Jump to content
waqas dar

Gaye dino ka suragh le ker kidher se aya kidher gaya wo

Recommended Posts

گئے دِنوں کا سراغ لے کر ، کِدھر سے آیا کِدھر گیا وہ 
عجیب مانوس اجنبی تھا ، مجھے تو حیران کر گیا وہ 

بس ایک موتی سی چھب دِکھا کر 
بس ایک میٹھی سی دُھن سُنا کر 
ستارہء شام بن کے آیا ، برنگِ خُوابِ سحر گیا وہ 

خوشی کی رُت ہو کہ غم کا موسم 
نظر اُسے ڈُھونڈتی ہے ہر دٙم 
وُہ بُوئے گل تھا کہ نغمہء جاں ، مرے تو دل میں اُتر گیا وہ 

نہ اب وُہ یادوں کا چڑھتا دریا 
نہ فرصتوں کی اُداس برکھا 
یُونہی ذرا سی کسک ہے دِل میں ، جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ 

کچھ اب سنبھلنے لگی ہے جاں بھی 
بدل چلا دٙورِ آسماں بھی 
جو رات بھاری تھی ٹل گئی ہے ، جو دِن کڑا تھا گزر گیا وہ

بس ایک منزل ہے بوالہوس کی 
ہزار راستے ہیں اہلِ دل کے 
یہی تو ہے فرق مجھ میں ، اس میں گزر گیا میں ، ٹھہر گیا وہ 

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں 
گئے دِنوں کو بُلا رہا ہوں 
جو قافلہ میرا ہمسفر تھا ، مثالِ گردِ سفر گیا وہ 

میرا تو خون ہو گیا ہے پانی 
سِتمگروں کی پلک نہ بھیگی 
جو نالہ اُٹھا تھا رات دِل سے ، نہ جانے کیوں بے اٙثر گیا وہ 

وہ میکدے کو جگانے والا 
وہ رات کی نیند اُڑانے والا 
یہ آج کیا اُس کے جی میں آئی ، کہ شام ہوتے ہی گھر گیا وہ 

وہ ہجر کی رات کا ستارہ 
وہ ہم نفس ہم سُخن ہمارا 
سدا رہے اُس کا نام پیارا ، سُنا ہے کل رات مٙر گیا وہ 

وہ جس کے شانے پہ ہاتھ رکھ کر 
سفر کیا تُو نے منزلوں کا 
تری گلی سے نہ جانے کیوں آج ، سٙر جُھکائے گزر گیا وہ 

وہ رات کا بے نوا مسافر 
وہ تیرا شاعر ، وہ تیرا ناصر 
تیری گلی تک تو ہم نے دیکھا تھا ، پھر نہ جانے کِدھر گیا وہ 
*****
*****
شاعر : ناصر کاظمی 
(دیوان)

 

dewan.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,925
    Total Topics
    8,043
    Total Posts
×