Jump to content

Register now to gain access to all of our features. Once registered and logged in, you will be able to create topics, post replies to existing threads, give reputation to your fellow members, get your own private messenger, post status updates, manage your profile and so much more. If you already have an account, login here - otherwise create an account for free today!

Welcome to our forums
Welcome to our forums, full of great ideas.
Please register if you'd like to take part of our project.
Urdu Poetry & History
Here you will get lot of urdu poetry and history sections and topics. Like/Comments and share with others.
We have random Poetry and specific Poet Poetry. Simply click at your favorite poet and get all his/her poetry.
Thank you buddy
Thank you for visiting our community.
If you need support you can post a private message to me or click below to create a topic so other people can also help you out.

Sign in to follow this  
waqas dar

Gaye dino ka suragh le ker kidher se aya kidher gaya wo

Recommended Posts

گئے دِنوں کا سراغ لے کر ، کِدھر سے آیا کِدھر گیا وہ 
عجیب مانوس اجنبی تھا ، مجھے تو حیران کر گیا وہ 

بس ایک موتی سی چھب دِکھا کر 
بس ایک میٹھی سی دُھن سُنا کر 
ستارہء شام بن کے آیا ، برنگِ خُوابِ سحر گیا وہ 

خوشی کی رُت ہو کہ غم کا موسم 
نظر اُسے ڈُھونڈتی ہے ہر دٙم 
وُہ بُوئے گل تھا کہ نغمہء جاں ، مرے تو دل میں اُتر گیا وہ 

نہ اب وُہ یادوں کا چڑھتا دریا 
نہ فرصتوں کی اُداس برکھا 
یُونہی ذرا سی کسک ہے دِل میں ، جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ 

کچھ اب سنبھلنے لگی ہے جاں بھی 
بدل چلا دٙورِ آسماں بھی 
جو رات بھاری تھی ٹل گئی ہے ، جو دِن کڑا تھا گزر گیا وہ

بس ایک منزل ہے بوالہوس کی 
ہزار راستے ہیں اہلِ دل کے 
یہی تو ہے فرق مجھ میں ، اس میں گزر گیا میں ، ٹھہر گیا وہ 

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں 
گئے دِنوں کو بُلا رہا ہوں 
جو قافلہ میرا ہمسفر تھا ، مثالِ گردِ سفر گیا وہ 

میرا تو خون ہو گیا ہے پانی 
سِتمگروں کی پلک نہ بھیگی 
جو نالہ اُٹھا تھا رات دِل سے ، نہ جانے کیوں بے اٙثر گیا وہ 

وہ میکدے کو جگانے والا 
وہ رات کی نیند اُڑانے والا 
یہ آج کیا اُس کے جی میں آئی ، کہ شام ہوتے ہی گھر گیا وہ 

وہ ہجر کی رات کا ستارہ 
وہ ہم نفس ہم سُخن ہمارا 
سدا رہے اُس کا نام پیارا ، سُنا ہے کل رات مٙر گیا وہ 

وہ جس کے شانے پہ ہاتھ رکھ کر 
سفر کیا تُو نے منزلوں کا 
تری گلی سے نہ جانے کیوں آج ، سٙر جُھکائے گزر گیا وہ 

وہ رات کا بے نوا مسافر 
وہ تیرا شاعر ، وہ تیرا ناصر 
تیری گلی تک تو ہم نے دیکھا تھا ، پھر نہ جانے کِدھر گیا وہ 
*****
*****
شاعر : ناصر کاظمی 
(دیوان)

 

dewan.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,060
    Total Topics
    8,878
    Total Posts
×
×
  • Create New...