Jump to content

Welcome to Fundayforum. Please register your ID or get login for more access and fun.

Signup  Or  Login

house fdf.png

ADMIN ADMIN

ROHAAN

Member
  • Content Count

    77
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    16
  • Points

    704 [ Donate ]

ROHAAN last won the day on April 23

ROHAAN had the most liked content!

Community Reputation

59 Neutral

3 Followers

About ROHAAN

  • Rank
    Ice cream Time
  • Birthday June 8

Profile Information

  • Gender
    Male
  • Interests
    FRIENDSHIP
  • Location
    Karachi

Contact Methods

Recent Profile Visitors

246 profile views
  1. بازوؤں کی چھـتری تھی بازوؤں کی چھـتری تھی راستوں کی بارش میں بھیگ بھیگ جـــاتے تھے دھڑکنوں کی بارش میں اور ہی زمـــــانہ تھا اور ہی تھے روز و شب مجھ سےجب ملاتھا وہ چاہتوں کی بارش میں بھیگتی ہوئی ســـــانسیں ، بھیگتے ہوۓ لمحے دل گداز رم جھم تھی خوشبوؤں کی بارش میں بجــــلیاں چمکتی تھیں ، کھــڑکیاں دھڑکتی تھیں ایک چھت کے نیچے تھے دو دلوں کی بارش میں شـــــــام تھی جدائ کی اور شب قیامت کی جب اسے کیـــا رخصت آنسوؤں کی بارش میں دل پـــــــہ زخم ہے کوئی روح میں اداسی ہے کتنے درد جاگے ہیں سسکیوں کی بارش میں شہر ِ کج نگاہاں میں کون خوش نظر نکلا پھول کس نے پھینکا ہے پتّھروں کی بارش میں بـــــــرق سی لپکتی تھی ، روشنی نکلتی تھی رات کے اندھیرے سے ان دنوں کی بارش میں ہم تو خیر ایسے تھے، راستے میں بیٹھے تھے تم کہاں سے آ نکلے اس غموں کی بارش میں کــــر چیاں سمیٹیں اب زخم زخم پوروں سے کچھ نہیں بچا فوزی پتھــــروں کی بارش میں
  2. جو وقت ہم دوسروں پر تنقید کرتے گزارتے ہیں وہی وقت اگر ہم اپنی اصلاح میں صرف کریں تو زیادہ بہتر ہے
    کیونکہ کسی کو بدلنا ہمارے اختیار میں نہیں مگر خود کو بدلنا ہمارے اختیار میں ضرور ہے۔
  3. ❤ پسند کرنے کا بہت بہت شکریہ ❤
  4. آنکھ میں خواب نہیں آنکھ میں خواب نہیں خواب کا ثانی بھی نہیں کنج لب میں کوئی پہلی سی کہانی بھی نہیں ڈھونڈھتا پھرتا ہوں اک شہر تخیل میں تجھے اور مرے پاس ترے گھر کی نشانی بھی نہیں بات جو دل میں دھڑکتی ہے محبت کی طرح اس سے کہنی بھی نہیں اس سے چھپانی بھی نہیں آنکھ بھر نیند میں کیا خواب سمیٹیں کہ ابھی چاندنی رات نہیں رات کی رانی بھی نہیں لیلی حسن ذرا دیکھ ترے دشت نژاد سر بسر خاک ہیں اور خاک اڑانی بھی نہیں کچے ایندھن میں سلگنا ہے اور اس شرط کے ساتھ تیز کرنی بھی نہیں آگ بجھانی بھی نہیں اب تو یوں ہے کہ ترے ہجر میں رونے کے لئے آنکھ میں خون تو کیا خون سا پانی بھی نہیں
  5.  

    تسلی کے دو بول اپنائیت سے بھرپُور ایک مُسکراہٹ مُحبت بھرا لمس اور دِل کو سکُون دینے والا ایک جُملہ دُنیا کی ساری دولت اور دلکشی سے بڑھ کر ہوتا ہے

    animal-671235.jpg

  6. ﺍﺳﮑﯽ ﯾﮧ ﮈﯾﻤﺎﻧﮉ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺷﯿﻮ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺍﺳﮑﯽ ﯾﮧ ﮈﯾﻤﺎﻧﮉ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺷﯿﻮ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮨﯽ ﻭﮦ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﮮ ﮔﯽ " ، ﻋﻤﺮ ﮐﮧ ﺍﻣﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺁ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺧﺒﺮ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺩﮬﭽﮑﺎ ﺳﺎ ﻟﮕﺎ۔ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺩﻝ ﭘﺮ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﺎﺭﯼ ﺑﻮﺟﮫ ﺁﻥ ﮔﺮﺍ، " ﮐﯿﺎ؟؟؟ ﯾﮧ ﺳﻌﺪﯾﮧ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ۔۔؟؟ " ، ﺍﺳﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺁ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﮨﻔﺘﮧ ﺭﮦ ﺟﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﻨﮕﯿﺘﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻨﻨﺎ۔۔ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﮕﮧ ﺑﻦ ﭼﮑﯽ ﮨﻮ، ﻣﺤﺒﺖ ﺳﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﮨﻮ۔۔ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ ﻧﺎﻗﺎﺑﻞِ ﺑﯿﺎﮞ ﺗﮭﺎ۔ " ﮨﺎﮞ ﺑﯿﭩﺎ، ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﻘﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺁ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺧﻮﺩ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮨﯽ ﭘﻮﭼﮫ ﮐﺮ ﺁ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﻧﻮ ﺗﻮ ﺍﺳﮑﯽ ﻣﺎﻥ ﻟﻮ۔ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ۔ ﺁﺟﮑﻞ ﺗﻮ ﻟﻮﮒ ﺩﻭ ﭨﮑﮯ ﮐﯽ ﺟﺎﺏ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺗﻮ ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﮯ ﺑﯿﭩﺎ۔ ﺍﺗﻨﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﮨﮯ، ﭘﮍﮬﯽ ﻟﮑﮭﯽ، ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ، ﺟﻮﺍﻥ، ﺍﭼﮭﺎ ﺧﺎﺻﺎ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮨﮯ، ﺧﻮﺩ ﻭﮦ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔۔ ﺍﺏ ﺿﺪ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﯿﭩﺎ " ، ﺳﺎﺭﮦ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﯿﮟ۔ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻨﮕﯿﺘﺮ، ﺍﺏ ﻣﺎﮞ۔۔ ﺍﻭﺭ ﮐﺲ ﮐﺲ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﺻﺪﻣﮯ ﺳﮯ ﺣﻠﻖ ﮔﮭُﭩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ۔ " ﺍﻣﯽ ﺟﺎﻥ ۔۔ ﺟﺐ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﺝ ﺍﮔﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﻦ ﮐﺮ ﺍﺳﮑﯽ ﺳﻮﭼﯿﮟ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﻗﺼﻮﺭ ﻧﮩﯿﮟ " ، ﺩﻝ ﻏﻢ ﺳﮯ ﭼُﻮﺭ ﭼُﻮﺭ ﺗﮭﺎ۔ * * * * * " ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺩﻝ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﯾﻤﺎﻥ۔۔ ﺍﯾﮏ ﺟﺎﻧﺐ ﺩﻧﯿﺎ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﺍﻟﻠﮧ۔۔ ﺍﯾﮏ ﺭﺳﺘﮧ ﺩﻝ ﭘﺴﻨﺪ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﮨﺠﺮ ﮐﯽ ﺗﻨﮩﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ۔۔ " ، ﻋﻤﺮ ﺳُﻨﺴﺎﻥ ﭘﺎﺭﮎ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﺝ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺏ ﻧﮯ۔ ﺁﺝ ﭘﺘﺎ ﭼﻠﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺩﯾﻦ ﺩﯾﻦ ﮐﮯ ﻧﻌﺮﮮ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻋﻤﺮ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﯾﺎ ﺭﺏ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﺩﻋﻮﮮ ﮐﮭﻮﮐﮭﻠﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺯﮨﻦ ﺳﮯ ﭘﺮﺍﻧﯽ، ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﻟﮕﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﺟﺐ ﭘﮩﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺳﻌﺪﯾﮧ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﺐ ﺭﺷﺘﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﺎﮞ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﭘﺮ ﭼﮭﯿﮍ ﭼﮭﺎﮌ، ﮨﻨﺴﯽ ﻣﺰﺍﻕ۔۔۔ ﻋﻤﺮ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﻤﯽ ﺍﺗﺮ ﺁﺋﯽ۔۔ " ﺍﯾﮏ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔۔ ﻣﯿﺮﯼ ﭘﻮﺭﯼ ﺁﺧﺮﺕ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ۔۔ " ، ﭘﻠﮑﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﭽﮫ ﻗﻄﺮﮮ ﻧﻤﻮﺩﺍﺭ ﮨﻮﺋﮯ۔ " ﺍﻟﻠﮧ ﺍﮐﺒﺮ، ﺍﻟﻠﮧ ﺍﮐﺒﺮ۔۔ " ، ﻗﺮﯾﺒﯽ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﮔﻮﻧﺠﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔ " ﺍﻟﻠﮧ ﺍﮐﺒﺮ۔۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮨﮯ۔۔ ﺍﻑ !! ﺑﮯﺷﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮨﮯ، ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺧﻮﺍﮨﺸﺎﺕ ﺳﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔۔ " ،ﻋﻤﺮ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﮯﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﮩﮧ ﺍﭨﮭﺎ۔ " ﺁﺝ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﺪﺭ ﻟﮍﻧﯽ ﮨﮯ۔۔ ﺍﯾﮏ ﺍُﺣﺪ ﭘﺮ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮨﻮﻧﺎ ﮨﮯ۔۔۔ ﭘﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺩﻓﻌﮧ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﺑﻨﺎ ﮨﮯ۔۔ ﮨﺮ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮨﮯ ﺗُﺠﮫ ﭘﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺤﺒﻮﺏ۔۔ ﺍﺱ ﺩﻝ ﭘﺮ ﺁﺝ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﭼﮭُﺮﯼ ﭼﻼ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ۔۔ " ، ﺩُﮐﮫ ﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺭﻧﺪ ﮔﺌﯽ * ﺗﻢ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﻮ ﮐﮧ ﺍﺩﺍﺋﮯ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻤﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺭﺏ ﮐﯽ ﺭﺿﺎ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﺧﻮﺩ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺩُﮐﮭﺎ ﺩﯾﻨﺎ * ‏( ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ۔۔ ‏) " ﺁﺋﯿﮟ ﻧﺎ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﮟ ﭘﻠﯿﺰ۔۔ " ، ﺁﻣﻨﮧ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﺳﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﺗﮭﯽ۔ " ﺍﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﮔﮭﻨﭩﮯ ﺗﮏ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﺁﻣﻨﮧ، ﺁﺝ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺑﮩﺖ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ " ، ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﻟﯿﭗ ﭨﺎﭖ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﯾﺐ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺍ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔ " ۔۔ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﮐﮭﺎﺅﮞ ﮔﯽ۔۔ " ، ﺁﻣﻨﮧ ﻧﮯ ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﯿﭩﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺩﮬﯿﻤﯽ ﺳﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ۔ " ﮐﯿﺎ۔۔؟ ﺍﺭﮮ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ۔۔؟؟ " ، ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﺳﺐ ﮐﺎﻡ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﺭُﺥ ﭘﻮﺭﯼ ﻃﺮﺡ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﭘﮭﯿﺮ ﻟﯿﺎ۔ " ۔۔ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺑﮩﺖ ﺑﮭﻮﮎ ﻟﮓ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔۔۔ " ، ﺁﻣﻨﮧ ﻧﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩُﮐﮭﯽ ﺳﺎ ﻣﻨﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ۔ " ﮨﺎﮨﺎﮨﺎ۔۔ " ، ﻋﻤﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﻨﺴﯽ ﻧﮧ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﺎ۔ " ﺣﯿﺮﺕ ﮨﮯ ﻣﯿﮉﻡ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﭧ ﺑﮭﻮﮎ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﯽ، ﺁﺝ ﺗﯿﻦ ﮔﮭﻨﭩﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﮔﺰﺍﺭ ﻟﯿﮯ؟؟ " ﺁﻣﻨﮧ ﺑﮭﯽ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﺩﯼ۔ " ﻟﮕﺎﺅﮞ ﭘﮭﺮ ﮐﮭﺎﻧﺎ؟ " " ﺟﯽ ﺟﻨﺎﺏ، ﻣﻠﮑۂِ ﻋﺎﻟﮧ ﺑﮭﻮﮐﯽ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺧﯿﺎﻝ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ، ﺍﯾﺴﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﺑﮭﻼ؟ " ، ﻋﻤﺮ ﺷﺮﺍﺭﺗﺎً ﺍﺱ ﺳﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻟﯿﭗ ﭨﺎﭖ ﺍﺏ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﺭﺟﺮ ﺍﺗﺎﺭ ﮐﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺭﮐﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺁﻣﻨﮧ ﺷﺮﻣﺎﺗﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻨﺴﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﭽﻦ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﭼﻞ ﺩﯼ۔ ﺳﻌﺪﯾﮧ ﮐﮯ ﭨﮭﮑﺮﺍ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺑِﯿﺖ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻨﮕﯿﺘﺮ ﺍﻭﺭ ﺳُﻨﺖ ﮐﯽ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺳﻨﺖ ﮐﻮ ﭼُﻨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺩﻧﯿﺎﺩﺍﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮯﻭﻗﻮﻑ ﺗﺮﯾﻦ ﭨﮭﮩﺮﺍ ﺗﮭﺎ، ﺍﭘﻨﻮﮞ، ﺣﺘٰﯽ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺗﮏ ﮐﮯ ﻃﻌﻨﮯ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺳﻨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ، ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺍﻟﮓ۔۔ * ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔۔ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺟﺐ ﺗﮏ ﮨﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﭼﮭﺎ ﺭﺷﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ۔۔ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺫﻟﯿﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﺑﻮﮌﮬﮯ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺿﺪ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ۔۔ * ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺟﯿﺴﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﭘﻮﺭﺍ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺍﮐﯿﻼ ﮨﯽ ﺳﻨﺘﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺟﻮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺁﯾﺎ ﮐﮩﺘﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﺑﺪﻻ۔ ﮨﺎﮞ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺗﻮ ﺑﮩﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻗﺮﺁﻥ ﺍﻭﺭ ﺫﮐﺮ ﺍﯾﺴﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺳﮑﯽ ﮨﻤﺖ ﺑﻨﯽ ﺭﮨﯿﮟ۔ ﺳﭻ ﮨﮯ ﻧﻤﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﺫﮐﺮ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺗﻮ ﭘﺎﮔﻞ ﮨﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺻﺒﺮ ﭘﺮ ﺍﺳﺘﻘﺎﻣﺖ ﺑﮭﯽ ﭘﮭﺮ ﮐﻤﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ۔ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺭﺏ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﺍُﭨﮭﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﮐﯿﻼ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻟﯿﻮﻝ ﭘﺮ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﮩﻼ ﻗﺪﻡ ﺧﻮﺩ ﺍُﭨﮭﺎﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺛﺒﻮﺕ ﺩﯾﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﮯ۔۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮈﺭﭘﻮﮎ ﺳﮯ ﮈﺭﭘﻮﮎ ﺗﺮﯾﮟ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺑﮭﯽ ﭘﮩﺎﮌ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﮯ ﻭﮦ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﮐﻮ ﺭﺏ ﮐﮯ ﺭﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﺟﻤﺎ ﺩﮮ ، ﺍﺳﻄﺮﺡ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﮐﺘﻨﯽ ﺑﮭﯽ ﺳﺨﺖ ﮨﻮﺍﺋﯿﮟ ﭼﻠﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﮔﺮﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﯿﮟ، ﺍﺱ ﺭﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﮨﭩﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﯿﮟ۔۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﺭﺍﮦ ﭘﺮ ﺻﺮﻑ ﺩﮐﮫ ، ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺮﻭﻣﯿﺎﮞ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻭﻗﺘﺎً ﻓﻮﻗﺘﺎً ﺍﻧﻌﺎﻡ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔۔ ﺟﯿﺴﮯ ﺁﺝ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﺮﺻﮯ ﮐﮯ ﮔﮭُﭗ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﻃﻮﻓﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﮑﯽ ﮐﺸﺘﯽ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﺁﻣﻨﮧ ﺟﯿﺴﯽ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﯽ، ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ، ﺷﺮﻡ ﻭ ﺣﯿﺎ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﯾﮏ ﭘﺮﺩﮦ ﺩﺍﺭ، ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺑﯿﻮﯼ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺳﻌﺪﯾﮧ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﮭﻮ ﺩﯾﻨﮯ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺟﻨﺖ ﺳﯽ ﺩﮮ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﻟﮕﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﻓِﯿﻠِﻨﮕﺰ ﮐﻮ ﺳﻤﯿﭧ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﺎ ﺭُﻭﭖ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ ﮨﻮ، ﺁﻣﻨﮧ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ۔ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﺣﻘﯿﻘﺘﺎً ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﻋﻤﺮ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺑﯽ ﻋﮑﺲ، ﺍﺳﮑﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﭨﮭﻨﮉﮎ، ﺍﺳﮑﯽ ﺭﻭﺡ ﮐﺎ ﺳﮑﻮﻥ۔۔ ﺟﺒﮑﮧ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ، ﺳﻌﺪﯾﮧ، ﺍﺳﮯ ﭨﮭُﮑﺮﺍ ﺩﯾﻨﮯ ﭘﺮ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﮐﻨﻮﺍﺭﯼ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﺷﺎﯾﺪ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺟﺴﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﭨﮭُﮑﺮﺍ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ، ﻭﮦ ﻣﺤﺾ ﺍﯾﮏ ﺩﺍﮌﮬﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ، ﺑﻠﮑﮧ ﺳﻨﺖِ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻋﻤﺮ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺟُﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﺳﻌﺪﯾﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺁﺝ ﮐﺘﻨﮯ ﮨﯽ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺩﺍﮌﮬﯽ، ﭘﺮﺩﮦ، ﭨﺨﻨﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﭘﺎﺋﻨﭽﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺘﻨﮯ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﺁﻣﯿﺰ ﺭﻭﯾﮯ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﺰﺍﻕ ﺍُﮌﺍﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔۔ ﯾﮧ ﺳﻮﭼﮯ ﺑِﻨﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻧﮑﻮ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﮐﮯ ﮐﺲ ﮐﺲ ﮔﮍﮬﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻨﮑﺘﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺗﺒﺎﮦ ﻭ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮﺗﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔۔ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭِﻦ ﮔﯿﺎ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺒﯽ ﮐﮯ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﮯ ﺭﺳﺘﮯ ﭘﮧ ﭼﻞ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﮑﻮﮞ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﮯ ﻧﺸﮧ ﺟﺐ ﺳﮯ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺍُﭼﺎﭦ ﺍﭘﻨﺎ ﺟﯽ ﺍﺱ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔
  7. ROHAAN

    poetry Share Your Favorite poetry Here

    تمہیں گلاب تو دے دوں مگر وہ کیا ہے ناں تمہارے سامنے پھولوں کی کیا حقیقت ہے
  8. ROHAAN

    poetry Share Your Favorite poetry Here

    مدت سے ایک چاک پر رقص میں ہے حیات وہ کوزہ گر ........ کچھ اس طرح تسخیر کر گیا
  9. ROHAAN

    موت کیا ہے

    ❤ پسند کرنے کا بہت بہت شکریہ ❤
  10. ROHAAN

    poetry اے خُدا معذرت

    ❤ پسند کرنے کا بہت بہت شکریہ ❤
  11. ROHAAN

    یہ ہے مے کدہ یہاں رند ہیں

    ❤ واااااہ بہت خـــــــــوب❤
  12. اے خُدا معذرت مَیں جہاں تھا وہیں رہ گیا، معذرت اے زمیں معذرت ! اے خُدا معذرت کچھ بتاتے ھوئے، کچھ چُھپاتے ھوئے مَیں ھَنسا، معذرت ! رُو دیا، معذرت خُود تمھاری جگہ جا کے دیکھا ھے اور خُود سے کی ھے تمھاری جگہ معذرت جو ھوا، جانے کیسے ھوا، کیا خبر ایک دن مَیں نے خود سے کہا، معذرت ھم سے گِریہ مکمل نہیں ھو سکا ھم نے دیوار پر لکھ دِیا، معذرت مَیں بہت دُور ھوں، شام نزدیک ھے شام کو دو صدا، شکریہ ! معذرت
  13. ROHAAN

    poetry دکھ

    دکھ کہتا ہے ایک دن مجھ سے بڑا دکھ ہے مجھے میں نے پوچھا کس بات کا دکھ؟ کہتا ہے بس کچھ ہے میں نے پوچھا کھانا پیٹ بھر کر کھاتے ہو؟ کہتا ہے ہاں پھر پوچھا کوئی بیماری تو نہیں؟ کہتا ہے نہیں پھر پوچھا اعضاء سلامت ہیں؟ کہتا ہے ہاں سر پہ چھت ہے؟ کہتا ہے ہاں پھر میں لے گئی اس کو ایک ایسی جگہ جہاں قحط تھا بچوں کے جسم لباس سے عاری اور پیٹ اناج سے خالی سونے کو چھت نہیں نہ سردی کی لذت نہ گرمی کی ہیبت احساس جیسے باقی ہی نہ رہے ایک اور ایسی جگہ جہاں زندگی ایک جرم تھی روز لاشیں گرتیں عزتیں پامال ہوتیں ظلم اپنی انتہا پہ جہاں آتی جاتی سانسوں پہ بھی شکر تھا کہ سلامت ہیں پھر میں نے پوچھا اب بتاؤ کوئی دکھ ہے باقی؟ کہتا ہے نہیں مجھے تو دکھ کے معنی آج سمجھ آئے ہیں
  14. ROHAAN

    poetry Share Your Favorite Punjabi Poetry

    میں تینوں فیر ملاں گی میں تینوں فیر ملاں گی کِتھے؟ کس طرح؟ پتا نہیں شاید تیرے تخیل دی چھنک بن کے تیرے کینوس تے اتراں گی یا ہورے تیرے کینوس دے اُتے اک رہسمئی لکیر بن کے خاموش تینوں تکدی رواں گی یا ہورے سورج دی لو بن کے تیرے رنگاں اچ گھُلاں گی یا رنگاں دیاں باہنواں اچ بیٹھ کے تیرے کینوس نو ولاں گی پتا نئیں کس طرح، کتھے پر تینوں ضرور ملاں گی یا ہورے اک چشمہ بنی ہوواں گی تے جیویں جھرنیاں دا پانی اڈ دا میں پانی دیاں بُونداں تیرے پنڈے تے مَلاں گی تے اک ٹھنڈک جئی بن کے تیری چھاتی دے نال لگاں گی میں ہور کج نئیں جاندی پر اینا جاندی آں کہ وقت جو وی کرے گا اے جنم میرے نال ٹُرے گا اے جسم مُکدا اے تے سب کج مُک جاندا پر چیتیاں دے تاگے کائناتی کنا دے ہوندے میں انہاں کنا نو چناں گی تاگیاں نو ولاں گی تے تینوں میں فیر ملاں گی امرتا پریتم
  15. موت کیا ہے سب سے پہلے میری موت پر مجھ سے جو چھین لیا جائے گا وہ میرا نام ہوگا! !! اس لئے جب میں مرجاوں گا تو لوگ کہیں گے کہ" لاش کہاں" ہے؟ اور مجھے میرے نام سے نہیں پکاریں گے ۔۔! اور جب نماز جنازہ پڑھانا ہو تو کہیں گے "جنازہ لےآؤ "!!! میرانام نہیں لینگے ۔۔! اور جب میرے دفنانے کا وقت آجائےگا تو کہیں گے "میت کو قریب کرو" !!! میرانام بھی یاد نہیں کریں گے ۔۔۔! اس وقت نہ میرا نسب اور نہ ہی قبیلہ میرے کام آئے گا اور نہ ہی میرا منصب اور شہرت۔۔۔ کتنی فانی اور دھوکہ کی ہے یہ دنیا جسکی طرف ہم لپکتے ہیں۔۔ پس اے زندہ انسان ۔۔۔ خوب جان لے کہ تجھ پر غم و افسوس تین طرح کا ہوتا ہے : 1۔ جو لوگ تجھے سرسری طور پر جانتے ہیں وہ مسکین کہکر غم کا اظہار کریں گے ۔ 22۔ تیرے دوست چند گھنٹے یا چند روز تیرا غم کریں گے اور پھر اپنی اپنی باتوں اور ہنسی مذاق میں مشغول ہو جائیں گے ۔ 33۔ زیادہ سے زیادہ گہرا غم گھر میں ہوگا وہ تیرے اہل وعیال کو ہوگا جو کہ ہفتہ، دو ہفتے یا دو مہینے اور زیادہ سے زیادہ ایک سال تک ہوگا ۔ اور اس کے بعد وہ تجھے یادوں کے پنوں میں رکھ دیں گے! !! لوگوں کے درمیان تیرا قصہ ختم ہو جاۓ گا اور تیرا حقیقی قصہ شروع ہو جاۓ گا۔ وہ ہے آخرت کا ۔ تجھ سے چھین گیا تیرا ۔۔۔ 1۔ جمال ۔۔۔ 2۔ مال ۔۔ 3۔ صحت ۔۔ 4۔ اولاد ۔۔ 5۔ جدا ہوگئےتجھ سے مکان و محلات۔ 6۔ بیوی ۔۔۔ 7۔ غرض ساری دنیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور کچھ باقی نہ رہا تیرے ساتھ سوائے تیرے اعمال کے۔ اور حقیقی زندگی کا آغاز ہوا ۔ اب سوال یہاں یہ ہیکہ : تو نے اپنی قبر اور آخرت کے لئے اب سے کیا تیاری کی ہے ؟ یہی حقیقت ہے جسکی طرف توجہ چاہئے ۔۔ اس کے لیے تجھے چاہئے کہ تو اہتمام کرے : 1۔ فرائض کا 2۔ نوافل کا 3۔پوشیدہ صدقہ اور صدقہ جاریہ کا۔۔۔۔۔ 4۔ نیک کاموں کا 5۔ رات کی نمازوں کا شاید کہ تو نجات پاسکے۔ اگر تو نے اس مقالہ سے لوگوں کی یاددہانی میں مدد کی جبکہ تو ابھی زندہ ہے تاکہ اس امتحان گاہ میں امتحان کا وقت ختم ہونے سے تجھے شرمندگی نہ ہو اور امتحان کا پرچہ بغیر تیری اجازت کے تیرے ہاتھوں سے چھین لیا جائے اور تو تیری اس یاددہانی کا اثر قیامت کے دن تیرے اعمال کے ترازو میں دیکھےگا (اور یاددہانی کرتے رہئے بیشک یاددہانی مومنوں کو نفع دیگا) میت صدقہ کو کیوں ترجیح دیتی ہے اگر وہ دنیا میں واپس لوٹا دی جائے۔۔ جیسا کہ قرآن میں ہے۔ *"اے رب اگر مجھے تھوڑی دیر* *کے* *لئے واپس لوٹا دے تو* *میں صدقہ کروں اور نیکوں ** *میں شامل ہو جاؤں** *(سورة المنافقون )* یہ نہیں کہےگا کہ۔۔ عمرہ کروں گا نماز پڑھوں گا روزہ رکھوں گا علماء نے کہا کہ : میت صدقہ کی تمنا اس لئے کریگا کیوں کہ وہ مرنے کے بعد اس کا عظیم ثواب اپنی آنکھوں سے دیکھے گا۔ اس لئے صدقہ کثرت سے کیا کرو بیشک مومن قیامت کے دن اپنے صدقہ کے سایہ میں ہوگا
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×