Jump to content

Rate this topic

Recommended Posts


انکار نہ ہو جائے اقرار کروں کیسے
میں اپنی محبت کا اظہا ر کروں کیسے 
وہ آئے تو جانے کے اسباب لیے آئے 
میں روکوں تو رکنے پہ اصرار کروں کیسے 
وہ بات الگ سی تھی وہ موقع الگ سا تھا 
اب فرط محبت ہے دیدار کروں کیسے 
اب جا کے تو سوئے ہیں ، شب بھر کی تھکاوٹ ہے 
مہمان بھی در پہ ہیں ، بیدار کروں کیسے 
میں لہجے کی قوت کا قا ئل ہوں مگر پھربھی 
جب بات غلط ٹھہری سرکار کروں کیسے 
میں نے تو گزارش کی ، میں نے تو طلب بھیجی 
وہ کہتے نہیں ہیں تو تکرار کروں کیسے 
ساگر نے محبت کی اک طرح نئی ڈالی 
انکار تو مشکل ہے تو اقرار کروں کیسے

 

FB_IMG_1530915794128.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,938
    Total Topics
    8,061
    Total Posts
×