Jump to content

FDF Members Poetry

  • entries
    155
  • comments
    113
  • views
    20,935

Contributors to this blog

khuwab e Gul

Hareem Naz

30 views

آنکھوں میں سِتارے تو کئی شام سے اُترے
پر دِل کی اُداسی نہ در و بام سے اُترے

کُچھ رنگ تو اُبھرے تِری گُل پیرہنی کا
کُچھ زنگ تو آئینہء ایام سے اُترے

ہوتے رہے دِل لمحہ بہ لمحہ تہہ و بالا
وہ زینہ بہ زینہ بڑے آرام سے اُترے

جب تک تِرے قدموں میں فروکش ہیں سبُو کش
ساقی خطِ بادہ نہ لبِ جام سے اُترے

بے طمع نوازش بھی نہیں سنگ دِلوں کی
شاید وہ مِرے گھر بھی کسی کام سے اُترے

اوروں کے قصیدے فقط آورد تھے جاناں
جو تُجھ پہ کہے شعر وہ الہام سے اُترے

اے جانِ فراز ؔاے مِرے ہر دُکھ کے مسیحا
ہر زہر زمانے کا تیرے نام سے اُترے

 

ee6d12d4ccc58fc-a-nw-p.jpg



0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
×