Jump to content
Zarnish Ali

گنگناتے ہوئے لمحوں میں اُسے

Recommended Posts

گنگناتے ہوئے لمحوں میں اُسے
دھیان میرا کبھی آیا کہ نہیں
جانے وہ آج بھی سویا کہ نہیں

اے مجھے جاگتا پاتی ہوئی رات

وہ مری نیند سے بہلا کہ نہیں

بھیڑ میں کھویا ہوا بچہ تھا

اُس نے خود کو ابھی ڈھونڈا کہ نہیں

مجھ کو تکمیل سمجھنے والا

اپنے معیار میں بدلا کہ نہیں

گنگناتے ہوئے لمحوں میں اُسے

دھیان میرا کبھی آیا کہ نہیں

بند کمرے میں کبھی میری طرح

شام کے وقت وہ رویا کہ نہیں

میری خود داری برتنے والے

تیرا پندار بھی ٹوٹا کہ نہیں

الوداع ثبت ہوئی تھی جس پر

اب بھی روشن ہے وہ ماتھا کہ نہیں

پروین شاکر

 

5.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,934
    Total Topics
    8,057
    Total Posts
×