Jump to content

Rate this topic

Recommended Posts

فراق یار کی بارش، ملال کا موسم 
ہمارے شہر میں اترا کمال کا موسم


وہ اک دعا میری جو نامراد لوٹ آئی
زباں سے روٹھ گیا پھر سوال کا موسم


بہت دنوں سے میرے ذہن کے دریچوں میں
ٹھہر گیا ہے تمھارے خیال کا موسم


جو بے یقیں ہو بہاریں اجڑ بھی سکتی ھیں
تو آ کے دیکھ لے میرے زوال کا موسم


محبتیں بھی تیری دھوپ چھاوں جیسی ھیں
کبھی یہ ہجر کبھی یہ وصال کا موسم


کوئی ملا ہی نہیں جس کو سونپتے محسن
ہم اپنے خواب کی خوشبو خیال کا موسم

 

FB_IMG_1531281640120.jpg

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,937
    Total Topics
    8,060
    Total Posts
×