Jump to content

Register now to gain access to all of our features. Once registered and logged in, you will be able to create topics, post replies to existing threads, give reputation to your fellow members, get your own private messenger, post status updates, manage your profile and so much more. If you already have an account, login here - otherwise create an account for free today!

Welcome to our forums
Welcome to our forums, full of great ideas.
Please register if you'd like to take part of our project.
Urdu Poetry & History
Here you will get lot of urdu poetry and history sections and topics. Like/Comments and share with others.
We have random Poetry and specific Poet Poetry. Simply click at your favorite poet and get all his/her poetry.
Thank you buddy
Thank you for visiting our community.
If you need support you can post a private message to me or click below to create a topic so other people can also help you out.

Sign in to follow this  
Urooj Butt

اپنا تو یہی سرمایہ ہے

Rate this topic

Recommended Posts

کیا حال سنائیں دُنیا کا
کیا بات بتائیں لوگوں کی 
دنیا کے ہزاروں موسم ہیں
لاکھوں ہیں ادائیں لوگوں کی

کچھ لوگ کہانی ہوتے ہیں
دنیا کو سنانے کے قابل
کچھ لوگ نشانی ہوتے ہیں
بس دل میں چھپانے کے قابل

کچھ لوگ گزرتے لمحے ہیں
اک بار گئے تو آتے نہیں
ہم لاکھ بلانا بھی چاہیں
پرچھائی بھی انکی پاتے نہیں

کچھ لوگ خیالوں کے اندر
جذبوں کی روانی ہوتے ہیں
کچھ لوگ کٹھن لمحوں کی طرح
پلکوں پہ گرانی ہوتے ہیں

کچھ لوگ سمندر گہرے ہیں
کچھ لوگ کنارا ہوتے ہیں
کچھ ڈوبنے والی جانوں کو
تنکوں کا سہارا ہوتے ہیں

کچھ لوگ چٹانوں کا سینہ
کچھ ریت گھروندہ چھوٹا سا
کچھ لوگ مثال ابر رواں
کچھ اونچے درختوں کا سایہ

کچھ لوگ چراغوں کی صورت
راہوں میں اجالا کرتے ہیں
کچھ لوگ اندھیروں کی کالک 
چہرے پر اچھالا کرتے ہیں

کچھ لوگ سفر میں ملتے ہیں
دو گام چلے اور رستے الگ
کچھ لوگ نبھاتے ہیں ایسا
ہوتے ہی نہیں دھڑکن سے الگ

کیا حال سنائیں اپنا تمہیں
کیا بات بتائیں جیون کی
اک آنکھ ہماری ہستی ہے
اک آنکھ میں رت ہے ساون کی

ہم کس کی کہانی کا حصہ
ہم کس کی دعا میں شامل ہیں
ہے کون جو رستہ تکتا ہے
ہم کس کی وفا کا حاصل ہیں

کس کس کا پکڑ کر دامن ہم
اپنی ہی نشانی کو پوچھیں
ہم کھوئے گئے کن راہوں میں
اس بات کو صاحب جانے دیں

کچھ درد سنبھالے سینے میں
کچھ خواب لٹائے ہیں ہم نے
اک عمر گنوائی ہے اپنی،
کچھ لوگ کمائے ہیں ہم نے

دل خرچ کیا ہے لوگوں پر
جان کھوئی ہے غم پایا ہے
اپنا تو یہی سرمایہ ہے
اپنا تو یہی سرمایہ ہے 

 

FB_IMG_15397068845763643.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,083
    Total Topics
    8,906
    Total Posts
×
×
  • Create New...