Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...
Sign in to follow this  
Jannat malik

یار کو دیدۂ خوں بار سے اوجھل کر کے

Rate this topic

Recommended Posts

یار کو دیدۂ خوں بار سے اوجھل کر کے

مجھ کو حالات نے مارا ہے مکمل کر کے

جانب شہر فقیروں کی طرح کوہ گراں

پھینک دیتا ہے بخارات کو بادل کر کے

جل اٹھیں روح کے گھاؤ تو چھڑک دیتا ہوں

چاندنی میں تری یادوں کی مہک حل کر کے

دل وہ مجذوب مغنی کہ جلا دیتا ہے

ایک ہی آہ سے ہر خواب کو جل تھل کر کے

جانے کس لمحۂ وحشی کی طلب ہے کہ فلک

دیکھنا چاہے مرے شہر کو جنگل کر کے

یعنی ترتیب کرم کا بھی سلیقہ تھا اسے

اس نے پتھر بھی اٹھایا مجھے پاگل کر کے

عید کا دن ہے سو کمرے میں پڑا ہوں اسلمؔ

اپنے دروازے کو باہر سے مقفل کر کے

FB_IMG_1578819175552.thumb.jpg.16e85bbf3dd8b9d08f7f4481d80e2a0d.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,118
    Total Topics
    8,941
    Total Posts
×
×
  • Create New...