Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...
Sign in to follow this  
Jannat malik

دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایا نہ تھا

Rate this topic

Recommended Posts

دور تک چھائے تھے بادل اور کہیں سایہ نہ تھا

اس طرح برسات کا موسم کبھی آیا نہ تھا

کیا ملا آخر تجھے، سایوں کے پیچھے بھاگ کر

اے دلِ ناداں، تجھے کیا ہم نے سمجھایا نہ تھا

اف یہ سناٹا کہ آہٹ تک نہ ہو جو جس میں مخل

زندگی میں اس قدر ہم نے سکوں پایا نہ تھا

خوب روئے چھپ کے گھر کی چار دیواری میں ہم

حال دل کہنے کے قابل کوئی ہمسایا نہ تھا

ہو گئے قلاش جب سے آس کی دولت لٹی

پاس اپنے، اور تو کوئی بھی سرمایہ نہ تھا

وہ پیمبر ہو کہ عاشق، قتل گاہ شوق میں

تاج کانٹوں کا کسے دنیا نے پہنایا نہ تھا

صرف خوشبو کی کمی تھی غور کے قابل قتیل

ورنہ گلشن میں کوئی بھی پھول مرجھایا نہ تھا

 

FB_IMG_1483548664991.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites
Admin

Bohaaaat hi awalaaaaaaaaaaaaaaaaaaaa @Jannat malik   very nice :) 

rope-line-animated.gif


New Content added Less than in a minutes & merged.

animated-smiley-line.gif

 

اس کی محبت میں سر راہ قتل ہوئے ہم
 معصوم سے چہرے پر آنکھیں ظالم صاحب

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,121
    Total Topics
    8,948
    Total Posts
×
×
  • Create New...