Jump to content

Welcome to Fundayforum. Please register your ID or get login for more access and fun.

Signup  Or  Login

house fdf.png

ADMIN ADMIN

Captain Marvel Movie 2019

IMDb - 6.3/10 Rotten Tomatoes Description: Captain Marvel gets caught in the middle of a galactic war between two alien races. Initial release: March 8, 2019 (USA) Directors: Anna Boden, Ryan Fleck Budget: 152 million USD Music composed by: Pinar Toprak Screenplay: Anna Boden, Ryan Fleck, Nicole Perlman, Geneva Robertson-Dworet, Meg LeFauve, Liz Flahive, Carly Mensch
Watch and Download

Alita - Battle Angel 2019

IMDb: 7.6/10 Genre : Action, Science Fiction, Thriller, Romance Director : Robert Rodriguez Stars : Rosa Salazar, Christoph Waltz, Ed Skrein, Mahershala Ali, Jennifer Connelly LANGUAGE: Hindi (Cleaned) – English Quality: 720p HD-Camrip PLOT: Six strangers find themselves in a maze of deadly mystery rooms, and must use their wits to survive.
Watch and Download

Rate this topic

Recommended Posts

‏لوگ کہتے ہیں سمجھو تو خاموشیاں بھی بولتی ہیں

میں عرصے سے خاموش ہوں، وہ برسوں سے بےخبر..!!



  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

وہ سِتم نہ ڈھائے تو کیا کرے اسے کیا خبر کہ وفا ہے کیا
تُو اسی کو پیار کرے ہے کیوں، یہ کلیمؔ تجھ کو ہُوا کیا
تجھے سنگدل یہ پتہ ہے کیا کہ دُکھے دلوں کی صدا ہے کیا
کبھی چوٹ تُو نے بھی کھائی ہے، کبھی تیرا دل بھی دُکھا ہے کیا
تُو رئیسِ شہرِ سِتم گراں، میں گدائے کُوچۂ عاشقاں
تُو امیر ہے، تو بتا مجھے میں غریب ہوں تو بُرا ہے کیا
تُو جفا میں مست ہے روز و شب، میں کفن بدوش غزل بلب
ترے رُعبِ حُسن سے چُپ ہیں سب، میں بھی چُپ رہوں تو مزا ہے کیا
یہ کہاں سے آئی ہے سُرخ رو، ہے ہر ایک جھونکا لہُو لہُو
کٹی جس میں گردنِ آرزُو، یہ اسی چمن کی ہوا ہے کیا
ابھی تیرا دورِ شباب ہے، ابھی کیا حساب و کتاب ہے
ابھی کیا نہ ہو گا جہان میں، ابھی اس جہاں میں ہُوا ہے کیا
یہی ہمنوا، یہی ہم سخن، یہی ہم نشاں، یہی ہم وطن
میری شاعری ہی بتائے گی، میرا نام کیا ہے پتہ ہے کیا۔۔۔۔۔۔۔

  • Like 3

Share this post


Link to post
Share on other sites

تجھے اے سنگدل پتہ کیا خاک ھے دکھی دلوں کا۔ جی چاہ رہاھے تیرا خون کردوں 

  • Like 2

Share this post


Link to post
Share on other sites

جیسے ہم جان ہی نہیں رکھتے 
موت کا اجتناب تو دیکھیے

  • Like 2

Share this post


Link to post
Share on other sites

میں خود زمیں ہوں مگر ظرف آسمان کا ہے
کہ ٹوٹ کر بھی میرا حوصلہ چٹان کا ہے
بُرا نہ مان میرے حرف زہر زہر سہی
میں کیا کروں کہ یہی ذائقہ زبان کا ہے
ہر ایک گھر پہ مسلط ہے دِل کی ویرانی
تمام شہر پہ سایہ میرے مکان کا ہے
بچھڑتے وقت سے اب تک میں یوں نہیں رویا
وہ کہہ گیا تھا یہی وقت امتحان کا ہے
مسافروں کی خبر ہے نہ دُکھ ہے کشتی کا
ہوا کو جتنا بھی غم ہے وہ بادبان کا ہے
یہ اور بات عدالت ہے بے خبر ورنہ
تمام شہر میں چرچہ میرے بیان کا ہے
اثر دِکھا نہ سکا اُس کے دل میں اشک میرا
یہ تیر بھی کسی ٹوٹی ہوئی کمان کا ہے
بچھڑ بھی جائے مگر مجھ سے بدگمان بھی رہے
یہ حوصلہ ہی کہاں میرے بدگمان کا ہے
قفس تو خیر مقدر میں تھا مگر محسن
 ہوا میں شور ابھی تک میری اُڑان کا ہے

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    2,012
    Total Topics
    8,760
    Total Posts
×