ بھی جذبوں کی روح میں ہے شامل نہ محبت یہ آزماتی ہے اب بھی باقی ہے دوستی کا مان اب بھی رشتوں میں جان باقی ہے اب بھی جنت ہے ماں کے قدموں میں اب بھی ماں لوریاں سناتی ہے خوشبویں مٹیوں میں زندہ ہیں عکس بھی پانیوں میں ہیں باقی اب بھی تاروں کے سنگ راتوں کو چاندنی محفلیں سجاتی ہے اب بھی راتوں کو چاند کی سکھیاں اپنے چندا سے ملنے جاتی ہیں اور اک دور کھڑے سائے کو اپنی سب دھڑکنیں سناتی ہیں اب بھی سب قافلے جشن میں ہیں اب بھی سب فاصلے امن میں ہیں مسافر جا کے لوٹ آتے ہیں ان کی یادیں نہیں ستاتی ہیں چلو اب ہم بھی وہیں چلتے ہیں جہاں دل آج بھی دھڑکتے ہیں جہاں اب بھی وہ وقت ساکن ہے زندگی اب بھی مسکراتی ہے سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے
×