Jump to content

Recommended Posts

شہرِ دل کی گلیوں میں
شام سے بھٹکتے ہیں

!چاند کے تمنائی

بے قرار سودائی
دل گداز تاریکی

روح جاں کو ڈستی یے
روح و جاں میں بستی ہے
شہرِ دل کی گلیوں میں

تاک شب کی بیلوں پر
شبنمیں سر شکوں کی
بے قرار لوگوں نے
بے شمار لوگوں نے
یاد گار چھوڑی ہے
اتنی بات تھوڑی ہے

صد ہزار باتیں تھیں
حیلۂ شکیبائی
صورتوں کی زیبائی
قامتوں کی رعنائی
ان سیاہ راتوں میں
ایک بھی نہ یاد آئی
جا بجا بھٹکتے ہیں
کس کی راہ تکتے ہیں

چاند کے تمنائی

یہ نگر کبھی پہلے
اس قدر نہ ویراں تھا
کہنے والے کہتے ہیں
قریہ نگاراں تھا
خیر اپنے جینے کا
یہ بھی ایک ساماں تھا

آج دل میں ویرانی
ابر بن کے گھر آئی
آج دل کو کیا کہیے
با وفا نہ ہرجائی
پھر بھی لوگ دیوانے
آ گئے ہیں سمجھانے

اپنی وحشت دل کے
بن لیے ہیں افسانے
خوش خیال دنیا نے
گرمیاں تو جاتی ہیں
وہ رتیں بھی آتیں ہیں
جب ملول راتوں میں
دوستوں کی باتوں میں
جی نہ چین پائے گا
اور اوب جائے گا
آہٹوں سے گونجے گی
شہرِ دل کی پہنائی
اور چاند راتوں میں
چاندنی کے شیدائی
ہر بہانے نکلیں گے
آزمانے نکلیں گے
آرزو کی گہرائی
ڈھونڈنے کو رسوائی
سرد سرد راتوں کو
زرد چاند بخشے گا
بے حساب تنہائی
بے حجاب تنہائی
!!!شہرِ دل کی گلیوں میں

ابنِ انشاء 

 

darkness.jpg

  • Like 2

Share this post


Link to post
Share on other sites

۔۔ﻓﺮﺽ ﮐﺮﻭ ﮨﻢ ﺍﮨﻞ ﻭﻓﺎ ﮨﻮﮞ ، ﻓﺮﺽ ﮐﺮﻭ ﺩﯾﻮﺍﻧﮯ ﮨﻮﮞ
ﻓﺮﺽ ﮐﺮﻭ ﯾﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺟﮭﻮﭨﯽ ﮨﻮﮞ ﺍﻓﺴﺎﻧﮯ ﮨﻮﮞ۔۔
ﺍﺑﻦ ﺍﻧﺸﺎﺀ

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,951
    Total Topics
    8,138
    Total Posts
×