Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...
Sign in to follow this  
Jannat malik

poetry حالتِ حال کے سبب، حالتِ حال ہی گئی

Rate this topic

Recommended Posts


حالتِ حال کے سبب، حالتِ حال ہی گئی
شوق میں کچھ نہیں گیا، شوق کی زندگی گئی

ایک ہی حادثہ تو ہے، اور وہ یہ کہ آج تک
بات نہیں کہی گئی، بات نہیں سنی گئی

بعد بھی تیرے جانِ جاں، دل میں رہا عجب سماں
یاد رہی تری یہاں، پھر تری یاد بھی گئی

صحنِ خیالِ یار میں، کی نہ بسر شبِ فراق
جب سے وہ چاندنہ گیا، جب سے وہ چاندنی گئی

اس کے بدن کو دی نمود، ہم نے سخن میں اور پھر
اس کے بدن کے واسطے، ایک قبا بھی سی گئی

اس کی امیدِ ناز کا، ہم سے یہ مان تھا کہ آپ
عمر گزار دیجیے، عمر گزار دی گئی

اس کے وصال کے لیے، اپنے کمال کے لیے
حالتِ دل کہ تھی خراب، اور خراب کی گئی

تیرا فراق جانِ جاں، عیش تھا کیا مرے لیے
یعنی ترے فراق میں، خوب شراب پی گئی

اس کی گلی سے اٹھ کے میں، آن پڑا تھا اپنے گھر
ایک گلی کی بات تھی، اور گلی گلی گئی

جون ایلیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

FB_IMG_1481807905016.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Share this post


Link to post
Share on other sites
Admin

ﺍﺱ ﮐﮯ ﻏﻢ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺳﺒﮭﯽ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ
 ﮐﻮﺋﯽ ﺷﮑﻮﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﺏ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ

(ﺟﻮﻥ ﺍﯾﻠﯿﺎﺀ)

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,121
    Total Topics
    8,949
    Total Posts
×
×
  • Create New...