Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...
Sign in to follow this  
Jannat malik

poetry  منظر سمیٹ لائے ہیں جو تیرے گاؤں کے

Rate this topic

Recommended Posts

 منظر سمیٹ لائے ہیں جو تیرے گاؤں کے

نیندیں چرا رہے ہیں وہ جھونکے ہواؤں کے

تیری گلی سے چاند زیادہ حسیں نہیں

کہتے سنے گئے ہیں مسافر خلاؤں کے

پل بھر کو تیری یاد میں دھڑکا تھا دل مرا

اب دور تک بھنور سے پڑے ہیں صداؤں کے

داد سفر ملی ہے کسے راہ شوق میں

ہم نے مٹا دئیے ہیں نشاں اپنے پاؤں کے

جب تک نہ کوئی آس تھی، یہ پیاس بھی نہ تھی

بے چین کر گئے ہمیں سائے گھٹاؤں کے

ہم نے لیا ہے جب بھی کسی راہزن کا نام

چہرے اتر اتر گئے کچھ رہنماؤں کے

اُگلے گا آفتاب کچھ ایسی بلا کی دھوپ

رہ جائیں گے زمین پہ کچھ داغ چھاؤں کے

(قتیل شفائی)

11193288_825608930826851_2113998000724061996_n.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites
Admin

Bohaaaat Umdaaa lajawaaab shairy bahtreeen shairy hain qateel shafai zaberdast :clap: 

ہم نے اک دوسرے کے عکس کو جب قتل کیا
 آئینہ دیکھ رہا تھا ہمیں حیرانی سے

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,121
    Total Topics
    8,949
    Total Posts
×
×
  • Create New...