Jump to content

جو دن تھا ایک مصیبت تو رات بھاری تھی


jannat malik

Recommended Posts

جو دن تھا ایک مصیبت تو رات بھاری تھی

گزارنی تھی مگر زندگی، گزاری تھی

سواد شوق میں ایسے بھی کچھ مقام آئے

نہ مجھ کو اپنی خبر تھی نہ کچھ تمہاری تھی

لرزتے ہاتھوں سے دیوار لپٹی جاتی تھی

نہ پوچھ کس طرح تصویر وہ اتاری تھی

جو پیار ہم نے کیا تھا وہ کاروبار نہ تھا

نہ تم نے جیتی یہ بازی نہ میں نے ہاری تھی

طواف کرتے تھے اس کا بہار کے منظر

جو دل کی سیج پہ اتری عجب سواری تھی

تمہارا آنا بھی اچھا نہیں لگا مجھ کو

فسردگی سی عجب آج دل پہ طاری تھی

کسی بھی ظلم پہ کوئی بھی کچھ نہ کہتا تھا

نہ جانے کون سی جاں تھی جو اتنی پیاری تھی

ہجوم بڑھتا چلا جاتا تھا سر محفل

بڑے رسان سے قاتل کی مشق جاری تھی

تماشا دیکھنے والوں کو کون بتلاتا

کہ اس کے بعد انہی میں کسی کی باری تھی

وہ اس طرح تھا مرے بازوؤں کے حلقے میں

نہ دل کو چین تھا امجدؔ نہ بے قراری تھی

DsIAkFhWwAEXf1P.jpg.a8b59b1bb0fda3f1bfac7cd8e8d31060.jpg

Link to comment
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

  • Recently Browsing   0 members

    • No registered users viewing this page.
  • Forum Statistics

    2.2k
    Total Topics
    9.1k
    Total Posts
×
×
  • Create New...