Jump to content

Please Disable Your Adblocker. We have only advertisement way to pay our hosting and other expenses.  

Rate this topic

Recommended Posts

ذات کا گنجل کھول پِیا
کچھ بول پِیا۔۔۔

اس رات کی کالی چادر کو
یہ چاند ستارے اوڑھ چکے۔۔۔

کچھ جان سے پیارے یار سجن
دل توڑ چکے، مکھ موڑ چکے۔۔۔

خود آپ بھٹکتی راہوں میں
یہ تن تنہا مت رول پِیا
کچھ بول پِیا۔۔۔

وہ عشوہ و غمزہ دیکھ لیا
اب رات کٹے گی خوابوں میں۔۔۔

میں نام ترے جیون جیون
تم اب تک دور سرابوں میں۔۔۔

جو راکھ ہوئی ان خوابوں میں
یہ ہستی ہے انمول پِیا
کچھ بول پِیا۔۔۔

تو جب تک اپنے پاس رہا
گرداب کا گھیرا راس رہا۔۔۔

پر تول چکا، سب بول چکا
اب من پنچھی بے آس رہا۔۔۔

جذبات نہیں معصیت کے
یوں زہر نہ ان میں گھول پِیا
کچھ بول پِیا۔۔۔

دربار لگا ہے زخموں کا
دردوں کی نمائش جاری ہے۔۔۔

رِستا ہے لہو ان پھولوں سے
خاروں کی ستائش جاری ہے۔۔۔

ہر زخم مہکنے لگ جائے
اک بول تو ایسا بول پِیا
کچھ بول پِیا۔۔۔

FB_IMG_1531083303346.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 

💚💚,,,عمــــــــــــــــــــــــــــــــدہ,,,💚💚
زبــــــــــــــــــــــــــردست,,,
💜💜,,,اعــــــــــــــــــــــــــــــــلی,,,💜💜
شــــــ
ــــــــــانـــــــــــــــدار,,
💛💛,,,بہتـــــــــــــــــــــــــــــــرین,💛💛
لاجـــــــــــــــــــــــــــــواب
,,,خـــــــــــــــــــــــــــــــــوب,

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,834
    Total Topics
    8,139
    Total Posts
×