Jump to content

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

News Ticker

Rate this topic

Recommended Posts

اپنے ہونٹوں پر سجانا چاہتا ہوں
آ تجھے میں گنگنانا چاہتا ہوں

کوئی آنسو تیرے دامن پر گرا کر
بُوند کو موتی بنانا چاہتا ہوں

بڑھ گئی اس حد تلک بے اعتمادی
تجھ کو تجھ سے بھی چھپانا چاہتا ہوں

تھک گیا میں کرتے کرتے یاد تجھ کو
اب تجھے میں یاد آنا چاہتا ہوں

اس لیے کی ہے تڑپنے کی تمنا
رقص کرنے کا بہانا چاہتا ہوں

آخری ہچکی ترے زانو پہ آئے
موت بھی میں شاعرانہ چاہتا ہوں

جو بنا باعث مری ناکامیوں کا
میں اُسی کے کام آنا چاہتا ہوں

چھا رہا ہے ساری بستی پراندھیرا
روشنی کو، گھر جلانا چاہتا ہوں

پھول سے پیکر تو نکلے بے مروّت
پتھروں کو آزمانا چاہتا ہوں

رہ گئی تھی کچھ کمی رسوائیوں میں
پھر قتیل اُس در پہ جانا چاہتا ہوں

قتیل شفائی

love words.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now


  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,837
    Total Topics
    7,896
    Total Posts
×