Jump to content

Captain Marvel Movie 2019

IMDb - 6.3/10 Rotten Tomatoes Description: Captain Marvel gets caught in the middle of a galactic war between two alien races. Initial release: March 8, 2019 (USA) Directors: Anna Boden, Ryan Fleck Budget: 152 million USD Music composed by: Pinar Toprak Screenplay: Anna Boden, Ryan Fleck, Nicole Perlman, Geneva Robertson-Dworet, Meg LeFauve, Liz Flahive, Carly Mensch
Watch and Download

Alita - Battle Angel 2019

IMDb: 7.6/10 Genre : Action, Science Fiction, Thriller, Romance Director : Robert Rodriguez Stars : Rosa Salazar, Christoph Waltz, Ed Skrein, Mahershala Ali, Jennifer Connelly LANGUAGE: Hindi (Cleaned) – English Quality: 720p HD-Camrip PLOT: Six strangers find themselves in a maze of deadly mystery rooms, and must use their wits to survive.
Watch and Download
waqas dar

poetry تم کہ سنتے رہے اوروں کی زبانی لوگو

Rate this topic

Recommended Posts

تم کہ سنتے رہے اوروں کی زبانی لوگو
 ہم سُناتے ہیں تمہیں اپنی کہانی لوگو

کون تھا دشمنِ جاں وہ کوئی اپنا تھا کہ غیر
 ہاں وہی دُشمنِ جاں دلبرِ جانی لوگو

زُلف زنجیر تھی ظالم کی تو شمشیر بدن
 رُوپ سا رُوپ جوانی سی جوانی لوگو

سامنے اُسکے دِکھے نرگسِ شہلا بیمار
 رُو برو اُسکے بھرے سَرو بھی پانی لوگو

اُسکے ملبوس سے شرمندہ قبائے لالہ
 اُس کی خوشبو سے جلے رات کی رانی لوگو

ہم جو پاگل تھے تو بے وجہ نہیں تھے پاگل
 ایک دُنیا تھی مگر اُس کی دِوانی لوگو

ایک تو عشق کیا عشق بھی پھر میر سا عشق
 اس پہ غالب کی سی آشفتہ بیانی لوگو

ہم ہی سادہ تھے کِیا اُس پہ بھروسہ کیا کیا
 ہم ہی ناداں تھے کہ لوگوں کی نہ مانی لوگو

ہم تو اُس کے لئے گھر بار بھی تج بیٹھے تھے
 اُس ستمگر نے مگر قدر نہ جانی لوگو

کس طرح بھُول گیا قول و قسم وہ اپنے
 کتنی بے صرفہ گئی یاد دہانی لوگو

اب غزل کوئی اُترتی ہے تو نوحے کی طرح
 شاعری ہو گئی اب مرثیہ خوانی لوگو

شمع رویوں کی محبت میں یہی ہوتا ھے
 رہ گیا داغ فقط دل کی نشانی لوگو

( احمد فراز )

alone fundayforum.jpg

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites
15 hours ago, waqas dar said:

تم کہ سنتے رہے اوروں کی زبانی لوگو
 ہم سُناتے ہیں تمہیں اپنی کہانی لوگو

کون تھا دشمنِ جاں وہ کوئی اپنا تھا کہ غیر
 ہاں وہی دُشمنِ جاں دلبرِ جانی لوگو

زُلف زنجیر تھی ظالم کی تو شمشیر بدن
 رُوپ سا رُوپ جوانی سی جوانی لوگو

سامنے اُسکے دِکھے نرگسِ شہلا بیمار
 رُو برو اُسکے بھرے سَرو بھی پانی لوگو

اُسکے ملبوس سے شرمندہ قبائے لالہ
 اُس کی خوشبو سے جلے رات کی رانی لوگو

ہم جو پاگل تھے تو بے وجہ نہیں تھے پاگل
 ایک دُنیا تھی مگر اُس کی دِوانی لوگو

ایک تو عشق کیا عشق بھی پھر میر سا عشق
 اس پہ غالب کی سی آشفتہ بیانی لوگو

ہم ہی سادہ تھے کِیا اُس پہ بھروسہ کیا کیا
 ہم ہی ناداں تھے کہ لوگوں کی نہ مانی لوگو

ہم تو اُس کے لئے گھر بار بھی تج بیٹھے تھے
 اُس ستمگر نے مگر قدر نہ جانی لوگو

کس طرح بھُول گیا قول و قسم وہ اپنے
 کتنی بے صرفہ گئی یاد دہانی لوگو

اب غزل کوئی اُترتی ہے تو نوحے کی طرح
 شاعری ہو گئی اب مرثیہ خوانی لوگو

شمع رویوں کی محبت میں یہی ہوتا ھے
 رہ گیا داغ فقط دل کی نشانی لوگو

( احمد فراز )

alone fundayforum.jpg

Related image

Share this post


Link to post
Share on other sites

اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں امکاں جاناں
یاد کیا تجھ کو دلائیں تیرا پیماں جاناں

یوں ہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے
کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

زندگی تیری عطا تھی سو تیرے نام په دی 
ہم نے جیسے بھی بسر کی تیرا احساں جاناں

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہو فُسردہ تو بھی
دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر
بے پیئے بھی تیرا چہرہ تھا گلستاں جاناں

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں
رگِ مینا سلگ اٹھی کہ رگِ جاں جاناں

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید
دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جانا! جاناں !

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جانا
سر بہ زانوں ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے
ہر کوئی اپنے ہی سایے سے ہراساں جاناں

جس کو دیکھو وہ ہی زنجیز بپا لگتا ہے 
شہر کا شہر ہوا داخل ہوا زِنداں جاناں

ہم بھی کیا سادہ تھےہم نےبھی سمجھ رکھاتھا
غمِ دوراں سے جدا ہے غمِ جاناں جاناں

ہم، کہ روٹھی ہوی رُت کو بھی منالیتےتھے
ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں

ہوش آیا تو سب ہی خواب تھے ریزہ ریزہ 
جیسے اُڑتے ہوئے اُوراقِ پریشاں جاناں

۔۔۔ احمد فراز

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites
2 hours ago, Jannat malik said:

اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں امکاں جاناں
یاد کیا تجھ کو دلائیں تیرا پیماں جاناں

یوں ہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے
کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

زندگی تیری عطا تھی سو تیرے نام په دی 
ہم نے جیسے بھی بسر کی تیرا احساں جاناں

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہو فُسردہ تو بھی
دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر
بے پیئے بھی تیرا چہرہ تھا گلستاں جاناں

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں
رگِ مینا سلگ اٹھی کہ رگِ جاں جاناں

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید
دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جانا! جاناں !

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جانا
سر بہ زانوں ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے
ہر کوئی اپنے ہی سایے سے ہراساں جاناں

جس کو دیکھو وہ ہی زنجیز بپا لگتا ہے 
شہر کا شہر ہوا داخل ہوا زِنداں جاناں

ہم بھی کیا سادہ تھےہم نےبھی سمجھ رکھاتھا
غمِ دوراں سے جدا ہے غمِ جاناں جاناں

ہم، کہ روٹھی ہوی رُت کو بھی منالیتےتھے
ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں

ہوش آیا تو سب ہی خواب تھے ریزہ ریزہ 
جیسے اُڑتے ہوئے اُوراقِ پریشاں جاناں

۔۔۔ احمد فراز

yaha hy copy past ka saman jana,

cholo thora halbala macha jana,,

thora sa rang bharday boseedah dewarroun pe

sehra ko ker de gulistaan jana

mumkin ager ho to parwano ko rehne dyna,,

abh shama ki jaga buleb balta hy jana

Image result for troll image

ik cup chaie b nahi koi poshta ,,

sara zamana khafa jana 

 

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

کیسے پایا تھا تجھے پھر کس طرح کھویا تجھے
!!  مجھ سا منکر بھی تو قائل ہو گیا تقدیر کا

(احمد فرازؔ)

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,026
    Total Topics
    8,782
    Total Posts
×