Jump to content
Momina Haseeb

qateel shafai wo ik shaks mujh ko udass chor gya

Rate this topic

Recommended Posts

Chura ky ly gaya jaam aur payas choor gaya

چُرا کے لے گیا جام اور پیاس چھوڑ گیا
وہ ایک شخص جو مجھ کو اُداس چھوڑ گیا

جو میرے جسم کی چادر بنا رہا برسوں
نہ جانے کیوں وہ مجھے بے لباس چھوڑ گیا

وہ ساتھ لے گیا ساری محبتیں اپنی
ذرا سا درد مرے دل کے پاس چھوڑ گیا

سجھائی دیتا نہیں دور تک کوئی منظر
وہ ایک دھند مرے آس پاس چھوڑ گیا

غزل سجاؤں قتیلؔ اب اُسی کی باتوں سے
وہ مُجھ میں اپنے سُخن کی مٹھاس چھوڑ گیا

قتیل شفائی

art of love.jpg

  • Like 2

Share this post


Link to post
Share on other sites

زیادہ پی لی تھی، جو کل شام کا منظر ناچا 
 یا پھر ایسا ہے کہ اندر کا قلندر ناچا

اب تلک چھنن چھنن چھن کی صدا آتی ہے
کون " بلھا" تھا، جو اس روح میں آکر ناچا

اُس نے یکبار جو محفل میں اٹھائی پلکیں
دستِ ساقی، کبھی بوتل، کبھی ساغر ناچا

دھڑکنیں وجد کناں ہوکے ہوئیں چُپ ایسے
جب میرے دل پہ، میرے یار کا خنجر ناچا

کیا کہیں کتنی دراڑوں نے زباں کھولی ہے 
 دل کے شیشے پہ جو اِک ہجر کا کنکر ناچا

وقت رخصت میری پلکوں سے لہو بھی نچڑا 
 پھر میرا ضبط میری آنکھوں میں آکر ناچا

دیکھ کر ضبط میرا دشت نے پاؤں پکڑے
پھر میری پیاس پہ کہتے ہیں سمندر ناچا

یار نے دیکھ لیا ثاقب دلِ خستہ کو 
 پھر یہ پاگل سرِ محفل سرِ محشر ناچا

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,925
    Total Topics
    8,043
    Total Posts
×