Jump to content

Rate this topic

Recommended Posts

سنو جاناں
جولائی آ گیا ہے
گھٹن اوڑھے ہوئے دن ہیں
کہ جن میں دھوب نیزے کی انی بن کر
بدن کو چیرے جاتی ہے
ہوا کے لمس سے نا آشنا شامیں
ستاروں سے بھری راتیں
کہ جن میں نیند کی دیوی بھی اکتائی سی لگتی ہے
اسی بے کیف منظر میں
اچانک آسماں بادل کی چادر اوڑھ لیتا ہے
وہ چھاجوں مینہ برستا ہے
کہ منظر جھوم اٹھتا ہے
وہی موسم، وہی رت ہے
کہ جب ایسے گھٹن اوڑھے ہوے دن کی برستی شام میں ہم تم
فضا کی گنگناہٹ روح میں محسوس کرتے تھے
کبھی بوندیں پکڑتے تھے
کبھی یوں مسکراتے تھے
کہ جیسے کان میں بارش نے کوئی بات کہہ دی ہو
سنو جاناں
وہی منظر وہی رت ہے
گھٹن اوڑھے ہوئے دن ہیں
فضا بھی گنگناتی ہے
نجانے تم کہاں پر ہو
چلے بھی آو اب جاناں
تمہیں بارش بلاتی ہے. 

 

FB_IMG_1530777367622.jpg

Edited by Urooj Butt

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,938
    Total Topics
    8,061
    Total Posts
×