Jump to content

Welcome to Fundayforum.com

Take a moment to join us, we are waiting for you.

News Ticker

Search the Community

Showing results for tags 'payar'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Help Support
    • Announcement And Help
    • Funday Chatroom
  • Poetry
    • Shair-o-Shaa'eri
    • Famous Poet
  • Islam - اسلام
    • QURAN O TARJUMA قرآن و ترجمہ
    • AHADEES MUBARIK آحدیث مبارک
    • Ramazan ul Mubarik - رمضان المبارک
    • Deen O Duniya - دین و دنیا
  • Other Forums
    • Quizzes
    • Chitchat and Greetings
    • Urdu Adab
    • Entertainment
    • Common Rooms
  • Music, Movies, and Dramas
    • Movies Song And Tv.Series
  • Science, Arts & Culture
    • Education, Science & Technology
  • IPS Community Suite
    • IPS Community Suite 4.1
    • IPS Download
    • IPS Community Help/Support And Tutorials

Blogs

There are no results to display.

There are no results to display.

Categories

  • Books
    • Urdu Novels
    • Islamic
    • General Books
  • IPS Community Suite 4
    • Applications
    • Plugins
    • Themes
    • Language Packs
    • IPS Extras
  • IPS Community Suite 3.4
    • Applications
    • Hooks/BBCodes
    • Themes/Skins
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • XenForo
    • Add-ons
    • Styles
    • Language Packs
    • Miscellaneous XML Files
  • Web Scripts
  • PC Softwares

Categories

  • Islam
  • General Knowledge
  • Sports

Found 14 results

  1. Kisse kahoon

    غزل شائستہ سحر رگوں میں خون نہ پانی کہوں تو کس,سے کہوں رکی ہے دل کی روانی کہوں تو کس سے کہوں یہ تو نے ڈال دیا مجھ کو کیسی الجھن میں کہ اس میں جان ہے جانی کہوں تو کس سے کہوں اے دوست مجھ کو یہ کن راستوں میں چھوڑ گیا. جہاں پہ چھاؤں نہ پانی کہاں تو کس سے کہوں یہ تیرے درد کی دولت بنی ہے سرمایہ چھپاؤں کیسے نشانی کہوں تو کس سے کہوں جو چاند بن کے مرے ساتھ ساتھ چلتا رہا بنا ہے دشمنِ جانی کہوں تو کس سے کہوں مجھے تو بھول گئیں ہیں قرار راتیں سب مگر وہ رات کی رانی کہوں تو,کس سے کہوں اسے تھی شاید جلدی بہت بچھڑنے کی سو اس نے ایک نہ مانی کہوں تو,کس سے کہوں
  2. Zindagi ab bhi muskurati hai

    سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے اب بھی سورج کی وہی عادت ہے گھر کے آنگن کو وہ جگاتا ہے مرمریں شوخ سی حسین کرنیں چہروں کو چوم کر اٹھاتی ہیں وہاں صبحیں بڑی توانا ہیں اور سب دن بھی خوب دانا ہیں منہ اندھیرے سفر کو جاتے ہیں روز پھر گھر میں شام ہوتی ہے وہی برگد تلے کی ہیں شامیں ایک حقہ ھے کئی ہیں سامع اب بھی فکریں گلی محلے کی باتوں باتوں میں ختم ہوتی ہیں وہی بچوں کا ہے حسیں بچپن جگنو, تتلی کی ہے وہی ان بن وہی جھریوں سی پیاری نانی ہے وہی پریوں کى اک کہانی ہے اب بھی موسم وہاں نشیلے ہیں وہی قوس قزح کے جھولے ہیں وہی بارش کی مستیاں اب بھی ٹین کی چھت پہ گنگناتی ہیں ہے سخن باکمال لوگوں کا میٹھا پن لازوال لہجوں کا سچ بھی جذبوں کی روح میں ہے شامل نہ محبت یہ آزماتی ہے اب بھی باقی ہے دوستی کا مان اب بھی رشتوں میں جان باقی ہے اب بھی جنت ہے ماں کے قدموں میں اب بھی ماں لوریاں سناتی ہے خوشبویں مٹیوں میں زندہ ہیں عکس بھی پانیوں میں ہیں باقی اب بھی تاروں کے سنگ راتوں کو چاندنی محفلیں سجاتی ہے اب بھی راتوں کو چاند کی سکھیاں اپنے چندا سے ملنے جاتی ہیں اور اک دور کھڑے سائے کو اپنی سب دھڑکنیں سناتی ہیں اب بھی سب قافلے جشن میں ہیں اب بھی سب فاصلے امن میں ہیں مسافر جا کے لوٹ آتے ہیں ان کی یادیں نہیں ستاتی ہیں چلو اب ہم بھی وہیں چلتے ہیں جہاں دل آج بھی دھڑکتے ہیں جہاں اب بھی وہ وقت ساکن ہے زندگی اب بھی مسکراتی ہے سنا ہے حد نظر سے آگے زندگی اب بھی مسکراتی ہے
  3. ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺗﻢ ﮐﻮﻥ ﮨﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ۔۔۔۔۔ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﺩﮬﮍﮐﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﮔﯿﺖ ﮨﻮ ﺟﯿﻮﻥ ﮐﺎ ﺗﻢ ﺳﻨﮕﯿﺖ ﮨﻮ ﺗﻢ ﺯﻧﺪﮔﯽ، ﺗﻢ ﺑﻨﺪﮔﯽ ﺗﻢ ﺭﻭﺷﻨﯽ، ﺗﻢ ﺗﺎﺯﮔﯽ ﺗﻢ ﮨﺮ ﺧﻮﺷﯽ، ﺗﻢ ﭘﯿﺎﺭ ﮨﻮ ﺗﻢ ﭘﺮﯾﺖ ﮨﻮ ﻣﻦ ﻣﯿﺖ ﮨﻮ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ، ﯾﺎﺩﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ، ﺁﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﯿﻨﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ، ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺗﻢ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻥ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺻﺒﺢ ﻣﯿﮟ، ﺗﻢ ﺷﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﻮﭺ ﻣﯿﮟ، ﺗﻢ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﭘﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﮐﮭﻮﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﮨﺴﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺭﻭﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﺍﻭﺭ ﺟﺎﮔﻨﺎ ﺳﻮﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﺟﺎﺅﮞ ﮐﮩﯿﮟ، ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﮨﻮ ﻭﮨﺎﮞ، ﺗﻢ ﮨﻮ ﻭﮨﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﺑﻦ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺗﻢ ﮐﻮﻥ ﮨﻮ ﯾﮧ ﺟﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺭﻭﭖ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﮨﮯ ﭼہرے میں سمٹی چاندنی ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﺭﺍﮔﻨﯽ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﮯ ﺟﯿﺴﺎ ﺍﺟﺎﻻ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﯿﺴﺎ ﺭﻧﮓ ﮨﮯ ﯾﮧ ﻧﮕﺮﯾﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﯽ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺣﺎﻟﺖ ﺩﻝِ ﯾﺘﺎﺏ ﮐﯽ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺗﻢ ﮐﻮﻥ ﮨﻮ ﺗﻢ ﮨﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺗﻢ ﮨﯽ ﭼﺎﮨﺖ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺗﻢ ﮨﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﺭﻣﺎﻥ ﮨو تکتی ﮨﻮﮞ ﮨﺮ ﭘﻞ ﺟﺴﮯ ﺗﻢ ﮨﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﮨﻮ ﺗﻢ ﮨﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﮨﻮ ﺗﻢ ﮨﯽ ﺳﺘﺎﺭﮦ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺗﻢ ﮨﯽ ﻧﻈﺎﺭﮦ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﯾﻮﮞ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﮨﻮ ﺗﻢ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮔﮭﯿﺮﮮ ﮨﻮ ﺗﻢ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﯿﺮﮮ ﺟﯿﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﮨﺮ ﭘﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﮨﺮ ﭼﻦ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺭﺳﺘﮧ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﻣﻨﺰﻝ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺳﺎﮔﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺳﺎﺣﻞ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭتىﺑﺲ ﺗﻢ ﮐﻮ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳوچتی ﺑﺲ ﺗﻢ ﮐﻮ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺎنتی ﺑﺲ ﺗﻢ ﮐﻮ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺎنتی ﺑﺲ ﺗﻢ ﮐﻮ ﮨﻮﮞ ﺗﻢ ﮨﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﮨﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺗﻢ ﮐﻮﻥ ﮨﻮ !!!ﮐﯿﺴﮯ ﺑﺘﺎﺅﮞ۔۔۔
  4. Sab MayA hAi Sab Dhalti Phirtii Chaya hAi Is Ishq Mein hUm Ney jO khOya jO Paya hAi jO tUm Ney Kha "Faiz" Ney Jo Farmaya hAi Sab MayA hAi Haan Gahay Gahay Deed Ki dOulat Haath Aaii Ya Eik Wo Lazat nAam hAi Jis Ka rUSwaii Bus Is K Siwa To jO Bhe Sawaab KamayA hAi Sab MayA hAi Eik nAam To baQii Rehta hAi Gar jAan Nhien jAb Dekh Leya Is SOuday Mein NuQsAan Nhien Tab Shama Pey jAan Dainay Patanga AayA hAi Sab MayA hAi malOom Hamein Sab "Qais" Miyaan Ka QiSsa Bhe Sab Eik Sey hAin Yeh Ranjha Bhe Yeh "InSha" Bhe Farhaad Bhe Jo Eik Nehar Sii khOud K LayA hAi Sab MayA hAi kyOu dArd K Namay Likhtay Likhtay Raat Karo Jis Saat Samandar Paar Ki Naar Ki Baat Karo Us Naar Sey kOii Eik Ney dhOka KhayA hAi Sab MayA hAi Jis gOrii Par Hum Eik Ghazal Har Shaam Likhien Tum jAntay hO , hUm kyOu Kar Us Ka nAam Likhien Dil Us Ki Bhe Chokhat ChOom Ka Wapis AayA hAi Sab MayA hAi Wo Larki Bhe Jo Chand Nagar Kii Ranii Thii Wo Jis Ki Alhar AankhOun Mein KhaiRanii Thii Aaj Us Ney Bhe PaiGham Yahii BhijwayA hAi Sab MayA hAi Jo Abhe Tak nAam Waffa Ka Laitay hAin Wo jAan K dhOkay Khatay dhOkay Daitay hAin Haan Tho'k Baja Kar hUm Ney hUkam LagayA hAi Sab MayA hAi Jab Dekh Leya Har Shakhs Yhaan HarjAii hAi Is Sehar Sey dOor , Eik Kutya hUm Ney Banaii hAi Or Us Kutya K Mathay Par LikhwayA hAi Sab MayA hAi By: Ibne Insha [dil.e.wehshi]
  5. فرض کرو ہم اہلِ وفا ہوں فرض کرو ہم اہلِ وفا ہوں، فرض کرو دیوانے ہوں فرض کرو یہ دونوں باتیں جھوٹی ہوں افسانے ہوں فرض کرو یہ جی کی بپتا جی سے جوڑ سنائی ہو فرض کرو ابھی اور ہو اتنی،آدھی ہم نے چھپائی ہو فرض کرو تمھیں خوش کرنے کے ڈھونڈے ہم نے بہانے ہوں فرض کرو یہ نین تمھارے سچ مچ کے میخانے ہوں فرض کرو یہ روگ ہو جھوٹا، جھوٹی پیت ہماری ہو فرض کرو اس پیت کے روگ میں سانس بھی ہم پہ بھاری ہو فرض کرو یہ جوگ بجوگ کا ہم نے ڈھونگ رچایا ہو فرض کرو بس یہی حقیقت، باقی سب کچھ مایا ہو
  6. کبھی میں جو کہہ دوں محبت ہے تم سے تو مجھ کو خدارا غلط مت سمجھنا کہ میری ضرورت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے پھولوں کی ڈالی یہ باہیں تمہاری ہیں خاموش جادو نگاہیں تمہاری جو کانٹیں ہوں سب اپنے دامن میں رکھ لوں سجاؤں میں کلیوں سے راہیں تمہاری نظر سے زمانے کی خود کو بچانا کسی اور سے دیکھو دل نہ لگانا کہ میری امانت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے چہرہ تمہارا کہ دن ہے سنہرا اور اس پر یہ کالی گھٹاؤں کا پہرا گلابوں سے نازک مہکتا بدن ہے یہ لب ہیں تمہارے کہ کھلتا چمن ہے بکھیرو جو زلفیں تو شرمائے بادل یہ زاہد بھی دیکھے تو ہو جائے پاگل وہ پاکیزہ مورت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو بن کے کلی مسکراتی ہے اکثر شبِ ہجر میں جو رُلاتی ہے اکثر جو لمحوں ہی لمحوں میں دنیا بدل دے جو شاعر کو دے جائے پہلو غزل کے چھپانا جو چاہیں چھپائی نہ جائے بھلانا جو چاہیں بھلائی نہ جائے وہ پہلی محبت ہو تم بہت خوبصورت ہو تم
  7. ﺩﮬﻤﺎﻝ ﺩُﮬﻮﻝ ﺍُﮌﺍﺋﮯ ، ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻭﺟﺪ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ، ﺗﻮ ، ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﮩﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﻠﺘﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﮐﮯ ﺗﮩﮧ ﻣﯿﮟ ﺟﻼﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﭙِﺶ ﺗﻮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺩﮬﻮﺍﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺟﻮ ﺁﮒ ﺍﺷﮏ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺩﮐﺎﻥِ ﻭﺻﻞ ﺗﻮ ﮐﮭﻮﻟﮯ ﺍُﺩﺍﺱ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﮨﺠﺮ ﮐﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﺎﻝ ﻭ ﺧﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﯿّﺪ ﮨﻮ ﺳﻨﮓ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﭘﮕﮭﻞ ﮐﮯ،ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺩﮐﮭﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻗﺪﻡ ﻗﺪﻡ ﻭﮦ ﺩﮬﻤﮏ ﮨﻮ،ﺯﻣﯿﮟ ﺩﮬﮍﮎ ﺍُﭨّﮭﮯ ﻓﻠﮏ ﻏﺒﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﻋﺼﺎﺋﮯ ﺟﺬﺏ ﮐﯽ ﺿﺮﺑﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﻧﺌﮯ ﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺩﺭﺩ ﺍُﭨﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺭﮦ ﺭﮦ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮧﺀ ﺷَﻖ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺁﭖ ﺍﭘﻨﺎ ﺍُﭘﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺩﺑﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﮯ ﻣﻠﺒﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﮨﭩﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻧﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﮦ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻋﺎﺷﻖ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺩﺷﺖ ﻧﻮﺭﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺧﺎﮎ ﺍُﮌﺍﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺻﺪﺍ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺻﺪﺍ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﺎﺩ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻋﮑﺲ ﺁﻧﮑﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺷﺒﯿﮩﮧ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻓﻠﮏ ﻓﺮﯾﺐ ﮨﻮﮞ ﺑﺎﺗﯿﮟ،ﺯﻣﯿﮟ ﻓﺮﯾﺐ ﻋﻤﻞ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺭﻣﺰ ﻧﮧ ﭘﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﻏُﺒﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﺁﺋﮯ ﺟﻮ ﺯﺭ ﮐﮯ ﺭﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﻏِﻨﺎ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﮕﻮﻟﮧ ﻭﺍﺭ ﻭﮦ ﺟﺘﻨﺎ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﮧ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﮮ ﺯﻣﯿﮟ ﮐﻮ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﮭﻤﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ ﯾﮧ ﺳﻮﺯِ ﺟﺴﻢ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﮐﯽ ﺁﮒ ﮨﮯ ﻧﯿّﺮ ﺍﻻﺅ ﺭﻭﺡ ﺟﻼﺋﮯ ﺗﻮ ﻋﺸﻖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ !!
  8. Meri jaan Theek Kehti Hu

    میری جاں ٹهیک کہتی ہو میں سب کچهہ بهول جاوں گا تمہاری خواب سی آنکهیں تمہارا شبنمی لہجہ دبا کر ہونٹ کا کونا تمہارا مسکرانا بهی میری باتوں سے چڑ جانا مجهے اکثر "برا" کہنا مجهے اپنے مقابل جان کر نہ بیٹهنے دینا میرے تحفوں کے ریپرز کو بہت سنبهال کر رکهنا میرے سنگ واک پر جانا وہ مجهہ سے روٹهہ کر کہنا "میں واپس جا رہی ہوں تم میرے پیچهے نہیں آنا" مگر میرے بلانے پر میری جانب پلٹ آنا میری جاں ٹهیک کہتی ہو میں سب کچهہ بهول جاوں گا مگر یہ بات بهی سچ ہے میں ان لمحوں میں جیتا ہوں کہ جب یوں بے ارادہ ہی میرے شانے پہ سر رکهہ کر مجهے تم نے بتایا تها "محبت کے الاو میں اکیلے تم نہیں جلتے" !...میری جاں تم ہی بتلاو میں جن میں سانس لیتا ہوں میں ان اقرار کے لمحات کو کیا بهول سکتا ہوں؟ میری جاں ٹهیک کہتی ہو میں سب کچهہ بهول جاوں گا ,,,,,مگر اقرار کے لمحات کیسے بهول پاوں گا
  9. ﯾﮧ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭨﮭﺎﻥ ﻟﯽ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺩﻋﺎﺅﮞ ﺳﮯ, ﻭﻓﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻧﺎ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻂ ﻟﮑﮭﻨﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﻔﻆ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﯾﭽﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻠﮕﺘﯽ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮔﻼﺑﯽ ﺷﺎﻡ ﺭﮐﮭﻨﯽ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺷﺎﻡ ﮐﺎ ﺗﺎﺭﮦ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮ ﮐﺮ ﺧﯿﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺠﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺗﺘﻠﯽ ﮐﻮ ﺳﺘﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﻥ ﮐﮩﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻧﻈﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﭼﮭﭙﺎﻧﯽ ﮨﯿﮟ ﮨﺎﮞ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭨﮭﺎﻥ ﻟﯽ ﺍﺏ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﻨﺎ ” ﻣﺤﺒﺖ ﺫﺍﺗﯽ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮨﮯ
  10. ہر اک درخت جھڑنا ہے میری جان اسے کہتے ہیں اجڑنا میری جان . کیسا لگتا ہے سنورنے کے لئے بعض اوقات بگڑنا میری جان . تیری آمد کا پتا دیتا ہے سانس کا ایسا اکھڑنا میری جان . روشنی اپنی جگہ گھیرتی ہے تم ہواؤں سے نہ لڑنا میری جان . ہم نہ ہوں گے تو پیشانی کوئی کسی پتھر پہ رگڑنا میری جان . تیرے ملنے سے کھلا ہےمجھ پہ کتنا مشکل ہے بچھڑنا میری جان . آسمان خاک ہوئے ہیں پل میں کیا زمینوں پہ اکڑنا میری جان .
  11. اک بار جو بچھڑ جائے وہ دوبارا نہیں ملتا مل جائے کوئی شخص تو سارا نہیں ملتا . اُس کی بھی نکل آتی ہے اظہار کی صورت جس شخص کو لفظوں کا سہارا نہیں ملتا . پھر دوبارا یہ بات بہت سوچ لے پہلے ہر لاش کو دریا کا کنارا نہیں ملتا . یہ سوچ کر دل پھر سے آمادہ ء الفت ہے ہر بار محبت میں خسارا نہیں ملتا . وہ شہر بھلا کیسے لگے اپنا جہاں پر اک شخص بھی ڈھونڈے سے ہمارا نہیں ملتا
  12. سب کچھ اپنا واری بیٹھاں جتی بازی،،،، ہاری بیٹھاں دم کسے دا بھردے بھردے اپنا آپ،،، وساری بیٹھاں مجرم،،، اپنا آپ اى آں میں ہتھیں کھیڈ اجاڑی بیٹھاں ویچ کے ٹوٹے خواباں دے سپنا میں وپاری بیٹھاں مرضی دا،،، ہک ساہ نہ لیا اُنج میں عمر گزاری بیٹھاں ہواواں،،،،،،، راکھ اڈاون پئیاں اِنج میں قسمت ساڑی بیٹھاں اوہلے،،،، کی میں رکھدا یارو زندگی اس توں واری بیٹھاں اپنے آپ نوں،، قیدی کر کے اُچیاں کنداں چاڑی بیٹھاں کوئی کسے دا دردی نئیں ساری گل، نتاری بیٹھاں مُکیئے آپ ایہہ غم نئیں مکدے ہن ایہہ سوچ وچاری بیٹھاں
  13. ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﺗﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣِﺮﮮ ﺣﺮﻑ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮﺳﮑﮯ ﺗﺮﮮ ﻟﻤﺲ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺷﮕﻔﺘﮕﯽ ﻣﺮﮮ ﺟﺴﻢ ﻭﺟﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮﺳﮑﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮐﺴِﯽ ﮔﮩﺮﮮ ﺭﻧﮓ ﮐﮯ ﺭﺍﺯ ﮐﯽ ﻣﺮﮮ ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﺳﮑﮯ ﺗﺮﯼ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﮩﮑﺸﺎﮞ ﮨﻮﮞ ﻣﺤﺒﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﺯﺗﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻤﺎﻝ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﻣﮩﺮﺑﺎﮞ ﺗﺮﮮ ﺑﺎﺯﻭﺅﮞ ﮐﯽ ﺑﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺟُﮭﻮﻟﺘﮯ ﮨُﻮﺋﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﯼ ﺟﺴﺘﺠﻮ ﮐﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﮐﻮ ﺳﺮﺷﺎﻡ ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﻼﺅﮞ ﺍِﺳﯽ ﺟﮭﻠﻤﻼﺗﯽ ﺳﯽ ﺷﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻟِﮑﮭﻮﮞ ﻧﻈﻢ ﺟﻮ ﺗﺮﺍﺭُﻭﭖ ﮨﻮ ﮐﮩﯿﮟ ﺳﺨﺖ ﺟﺎﮌﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻡ ﺟﻮ ﭼﻤﮏ ﺍُﭨﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺳﯽ ﺩُﮬﻮﭖ ﮨﻮ ﺟﻮ ﻭﻓﺎ ﮐﯽ ﺗﺎﻝ ﮐﮯ ﺭﻗﺺ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﯿﺘﺎ ﺟﺎﮔﺘﺎ ﻋﮑﺲ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﺮﮮ ﺣﺮﻭﻑ ﺗﺎﺯﮦ ﮐﻼﻡ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﺭﺍﺯ ﮨﻮﮞ ﺟﻨﮭﯿﮟ ﻣُﻨﮑﺸﻒ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻭﮞ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺟﮩﺎﻥ ﺷﻌﺮ ﮐﮯ ﺑﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻣِﺮﮮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﭼﺸﻢ ﻭﻟﺐ ﺑﮭﯽ ﭼﻤﮏ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯽ ﻓﻀﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﮔﮭﯿﺮﻟﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻈﻢ ﺍﯾﺴﯽ ﻟﮑﮭﻮﮞ ﮐﺒﮭﯽ
  14. تو ملا ہے تو اب یہ غم ہے پیار زیادہ ہے زندگی کم ہے (پروین شاکر)
×