Jump to content

Rate this topic

Recommended Posts

لگتا تو یوں ہے جیسے سمجھتا نہیں ہے وہ
معصوم جتنا لگتا ہے اتنا نہیں ہے وہ

مجھ میں بسا ہوا بھی ہے وہ سر سے پیر تک
اور کہہ رہا ہے یہ بھی کہ میرا نہیں ہے وہ

کر دونگا موم باتوں میں سوز و گداز سے 
جذبات کی تپش سے مبرا نہیں ہے وہ

واضح یہ کر چکا ہے یقیں دل کے وہم پر
میرا ہے صرف اور کسی کا نہیں ہے وہ

رہتا ہے اس کے ساتھ ہمیشہ مرا خیال
تنہایوں میں رہ کے بھی تنہا نہیں ہے وہ

ہوگا غلط بیان میں مجبوریوں کا ہاتھ
حق بات ورنہ یہ ہے کہ جھوٹا نہیں ہے وہ

ٹھہرا وہ پھول، بوسے لبوں کے ملے اسے
پتوں کی طرح پیروں میں آیا نہیں ہے وہ

مرنے کے بعد آیا ہے کرنے مرا علاج
مانا کہ چارہ گر ہے. مسیحا نہیں ہے وہ

جاوید رات دن ہے ترا انتظار اسے
کہنے کو تیرے پیار کا بھوکا نہیں ہے وہ

ڈاکٹر جاوید جمیل

 

FB_IMG_1532414039544.jpg

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 

💚💚,,,عمــــــــــــــــــــــــــــــــدہ,,,💚💚
زبــــــــــــــــــــــــــردست,,,
💜💜,,,اعــــــــــــــــــــــــــــــــلی,,,💜💜
شــــــ
ــــــــــانـــــــــــــــدار,,
💛💛,,,بہتـــــــــــــــــــــــــــــــرین,💛💛
لاجـــــــــــــــــــــــــــــواب
,,,خـــــــــــــــــــــــــــــــــوب,

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,951
    Total Topics
    8,138
    Total Posts
×