Jump to content
Search In
  • More options...
Find results that contain...
Find results in...

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

Jannat malik

دیارِ دِل کی رات میں چراغ سا جلا گیا

Recommended Posts

 

دیارِ دِل کی رات میں چراغ سا جلا گیا
مِلا نہیں تو کیا ہُوا ، وہ شکل تو دِکھا گیا
وہ دوستی تو خیر اب نصیبِ دُشمناں ہُوئی
وہ چھوٹی چھوٹی رنجِشوں کا  لُطف بھی چلا گیا
جُدائیوں کے زخم دردِ زندگی نے بھر دیئے
تجھے بھی نِیند آگئی،  مُجھے بھی صبر آگیا
پُکارتی ہیں فُرصتیں، کہاں گئیں وہ صحبتیں؟
زمِیں نِگل گئی اُنہیں، کہ آسمان کھا گیا
یہ صُبح کی سفیدِیاں ، یہ دوپہر کی زردِیاں
اب آئینے میں دیکھتا ہُوں مَیں کہاں چلا گیا
یہ کِس خوشی کی ریت پر ،غموں کو نِیند آگئی
وہ لہر کِس طرف گئی،  یہ میں کہاں سما گیا
گئے دِنوں کی لاش پر پڑے رہوگے کب تلک
الَم کشو ! اُٹھو کہ آفتاب سر پہ آگیا

ناصؔر کاظمی

  • Like 3

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Forum Statistics

    1,877
    Total Topics
    7,977
    Total Posts
×