Jump to content

Rate this topic

Recommended Posts

شمارِ سبحہ، مرغوبِ بتِ مشکل پسند آیا
تماشائے ‘بہ یک کف بردنِ صد دل‘ پسند آیا
بہ فیضِ بے دلی، نومیدئ جاوید آساں ہے
کشائش کو ہمارا عقدہِ مشکل پسند آیا
ہوائے سیرِگل، آئینہِ بے مہرئ قاتل
کہ اندازِ ‘بخوں غلطیدنِ بسمل‘ پسند آیا
مرزا اسداللہ غالب

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

غالب کے ہاں محفل جمی تھی۔ ایک شاگرد نے ترنگ میں آکر مصرع کہا

شراب سیخ پہ ڈالی، کباب شیشے میں

اس مہمل مصرع پر سب چونک پڑے۔ چاروں طرف سے لعنت و ملامت شروع ہو گئی۔ مصرع کہنے والا بے چارہ گم سم سہمی فاختہ کی صورت ہر ایک کا منہ دیکھتا رہا۔

غالب سب سنتے رہے مگر خاموش رہے۔ جب سب اپنی اپنی کہہ چکے تو غالب نے متانت سے کہا۔
 ارے بھائی! آپ نے پورا شعر بھی تو سنا ہوتا۔ خیر اب مجھ سے سن لیجیئے۔

کسی کے آنے سے ساقی کے ایسے ہوش اڑے
 شراب سیخ پہ ڈالی، کباب شیشے میں

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,925
    Total Topics
    8,043
    Total Posts
×