Jump to content

Welcome to Fundayforum. Please register your ID or get login for more access and fun.

Signup  Or  Login

house fdf.png

ADMIN ADMIN

Captain Marvel Movie 2019

IMDb - 6.3/10 Rotten Tomatoes Description: Captain Marvel gets caught in the middle of a galactic war between two alien races. Initial release: March 8, 2019 (USA) Directors: Anna Boden, Ryan Fleck Budget: 152 million USD Music composed by: Pinar Toprak Screenplay: Anna Boden, Ryan Fleck, Nicole Perlman, Geneva Robertson-Dworet, Meg LeFauve, Liz Flahive, Carly Mensch
Watch and Download

Alita - Battle Angel 2019

IMDb: 7.6/10 Genre : Action, Science Fiction, Thriller, Romance Director : Robert Rodriguez Stars : Rosa Salazar, Christoph Waltz, Ed Skrein, Mahershala Ali, Jennifer Connelly LANGUAGE: Hindi (Cleaned) – English Quality: 720p HD-Camrip PLOT: Six strangers find themselves in a maze of deadly mystery rooms, and must use their wits to survive.
Watch and Download

Rate this topic

Recommended Posts

33384983-448481915581043-354120395864093

 

کچھ تو ہم بھی لکھیں گے
 
 

‏کچھ تو ہم بھی لکھیں گے ، جب خیال آئے گا
ظلم ، جبر ، صبر کا جب سوال آئے گا

 

عقل ہے، شعور ہے پھر بھی ایسی بے فکر
تب کی تب ہی دیکھیں گے جب زوال آئے گا

 

یوں تو ہم ملائک ہیں ، بشر بھی کبھی ہونگے
دُسروں کے دُکھ پہ جب ملال آئے گا

 

‏لہو بھی رگوں میں اب جم سا گیا ہے کچھ
آنکھ سے بھی ٹپکے گا جب اُبال آئے گا

 

دیکھ مت فقیروں کو اس طرح حقارت سے
آسمان ہلا دیں گے جب جلال آئے گا

 

پگڑیاں تو آپ کی بھی ایک دن اُچھلیں گی
آپ کے گناہوں کا جب وبال آئے گا

 

شاعری ابھی ہمارے دل کی بھڑاس ہے
بالوں میں جب سفیدی ہو گی کمال آئے گا

 

‏جس کو مجھ سے کہنا ہے ، جو کچھ بھی ، ابھی کہ دو
خاک جب ہو جاؤں گا تب خیال آئے گا ؟

 

آج کل کے مسلم بھی فرقہ فرقہ پھرتے ہیں
ایک یہ تبھی ہوں گے جب دجال آئے گا
  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

.                          سڑک کنارے بیٹھا تھا
                        کوئی جوگی تھا یا روگی تھا

                                 کیا جوگ سجائے بیٹھاتھا ؟
                                     کیا روگ لگائے بیٹھا تھا ؟

           تھی چہرے پر زردی چھائی
           اور نیناں اشک بہاتے تھے

                   تھے گیسو بکھرے بکھرے سے
                     جو دوشِ ھوا لہراتے تھے

                             تھا اپنے آپ سے کچھ کہتا
                            اور خود سن کے ھنس دیتا تھا

                        کوئی غم کا مارا لگتا تھا
                        کوئی دکھیاراسا لگتا تھا

                           اس جوگی کو جب دیکھتے تھے
                              ھر بار یہی ھم سوچتے تھے

          کیا روگ لگا ھے روگی کو
          کس شے کا سوگ ھے جوگی کو ؟

                        اک دن اس نے کوچ کیا
                        اور سارے دھندے چھوڑ گیا

        وہ جوگی ، روگی ، سیلانی
         سارے ھی پھندے توڑ گیا

                                  پھر اپنا قصہ شروع ھوا
                                 اک مورت دل میں آ بیٹھی

                     نین نشیلے ، ھونٹ رسیلے
                            چال عجب متوالی سی

        روپ سنہرا ، چاند سا چہرا
                زلفیں کالی کالی سی

                                ھنسے تو پائل بجتی تھی
                                روئے تو جل تھل ھو جائے

                       بینا کی لے تھی لہجے میں
                         کہ سننے والا سو جائے

          وہ چلے تو دنیا ساتھ چلے
              جو رکے تو عالم تھم جائے

                               ھو ساتھ تو دھڑکن تیز چلے
                               دوری سے سانس یہ جم جائے

               کچھ قسمیں ، وعدے ، قول ھوئے
                  انمول تھے وہ ، بِن مول ھوئے

                         تھے سونے جیسے دن سارے
                          راتیں سب چاندی کی تھیں

          امبر کا رنگ سنہرا تھا
         جہاں قوس و قزاح کا پہرا تھا

                              اک دن یونہی بیٹھے بیٹھے
                               کچھ بحث ھوئی ، تکرار ھوئی

                 وہ چلدی روٹھ کے بس یونہی
                میں سوچ میں تھا بیکار ھوئی

                             کچھ دن گذرے پھر ہفتہ بھی
                              نا دیکھا ، نا ملاقات ہی کی

          ناراض تھی وہ ، ناراض رہی
            نا فون پہ اس نے بات ہی کی

                           جب ملی تو صاف ہی کہہ ڈالا
                              وہ بچپن تھا نادانی تھی

                   کیا دل سے لگائے بیٹھے ھو ؟
                       وہ سب کچھ ایک کہانی تھی

                             تھی دل پہ بیتی کیا اس پل ؟
                              تم لوگ سمجھ نہ پاؤگے

               جب تم پر یہ سب بیتے گا
                 یہ روگ سمجھ ہی جاؤ گے

                            سب یاد دلائے عہدِ وفا
                            وہ قسمیں، قول، قرار سبھی

سکھ، دکھ میں ساتھ نبھانے کے
وہ وعدے اور اقرار سبھی

                           وہ ہنس کے بولی ، پاگل ہو ؟
                            کبھی وعدے پورے ھوتے ہیں ؟

              کیا اتنا بھی معلوم نہیں ؟
                  یہ عہد ادھورے ھوتے ہیں

                   تمہیں علم نہیں  نادان ھو تم
                             کب قسم نبھائی جاتی ھے ؟

               کس دیس کے رھنے والے ہو ؟
                   یہ قسم تو کھائی جاتی ہے

                                وہ ہنس کے چلدی راہ اپنی
                                اور صبر کا دامن چھوٹ گیا

آنکھوں سے جھیلیں بہہ نکلیں
اور ضبط بھی ہم سے روٹھ گیا

                       میں آج وہاں پر بیٹھا ھوں
                    جس جگہ پہ کل وہ جوگی تھا

                                  یہ آج سمجھ میں آیا ہے 
                                   کس چیز کا آخر روگی تھا۔۔
❤❤

  • Thumbs Up 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,017
    Total Topics
    8,768
    Total Posts
×